میرا پاکستان کیسا ہونا چاہئیے؟

(uzma ahmad, Lahore)
میرا پاکستان علامہ اقبال رحمتہ اللہ علیہ کے خوابوں کی تعبیر جیسا ہو، بابائے قوم محمد علی جناح رحمہ اللہ علیہ کی جدوجہد کی تکمیل جیسا ہو، اپنے مطلب کی عملی تصویر جیسا ہو، “پاکستان کا مطلب کیا؟ “ “لاالہ الااللہ“ اسلامی جمہوریہ پاکستان﴿ کہ جس کی بنیاد ہی اسلام پر رکھی گئی ہے﴾ کو اپنے نام کی تفسیر جیسا ہونا چاہئیے
بسم اللہ الرحمٰن الرحیم
محترم قارئین کرام السلام و علیکم!
ہماری ویب کے پلیٹ فارم پر لکھنے والوں کو جس موضوع پر اظہارِ خیال کے لئے مدعو کیا گیا ہے وہ ہے “ ہمارا پاکستان کیسا ہونا چاہئیے؟“

تو قارئین کرام میری دانست میں تو ہمارا پیارا وطن پاکستان ہر محبِ وطن پاکستانی کی امنگوں کے مطابق ہونا چاہئیے جیسا کہ اپنے وطن سے محبت کرنے والا پاکستانی سوچتا ہے ویسا ہونا چاہئیے جہاں امن سکون ہو ہریالی ہو خوشحالی ہو کوئی ڈر ہو نہ خوف ہو آزادی ہو سلامتی ہو کوئی مفلس نہ ہو کوئی بیروزگار نہ ہو یہاں انصاف ہو اخوت ہومساوات کا پرچار ہو محبت ہو ایثار ہو میرے دیس کا کوئی بچہ تعلیم کی دولت سے محروم نہ رہے جو ہنر مند اور تعلیم یافتہ ہیں ان میں سے کوئی بیروزگار نہ ہو اپنی دلچسپی، میلان طبع، خواہش اور جدوجہد کے مطابق ہر ایک کو اپنے مطلوبہ شعبے کے انتخاب میں آزادی و سہولت حاصل ہو متعلقہ افراد اوراداروں تک بنا کسی خوف کے باآسانی رسائی ممکن ہو-

پاکستان کے تمام باشندوں کو یکساں بنیادی سہولیات کی فراوانی ہو کوئی امیر کوئی غریب نہ ہو کسی کے دل میں کسی کے لئے نفرت نہ ہو حسد نہ ہو ایکدوسرے کو برداشت نہ کرنا پڑے بلکہ باہمی احترام اور محبت ہو سب کے دل میں ایک دوسرے کے لئےبے انصافی ہو نہ بدعنوانی نہ ہی رشوت ستانی ہو-

اب کیا کیا بیان کروں دل میں طوفان ہے مگر تمام خیالات کے بیان میں طوالت کا امکان ہے
سچ کہوں تو ہمارے دیس کو راقم کی ناقص دانست میں پاکستان کو

علامہ اقبال رحمتہ اللہ علیہ کے خوابوں کی تعبیر جیسا ، بابائے قوم محمد علی جناح رحمتہ اللہ علیہ کی جدوجہد کی تکمیل جیسا ، اپنے مطلب یعنی، "پاکستان کا مطلب کیا؟، لاالہ الااللہ“ کی عملی تفسیر جیسا ہونا چاہئیے-

