پاکستان/امت مسلمۃ کی کامیابی کا دو طرفہ حل

(manhaj-as-salaf, Peshawar)
میں اس موضوع پر پہلے ہی اپنی راۓ کو لکھ چکا ہوں اور میری راۓ میں پاکستان یا کسی بھی اسلامی مملکت کی کامیابی کا حل ان ہی نقاط پر مبنی ہے. اسلیے میں اسکو ریسینڈ کر رہا ہوں.

چاہے مالدار ہو یا مساکین ہوں ان سب کو چاہے کہ دو طرفہ حل کی طرف رجوع کریں. یعنی ضروری طور پر توحید الوہیت کی دعوۃ، ایمان کی دعوۃ، شرک سے دوری اختیار کرنا، نیک اعمال کی مستقل دعوۃ، صلوۃ و زکوۃ پر استقامت، سود کا خاتمہ، دین اور السنۃ کی بچوں اور بڑوں میں یکساں دعوۃ، اسکے ساتھ ساتھ پاکستان بھر میں ہر قسم کی دنیاوی تعلیم کو عام کرنا ضروری قرار دینا، یہ ہے کامیابی کا حل. میں یہ بھی کہنا چاہوں گا کہ یہ تمام پواننٹس سو فی سد اپلیکیبل ہیں، شرط صرف یہ ہے کہ تصفیہ اور تربیت کرتے ہوئے اخلاص اور صبر سے انکو معاشرے پر لاگو کیا جائے اور اسکا اینڈ رزلٹ بہترین ان شاء اللہ ضرور نکلے گا-

انشاء اللہ پاکستان یا کسی بھی اسلامی ملک کی اصل کامیابی حاصل کرنے کے عوامل کو ہم دو طرفہ حل یا ٹو پرون فلسفہ کو نقاط کی صورت میں درج کر دیتے ہیں تاکہ سمجھنا، یاد رکھنا، عمل کرنا اور اسکو پھیلانا آسان ہو جاۓ.-

1. سب سے پہلے اللہ کی توحید الوھیت یعنی توحید عبادت اور صحیح عقیدہ کو پاکستان کے شہر، شہر اور گاؤں گاؤں میں مساجد، مدارس، سکولوں، کالجز اور یونیورسٹز غرض ہر جگہ سے پھیلانا.

2. اسی طرح ایمان وصحیح عقیدہ پر استقامت قائم کرنا.

3. نیک اعمال مثلا نماز پڑھنا، اچھی باتوں کی ترویج، جھوٹ نہ بولنا، والدین سے حسن سلوک، اھل وعیال سے نیکی، سود سے بچنا، وغیرھ کی مستقل دعوت دینا.

4. ہر قسم کے شرک سے براۃ اور دوری اختیار کرنا اور اسکی دعوۃ دینا.

‏‏‏‏‏5. نماز کو قائم کرنا اور زکوۃ کو امراء سے ذبردستی اکھٹا کرنا اور مساکین میں تقسیم کرنا.

‏6. سود کی فی الفور ایک حکم سے معطلی.

‏7. ٹیکس کا نظام صحیح نہیں، بلکہ جھوٹ اور دھوکہ کو فروغ دینے کا باعث ہے، اس لیے اسکو باطل قرار دینا. یقین مانیں کہ اگر صرف اخلاص سے زکوۃ اکٹھی جاۓ تو وہ یقینا کافی و شافی ہوگی، آزمائش شرط ہے.

‏8. پورے پاکستان بھر میں دنیاوی تعلیم کو ضروری قرار دینا اور اسکا جال بچھا دینا.

‏9. ہر طالب علم کے لیے بنیادی دینی علم مثلا عقیدہ، منہج، عبادات کا فہم، توحید و شرک وبدعت کی پہچان اور بنیادی دنیاوی علم مثلا سائینس، ریاضی، جیوگرافی وغیرہ کو ایک پڑھے لکھے اور خاص انداز میں ضروری قرار دینا، اور اس کو پورے پاکستان میں قریہ قریہ اور گاؤں تک میں پھیلانا بلکہ حقیقتا امراجنسی نافض کر کے پاکستان بھر میں اسکا جال بچھا دینا.

‏10. ہر دینی مدرسہ کے طالب علم اور سکول و کالج کے سٹوڈنٹ کے لیے عربی فہم اور بول چال کا اجراء و آغاز کرنا اور انگریزی اور عربی کو سیکھنا ضروری قرار دینا.

‏11. ہر طالب علم کو اسکے انٹرسٹ اور شوق و ذوق کے مطابق آگے بڑھنے کے وسائل فراہم کرنا تاکہ وہ معاشرے پر کسی قسم کا بوجھ نہ بنے. بلکہ معاشرے کے لیے سود مند ہو.

‏12. اسی طرح معاشرے میں لوگوں کے لیے بغیر سود کے قرضوں کو آسان کیا جاۓ تاکہ اس سے لوگوں میں خود انحصاری آسان ہو جاۓ.

13. ایک عنصر یہ ہے کہ لوگوں میں دنیاوی تعلیم کے ساتھ کسی ہنر کو سیکھنے کے لیے ابھارہ جاۓ تاکہ وہ اس سے فائدہ مند ہوں سکیں اور ذہین طلباء میں باقاعدہ انٹرنیشنل لیول کے کورسز اور وظیفوں کا اجراء بھی کیا جاۓ تاکہ وہ دل جمعی سے ہنر سیکھیں. جب ان نہج پر تربیت شروع ہوگی تو صرف دس سال میں پاکستان یا کسی بھی اسلامی ملک جہاں ان خطوط پر تبدیلی کے لیے عمل کیا جاۓ وہاں دینی و دنیاوی انقلاب آ جاۓ گا.

