09 نومبر یوم پیدائش…… شاعر مشرق علامہ اقبالؒ

(Mufti Muhammad Waqas Rafi, )
یہ آج سے تقریباً دو سو ٗ سوا دو سو سال قبل انیسویں صدی کے اواخر یا بیسویں صدی کے اوائل کی بات ہے کہ کشمیری برہمنوں کے ایک خاندان نے اسلام قبول کر لیا تھا جس کی وجہ سے اسی وقت سے اس خاندان میں تقویٰ و طہارت اور خشیت و ﷲیت کا رنگ غالب ہوگیا تھا ۔اسلام قبول کرنے کے بعد کشمیری بر ہمنوں کایہ نومسلم خاندان کشمیر سے ہجرت کرکے غیر منقسم (برطانوی) ہندوستان کے مشہور صوبہ ٗ صوبہ پنجاب کے مشہور شہر سیالکوٹ میں آکر آباد ہوگیاتھا۔ اس نو مسلم خاندان میں ایک شخص شیخ نور محمدنامی بھی تھے جو بڑے دین دار اور اﷲ والے تھے ،ان کے گھرمیں مؤرخہ 09 نومبرسنہ 1877 ء جمعہ کے روز ایک بچے نے جنم لیا جس کا نام انہوں محمد اقبال رکھا۔ محمد اقبال جب تھوڑے بڑے ہوئے اور سن شعور کو پہنچے تو ان کے والد شیخ نور محمد انہیں دینی تعلیم دلوانے مولانا غلام حسن کے پاسچھوڑ آئے ، جہاں وہ محلہ شوالہ کی مسجد میں لوگوں کو قرآن مجید کا درس دیا کرتے تھے ، محمد اقبال نے بھی یہاں آکر قرآن مجید کی تعلیم حاصل کرنا شروع کردی ، چنانچہ یہیں سے علامہ اقبال کی ابتدائی تعلیم کا آغاز ہوتا ہے ۔

علامہ اقبال نے جب قرآن مجید کی تعلیم حاصل کرلی تو ان کے والد شیخ نور محمد نے انہیں اپنے گھر کے قریب ہی کوچہ میر حسام الدین میں واقع میر حسن کے مکتب میں آپ کو داخل کروادیا ، علامہ اقبال نے یہاں رہ کر تقریباً تین سال تک اردو ، فارسی اور عربی ادب کی تعلیم حاصل کی۔

اس کے بعدعلامہ اقبال نے انگریزی تعلیم اپنے شہر کے اسکول میں حاصل کرنا شروع کردی اور وہاں کا امتحان امتیازی درجہ میں پاس کرکے آپ نے شہر کے کالج میں داخلہ لے لیا ، کچھ عرصہ وہاں پڑھتے رہے ، پھر اس کے بعد سیالکوٹ سے لاہور جاکر گورنمنٹ کالج لاہور میں داخلہ لیا اور فلسفہ ، عربی اور انگریزی مضامین اختیار کرکے B.A کی سند حاصل کی ۔ اس کے بعد مارچ 1899 ء میں فلسفہ میں M.A کا امتحان دیا اور پورے صوبۂ پنجاب میں اوّل پوزیشن حاصل کی ، اس دوران شاعری کا سلسلہ بھی چلتا رہا مگر آپ مشاعروں میں نہ جاتے تھے۔

نومبر 1899 ء کی ایک شام کچھ بے تکلف ہم درس علامہ اقبال کو حکیم امین الدین کے مکان پر ایک محفل مشاعرہ میں کھینچ لے گئے ، بڑے بڑے سکہ بند اساتذہ ، شاگردوں کی ایک کثیر تعداد سمیت وہاں شریک تھے ، سننے والوں کا بھی ایک ہجوم تھا ۔ اقبال چوں کہ بالکل نئے تھے اس لئے ان کا نام مبتدیوں کے دور میں پکارا گیا ، غزل پڑھنی شروع کی ، جب اس شعر پر پہنچے کہ ؂
موتی سمجھ کر شانِ کریمی نے چن لیے
قطرے جو تھے مرے عرقِ انفعال کے

