نیب سست کیوں ھے؟ الیکشن کمیشن کہاں ھے؟

(Mian Khalid Jamil {Official}, Lahore)

خبر ھےکہ جنرل الیکشن 2018ء میں ھر پولنگ اسٹیشن پر اندر اور باھر فوج تعینات ھوگی۔۔ سوال یہ ھے کہ اس سے قبل کیا فوج تعینات اسطرح نہیں کی جاتی رہی؟ اور پھر دھاندلی کے ریکارڈ بھی ٹوٹتے ساری قوم کو نظر آتے رھےحالانکہ یہ سب کو علم ھے کہ فوج امن و امان کے کنٹرول کیلئے تعینات کی جاتی ھے تاکہ کسی پولنگ اسٹیشن پر ھنگامہ آرائی یا کوئی ناخوشگوار واقعہ رونما نہ ھوجائے مگر حیرت یہ ھے کہ آجکل فوج کی تعیناتی کی خبر پرنٹ و الیکٹرک میڈیا میں متواتر اس انداز سے جاری کی جارھی ھے جیسے فوج انتخابات کے سارے مرحلوں پر نگاہ رکھے گی جبکہ حقیقت اس کے برعکس ھے چونکہ دھاندلی کا عمل پولنگ بوتھ میں بیٹھے پریذائیڈنگ آفیسر حضرات سے شروع ھوتاھے جن کی تعداد زیادہ تر سرکاری اسکولز کے ٹیچروں پر مشتمل ھوتی ھے اور انہیں متعلقہ ضلعے کے آفس سے ازخود ووٹس کی بکس، پکی سیاہی و متعلقہ پولنگ اسٹیشن کا دیگر سامان بمعہ ووٹرز لسٹ بوریوں میں پیک شدہ مل جاتا ھے اور انتخابات سے قبل ہی سابق حکمران جماعت پری پلان ھر حلقے میں اپنے مرضی کے ٹیچرز کو پریذائیڈنگ آفیسرز لگوا لیتے ہیں اور کئی پریذائیڈنگ افسران مخصوص پولنگ اسٹیشنز پر جعلی ووٹ کاسٹ کرنے میں معاون بن جاتے ہیں اور یہ جعلی ووٹ کی کاسٹنگ کا پہلا مرحلہ ھے اسکے بعد خواتین پولنگ اسٹیشنز کی باری آتی ھے اور خواتین کا کم شرح سے ووٹ ڈالنے اور خواتین پولنگ اسٹیشنز پر دھاندلی زیادہ مؤثر انداز میں کی جاتی ھے جبکہ جسوقت پولنگ کے دوران کھانے کا وقفہ شروع ھوتاھے تب سابق حکمران جماعت زیادہ تر خواتین پولنگ اسٹیشنز پر پہلے سے تیار بھرے ھوئے ڈبے سول انتظامیہ کی مدد سےتبدیل کردیتے ہیں۔ اس کے بعد دھاندلی کا ایک دوسرا مرحلہ شروع ھوجاتاھے۔ پولنگ کے اختتام کےبعد پولنگ اسٹیشنز سے روانہ ھونیوالا پیکٹ بھی متعین ٹیچر حضرات یعنی پریذائیڈنگ افسران ہی مین آفس میں سارے حلقے کے پیکٹ جمع کرانےجاتے ہیں اور یہ پیکٹ راستے میں کسی مقام پر خفیہ کھول کر اس میں طے شدہ ووٹ پرچیاں مزید شامل کردی جاتی ہیں اور نتائج کا پیپر بھی تبدیل کر دیاجاتا ھے یوں جب تمام پیکٹ کھول کر گنتی کیجاتی ھے تو نگران حکومت کے منظور نظر جماعت جو اقتدار چھوڑ چکی ھوتی ھے اسی کے امیدواران جیت جاتے ہیں۔ بعض اوقات پولنگ اسٹیشن سے لیکر متعلقہ آفس تک درمیان پیکٹ کھولنے کا موقع نہیں ھوتا یا لیٹ ھو جانیکی صورت میں درمیان راست میں ہی رزلٹ کا مکمل پیکٹ تبدیل کردیاجاتاھے۔ 2013ء کےانتخابات میں لگ بھگ یہی فارمولا اپنایا گیاتھا اور آج بھی اسی طرح کا میکانزم طے نظر آتاھے جس کیلئے ضروری ھے کہ فوج پولنگ بوتھ کے اندر بھی پولنگ عمل کی مکمل نگرانی کرے اور فوج کی نگرانی میں پولنگ اسٹیشنز کے تمام رزلٹ پیکٹس مین آفس پہنچیں اور وھاں تمام پیکٹس کو کھولنے اور تمام انتخابی حلقہ جات کے سارے پولنگ اسٹیشنز کے جمع پیکٹس کے نتائج اکٹھا کرنیکی مانیٹرنگ میں بھی فوج شریک ھو تب جاکر کہہ سکتے ہیں کہ شفاف الیکشن کےعمل میں نگرانوں کےساتھ ساتھ فوج نے بھی اپنا فریضہ ادا کیاھے اور چونکہ اسوقت تک ایسے کسی میکانزم کی اطلاع نہیں کیونکہ پنجاب سمیت وفاقی حکومت کا بیشتر ڈھانچہ ابھی تک ن لیگی حکومت کا ہی براجمان ھے اور یہ ڈھانچہ تمام اضلاع کے کمشنرز، ڈی پی اوز، سی سی پی اوز سے لیکر سارے پنجاب کے تھانوں کے ایس ایچ اوز تک براجمان ہیں اور یہ تمام الیکشن پراسیس میں کسی نہ کسی صورت شامل ھوتے ہیں اور چونکہ چاروں صوبوں کے گورنرز بالخصوص پنجاب، سندھ، خیبرپختونخواہ۔ یہ سب خالص سیاسی گورنرز ہیں اور یہ نیوٹرل بالکل نہیں اسطرح سارا الیکشن پراسیس مشکوک نظر آتاھے اس تمام بنے بنائے پرانے میکانزم کی تبدیلی فوری ضروری ھے تاکہ انتخابی نتائج دھاندلی شدہ نظر نہ آسکیں*