ان اصولوں کی پیروی سے ایک تقویٰ دار اور دینی فہم رکھنے والی اور دنیاوی بہترین تعلیم و ہنر سے آراستہ نسل پروان چڑھے گی.

یاد رہے کہ اسکے علاوہ کوئی اور طریقہ اختیار کیا گیا تو کسی ایک جز میں شائد کامیابی ہو مگر کبھی بھی مکمل کامیابی نہیں ملے گی، پاکستان کی تاریخ اس بات پر شاہد ہے، بہرحال ھم پھر کہیں گے آزمائیش شرط ہے.
Comments Print Article Print
 PREVIOUS
NEXT 
About the Author: manhaj-as-salaf

Read More Articles by manhaj-as-salaf: 287 Articles with 222732 views »
Currently, no details found about the author. If you are the author of this Article, Please update or create your Profile here >>
03 Aug, 2016 Views: 360

Comments

آپ کی رائے
brother may nay taqreeban sub kay hi points parhay hain magar aap or uzma sahiba or chund aik nay hi Islam kay daira ma rehtay huay tajaweez paish ki hain ..waisay her kissi nay apni soch kay mutabiq behtareen likha hay jis ki tareef hum her aik kay mazmoon per comment bhi kerdiya .. or aap as usual behtareen tajaweez paish ki hain ..... baishuk Islami qawaneen per amal kerkay hi hum Pakistan kay aaj or anay walay kal ko behtareen bana saktay hain magar masla firqa wariyath ka hay agar aik jamath points accept keray gi to doosri deny .... or aap bhi or may bhi jantay hain qom ko aik lari may pirona mushkil nahin to aaj kal kay halath ko daikha jai to namukin lugta hay .... lakin wohi baath agar Malik Kul cha hay to rastay ki mushkilath pal bhar may mit bhi sakti hain .... Allah hum sub ko seedhi rah per chalai or Pakistan or Islam kay liyai kuch ker guzarnay ka hosla ata karay ... ameen
By: farah ejaz, Aaronsburg on Aug, 13 2016
Reply Reply
0 Like
100% agreed with you brother ...Jazak Allah HU Khairan Kaseera
By: farah ejaz, Aaronsburg on Aug, 14 2016
0 Like
sister,

jazakAllahu khairan aap k input ka.

asal mai aik musliman ki asal tu hamaara deen hai, baqi baatein tu sirf dunya guzaarne ki mukhtalif tareeqay aur shuqhal hain, maslan agar aik shakhs doctor hai, ya koi engineer hai ya koi skill jaanta hai, ya even taxi driver hai waghera ye tu sirf us rizq ka tareeqah hai is ka ye matlab tu hargiz nahi hai k ham apne deen ko pas-e-posht daal dain, isi liye ham aaj nakaam hain q k ham ne apne deen ko pas-e-posht daal dia hai. tu jab deen ko na seekha jae ga tu koi bhi tom aur harry akar hamei deen k naam par gumrah kar dain ge.

jahan tak mukhtalif firqa parasti hai tu is ka islam se koi ta'luq nahi hai, tahqeeq k darwaazay har aik k liye khulay hain, is liye tahqeeq se kisi ka aik nuqta par kisi aalim ka aik ray pesh karna ghalat nahi hai aur isi baat ko hamei awaam ko samjhana chayhe. laikin agar woh tahqeeq mai ghalat ho tu us ko chohr do.

albatta masala tab hota hai jab takfirriyat, aur ikhwaniyat aur khurooj jaise awaamil ulamah mai ajein aur phir us ki base par woh apne sun-ne waalon mai ghalat afkaar ko parwaan charhain. laikin is ka hargiz ye matlab nahi hai k deen k mukhtalif shu'bahaat ko na discuss kiya jae aur na un par amal kiya jae.

isi liye taraqqi aur urooj ka raasta wohi rahe ga k imaarat deen k gird bano aur dunya ko is mai adjust karo. jab k log imaarat dunya ki banaate hain aur deen ko us mai wal ayazu billah apne nafs k mutabiq ajust karne ki koshish karte hain.

bahar haal, Allaah ham mai apne deen se muhabbat daalay aur haq ko haq aur baatil ko baatil kahne ka shu'oor paida farmae, ameen.
By: manhaj-as-salaf, Peshawar on Aug, 14 2016
0 Like
barakAllahu feek, Allah hamei aqal de k ham apne aap ko aur gird-o-nawah ko khud badal lain aur jab ham aisa kar lain ge tu Allaah jalla wa 'ala hamaray ooper saalih hukkam le ae ga jo ye points zuroor laago karein ge, ameen.

is ziman mai Allaah ne qur'an mai farmaaya:
إِنَّ اللَّـهَ لَا يُغَيِّرُ مَا بِقَوْمٍ حَتَّىٰ يُغَيِّرُوا مَا بِأَنفُسِهِمْ

mafhum: Allaah kisi qoam ki haalat nahi badalta jab tak k woh apne nafs (apni haalat) ko na badal lein.
(surah r'ad 13 ayah 11)

isi tarha is se related aik iqtibaas imaam ibn al-qayyim rahimahullah (al-mutawaffa 752 hijree) ne bhi farmaya jo aap yahan par zuroor parh lein:
http://www.hamariweb.com/articles/article.aspx?id=50752

Allaah hamei samaj, faham aur amal ki tawfeeq de aur is ko phailaane ka jazba bhi, ameen.
By: manhaj-as-salaf, Peshawar on Aug, 13 2016
Reply Reply
0 Like
bohoth bohoth behtareen janab ..... Jazak Allah HU Khairan Kaseera
By: farah ejaz, Aaronsburg on Aug, 11 2016
Reply Reply
0 Like