پاکستان کو قیام پاکستان کے پس منظر میں دیکھا جائے تو ہم آپ سب یہ بات جانے ہیں کہ قیام پاکستان کا مقصد کیا تھا کس بنیاد پر برصغیر کے مسلمانوں نے اس خطّے کے مسلمانوں کے لئے علیحدٰہ وطن کا مطالبہ کیا تھا اور اسے پانے کیلئے ان گنت قربانیاں دی تھی مسلمانوں نے کیا ہم وہ سب فراموش کر سکتے ہیں ؟ ۔۔۔ نہیں بالکل نہیں اور فراموش کریں بھی تو کیوں کہ پاکستان اسلام کی بنیاد پر قائم کیا گیا پاکستان کی بنیاد ہی اسلام پر رکھی گئی اور ایک مسلمان مذہب کیلئے اپنا تن من دھن سب کچھ داؤ پر لگا دینے کا حوصلہ رکھتا ہے اور مسلمانوں نے یہ کیا بھی تاکہ مسلمان پوری آزادی کیساتھ اپنی زندگیاں اسلام کے سنہری اصولوں اور کتاب ہدایت یعنی قرآن و سن أت کی رہنمائی میں بسر کر سکیں
اسی لئے قیام پاکستان کے بعد پاکستان کا نام "اسلامی جہموریہ پاکستان" رکھا گیا
اسلام قانون کے دائرے میں رہتے ہوئے ہر فرد کو شخصی آزادی کا حق دیتا ہے
پاکستان میں اسلام کے مطابق جمہوری نظام کا قیام عمل میں لایا جانا بیحد ضروری ہے
اس کے علاوہ ہمارا پیارا وطن پاکستان کیسا ہونا چاہئیے اسی بات کو آگے بڑھاتے ہوئے یہ بات ہم
پاکستانیوں کے پیش نظر رہنی چاہئیے کہ پاکستان کے قیام کی وجوہات کیا تھیں مقصد کیا تھا یہی نہ کہ برصغیر کے مسلمانوں کیلئے ایک خالصتاً اسلامی ریاست تشکیل دی جائے جہاں آزادی و بے خوفی سے اسلام کے اصولوں کے مطابق زندگی بسر کر سکیں، اس ریاست کا نام پاکستان تجویز کیا گیا یعنی کے پاک لوگوں کے رہنے کی جگہ-

پاکستان کی تشکیل کے تناظر میں دیکھا جائے تو پاکستان کو کلی طور پر ایک اسلامی ریاست ہونا چاہئیے
پاکستان کے لفظی معنی ملاحظہ کئے جائیں تو پاکستان یعنی پاک لوگوں کے رہنے کی جگہ پاک باشندوں کا مسکن جو ہر طرح کی ظاہری ہو باطنی آلودگی و غلاظت سے پاک ہو۔ ہمارے مذہب کی تعلیم بھی یہی ہے جسمانی و روحان4ی پاکیزگی جیسا کہ اس حدیث مبارکہ سے ظاہر ہے “صفائی نصف ایمان ہے“ ظاہری و باطنی پاکیزگی دین ہدایت پر عمل درآمد سے ہی ممکن ہے ہر قسم کی برائی سے خود کو بچانا اور ہر بھلائی کی راہ اپنانا یہی دین اسلام کی تعلیم ہے-

اپنے اطراف کو اپنے ارد گرد کے ماحول کو اپنے استعمال کی اشیا کو اپنے گھر گلی محلے شہر کو صاف ستھرا رکھنا مطلب پاکستان کو صاف رکھنا اور پاکستان کو ہونا بھی صاف ستھرا چاہیے اپنے نام کی طرح پاک-

ستھرا رکھنے کی عادت ہی ہمارے ماحول کو پاک صاف کر سکتی ہے یوں صفائی کی عادت اپنا کرگویا باشندگان پاکستان نے اپنا نصف ایمان محفوظ کر لیا ہے پاک صاف ماحول انسانی مزاج پر خوشگوار اثر ڈالتا ہے دل و دماغ میں بھی ماحول کے زیر اثر پاکیزہ خیالات در آتے ہیں یوں انسان کے لئے ظاہر کے ساتھ ساتھ باطن کو پاک صاف رکھنا بھی سہل ہو جاتا ہے-

