بدبخت پاکستانی قوم اور سیٹھ حکمران

(KMR, Karachi)

ایک بہت ہی غریب شخص امداد کیلئے کسی سیٹھ کے پاس گیا‘ سیٹھ صاحب دل کے کمزور تھے‘ غریب شخص ان کے پاس پہنچا‘ ان کے قدموں میں بیٹھا اور اپنی دکھ بھری داستان سنانا شروع کر دی۔ اس کی کہانی اوراس کا لہجہ اتنا دردناک تھا کہ سیٹھ صاحب کے آنسو نکل آئے اور وہ بھی غریب سوالی کے ساتھ بیٹھ کر رونے لگے‘ روتے روتے سیٹھ صاحب نے اپنے ملازم کو آواز دی‘ غریب شخص سمجھا سیٹھ صاحب ابھی ملازم کواس کی مدد کرنے کا حکم دیں گے لیکن جونہی ملازم سیٹھ صاحب کے پاس آیا‘ سیٹھ صاحب نے اسے حکم دیا‘ اس بدبخت شخص کو دھکے دے دے کر باہر نکال دو‘ اس نے رلارلا رک میرا برا حال کر دیا ہے۔

یہ کسی دوسرے شخص کی کہانی نہیں‘ یہ اس ملک کی کہانی ہے کیونکہ اس ملک کا ہر غریب‘ نادار‘ مسکین اور مڈل کلاس بدبخت شخص ہے اور اس ملک کی ہر حکومت‘ ہر حکمران اور ہر وزیر خزانہ سیٹھ ہے۔ ہماری حکومتوں کو غریبوں کی عزت‘ مسکینی‘ ناداری اور پریشانی ہمیشہ دکھ دیتی ہے‘ یہ لوگ عام شخص کے دکھوں پر غمگین بھی ہو جاتے ہیں‘ ان کی آنکھوں میں آنسو بھی آ جاتے ہیں اور یہ غریبوں کی غربت دیکھ کر بے چین بھی ہو جاتے ہیں لیکن جب غریب کی عملی مدد کا وقت آتا ہے تو یہ اپنے کسی نہ کسی وزیر‘ کبیر‘ مشیر کو بلوا کر حکم دیتے ہیں اس بدبخت کو دھکے دے کر باہر نکال دو۔ اس نے رلا رلا کر میرا برا حال کر دیا ہے۔

Email
Rate it:
Share Comments Post Comments
10 Jun, 2018 Total Views: 2829 Print Article Print
NEXT 
Reviews & Comments
Post your Comments Language:    
Type your Comments / Review in the space below.
MORE ON ARTICLES
MORE ON HAMARIWEB