ڈالر گرل اور بوائے

(Syed Muhammad Ishtiaq, Karachi)
پاکستانی قوم یوں تو آئے دن، دل دہلادینے والی ہولناک خبروں کے ساتھ بدعنوانیوں کے قصّے بھی سنتی رہتی ہے لیکن چند گھنٹوں یا دنوں بعد سب بھلا بیٹھتی ہے،اب اس کو قساوت قلبی کہیں یا کچھ اور،بہرحال ز ندہ قوموں کی یہ نشانیاں نہیں ہوتی ہیں۔چند ماہ قبل کرنسی اسمگلنگ کا ایک کیس پکڑا گیا، جس نے کافی شہرت پائی اور جو خاتون یہ کام سر انجام دے رہیں تھیں،ان کو،ان کی سابقہ وجہ شہرت کی وجہ سے عوام میں کافی پذیرائی حاصل ہوئی ، ان کو ڈالر گرل کے خطاب سے بھی نوازا گیا، وکلاء کی قانونی موشگافیوں کے بعد ان کی رہائی تو عمل میں آگئی لیکن تفتیشی افسر کو جان سے ہاتھ دھونے پڑے ،رہائی کے بعد ان کو ایک سرکاری یونیورسٹی میں بھی مدعو کیا گیا ،گو کہ جس طالبعلم نے ان کو یہ عزت بخشی تھی ،یونیورسٹی سے اخراج کا سامنا کرنا پڑگیا،اب بھی وقتا فوقتا،پیشیوں کے وقت قابل ذکر تذکرہ اخباروں میں اور TVپر ڈالر گرل کو مل جاتا ہے۔ہم قوم سے یہی گزارش کرسکتے ہیں کہ ڈالر گرل کے ساتھ ذرا ،ہر زمانے کے ڈالر بوائے کو بھی یاد رکھیں ،جن کی وجہ سے قیام پاکستان سے لے کرا ب تک، ہر دور حکومت میں ایک ڈالر بوائے موجود رہا،جو حکمرانوں کی کرپشن کو جاری و ساری رکھنے کے لیے ،غیر ملکی اداروں سے ڈالروں میں قرضے لیتا رہا،جس کی وجہ سے قوم کا ہر بچہ پیدائش سے لے کر موت تک مقروض رہتا ہے ۔گزشتہ 8 سالہ جمہوری دور میں جتنا قرضہ لیا گیا ہے وہ1947 سے لے کر2007 کے مجموعی قرضے سے زیادہ ہے، اسی طرح سابقہ حکومت کے 5 سالہ دورمیں جتنا قرضہ لیاگیا،اس سے زیادہ قرضہ موجودہ حکومت کے 3 سالہ دور میں لے لیا گیا ہے،یعنی قرضوں کے نئے ریکارڈ قائم ہورہے ہیں لیکن عوام کی حالت میں کوئی بہتری رونما نہیں ہورہی ہے ،گیس، بجلی اور اشیائے صرف کی قیمتیں گزشتہ 8 سالہ عوامی دور میں ،عوام کے لیے دگنی سے بھی زیادہ کردی گئیں ہیں،تعلیم اورصحت جیسی بنیادی سہولیات سے پاکستانیوں کی اکثریت محروم ہے،مریضوں کے لیے سرکاری اسپتال میں بستر اور دوائیاں دستیاب نہیں ہیں،عوام کی اکثریت نجی اسپتال میں علاج کرانے سے قاصر ہے لیکن حکمرانوں اور ارکان اسمبلی کو عوام کے ٹیکس کے پیسے سے بیرون ملک علاج کرانے کی سہولت حاصل ہے،پینے کا صاف پانی جو ہر شہری کا بنیادی حق ہے ،اکثریت اس سے محروم ہے، حکمراں ا ورنج لائن ٹرین کی شکل میں اہلیان لاہور کو 214 ارب کا تحفہ دینے پر مصر ہیں اور دوسری طرف پورے پنجاب کے لیے صحت کی مد میں موجودہ صوبائی بجٹ میں200 ارب روپے مختص کیے گئے ہیں، اس سے حکمرانوں کی ترجیحات کاا ندازہ ہوجاتا ہے کہ وہ عوام سے کتنی مخلص ہے۔ انتخابات کے وقت کیا گیا، لوڈشیڈنگ کے خاتمے کا وعدہ ہو ،کڑے احتساب کا وعدہ ہو ،مہنگائی ختم کرنے کا وعدہ ہویا ہر منصوبے میں شفافیت کا وعدہ،کوئی بھی وعدہ اب تک پورا نہیں کیا گیا ہے،عوام کے ٹیکس کے پیسے سے عیاشی کرنے کے باوجود بھی حکمرانوں کا دل نہیں بھرتا ،ملکی ترقی یا عوامی فلاح و بہبود کے منصوبوں میں اپنا مالی حصہ رکھا جاتا ہے، گزشتہ 8 سالہ دور میں بھی ماضی کی طرح حکمرانوں کی بدعنوانیوں کے بے شمار قصے منظر عام پر آئے ،جس میں نندی پور اور پانامہ لیکس سر فہرست ہیں ،ان میں سے کچھ عدالتوں کی بھی زینت بنے لیکن ملزمان کمال ہوشیاری سے عدالتوں سے قانونی پیچیدگیوں کا سہارا لے کر عوام کے سینے پر مونگ دلنے کو پہلے کی تیار ہیں ،زراعت کا شعبہ، جس پر معیشیت کا دارومدار ہے، حکومت کی غلط منصوبہ بندی کی وجہ سے اس سال پیداوار اور کھپت کے لحاظ سے،گزشتہ 15 سالوں میں سب سے نچلی سطح پر رہا ،تجارت میں توازن کے اعداد و شمار بھی کوئی حوصلہ بخش نہیں ہیں۔قومی ادارے بھی زبوں حالی کا شکار ہیں،کچھ تو عملا بند پڑے ہیں ،جیسے ملک سب سے بڑا صنعتی ادرہ اسٹیل مل ! مردم شماری 1998 بعد سے اب تک نہیں ہوئی ہے ،گزشتہ 2 سال سے صوبوں کو این ایف سیNFC ایوارڈ سے رقم کا اجراء نہیں ہوسکا ہے ۔کراچی سے حیدرآبا د سڑک کی تعمیر جاری ہے ،جس میں تاخیر کی وجہ سے حادثات کا رونما ہونا ،آئے دن کا معمول بن گیاہے ،کورنگی انڈسٹریل ایریا کی سڑک ہو یا قائدآباد سے اسٹیل مل تک نیشنل ہائی کی تعمیر کا معاملہ ہو ،حکام خواب غفلت میں ہیں،کراچی جو منی پاکستان بھی کہلاتا ہے ،پاکستان کی معیشت میں کلیدی کردار ہے،کورنگی انڈسٹریل ایریا اور قائدآباد سے اسٹیل مل تک بے شمار صنعتیں اور کارخانے قائم ہیں،لاکھوں لوگوں کا روزگار ان صنعتوں اور کارخانوں سے وابستہ ہے ، جوسڑکوں کی اس ناگفتہ بہ حالت کی وجہ سے سخت اذیت میں مبتلا ہیں۔ان تمام حالات میں، اب یہ سوچنا عوام کا کام ہے کہ حکمراں ہم کو دھوکہ دے رہے ہیں یا ہم بخوشی خود یہ دھوکہ کھارہے ہیں،آخر یہ ا ربوں ڈالر،جوڈالر بوائز ہمارے نام پر لیتے ہیں ،کہاں جارہے ہیں کیونکہ عوام کی اکثریت تو اب تک پسماندگی کا شکار ہے۔جس دن عوام میں یہ شعور بیدار ہوگیاکہ ہم ذات ،برادری،نسل اور زبان سے بالا تر ہوکر،ووٹ کے ذریعے سیاستدانوں کا احتساب کرسکتے ہیں ،وہ دن ڈالر بوائز کا پاکستان میں آخری دن ہوگا۔
Comments Print Article Print
 PREVIOUS
NEXT 
About the Author: Syed Muhammad Ishtiaq

Read More Articles by Syed Muhammad Ishtiaq: 44 Articles with 19844 views »
Currently, no details found about the author. If you are the author of this Article, Please update or create your Profile here >>
06 Oct, 2016 Views: 356

Comments

آپ کی رائے