دوسرے لفظوں میں۔۔۔ کہ پاکستان کا نعرہ بھی ہے پاکستان کا مطلب کیاَ “لا الہ الااللہ“ یعنی اللہ کے سوا کوئی لائق عبادت نہیں کوئی اللہ کا شریک نہیں وہی ہمارا مالک و پروردگار ہے اسی کی حکومت ہے اسی کی بادشاہت ہے انسان نائب ہے رب تعالٰی کا جو کچھ بھی اختیار یا منصب انسان کو اللہ کی طرف سے سونپا گیا ہے اسے اپنے رب کی مرضی اور حکم کے مطابق صرف کرنا ہے لیکن ایسا ایک ہی صورت میں ممکن ہے کہ ہم اللہ تبارک و تعالٰی کی رسی کو مضبوطی سے تھامے رکھیں اور تفرقے میں نہ پڑیں ، دیگر اقوام اسلام کے سنہری اور لازوال اصولوں کو اپنا کر ترقی پارہی ہیں جب کہ ہم مسلمان اسلام کے دٰعویدار ہو کر بھی عملی طور پر بہت پیچھے ہیں اسلام دین اور دنیا دونوں کی بہتری اور فلاح و کامرانی کا مذہب ہے تمام انسانوں کے لئے رہنما مذہب ہے اگر ہم اسلام کے مطابق خود کو عملی طور پر ڈھال لیں تو ہر شعبہ میں کامیاب ہو سکتے ہیں محنت دیانتداری سے عمل پیرا ہو کر ہمیں تفرقہ و منافرت ختم کر کے باہمی تعاون کو فروغ دینا ہوگا سچے دل سے اور خلوص کیساتھ اسلام کی صحیح روح کے مطابق اپنے اعمال کو ڈھال لیں تو یقیناً ہمارا پاکستان ہم پاکسانیوں کی امنگوں کے مطابق ہوگا وہ کامیابی ہمارے پاکستان کا مقدر ہوگی جس کے ہم پاکستانی منتظر و خواہاں ہیں-

انشاء اللہ (بس ہمیں خود کو بدلنا ہو گا پورے ایمان کیساتھ خلوص و سچائی کیساتھ متحد ہو کر محنت سے لگن سے ایمان کیساتھ) اللہ پاک ہمارے پاکستان کو دشمنوں کی بری نظر سے محفوظ فرمائے ہمیں اپنے ملک و قوم کی سلامتی و بقا کےلئے ہر دم مستعد رہنے کی توفیق عنایت فرمائے ہمارے دل سے باہمی نفرت ختم ہو اور ہم ایک محنتی جفاکش متحد قوم بن کر اپنے ملک کی بقا و سلامتی ہے لئے عمل پیرا رہیں دنیا کی کوئی طاقت ہمیں زیر نہ کر سکے نہ ہمارے پیارے وطن پاکستان پر میلی نظر ڈال سکے ہماری بقا و سلامتی کا ترقی و خوشحالی کا راز صرف اور صرف کلامِ پاک کی تعلیمات اور نبی کریم ھضرت محمد مصطفٰی صلی اللہ و علیہ واٰلہ وسلم کی سیرت طیبہ کے مطابق عمل پر کاربند رہنے میں ہی مضمر ہے اس کے بغیر کامیابی کی منزل لا حاصل اور کاربند رہنے میں کامیابی ہی کامیابی
اللہ ہم سب کا حامی ناصر ہو
پاکستان زندہ باد پائیندہ باد

آخر میں منظوم حسرت کا اظہار جو شاید ہر درد مند محبِ وطن پاکستانی کی آرزو ہو کہ “میرا پاکستان کیسا ہونا چاہئیے؟“ جو میرے دل کی یا شاید ہر درد مند محبِ وطن پاکستانی کی آرزو ہے کہ ہمارا وطن پاکستان کیسا ہونا چاہئیے-

امن ہو خوشحالی ہو، ہر سو ہریالی ہو
سرسبز و شاداب گلشن کی ہر ڈالی ہو

پھول اور افلاس کا کسی جگہ نہ ڈیرہ ہو
خوف و حراس کا کسی جگہ نہ پھیرا ہو
تارے جگمگاتے رہیں، پھول مسکراتے رہیں
ہر آنگن میں روشنی ہو کہیں نہ اندھیرا ہو
ہر پھول بے مثال ہو ہر کلی کی ادا نرالی ہو
رشک کرے سارا عالم میرے چمن کی رونق پر
میرے دیس کا ہر باشندہ کاش ایسا مثالی ہو

امن ہو خوشحالی ہو، ہر سو ہریالی ہو
سرسبز و شاداب گلشن کی ہر ڈالی ہو
Rate it:
Share Comments Post Comments
Total Views: 2315 Print Article Print
About the Author: uzma ahmad

Read More Articles by uzma ahmad: 265 Articles with 240280 views »
Pakistani Muslim
.. View More

Reviews & Comments

Good and Goodest
By: gull, Islamabad on Oct, 09 2016
Reply Reply
0 Like
Thanks to A lot Dear Gull
be Happy and Stay Blessed always
By: uzma ahmad, Lahore on Oct, 17 2016
0 Like
﴾دعائیہ کلام برائے پاکستان از اقراء محمود﴿

