جرمنی کا ایک گاؤں ایک لاکھ چالیس ہزار یورو میں فروخت

 

اس غیر معمولی نیلامی میں ایک ہی گمنام شخص نے حصہ لیا اور بیس نفوس پر مشتمل سابقہ مشرقی جرمنی کے اس گاؤں کو ایک لاکھ چالیس ہزار یورو میں خرید لیا۔
 


وفاقی جرمن دارالحکومت برلن سے محض پچھتر میل دوری پر واقع سابقہ مشرقی جرمنی کے الوینے نامی گاؤں کی آبادی محض بیس نفوس پر مشتمل ہے۔ مشرقی اور مغربی جرمنی کے اتحاد کے ستائیس برس بعد اب بھی ملک کے مشرقی حصے کی معاشی صورت حال کافی خراب ہے۔

اس نیلامی میں گاؤں کا مکمل سولہ ہزار مربع میٹر کا علاقہ جس میں بارہ رہائشی عمارتیں اور کچھ گیراج شامل ہیں، برائے فروخت رکھا گیا تھا۔ بولی لگانے کے لیے ابتدائی رقم سوا لاکھ یورو رکھی گئی تھی۔ نیلامی کرنے والی کمپنی کے مطابق صرف ایک ہی گمنام خریدار نے ٹیلی فون کے ذریعے بولی میں حصہ لیا اور الوینے کو ایک لاکھ چالیس ہزار یورو میں خرید لیا۔
 


سترہ برس قبل بھی اس گاؤں کو فروخت کیا گیا تھا، تب اسے برلن کے رہائشی دو بھائیوں کی ’ایک ڈوئچ مارک‘ کی علامتی رقم کے عوض خریدا تھا۔ لیکن الوینے گاؤں کی خستہ صورت حال میں کچھ بہتری نہیں آ پائی۔

گاؤں کے کل بیس معمر مکین بے صبری سے اس بولی کا انتظار کر رہے تھے لیکن اس کے ساتھ ساتھ انہیں یہ خدشہ بھی ہے کہ ہو سکتا ہے کہ نیا خریدار گاؤں میں ایسی تبدیلیاں لے آئے، جن کے باعث یہاں ان کا رہنا ناممکن ہو جائے۔
 


مشرقی اور مغربی جرمنی کے اتحاد کے وقت سن 1990 میں یہاں پچاس افراد رہائش پذیر تھے۔ اس وقت یہ گاؤں قریب ہی واقعہ ایک فیکٹری کی ملکیت تھا۔ پھر فیکٹری بند ہو گئی اور یہ مکین بھی یہاں سے آہستہ آہستہ رخصت ہو گئے۔


Partner Content: DW

Email
Rate it:
Share Comments Post Comments
12 Dec, 2017 Total Views: 2393 Print Article Print
NEXT 
Reviews & Comments
Post your Comments Language:    
Type your Comments / Review in the space below.
The 16,000-square meter settlement had a fuel factory when it was part of communist East Germany. But the village started decaying after the collapse of the Berlin Wall. The small village of Alwine in the eastern German state of Brandenburg was sold on Saturday at an auction house in Berlin for €140,000 ($165,000).
MORE ON ARTICLES
MORE ON HAMARIWEB