ماں ٹھیک کہتی تھی۔۔۔۔!!!پارٹ پنجم

(Naila Rani, Karachi)

مگر واصف پر ماں کا با توں کا کو ئی ا ثر نہ ہوا تھا ۔۔۔۔۔۔وہ بچپن سے ضدی سا تھا ۔۔۔۔۔۔اور اب تو اسکی محبت کا معا ملہ تھا ۔۔۔۔محبت بھی ایسی جس میں وہ ا ند ھا ہو گیا تھا ۔۔۔۔۔۔۔بجا ئے اسکے کہ وہ اپنی ماں کی با تو ں پر غور کر تا ۔۔۔۔۔۔۔اسنے جذبا ت میں آکر اپنی ما ں کو دھمکیاں د ینا شرو ع کر د یں ۔۔۔۔۔اور کہا ۔۔۔۔ماں اگر آپ میر ی شاری سو یرا سے نہیں کر یں گیں ۔۔۔۔۔۔۔۔تو میں زہر کھا لوں گا یا یہا ں سے چلا جا وں گا اور کبھی وا پس نہیں آو گا ۔۔۔۔۔۔۔ماں نے بھی جواب دیا بیٹا تم کچھ بھی کرو اگر تم سویرا سے شادی کرو گے ۔۔۔۔۔۔۔تو میں تمہیں کبھی معاف نہیں کروں گی ۔۔۔۔۔۔اور نہ تمہارا ہم سے کو ئی وا سطہ رہے گا ۔۔۔۔۔تم یا تو میرا انتخاب کر لو یا پھر سو یرا کا ۔۔۔۔۔واصف نے کہا ماں میں سویرا کو کسی قیمت پر نہیں چھوڑ سکتا ۔۔۔۔بے شک مجھے آپ کی صورت میں اسکی قیمت چکانی پڑے۔۔۔۔۔اور پھر ما ں خاموش ہو گئی ۔۔۔۔۔۔آخر وہ دن آ گیا ۔۔۔۔وا صف کے بھا ئی اور بھا بھی اسکی شا دی میں پیش پیش ر ہے ۔۔۔۔۔ماں کو تو جیسے صد مہ سا لگ گیا تھا ۔۔۔۔۔مگر بیٹے کی خو شی میں پیچھے نہ ہٹی تھی ۔۔۔۔اب تو واصف کے پا و ں ز مین پر نہ ٹکتے تھے۔۔۔۔۔سو یرا اسکے خوابو ں میں آنے وا لی وہی فلمی ہیرو ئن جیسی تھی ۔۔۔۔۔۔جس کے وا صف خواب د یکھتا آ یا تھا ۔۔۔۔۔۔آج اسکا خواب حقیقت بن گیا تھا ۔۔۔۔۔۔تو بھلا وہ خوش کیوں نہ ہو تا ۔۔۔۔۔اب سویرا اور اسکی بہن نے کچھ زیادہ ہی بے ہو دگیا ں شروع کر دیں تھیں ۔۔۔۔۔۔گھر میں دن ہو یا رات ایک محفل سی سجی ر ہتی ۔۔۔۔۔۔۔پار ٹیوں کے نا م پر گھر میں خوب ادھم مچا یا جا تا ۔۔۔۔پو را محلہ انکی حر کتوں پر تو بہ تو بہ کر تا ۔۔۔۔۔محلے میں ایک دو لو گو ں نے تو یہ بھی کہ د یا تھا ۔۔۔۔۔۔بھئی د یکھو یہ شر یفو ں کا محلہ ہے ۔۔۔۔۔ذرا خیال کیا کرو رات گئے تک نا چ گا نے کی آ وا زیں آتی ر ہتی ہیں ۔۔۔۔۔۔۔مگر وا صف اور کا شف تو خود انکے رنگ میں ر نگ چکے تھے ۔۔۔۔۔۔انھیں تو کچھ د کھا ئی د یتا تھا نہ سجھا ئی د یتا تھا ۔۔۔۔۔بس اپنی بیو یوں کے پیچھے لگے ہو ئے تھے۔۔۔۔۔۔جیسا وہ کہتیں گھر میں و یسا ہی ہو تا ۔۔۔۔۔۔آ خر جس مقصد کے لیئے انھوں نے وا صف اور کا شف سے شا دی کی تھی ۔۔۔۔۔۔۔وہ با ت بھی انکے منہ پر آ ہی گئی ۔۔۔۔۔۔۔دونو ں بہنو ں نے دو نو ں بھا ئیوں سے کہا کہ اپنی جا ئیداد اپنے با پ سے ما نگیں ۔۔۔۔۔۔