میرے مولا میری دھرتی کو سلامت رکھنا
اسکی گلیوں میں امڈتی هوئی هر وحشت کو
نئی امید کی کرنوں سے منور کر دے
اسنے تھاما هے مجھے ماں کی ممتا کی طرح
اسکی آغوش-محبت کو تو قائم رکھنا
اس په پھیلے هیں جو نفرت کے گھنیرے بادل
انکو ایمان کی بوندوں میں بدل دے یا رب
یه جو دشمن هے میرے چاروں طرف ، تاک میں هے
انکو نابود کرمٹی میں ملا دے مولا
یه وطن دنیا کے نقشے په یوں ابھرے یا رب
جیسے مهتاب ابھرتا هے فلک پر تیرے
اس میں بستے سبھی چهرے صدا مسکاتے رهیں
اسکو خوشیوں کی کوئی ایسی دھنک دے مولا
آنچ نه آئے کوئی حرمتِ وطن په کبھی
اسکی عظمت کو سدا قائم و دائم رکھنا
هاتھ اٹھے هیں دعا کو که اس چمن کو میرے
هر بری نظر سے،آفت سے بچانا مالک
هم بھلے هوں یا نه هوں پر میرا دلدار وطن
تا قیامت رهے آباد میرے پیارے مولا
﴿آمین﴾
پاکستان زندہ با
پاکستان پائیندہ باد
By: UA, Lahore on Sep, 05 2016
Reply Reply
0 Like
پاکستان کا ہر فرد ایک روپیہ یومیہ کے حساب سے پاکستان اور پاکستانی عوام کی خوشحالی اور فلاح و بہبود کی نیت سے بچت کرے تو اک دن میں کتنے کروڑ روپے جمع کر سکتے ہیں اور ایک سال میں کتنے کروڑوں کا سرمایہ بڑھایا جا سکتا ہے اور پھر اسی سرمائے سے پاکستان کو خوشحال بنایا جا سکتا ہے بشرطیکہ منظم طریقے سے قومی بچت کے سرمائے کو قوم کی خوشحالی کیلئے استعمال میں لایا جا سکے خود مختار اسلامی جمہوریہ پاکستان کو ترقی یافتہ ممالک کی صف میں شامیل کرنے کا خواب شرمندہ تعمیر بنایا جا سکے
By: UA, Lahore on Sep, 05 2016
Reply Reply
0 Like
﴾مکمل مضمون﴿میرا پاکستان علامہ اقبال رحمتہ اللہ علیہ کے خوابوں کی تعبیر جیسا ہو، بابائے قوم محمد علی جناح رحمتہ اللہ علیہ کی جدوجہد کی تکمیل جیسا ہو، اپنے مطلب کی عملی تصویر جیسا ہو، “پاکستان کا مطلب کیا؟ “ “لاالہ الااللہ“ اسلامی جمہوریہ پاکستان﴿ کہ جس کی بنیاد ہی اسلام پر رکھی گئی ہے﴾ اپنے نام کی عملی تفسیر جیسا ہو

