زرداری ، عمران کی سیاست اور طاہرالقادری کا کندھا

(Arshad Sulahri, )

طاہر القادری کی سیاست ایک خاص فکر کے گرد گھومتی ہے۔ موصوف کے پاس عقیدت مندوں کی قابل ذکر تعداد موجود ہے ۔جو بیک وقت محفل میلاد،شب بیداری اور سیاسی یا احتجاجی پروگراموں میں کام آتے ہیں۔ایسی طرح ان کی اپنی ملٹی پل شخصیت ہے۔ دوہری شہریت کے حامل ہیں۔جو بیک وقت ،قائد انقلاب،عوامی سیاسی لیڈر،شیخ الاسلام،مذہبی رہنما ،پیش امام اور خطیب سمیت کئی پہلو رکھتے ہیں۔یعنی ان سے کوئی بھی کام لیا جا سکتا ہے اور لینے والے مستفید ہوتے بھی ہیں۔آجکل سیاسی میدان میں اپنی تمام تر توانائیوں کے ساتھ جلوہ افروز ہیں۔اپنے دعویٰ کے مطابق پاکستان کی دو بڑی سیاسی قوتوں کو ایک ساتھ ایک ہی ٹرک پر کھڑا کرنے فقیدالمثال خدمت انجام دینے جا رہے ہیں۔ بلاشبہ یہ کام طاہرالقادری ہی سرانجام دے سکتے ہیں۔یہ خدمت کوئی کم بھی نہیں ہے کہ ایک دوسرے کیخلاف بر سرپیکار سیاسی شخصیات کو ساتھ بیٹھا دیا جائے ۔ بابائے جمہوریت نوابزاہ نصراﷲ خان اگرچہ یہ کام بخوبی انجام دیتے رہے ہیں لیکن کسی بھی طرح سے نوابزادہ نصراﷲ خان کا موازنہ طاہرالقادری سے ہرگز نہیں کیا جا سکتا ہے۔طاہرالقادری کا نعرہ تو سیاست نہیں ، ریاست بچاو ہے جبکہ مرحوم نوابزادہ نصراﷲ خان جمہوریت کے داعی تھے۔طاہرالقادری کے ساتھ کھڑے ہونے والوں کو عام وخاص کسی اور نظر سے دیکھتے ہیں ۔ کھڑے ہونے والے کئی روز وضاحتیں دیتے پائے جاتے ہیں کہ ہم کیوں اور کس مقصد کے تحت طاہر القادری کا ساتھ دے رہے ہیں ۔طرفہ تماشا یہ کہ ان کی تمام تر وضاحتیں تسلیم کرنے کے باوجود شک کا عنصر باقی رہتا ہے۔اس امر سے پاکستان کے عام و خاص سب آگاہ ہیں کہ طاہرالقادری کا احتجاج سانحہ ماڈل ٹاون کیخلاف ہے اور حصول انصاف کیلئے عمران خان اور آصف زرداری احتجاج میں طاہرالقادری کے ساتھ ایک ہی ٹرک پر موجود ہوں گے اور بھر پور حمایت کریں گے۔پھر بھی لوگ یہ کہنے سے باز نہیں آتے ہیں کہ سب کچھ آمدہ الیکشن کیلئے کیا جا رہا ہے۔ وہ پیپلزپارٹی جس کی تاریخ جمہوریت اور نظریات کیلئے قربانیوں سے بھری پڑی ہے ۔ پیپلزپارٹی نے بھی یوٹرن لیتے ہوئے ایک چھتری تلے پناہ لے لی ہے۔جس کا مطلب ہے کہ اب جمہوریت کی نئی تشریح کی جائے گی۔جو کبھی جنرل پرویز مشرف شوکت عزیز کو وزیراعظم مقرر کرکے کیا کرتے تھے۔پیپلزپارٹی اب جمہوریت کا سبق طاہرالقادری سے پڑھے گی۔بدلتا ہے رنگ آسماں کیسے کیسے ۔ پیپلزپارٹی پر بھی یہ وقت آنا تھا کہ اپنی سیاسی بقا کیلئے سہاروں کی تلاش میں اپنی حد ہی کراس کر جائے گی۔نظریات کی جگہ جوڑ توڑ کی سیاست مقدم ٹھہرے گی۔جوڑ توڑ بھی ایسا کہ جس میں سازش کی بوآتی ہو۔کچھ طے ہونے کے اشارے ملتے ہوں۔سانحہ ماڈل ٹاون کے زخم جب ہرے تھے اس وقت تو آصف علی زرداری طاہرالقادری کے دھرنے کیخلاف رائے ونڈ پہنچ گئے اور جمہوریت بچانے کا نعرہ بلند کر رہے تھے ۔اب پیپلزپارٹی کیا کیسی کھیل کا حصہ بن گئی ہے۔کیسی کے حکم پر سر تسلیم خم کرلیا گیا ہے۔ کیوں کہ طاہرالقادری جمہوریت پسند نہیں ہے۔ طاہرالقادری کو انتخابات سے بھی کوئی دلچسپی نہیں ہے۔پھر وہ کون سی قوت ہے جس نے پیپلزپارٹی کو اس ددراہے پرلاکھڑا کیا ہے جوایک جانب جمہوریت کا راگ اور دوسری جانب ایک جمہوری منتخب حکومت گرانے کیلئے ایک غیرجمہوری اور غیرپارلیمانی عناصر کا ساتھ دینے پرکمربستہ ہے۔دال میں کچھ کالا ہے یا ساری دال ہی کالی ہے۔جو کچھ بھی ہے۔ سیاست ، جمہوریت ، عوام اور ملک کیلئے ایسی سیاسی موقع پرستی سے ہر دور میں نقصان ہوا ہے ۔ سیاسی جماعتیں کمزور اور سیاسی فورسز میں کرپشن ،بدعنوانی اور مفاد پرستی کے عنصر غالب آتے دیکھے گئے ہیں ۔جس سے حقیقی سیاسی کارکن بد دل اور مایوسی کا شکار ہوتے ہیں۔ جس کے نتائج پاکستان کے عوام پہلے ہی بھگت رہے ہیں۔سانحہ ماڈل ٹاون کے متاثرین کو انصاف ضرور ملنا چاہیے ۔ پاکستان کا ہر شہری اس امر سے اتفاق کرتا ہے کہ شہدائے ماڈل ٹاون کے ورثا کو انصاف دیا جائے۔ لیکن شہدائے کی لاشوں پر سیاست ہرگز ہرگز مناسب نہیں ہے۔عمران خان اور آصف زرداری کی طاہرالقادری کی احتجاجی تحریک میں شرکت کا طریقہ سیاسی مقاصد کی کھلی چغلی کھا رہا ہے۔ پیپلزپارٹی اور تحریک انصاف گو کہ بار بار یہ وضاحت دے رہی ہیں کہ ان کی شرکت سانحہ ماڈل ٹاون کے ورثا کو انصاف کیلئے ہے بعد از شرکت مزید وضاحتیں درکار ہوں گی۔
 

Comments Print Article Print
 PREVIOUS
NEXT 
About the Author: Arshad Sulahri

Read More Articles by Arshad Sulahri: 135 Articles with 44530 views »
I am Human Rights Activist ,writer,Journalist , columnist ,unionist ,Songwriter .Author .. View More
17 Jan, 2018 Views: 318

Comments

آپ کی رائے