اور اس با ت پر اتنا اکسا یا کہ ۔۔۔۔دو نو ں بھا ئی با پ کے سا منے کھڑے ہو گئے ۔۔۔۔۔۔جب با پ نے ان کے تیور د یکھے انکے روئیے اور انکی حر کا ت د یکھیں ۔۔۔۔۔۔۔تو دو نو ں بھا ئیوں کو جا ئیداد سے عا ق کر د یا ۔۔۔۔۔لہذا دو نو ں بھا ئیوں کی آ نکھیں کھلنی شروع ہو گئیں ۔۔۔۔۔۔با پ کے عا ق کر تے ہی دو نو ں بھا ئی اپنی بیو یوں کے پا س گئے ۔۔۔۔۔اور ا نھیں سب بتا یا ۔۔۔۔وہ سمجھ ر ہے تھے کہ ۔۔۔۔۔۔انکی بیو یا ں انکا درد با ٹیں گیں ۔۔۔۔مگر معا ملہ تو اس سے ا لٹ ہی نکلا ۔۔۔۔۔۔۔دو نو ں بہنو ں کے تیور بدل گئے رو ئیے بدل گئے ۔۔۔۔۔اب با ت بات پر ان کے در میان لڑائی جھگڑے ہو نے لگے اور آ خر با ت طلا ق تک آ پہنچی ۔۔۔۔۔۔ما ں جو کہ دل کی مر یضہ تھیں ۔۔۔۔۔صد مے کی و جہ سے ۔۔۔۔۔۔وا صف کی شا دی کے بعد ہی انتقال کر چکی تھیں ۔۔۔۔۔اب وہ ضد بھی کر تے تو کس سے کر تے ۔۔۔۔۔با پ سخت طبیعت کا ما لک تھا ۔۔۔۔۔وہ سب کچھ د یکھ ر ہا تھا مگر خا موش تھا ۔۔۔۔صبر کر ر ہا تھا ۔۔۔۔۔اور صحیح و قت کا انتظار بھی ۔۔۔۔اب وقت آ نے پر اسنے دو نو ں کی آ نکھیں کھو ل دی تھیں ۔۔۔۔جب طلا ق ما نگنے پر بھی وا صف اور کا شف نے طلا ق نہ دی ۔۔۔۔تو دو نو ں بہنیں وا صف اور کا شف کو رسوا کر کے گھر سے بھا گ گئیں ۔۔۔۔۔اور اپنے پرا نے عا شقوں کے ہاتھ ۔۔۔۔۔خلع کے پیپر بھیج د یئے ۔۔۔۔۔۔۔۔وہ ا صلح کے سا تھ آ ئے دو نو ں بھا ئیو ں کو خوب ما را پیٹاا ور ۔۔۔۔۔۔۔خلع کے پیپرز پر سا ئن کروا کرلے گئے ۔۔۔۔وہ دو نو ں بھا ئی خالی ہا تھ رہ گئے تھے ۔۔۔۔۔نہ تو ما ں با پ کی ما نی ۔۔۔۔۔اور نہ ہی انکے خواب پو ر ے ہو سکے ۔۔۔۔۔۔اب ا نھیں ما ں کی کہی ہو ئی ایک ایک با ت سمجھ آ نے لگی تھی ۔۔۔۔۔جو کہتی تھی ۔۔۔۔بیٹا ہر چمکتی چیز سو نو نہیں ہو تی ۔۔۔۔۔۔اور ایسی لڑ کیا ں گھر بسا نا نہیں جا نتیں ۔۔۔۔اب وہ رہ رہ کر پچھتا ر ہے تھے ۔۔۔۔اور کہہ ر ہے تھے کہ ۔۔۔۔ہا ں وا قعی ما ں ٹھیک کہتی تھی ۔۔۔۔۔ختم شد
 

Comments Print Article Print
 PREVIOUS
NEXT 
About the Author: naila rani riasat ali

Read More Articles by naila rani riasat ali: 104 Articles with 110866 views »
Currently, no details found about the author. If you are the author of this Article, Please update or create your Profile here >>
28 Jul, 2017 Views: 2430

Comments

آپ کی رائے