بسم اللہ الرحمٰن الرحیم
محترم قارئین کرام السلام و علیکم!
ہماری ویب کے پلیٹ فارم پر لکھنے والوں کو جس موضوع پر اظہارِ خیال کے لئے مدعو کیا گیا ہے وہ ہے “ ہمارا پاکستان کیسا ہونا چاہئیے؟“
تو قارئین کرام میری دانست میں تو ہمارا پیارا وطن پاکستان ہر محبِ وطن پاکستانی کی امنگوں کے مطابق ہونا چاہئیے جیسا کہ اپنے وطن سے محبت کرنے والا پاکستانی سوچتا ہے ویسا ہونا چاہئیے جہاں امن سکون ہو ہریالی ہو خوشحالی ہو کوئی ڈر ہو نہ خوف ہو آزادی ہو سلامتی ہو
کوئی مفلس نہ ہو کوئی بیروزگار نہ ہو یہاں انصاف ہو اخوت ہومساوات کا پرچار ہو محبت ہو ایثار ہو میرے دیس کا کوئی بچہ تعلیم کی دولت سے محروم نہ رہے جو ہنر مند اور تعلیم یافتہ ہیں ان میں سے کوئی بیروزگار نہ ہو اپنی دلچسپی، میلان طبع، خواہش اور جدوجہد کے مطابق ہر ایک کو اپنے مطلوبہ شعبے کے انتخاب میں آزادی و سہولت حاصل ہو متعلقہ افراد اوراداروں تک بنا کسی خوف کے باآسانی رسائی ممکن ہو
پاکستان کے تمام باشندوں کو یکساں بنیادی سہولیات کی فراوانی ہو کوئی امیر کوئی غریب نہ ہو کسی کے دل میں کسی کے لئے نفرت نہ ہو حسد نہ ہو ایکدوسرے کو برداشت نہ کرنا پڑے بلکہ باہمی احترام اور محبت ہو سب کے دل میں ایک دوسرے کے لئے
بے انصافی ہو نہ بدعنوانی نہ ہی رشوت ستانی ہو
اب کیا کیا بیان کروں دل میں طوفان ہے مگر تمام خیالات کے بیان میں طوالت کا امکان ہے
سچ کہوں تو ہمارے دیس کو راقم کی ناقص دانست میں پاکستان کو
علامہ اقبال رحمتہ اللہ علیہ کے خوابوں کی تعبیر جیسا ، بابائے قوم محمد علی جناح رحمتہ اللہ علیہ کی جدوجہد کی تکمیل جیسا ، اپنے نام کے مطلب یعنی، "پاکستان کا مطلب کیا؟، لاالہ الااللہ“ کی عملی تفسیر جیسا ہونا چاہئیے




پاکستان کو قیام پاکستان کے پس منظر میں دیکھا جائے تو ہم آپ سب یہ بات جانے ہیں کہ قیام پاکستان کا مقصد کیا تھا کس بنیاد پر برصغیر کے مسلمانوں نے اس خطّے کے مسلمانوں کے لئے علیحدٰہ وطن کا مطالبہ کیا تھا اور اسے پانے کیلئے ان گنت قربانیاں دی تھی مسلمانوں نے کیا ہم وہ سب فراموش کر سکتے ہیں ؟ ۔۔۔ نہیں بالکل نہیں اور فراموش کریں بھی تو کیوں کہ پاکستان اسلام کی بنیاد پر قائم کیا گیا پاکستان کی بنیاد ہی اسلام پر رکھی گئی اور ایک مسلمان مذہب کیلئے اپنا تن من دھن سب کچھ داؤ پر لگا دینے کا حوصلہ رکھتا ہے اور مسلمانوں نے یہ کیا بھی تاکہ مسلمان پوری آزادی کیساتھ اپنی زندگیاں اسلام کے سنہری اصولوں اور کتاب ہدایت یعنی قرآن و سن أت کی رہنمائی میں بسر کر سکیں
اسی لئے قیام پاکستان کے بعد پاکستان کا نام "اسلامی جہموریہ پاکستان" رکھا گیا
اسلام قانون کے دائرے میں رہتے ہوئے ہر فرد کو شخصی آزادی کا حق دیتا ہے
پاکستان میں اسلام کے مطابق جمہوری نظام کا قیام عمل میں لایا جانا بیحد ضروری ہے
اس کے علاوہ ہمارا پیارا وطن پاکستان کیسا ہونا چاہئیے اسی بات کو آگے بڑھاتے ہوئے یہ بات ہم پاکستانیوں کے پیش نظر رہنی چاہئیے کہ
کہ پاکستان کے قیام کی وجوہات کیا تھیں مقصد کیا تھا یہی نہ کہ برصغیر کے مسلمانوں کیلئے ایک خالصتاً اسلامی ریاست تشکیل دی جائے جہاں آزادی و بے خوفی سے اسلام کے اصولوں کے مطابق زندگی بسر کر سکیں، اس ریاست کا نام پاکستان تجویز کیا گیا یعنی کے پاک لوگوں کے رہنے کی جگہ
پاکستان کی تشکیل کے تناظر میں دیکھا جائے تو پاکستان کو کلی طور پر ایک اسلامی ریاست ہونا چاہئیے
پاکستان کے لفظی معنی ملاحظہ کئے جائیں تو پاکستان یعنی پاک لوگوں کے رہنے کی جگہ پاک باشندوں کا مسکن جو ہر طرح کی ظاہری ہو باطنی آلودگی و غلاظت سے پاک ہو۔ ہمارے مذہب کی تعلیم بھی یہی ہے جسمانی و روحانی پاکیزگی جیسا کہ اس حدیث مبارکہ سے ظاہر ہے
“صفائی نصف ایمان ہے“ ظاہری و باطنی پاکیزگی دین ہدایت پر عمل درآمد سے ہی ممکن ہے ہر قسم کی برائی سے خود کو بچانا اور ہر بھلائی کی راہ اپنانا یہی دین اسلام کی تعلیم ہے

