محبت کیا ہے۔۔۔۔۔؟؟؟؟؟

(Naila Rani, Lahore)

محبت امن کے موتی۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔محبت آنسوٶں کی لڑیاں۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔محبت بہت ہی ظالم ہوتی ہے۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔دل میں اتر تو جاتی ہے۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔مگر پھر ہو نٹو ں پہ قفل کیوں لگاتی ہے۔۔۔۔۔۔۔؟؟؟۔۔۔۔مجھے تو یوں لگتا ہے۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔محبت افلاک سے آتی ہے۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔اور زمین کے باشندوں کو اخلاق سکھاتی ہے ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ہاں اتفاق کا سبق بھی پڑھاتی ہے۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔محبت بہت درد دیتی ہے۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔جسمیں آہیں نکلتی ہیں۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔اور پھر یہ آہیں اک آہ اثر میں سمٹ کر۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔احساس دلا جاتی ہے۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔محبت خمار کی صورت۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔محبت کسی بے نام کی مانند۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔مگر پھر اپنا اک عظیم مقام رکھتی ہے۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔محبت بے غرض ہو تی ہے ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔اور میری تحریر کی طرح بہت بے ربط بھی ہوتی ہے۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔محبت چاند کی مانند۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔محبت آفتاب کی صورت۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔محبت اک خیال ہو جیسے میرے دل کا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔محبت قلب سمندر کا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔محبت دل ہے دھرتی کا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔محبت نام غلامی کا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔محبت کا کام عیاشی ہے۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔محبت دلدار سے ہوتی ہے۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔بس یہ تو اصل میں یار سے ہوتی ہے۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔محبت بے حد ہوتی ہے۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔محبت حد میں بھی ہوتی ہے۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔جسے عقیدت کہتے ہیں۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔عقیدت پھر جب احترام میں ڈھلتی ہے۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔تو پھر شاٸد محبت سے بھی جیت جاتی ہے۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔محبت کا آغاز ازل اور محبت کا انجام ہے ابد۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔محبت مصور کی صورت۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ محبت اک بیابان صحرا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔جس میں ریت کے ٹیلے ہیں۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔سارا ساون برس کر بھی۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔اس کی پیاس نہیں بجھتی۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔محبت ایسا اک زہر کا ساغر ہے۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔جسے پی کر بھی محب کا کچھ نہیں بگڑتا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔محبت آنسو بھی ہوتی ہے۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔جو قطروں میں بہتی ہے۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔یہ قطرے بہت نایاب ہوتے ہیں۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔انمول ہوتے ہیں ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ہاں انمول ہوتے ہیں ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔بس محبت کا اک یہ بھی پیام ہے کہ

میں اک آنسو ہی سہی ہوں بہت انمو ل مگر
یوں نہ پلکوں سے گرا کر مجھے مٹی میں ملا


ختم شد
 

Rate it:
Share Comments Post Comments
Total Views: 1618 Print Article Print
About the Author: naila rani riasat ali

Read More Articles by naila rani riasat ali: 88 Articles with 85953 views »
Currently, no details found about the author. If you are the author of this Article, Please update or create your Profile here >>

Reviews & Comments

Language: