میرا پاکستان کیسا ہو؟

(Rizwan Ullah Peshawari, Peshawar)
 مملکت خدادادپاکستان اﷲ تعالیٰ کا دیا ہوا تحفہ ہے۔ہر دور میں اور ہر مشکل کڑی میں اس کی حفاظت اہل پاکستان کی اولین فرض ہے۔جس طرح انسان اپنے رہن سہن ،اپنی مال ومتاع کی حفاظت کرتا ہے تو اس کہیں زیادہ مملت خداداد کی حفاظت ہمارے ذمہ ہے۔

تاریخ پاکستان یا پاکستان کی تاریخ سے مراد اُس خطے کی تاریخ ہے جو 1947؁ء کو تقسیم ہند کے موقع پر ہندوستان سے علیحدہ ہو کر اسلامی جمہوریہ پاکستان کہلایا۔ تقسیم ہند سے قبل موجودہ پاکستان کا خطہ برطانوی راج کا حصہ تھا۔ اُس سے قبل، اس خطے پر مختلف ادوار میں مختلف مقامی بادشاہوں اور متعدد غیر ملکی طاقتوں کا راج رہا۔ قدیم زمانے میں یہ خطہ برصغیر ہند کی متعدد قدیم ترین مملکتوں اور چند بڑی تہذیبوں کا حصہ رہا ہے ۔ 18 ویں صدی میں سرزمین برطانوی ہند میں ڈھل گئی۔

پاکستان کی سیاسی تاریخ کا آغاز 1906؁ء میں آل انڈیا مسلم لیگ کے قیام سے ہوتا ہے ۔ اس جماعت کے قیام کا مقصد ہندوستان میں بسنے والے مسلمانوں کے مفاد کا تحفظ اور اُن کی نمائندگی کرنا تھا۔ 29 دسمبر 1930؁ء کو، فلسفی و شاعر، ڈاکٹر سر علامہ محمد اقبال نے جنوب مشرقی ہندوستان کے مسلمانوں کے لیے ایک خود مختار ریاست کا تصور پیش کیا۔1930؁ء کی دہائی کے اواخر میں مسلم لیگ نے مقبولیت حاصل کرنا شروع کی۔ محمد علی جناح کی جانب سے دو قومی نظریہ پیش کیے جانے اور مسلم لیگ کی جانب سے 1940؁ء کی قرارداد لاہور کی منظوری نے پاکستان کے قیام کی راہ ہموار کی۔ قرارداد لاہور میں مطالبہ کیا گیا تھا کہ برطانوی ہند کے مسلم اکثریتی علاقوں پر مشتمل آزاد ریاستیں قائم کی جائیں۔ بالآخر جناح کی قیادت میں ایک کامیاب تحریک کے بعد 15 اگست 1947؁ء کو برطانوی تسلط سے آزادی ملی اور تقسیم ہند عمل میں آیا۔

قارئین کرام کو اپنے مملکت خداداد پاکستان کے بارے چند مفید معلومات بھی دینا چاہوں گاتاکہ ہر قاری کے ذہن میں ہو کہ مملکت خداداد پاکستان ہی میں اولین کام کئے گئے،آج جو ہم اپنی فتح اور کامیابی کے بعد مشکلات اور غلامی کے دلدل میں پھنسے ہیں تو ہم نے اپنے ہی مملکت خداداد پاکستان کے آزاد ہونے کے اس نعرہ کو صرف نعرہ تک ہی محدود کیا ہے،کہ پاکستان کا مطلب کیا؟لا الہ الا اﷲ اگر ہم ہی اسی پر سوچے اور اس نعرے کو عملی جامہ پہنائے تو وہ دن دور نہیں کہ اغیار ہم سے میلوں نہیں بلکہ کوسوں دور بھاگیں گے۔
٭پاکستان کا نام جنوری 1933مین چوہدری رحمت علی خاں نے تجویز کیا تھا ۔
٭پاکستان کے قیام کا اعلان 3جون 1947کو ہواتھا ۔
٭پاکستان اقوامِ متحدہ کا رکن 30ستمبر 1947 کو بنا تھا ۔
٭پاکستان کا پہلا سکہ 3جون 1947 کو جاری ہوا تھا ۔
٭پاکستان کا پہلا ڈاک ٹکٹ 9جولائی 1948 کو جاری ہوا تھا ۔
٭اسلام آباد کو پاکستان کا دارالحکومت 1960 میں کیا تھا ۔
٭پاکستان کا پہلا ٹی وی سٹیشن 24 نومبر 1964 کو قائم ہوا ۔
٭پاکستان ریڈ کراس سِوسائٹی کا نام بدل کر 1974 میں ہلالِ احمر رکھا گیا ۔
٭پاکستان نے 28مئی 1998 کو چاغی بلوچستان کے مقام پر چھ ایٹمی دھماکے کئے ۔
٭پاکستان کا جھنڈا قائد اعظم نے ڈیزائن کیا۔

اس کرۂ ارض پر پاکستان دینی اور اسلامی ممالک میں سے ایک ملک ہے،اس میں امن وامان اور خوشحالی کے لیے ہر ممکن کوشش ہونی چاہئے،تاکہ یہ مملت خدادادامن کا گہوارہ بنایا جا سکے۔

اس کے ساتھ ساتھ ایک اور تجویز یہ بھی ہے کہ جب یہ ملک اسلام کے نام پر بنا ہے تو اس میں اسلامی قلعوں(مدارس)کی خوب حفاظت ونگرانی کرنی چاہئے کیونکہ اس ملک کی آزادی میں انہی مدارس کے فضلاء علماء اور مشائخ کا اولین کردار رہا ہے جو کسی سے ڈکھی چھپی نہیں،لہٰذا اسلام کے محافظین علماء طلباء کے قدموں کو چھومنا چاہئے نہ کہ ان پر دہشت گردی کا لیبل لگا کر دنیا کے سامنے ذلیل کیا جائے اور میں یہ دعوے سے کہتا ہوں کہ خدانخواستہ اگر پاکستان پر کہیں بھی مشکل وقت آپڑا تو آپ کو صف اول میں یہی علماء طلباء ہی نظر آئیں گے کیونکہ انہی نے تو پاکستان کی آزادی میں انتھک کوششیں کیں ہیں۔
اﷲ تعالیٰ ہمارے اس مملکت خداداد کو دن دُگنی رات چگنی ترقیوں سے مالامال کردے۔(آمین)
Comments Print Article Print
 PREVIOUS
NEXT 
About the Author: Rizwan Ullah Peshawari

Read More Articles by Rizwan Ullah Peshawari: 162 Articles with 106614 views »
Currently, no details found about the author. If you are the author of this Article, Please update or create your Profile here >>
03 Aug, 2016 Views: 712

Comments

آپ کی رائے