اپنے اطراف کو اپنے ارد گرد کے ماحول کو اپنے استعمال کی اشیا کو اپنے گھر گلی محلے شہر کو صاف سھترا رکھنا مطلب پاکستان کو صاف رکھنا اور پاکستان کو ہونا بھی صاف ستھرا چاہیے اپنے نام کی طرح پاک
ستھرا رکھنے کی عادت ہی ہمارے ماحول کو پاک صاف کر سکتی ہے
یوں صفائی کی عادت اپنا کرگویا باشندگان پاکستان نے اپنا نصف ایمان محفوظ کر لیا ہے
پاک صاف ماحول انسانی مزاج پر خوشگوار اثر ڈالتا ہے دل و دماغ میں بھی ماحول کے زیر اثر پاکیزہ خیالات در آتے ہیں یوں انسان کے لئے ظاہر کے ساتھ ساتھ باطن کو پاک صاف رکھنا بھی سہل ہو جاتا ہے
دوسرے لفظوں میں۔۔۔ کہ پاکستان کا نعرہ بھی ہے
پاکستان کا مطلب کیاَ “لا الہ الااللہ“ یعنی اللہ کے سوا کوئی لائق عبادت نہیں کوئی اللہ کا شریک نہیں وہی ہمارا مالک و پروردگار ہے اسی کی حکومت ہے اسی کی بادشاہت ہے انسان نائب ہے رب تعالٰی کا جو کچھ بھی اختیار یا منصب انسان کو اللہ کی طرف سے سونپا گیا ہے اسے اپنے رب کی مرضی اور حکم کے مطابق صرف کرنا ہے


لیکن ایسا ایک ہی صورت میں ممکن ہے کہ ہم اللہ تبارک و تعالٰی کی رسی کو مضبوطی سے تھامے رکھیں اور تفرقے میں نہ پڑیں ، دیگر اقوام اسلام کے سنہری اور لازوال اصولوں کو اپنا کر ترقی پارہی ہیں جب کہ ہم مسلمان اسلام کے دٰعویدار ہو کر بھی عملی طور پر بہت پیچھے ہیں اسلام دین اور دنیا دونوں کی بہتری اور فلاح و کامرانی کا مذہب ہے تمام انسانوں
کے لئے رہنما مذہب ہے اگر ہم اسلام کے مطابق خود کو عملی طور پر ڈھال لیں تو
ہر شعبہ میں کامیاب ہو سکتے ہیں محنت دیانتداری سے عمل پیرا ہو کر ہمیں تفرقہ و
منافرت ختم کر کے باہمی تعاون کو فروغ دینا ہوگا سچے دل سے اور خلوص کیساتھ اسلام کی صحیح روح کے مطابق اپنے اعمال کو ڈھال لیں تو یقیناً ہمارا پاکستان ہم پاکسانیوں کی امنگوں
کے مطابق ہوگا وہ کامیابی ہمارے پاکستان کا مقدر ہوگی جس کے ہم پاکستانی منتظر و خواہاں ہیں
انشاء اللہ (بس ہمیں خود کو بدلنا ہو گا پورے ایمان کیساتھ خلوص و سچائی کیساتھ متحد ہو کر محنت سے لگن سے ایمان کیساتھ) اللہ پاک ہمارے پاکستان کو دشمنوں کی بری نظر سے محفوظ فرمائے ہمیں اپنے ملک و قوم کی سلامتی و بقا کےلئے ہر دم مستعد رہنے کی توفیق عنایت فرمائے ہمارے دل سے باہمی نفرت ختم ہو اور ہم ایک محنتی جفاکش متحد قوم بن کر اپنے ملک کی بقا و سلامتی ہے لئے عمل پیرا رہیں دنیا کی کوئی طاقت ہمیں زیر نہ کر سکے نہ ہمارے پیارے وطن پاکستان پر میلی نظر ڈال سکے
ہماری بقا و سلامتی کا ترقی و خوشحالی کا راز صرف اور صرف کلامِ پاک کی تعلیمات اور نبی کریم حضرت محمد مصطفٰی صلی اللہ و علیہ واٰلہ وسلم کی سیرت طیبہ کے مطابق عمل پر کاربند رہنے میں ہی مضمر ہے اس کے بغیر کامیابی کی منزل لا حاصل اور کاربند رہنے میں کامیابی ہی کامیابی
اللہ ہم سب کا حامی ناصر ہو