تو اچھے اچھے اساتذہ ورطۂ حیرت میں ڈوب گئے اور ان پر سکتہ طاری ہوگیا، وہ بے اختیارعلامہ اقبال کو داد دینے لگ گئے ، یہیں سے بحیثیت شاعر علامہ اقبال کی شہرت کا آغاز ہوا اور مشاعروں میں باصرار بلائے جانے لگے۔

1899 ء میں M.A پاس کرنے کے بعد علامہ اقبال مؤرخہ 13 مئی 1899 ء کو تاریخ ، فلسفہ اور سیاسیات کے لیکچرارکی حیثیت سے اورینٹل کالج لاہور میں مقرر ہوگئے جہاں وہ تقریباً چار سال تک رہے۔ اورینٹل کالج لاہور میں مدت ملازمت ختم ہونے کے بعد 1903 ء میں اسسٹنٹ پروفیسر انگریزی کی حیثیت سے گورنمنٹ کالج میں علامہ ا قبال کا تقرر ہوا جہاں پہلے آ پ انگریزی کے استاذ مقرر ہوئے اور بعد میں فلسفے کے شعبے میں چلے گئے ، لیکن اس دوران آپ نے طلبہ و اساتذہ میں اپنے علم و فضل کا لوہا منوالیا اور محکمۂ تعلیم کے ذمہ داروں کا اعتماد اپنے ہاتھ میں لے لیا ۔

25 دسمبر 1905 ء کو علامہ اقبال اعلیٰ تعلیم حاصل کرنے کے لئے انگلستان چلے گئے اور کیمبرج یونی ورسٹی ٹرنٹی کالج میں داخلہ لے لیا اور فلسفہ و معاشیات کی ڈگریاں حاصل کرکے تین سال تک وہیں لندن میں مقیم رہے ، اس مدت میں پروفیسر آرنلڈ کی عدم موجودگی میں لندن یونی ورسٹی کے شعبۂ عربی میں تدریسی فرائض بھی سر انجام دیتے رہے اور میونخ جاکر فلسفہ میں ڈاکٹریٹ حاصل کی اور پھر لندن آکر قانون کا اعلیٰ امتحان پاس کرکے کامرس کالج لندن میں استاذ مقرر ہوگئے اور پھر سیاسیات و اقتصادیات میں امتیاز پیدا کرنے کے بعد 1908 ء میں اپنے وطن کی طرف واپس لوٹے اور گورنمنٹ کالج لاہور میں فلسفہ پڑھانے لگے۔علامہ اقبال نے یہ کل امتیازات محض 32,33سال کی عمر ہی میں حاصل کرلیے تھے۔

1910ء میں طرابلس اور بلقان کی جنگیں چھڑگئیں جن کے اثرات سے علامہ اقبال برے طرح متاثر ہوئے اور ان کے قلبی احساسات ٹوٹ ٹوٹ سے گئے ، جس کی وجہ سے ان کے دل میں مغربی تہذیب اور یورپی سامراج کی شدید نفرتوں نے جنم لیا ، ان کے رنج و غم نے علامہ اقبال سے وہ پرجوش نظمیں کہلوائیں جو مسلمانوں کے غم میں گرم آنسو اور مغرب کے خلاف تیر و نشتر تھیں۔

ا 1914ء میں جب یورپ میں جنگ عظیم کا لاوا پھوٹا اور عالم اسلام جن حالات و حوادث سے دوچار ہوا انہوں نے علامہ اقبال کو ایک درد مند شاعر ، ایک مجاہد داعی ، ایک فلسفی حکیم اور دیدہ ور مبصر بنا دیا جو حالات سے مستقبل کا اندازہ لگالیتے اور حقائق و عبر کو نظم کا لباس پہنادیتے تھے۔

1930 ء میں الٰہ آباد میں مسلم لیگ کے اجلاس کے خطبہ صدارت میں علامہ اقبال نے پہلی بار پاکستان کا نظریہ پیش کیا اور پنجاب کے مجلس قانون ساز کے ممبر منتخب ہوئے اور 1931,32 ء کی گول میز کانفرنس میں مسلمانوں نمائندگی کی ۔ 1932 ء میں شاہ نادر خان شہید ؒ کی دعوت پر اُس علمی وفد کے ساتھ افغانستان گئے جس میں سر راس مسعود اور علامہ سید سلیمان ندویؒ بھی شریک تھے ۔ بادشاہ نے بہت اخلاص کے ساتھ راز دارانہ گفتگو کی اور اپنا دل کھول کر رکھ دیا ، دونوں ایک دوسرے کے ساتھ کافی دیر تک محو گفتگو رہے اور روتے رہے ۔

علامہ اقبال محض ایک شاعر اور ادیب ہی نہیں بلکہ ایک سچے اور پکے عاشق رسول بھی تھے ،جس کی ایک ہلکی سی جھلک اس واقعہ سے آشکارا ہوجاتی ہے کہ ایک روز علامہ اقبال کے دوست حکیم احمد شجاع آپ کے مکان پر پہنچے تو آپ کو بہت زیادہ فکر مند، مغموم اور بے چین پایا ، حکیم صاحب نے گھبرا کر دریافت فرمایا : ’’ خیر تو ہے ؟ آپ آج خلاف معمول بہت زیادہ مضطرب اور پریشان نظر آتے ہیں ؟‘‘۔ علامہ اقبال نے خاص اندازمیں نظریں اوپر اٹھائیں اور غم انگیز لہجے میں فرمایا : ’’احمد شجاع ! یہ سوچ کر میں اکثر مضطرب اور پریشان ہوجاتا ہوں کہ کہیں میری عمر نبی پاک ا کی عمر مبارک سے زیادہ نہ ہوجائے۔ ‘‘چنانچہ ایسا ہی ہوا اور علامہ اقبال کی عمر 60 سال تک ہی محدود رہی۔

مبلغ اسلام حضرت مولانا ڈاکٹر طارق جمیل صاحب دامت برکاتہم فرماتے ہیں کہ دنیا میں تین زبانیں ایسی ہیں جن سے ادب کی خوش بو مہکتی ہے ٗعربی، فارسی اور اردو ۔میں نے ان تینوں ادبی زبانوں سمیت انگلش کے شعراء کا بھی مطالعہ کیا ہے ، انگلش کے شعراء کا تو میں دعویٰ نہیں کرتا لیکن بقیہ تینوں ادبی زبانوں عربی ، فارسی اور اردو کے شعراء کے حق میں میں یہ دعویٰ ضرورکرتا ہوں کہ ان کا کوئی بھی شاعر (ماسوائے صحابہ کرام کے) علامہ اقبال کی ہمسری نہیں کرسکا جس نے قرآن اور حدیث کی صحیح معنوں میں ترجمانی کرکے ظلمت و جہالت کی چادر تانے ہوئے ابدی نیند سونے والی مسلم قوم کو اپنا شاعرانہ نغمہ سناکرغفلت و لاپرواہی کی نیند سے بیدار کیا اور انہیں یہ پیغام دیا کہ ؂
نہیں تیرا نشیمن ’’قصر سلطانی‘‘ کے گنبد پر
تو شاہین ہے بسیرا کر پہاڑوں کی چٹانوں میں

اقبال نے اپنے جن اشعار میں قرآن مجید کی ترجمانی کی ہے اس کی چند ایک مثالیں آپ بھی ملاحظہ فرمایئے : قرآن مجید میں صحابہ کرام رضی اﷲ عنہم کی مدح و تعریف کرتے ہوئے ایک جگہ اﷲ تعالیٰ فرماتے ہیں : ﴿ أشداء عليٰ الکفار رحماء بینھم (ألفتح) ﴾ ترجمہ صحابہ کرام رضی اﷲ عنہم کافروں کے مقابلہ میں سخت اور آپس میں ایک دوسرے پر انتہائی مہربان اور نرم دل ہیں ۔علامہ اقبال نے اس کی ترجمانی یوں کی ہے ؂
ہو حلقہ یاراں تو بریشم کی طرح نرم
رزم حق و باطل ہو تو فولاد ہے مؤمن

ایک دوسری جگہ اﷲ تعالیٰ فرماتے ہیں: ﴿ وفي أنفسکم أفلا تبصرون ( ألذاریات) ﴾ یعنی اور خود تمہارے اندر (بھی کئی نشانیاں ہیں) سو کیا تم کو سوجھتا نہیں؟ (ترجمہ شیخ الہند) علامہ اقبال نے اس کی ترجمانی یوں کی ہے ؂
اپنے من میں ڈوب کر پاجا سراغِ زندگی
تو اگر میرا نہیں بنتا نہ بن اپنا تو بن

علامہ اقبال عرصہ دراز سے لاحق مختلف قسم کے امراض و عوارض کا مقابلہ کرتے رہے لیکن آخر کار ان کی ہمت نے جواب دے دیا اور وہ صاحب فراش ہوگئے ، لیکن اس زمانہ میں بھی شعر گوئی ، تصانیف اور ملاقاتوں کا سلسلہ برابر جاری رہا ، حتیٰ کہ اپنی وفات سے تقریباً دس (۱۰) منٹ پہلے علامہ اقبال نے یہ اشعار کہے:
سرودے رفتہ باز آید کہ ناید
نسیمے از حجاز آید کہ ناید
سر آمد روزگار ایں فقیرے
دگر دانائے راز آید کہ ناید

اور پھر اپنی شاعرانہ زندگی کا مشک کی مہر لگا یہ آخری شعر کہا:
نشانِ ’’مرد مؤمن ‘‘ باتو گویم
چو مرگ آید تبسم بر لب اوست

اور بالآخر عالم اسلام کا یہ عظیم اسلامی فلاسفر ، شاعر مشرق ،مصورِ پاکستان ،مفکر اسلام، عاشق رسول ، دنیائے علم و ادب کی چہچہاتی بلبل ، قرآن و حدیث کا بہترین ترجمان ، برصغیر پاک و ہند میں مسلمانوں کا عظیم لیڈر و رہنما ، کروڑوں لوگوں کے دلوں پر حکومت کرنے والا، بھٹکے ہوئے آہوؤں کا رخ سوئے حرم پھیرنے والا مسلمانوں کایہ نامور عبقری سپوت تقسیم ہند سے پہلے ہی اپنی حیات مستعار کی 6دھائیاں دیکھنے کے بعد بعمر 60 سال مؤرخہ21 اپریل 1938 ء کو اپنا شاعرانہ نغمہ گاتے گاتے ہمیشہ کے لئے خاموش ہوگیا اور بادشاہی مسجد لاہور کے متصل اپنے ہی ایک مقبرہ ’’ مزارِ اقبال‘‘میں ابدی نیند سوکر محو استراحت ہوگیا ؂
بڑے غور سے سن رہا تھا زمانہ
ہمیں سوگئے داستاں کہتے کہتے
Comments Print Article Print
 PREVIOUS
NEXT 
About the Author: Mufti Muhammad Waqas Rafi

Read More Articles by Mufti Muhammad Waqas Rafi: 185 Articles with 133348 views »
Currently, no details found about the author. If you are the author of this Article, Please update or create your Profile here >>
09 Nov, 2016 Views: 374

Comments

آپ کی رائے