حفصہ اور اس کا بے نمازی شوہر

(syed imaad ul deen, samandri)
اللہ رب العزت ایسی بیوی ہرکسی کودے..سونے سے پہلے اس نے اپنے غنودگی میں لیٹے شوہر کو مخاطب کیا۔۔سنیں فجر میں اٹھاؤں آپ کو؟
اس نے نیند میں ڈوبی آنکھیں کھول لئے اور تھوڑے کڑوے لہجے میں بولا۔۔تم کو کتنی دفعہ کہا ہے میں نیند سے نہیں اٹھ پاتا فجر میں، سارا دن کا تھکا ہارا ہوتا ہوں.
وہ اسے دیکھتے ہوئے بولی. پر نماز تو فرض ہے ناں۔ فجر ہی کیا آپ کوئی بھی نمازادا نہیں کرتے۔ بس جمعہ یا عید۔
اس کی بات سن کر وہ جھنجلا کر بستر پر بیٹھ گیا اور کہا.
دیکھو حفصہ تم نماز پڑھتی ہو. میں کبھی نہیں ٹوکتا مگر یہ بار بار مجھے مت لیکچر دیا کرو۔ سب نے اپنا اپنا حساب دینا ہے۔ اب سونے دو مجھے اور لائٹ بند کر دو۔
وہ پھر بستر پر لیٹ گیا۔
اچھا سنیں..... اس کے پھر پکارنے پر اس کا ضبط جواب دے گیا۔
حفصہ! ایک بار کہہ دیا تو کیوں وہ بحث کر رہی ہو بار بار...
وہ کچھ دیر کے توقف کے بعد بولی۔۔نماز کا نہیں کہہ رہی، دوسری بات ہے.....
کیا؟؟؟!! اسے سمجھ نہیں آرہی تھی وہ اب کیا پوچھنا چاہ رہی ہے۔۔مجھے کل پیسوں کی ضرورت ہے۔جو آپ نے دئیے سب ختم ہو گئے.... سب ختم ہوگئے؟؟ اس کے لہجے میں بلا کی حیرت تھی..... خدا کی بندی ایسے کہاں خرچ کئیے پیسے؟ابھی آدھا مہینہ باقی ہے تنخواہ ملنے کو۔ اور تم نے مہینے بھر کا بجٹ ابھی سے ختم کر دیا؟
میں آپ کو حساب نہیں دینا چاہتی، بس ہو گئے خرچ. کل بندوبست کر دیجئے گا پیسوں کا.
اس کی بات پر اس کے تن بدن میں آگ لگ گئی..... کیوں حساب نہیں دینا چاہتیں۔۔پیسہ کیا درختوں پر لگا ہے جو توڑ لےبندہ۔۔ایسا تو آج تک تم نے نہیں کیا پھر اس بار۔۔کچھ بھی ہو مجھے ساراحساب چاہئیے.
ابھی اس کا چہرہ بتا رہا تھا وہ سخت غصے میں ہے.
اس کی بات پر وہ مسکرا دی۔ وہ حیرت سے اسے دیکھ رہا تھا...
تم ہنس رہی ہو۔۔مذاق ہے کیا یہ؟
وہ بولی۔۔میں اس لئیے ہنس رہی ہوں کہ اللّٰہ نے آپ کو اس گھر کا سربراہ بنا یا اور جب آپ کی سربراہی میں ،میں حساب نہ رکھ پائی تو آپ کو غصہ آ گیا۔۔۔اب سوچیں کل کو آپ سے بھی وہ رب محشر میں حساب مانگے گا تو کیسے دیں گے۔۔آپ کا میرا حساب تو چند ہزار روپوں کا ہے... پر بندے اور رب کا تو پوری زندگی کی ایک ایک نعمت کاہے جس کی کوئی قیمت نہیں۔۔۔کوئی بدل نہیں....
وہ جیسے سن ہوا اسے سن رہا تھا۔۔۔وہ پھر بولی۔۔میں نے تو آپ کو مزے سے کہہ دیا میرے پاس حساب نہیں. پر کیا آپ اس بڑے دن اس رب کے سامنے یہ کہہ سکیں گے؟جس دن بڑے بڑے بادشاہ اس کے سامنےکانپ رہے ہوں گے؟؟
وہ چپ ہو چکا تھا نظریں جھکائے تصورمیں جیسےاس بڑے دن کے تصور سے کانپ رہا تھا... آپ فکر نہ کریں، ہر مہینے کی طرح اس بار بھی پورا ہو جائے گا کہیں خرچ نہیں ہوئے پیسے یہ تو بس اس لئیے کہا کہ..... ۔اس نےبات ادھوری چھوڑ دی۔۔۔سو جائیں میں لائٹ بند کر دیتی ہوں۔وہ اٹھی تو وہ ایک دم بول پڑا۔
حفصہ...!!! جی؟.... تم اٹھو تو فجر کے لئےمجھے جگا دینا۔ یہ کہہ کر اس نے کروٹ بدلی اور آنکھیں بندکر لیں۔ اس کی بیوی نے اسے مسکرا کر دیکھا اور بتی گل کر دی۔ فجر میں ایک نئی روشنی پُھوٹنے والی تھی.
Comments Print Article Print
 PREVIOUS
NEXT 
About the Author: syed imaad ul deen

Read More Articles by syed imaad ul deen: 144 Articles with 156889 views »
Currently, no details found about the author. If you are the author of this Article, Please update or create your Profile here >>
24 Jul, 2016 Views: 551

Comments

آپ کی رائے

مزہبی کالم نگاری میں لکھنے اور تبصرہ کرنے والے احباب سے گزارش ہے کہ دوسرے مسالک کا احترام کرتے ہوئے تنقیدی الفاظ اور تبصروں سے گریز فرمائیں - شکریہ