پاکستان زندہ باد
پاکستان پائیندہ باد
آخر میں چند اشعار جو " میرا پاکستان کیسا ہو؟ " کے حوالے سے میرے بلکہ ہر درد مند اور محب وطن پاکستانی کے جزبوں کی ترجمانی کرتے ہوئے پیش خدمت ہیں ملاحظہ کیجئے

امن ہو خوشحالی ہو، ہر سو ہریالی ہو
سرسبز و شاداب گلشن کی ہر ڈالی ہو
بھوک اور افلاس کا کسی جگہ نہ ڈیرہ ہو
خوف و ہراس کا کسی جگہ نہ پھیرا ہو
تارے جگمگاتے رہیں، پھول مسکراتے رہیں
ہر آنگن میں روشنی ہو کہیں نہ اندھیرا ہو
ہر پھول بے مثال ہو ہر کلی کی ادا نرالی ہو
جان سلامت ہو سبکی ایمان سلامت ہو سبکا
صبح جیسی روشن ہو رات نہ کوئی کالی ہو
رشک کرے سارا عالم پاکستان کی رونق پر
میرے دیس کا ہر باشندہ ایسا کاش مثالی ہو
امن ہو خوشحالی ہو، ہر سو ہریالی ہو
سرسبز و شاداب گلشن کی ہر ڈالی ہو
By: عظمٰی, Lahore on Aug, 14 2016
Reply Reply
0 Like
ma sha Allaah buhut accha article tha, aur Allaah ne qur'an mai farmaaya hai:

وَعَدَ اللَّـهُ الَّذِينَ آمَنُوا مِنكُمْ وَعَمِلُوا الصَّالِحَاتِ لَيَسْتَخْلِفَنَّهُمْ فِي الْأَرْضِ كَمَا اسْتَخْلَفَ الَّذِينَ مِن قَبْلِهِمْ وَلَيُمَكِّنَنَّ لَهُمْ دِينَهُمُ الَّذِي ارْتَضَىٰ لَهُمْ وَلَيُبَدِّلَنَّهُم مِّن بَعْدِ خَوْفِهِمْ أَمْنًا ۚ يَعْبُدُونَنِي لَا يُشْرِكُونَ بِي شَيْئًا ۚ وَمَن كَفَرَ بَعْدَ ذَٰلِكَ فَأُولَـٰئِكَ هُمُ الْفَاسِقُونَ

turjama: tum mai se un logon se jo imaan la aye hain aur nayk a'maal kiye hain Allaah ta'lah wa'dah farmaa chuka hai k unhei zuroor zameen mai khaleefah banae ga jaise k un logon ko khaleefah banaya tha jo un se pehle thay aur yaqeenan un k liye un k is deen ko mazbooti k saath muhkam kar k jamaa de ga jisay un k liye woh pasand farma chuka hai aur un k is khawf au khatar ko wo aman-o-amaan se badal de ga, (ba-shart hai k) woh mairi ibaadat karein ge maire saath kisi ko bhi shareek na thahraein ge..

suran noor ayah 55.