*سوال یہ ہے کہ الیکشن کمیشن کہاں ہے؟ وہ ایک آزاد ادارہ ہے یا چند سیاسی شخصیات کا مزارع؟*

*اعلیٰ عدالتی فیصلوں کا موسم سر پر ھےاور نوازشریف، مریم نواز و کیپٹن صفدر کے احتساب عدالت کیسز پر تمام پروسیڈنگ مکمل ھوچکی ھے اور اب فیصلےکاوقت قریب آن پہنچاھے اور اچانک پہلے سے طے شدہ پلاننگ کےتحت کلثوم نواز کی بیماری کو اتنی شدت سے ھوا دی جارہی ھے کہ اب جھوٹ بھی سچ نظر آنےلگاھے اور اس بارے قومی تجزیہ کاران کا کہناھے کہ نوازشریف و دیگر اپنے خلاف فیصلہ الیکشن کی تاریخ سے قبل نہیں آنے دیناچاہتے کیونکہ اس سے انکا جو تھوڑا سا ووٹ بنک ھے اس سے بھی ھاتھ دھو بیٹھیں گے اور ان کی پلاننگ یہی ھے کہ انکی پنجاب میں حکومت بن جائے اور کلثوم نواز کی بیماری کے بہانے اعلیٰ عدلیہ کو فیصلہ کرنے میں دشواری پیدا ھوجائے اور چونکہ ابھی تک گورنرز و ضلعی سطح پر وسیع پیمانوں پر ٹرانسفر برائے ٹرانسپیرنٹ انتخابات تبادلے نہیں کئے جارھے اور نیب نے نگران وزیرداخلہ کو شریفس کا نام ECL میں ڈالنے کا تین بار کہا مگر نگران وزارت داخلہ نے اس پر عمل نہیں کیا جبکہ حمزہ شہبازشریف کی مبینہ بیوی کی دعویدار عائشہ احد ملک جو گزشتہ 7 برس سے انصاف کیلئے دہائیاں دے رہی تھی چیف جسٹس آف پاکستان نے نوٹس لیکر حمزہ شہباز کیخلاف مقدمات درج کرنے کی اعلیٰ پولیس حکام کو ھدایات جاری کیں مگر دونوں فریقین کو عدالت طلب کیا اور بعدازاں پتہ چلا کہ عدالت میں ہی دونوں نے اپنے اپنے کیس واپس لے لئے اھم غورطلب بات یہ کہ اسکی تفصیلات کو اعلیٰ عدلیہ نے مخفی کیوں رکھا؟ یوں سارے معاملات مشکوک ھوگئے کہ اگر حمزہ شہباز نے عائشہ احد کو اپنی بیوی تسلیم کیا تو وہ آرٹیکل 62، 63 کے تحت نااھل قرار پاتاھے۔۔ ایسا کیا ھوا کہ عائشہ احد ملک نے 7 سال انصاف کےحصول کیلئے مسلسل جدوجہد کہ اور احاطہ عدالت میں ایک گھنٹے کے اندر اندر سرنڈر کرگئی جسکی تفصیلات ابھی تک منظر عام پر نہیں آسکیں بلکہ معزز عدالت کا یہ کہنا تعجب سے کم نہیں کہ معاملات عدالت سے باھر لیک نہیں کئے جائیں گے تو کیا معزز جج صاحب پارٹی بن گئے؟ اگر وہ واقعی غیرجانبدار ہیں تو ابھی تک اس کیس کی تفصیلات پبلک کیوں نہیں کی گئیں کیونکہ پبلک میں یہ ثاثر پھیل رھاھے کہ حمزہ شہباز کو اعلیٰ عدالتی شخصیت نے ریلیف دلانے میں اھم کردار اداکیا اور اگر ایسا نہیں تو اسکی تفصیلات کا پبلک ھونا اشد ضرورت ھے اور یہ بھی کہ نوازشریف اور مریم نواز اگر کلثوم نواز کی بیماری کےبہانے لندن سے واپس نہیں آتے تو انکی غیر موجودگی میں اعلیٰ عدلیہ کو اپنا فیصلہ سنا دینا چاہیئے یہی حقیقی انصاف کا تقاضا ھے جس میں دوھرا معیار نظر نہ آئے جبکہ شہباز شریف کیخلاف کرپشن کے حوالے سے پنجاب میں قائم 56 کمپنیوں کے کیسز کے علاوہ ماڈل ٹاؤن سانحہ، ایل ڈی اے آتشزدگی اور اس میں ھونے والی ھلاکتوں سمیت نندی پور، حدیبیہ پیپر ملز و اورینج لائن اور ملتان میٹرو پراجیکٹ کرپشن کیسز سمیت لاتعداد کیسز پر بھی فوری پیشرفت ضروری ھے تاکہ پبلک میں یہ تاثر دور ھوسکے کہ NRO پارٹ ٹو طے پایا جا چکا۔ اور اگر یہ واقعی درست بات ھے اور کچھ نہیں ھونا تو پھر یہ اس ملک اور اسکی عوام کیساتھ بہت بڑی زیادتی ھوگی کیونکہ ساری قوم کی نگاہیں اعلیٰ عدلیہ پر ہیں کہ وہ تمام کیسز کو آئین و قانوں کی اصل روح کیمطابو کسطرح ھینڈل کریں اور کیا فیصلے صادر فرمائیں کیونکہ یہاں شخصیات نہیں بلکہ ادارے اھم ہیں اور شفافیت سے ہی پاکستان کو نیک نامی ساری دنیا میں مل سکتی ھے کہ جسطرح پاک مسلح افواج نے کراچی، بلوچستان سمیت شمالی و جنوبی وزیرستان میں دھشتگردوں کیخلاف وسیع آپریشن کیا جس نتیجے میں 15 ھزار دھشتگرد مارے اور دھشتگردی کی جنگ کے دوران 70 ھزار پاکستانیوں نے دھرتی پر اپناخون نچھاور کیا جس میں جرنیل سے لیکر مورچے میں بیٹھے 5 ھزار فوجی جوانوں کے علاوہ ھزاروں دیگر قانون نافذ کرنیوالے اداروں کی قربانیاں بھی شامل ہیں۔۔ الحمدللہ آجکا پاکستان " پاک افواج اور اسکی عوام کے متحد ھونے اور قربانیاں دینے سے محفوظ ھے" مگر ھزار صد افسوس صرف اس بات کا ھے کہ ھمارے سیاسی کرپٹ سسٹم کو درست کرنے اور کرپشن کرنیوالے عناصرز سے رقوم واپس لینے کیلئے کوئی خاص ورکنگ نظر نہیں آرہی ھے اور اب اگر یہ کرپٹ عناصر دوبارہ انجینئرڈ الیکشن کیصورت میں برسراقتدار آگئے تو پھر پاکستان کا خدا ھی حافظ کیونکہ آئندہ یہی کرپٹ سیاستدان برسراقتدار آکر پاکستان کو بنجر بنادیں گے کہ بھارت سے ملی بھگت اور دریاؤں کے پانی کو روکنے میں ان کرپٹ سیاستدانوں کا بڑا کردار شامل ھے اور یہ ایسا نازک موقع ھے کہ اگر قومی سلامتی کے ضامن اداروں نے اپنا قومی فریضہ ادا نہ کیا توخدا نخواستہ پاک مسلح افواج ادارے کو یہی شریفس رضا کار فورس بناکر پنجاب پولیس کے آئی جی کے ماتحت کر دیں گے۔

Email
Rate it:
Share Comments Post Comments
19 Jun, 2018 Total Views: 214 Print Article Print
NEXT 
About the Author: Mian Khalid Jamil {Official}

Independent social, electronic, print media observer / Pak Army & ISI defender/ Professional Columnist, Analyst.. View More

Read More Articles by Mian Khalid Jamil {Official}: 216 Articles with 79579 views »
Reviews & Comments
واقعی الیکشن کمیشن اور نیب کا کردار مشکوک نظر آتا ھے۔۔ قومی سلامتی کے ادارے کو آنکھیں کھلی رکھنی چاہیئیں
By: Nadia Mirza, Lahore on Jun, 21 2018
Reply Reply
0 Like
میاں خالد صاحب آپکی جرآتوں کو سلام
By: Wafadaae Hain Hum, Lahore on Jun, 21 2018
Reply Reply
1 Like
Sharif's big thief
By: Sara Chaudhary, Lahore on Jun, 21 2018
Reply Reply
0 Like
Pak armed forces zindabad.
By: Mian Shahid, Lahore on Jun, 21 2018
Reply Reply
0 Like
Post your Comments Language:    
Type your Comments / Review in the space below.
MORE ON ARTICLES
MORE ON HAMARIWEB