is aik ayat mai aman amaan aur shirk se bar'at, tawheed aur aqeedah ki ahmiyyat aur nayk a'maal aur imaan sab par roshni daali gai hai. jis ka zikar aap ne mukhtalif jahton se is article mai kiya.
By: manhaj-as-salaf, Peshawar on Aug, 14 2016
Reply Reply
1 Like
jazak Allah hjo khair behd sjukria qdraafzae frmae ap ny mzmun pr jamey aur umdah tbsra frma kr
salamat rahaen Allah ap sy razi ho
stay blessed always
By: Uzma Ahmad, Lahore on Aug, 14 2016
0 Like
bohoth umda Masha Allah ... really alfaz nahi mil rahay .... dear is contest may jo bhi jeetay magar meri nazar may sub hi winner hain ... Allah aap sub ko kamiyab karay ameen ... Jazak Allah Hu Khairan Kaseera
By: farah ejaz, Aaronsburg on Aug, 10 2016
Reply Reply
0 Like
jazak Allah ho khair
Dear Farah Ejaz ap ki baat ki taeed krti hoon k sb he winner hai tmammeiny "Mera Pakistan kesa ho?" k hwaly sy likhy gaey tmam mazameen paRhai hain sb ny apny Pakistan k lye apny jzbat ehsasat aur nzrye ka bhrpur aur umdah andaz mein izhar keya hai kash k jo kuchh mujh samet degr shurka ny jo bhi suggestions point out ki hain un pr amal dramad mumkin ho aur Hamar Pakistan hm tmam PakistanyoN ki umangoN arzouN aur duaon jesa hoAllah Dushman ki hr chal ko nakam bnady jo bhi Pakistan ki tarqi o baqa ki raoh mein rukhwtain peda krna chahtai hain hr buri nzr sy bcha kr Pak prwardigar hmarai Pakistan ka Mustaqbil hamesha drakhshan o tabnak rahi rehti duniya tk (Aameen)
agr enam ya winner ki shart na bhi hoti tau bhi is mozu pr likhna bnta hai hamariweb ki janib sy invite krny pr suhkria hamariweb. ka bbehd k hm PakistaniyoN ko is bahani Pakistan sy apni Muhabbat k izhar ka muqa mila dili sukun hota hai apny jzbat k izhar sy so mujhy bhi hoa aur yehi kafi hai
(agrchay aik arsa hua nasr nigari ko trk kye bl k ab tau poetry bhi shaz o nadir he likhi jati hai)
khush rahain abad rahian
Stay Blessed always
By: uzma, Lahore on Aug, 11 2016
1 Like
برائے مہربانی دوسرے شعر کا پہلا لفظ “بھوک“ پڑھا جائے “پھول“ نہیں
شکریہ
By: uzma, Lahore on Aug, 09 2016
Reply Reply
0 Like
well written... column k end mein jo verses hain پھول اور افلاس کا کسی جگہ نہ ڈیرہ ہو yahan phool ki jga bhook ka lafz use hota hai... baqi article perfect hai... stay blessed!!!
By: Faiza Umair, Lahore on Aug, 09 2016
Reply Reply
0 Like
jazak Allah ho khair
buhat buhat shukria comments ka ji ap ny sahi kaha infact bhook he hai dusra misra zehn mein sath he araha the jiski wja sy phool ghalti sy bhook ki jga likha gaya yehi article dubara tarmim aur mukhtasir azafay k sath arsal kia hai wahan ghalti durst krdi gae hai niz poetry section mein b islah k lye comment mein guzarish krdi hai
article pasand krny ka b buhat shukria
salamat rahain shaad rahain
stay blessed always
By: uzma, Lahore on Aug, 09 2016
0 Like
Very Nice article :)
By: Syed Hafeez Ur Rehman , Karachi on Aug, 08 2016
Reply Reply
0 Like
Jazak Allah ho khair
thanks a lot
stay blessed
By: uzma, Lahore on Aug, 08 2016
0 Like
بہت اچھا لکھا ہوا ہے۔۔۔۔۔۔۔
By: sana, Lahore on Aug, 05 2016
Reply Reply
0 Like
بہت شکریہ ثناء صاحبہ
جزاک اللہ ھو خیر
By: عظمٰی, Lahore on Aug, 07 2016
0 Like
السلام و علیکم ! محترم قارئینِ کرام “میرا پاکستان کیسا ہو“ کے حوالے سے یہ مضمون مزید اضافے کے ساتھ دوبارہ ارسال کیا ہے امید ہے ایک دو دن میں آن لائن ہو جائے گا بیحد شکریہ کہ آپ نے اپنے قیمتی وقت مین سے کچھ وقت نکال کر تحر پر توجہ فرمائی اس قدر افزائی کے لئے بیحد شکریہ
By: uzma ahmad, Lahore on Aug, 04 2016
Reply Reply
0 Like
Language: