پلوامہ ڈرامہ۔مودی کو پیغام

(Prof Masood Akhtar Hazarvi, )

پلوامہ ڈرامہ کے حقائق منظر عام پر آنے کے بعدیہ بات واضح ہوگئی ہے کہ الیکشن جیتنے کیلئے اپنے ہی فوجیوں کو مودی سرکار نے خود مروا کرالزام پاکستان پر دھر دیا ہے۔ اپنی ’’جنتا ‘‘کو بے وقوف بنانے کیلئے بھارتی میڈیا مسلسل پاکستان کے خلاف زہر اگل رہا ہے۔آئے روز حقیقت سے بے خبر (بقول ایک انڈین سکھ کے)پانچ پانچ فٹ قد کی ٹی وی اینکرز چھ چھ فٹ اچھل کر پاکستان پر الزام تراشیاں کر رہی ہیں۔حالانکہ غیر حقیقت پسندانہ شور و غل کبھی سمجھدار اور باشعور لوگوں کو قائل نہیں کر سکتا۔پاکستان کو’’بھیک مانگا اور دہشت گرد ملک‘‘ بلکہ جو منہ میں آتا ہے بولے جا رہی ہیں۔ سوچنے کی بات یہ ہے کہ بھارت کی اپنی حقیقت کیا ہے۔ فحش فلمیں بنابنا کر اکثریتی آبادی کو بیہودہ فلمی اداکار بنا دیا ہے ۔ اپنی دولت کا گھمنڈ دکھا دکھا کر شور شرابا کیے جا رہے ہیں کہ ہم بدلہ لیں گے۔ ارے عقل کے اندھو کس چیز کا بدلہ؟ اپنے فوجی خود مارنے کا بدلہ؟ یہ کوئی الزام نہیں بلکہ دنیا بھر کے میڈیا پر خود ہندوستانی دانشوروں کی طرف سے بطور ثبوت وڈیوز ریلیز ہو چکی ہیں کہ الیکشن جیتنے کیلئے پلوامہ میں مودی سرکار نے خود فوجی مروائے ہیں۔ ہمیں طعنے دیتے ہیں کہ پاکستان ایک ہزار ارب ڈالر کا مقروض ہے۔ جی ہاں درست ہے اور ہمیں اس پر بہت افسوس ہے کہ ہمارے کرپٹ حکمرانوں نے ہمیں اس نہج تک پہنچایا ہے۔ لیکن کیا آپ نے اپنے گریبان میں بھی کبھی جھانکا ہے کہ بھارت تو پانچ سو ارب ڈالر کا مقروض ہے۔ دنیا میں سب سے زیادہ غربت بھارت میں ہے۔’’ بھیک منگوں‘‘ میں پہلا نمبر بھارت کا ہے۔ بھارت کی ستر فیصد آبادی کے پاس ٹائیلٹ کی سہولت تک میسر نہیں۔ بھارت کی آبادی کا خاصہ حصہ فٹ پاتھوں پر زندگی گزار رہا ہے۔ پاکستان کو ہشت گرد کہنے والو! ذرا غور تو کرو کہ آ پ کی ’’بالی وڈ‘‘ کی ساری فلم انڈسٹری انڈر ورلڈ کے دہشت گرد چلا رہے ہیں۔ شاید دنیا کاواحد ملک بھارت ہے جس کا تمام ہمسایہ ممالک سے سیز فائر ہو چکا ہے۔ اس طرح دنیا کے نقشے پر سب سے برا ہمسایہ بھی ہندوستان ہے۔مقبوضہ کشمیر میں حقوق انسانی کی سنگین خلاف ورزیاں ہو رہی ہیں۔ سات لاکھ فوج کشمیریوں کا بے رحمی سے قتل عام کر رہی ہے۔ماضی میں سکھوں پر وحشیانہ بربریت کی گئی اور اب بھی ان کیلئے وہاں پر جینا بہت مشکل کیا جا رہا ہے۔’’نانگا لینڈ‘‘ میں انسانوں کا وحشیانہ قتل ہو رہا ہے۔’’ سری لنکا تامل باغیوں‘‘ کو بھارت کی جنوبی ریاست تامل ناڈو کی خفیہ تربیت گاہ میں ٹریننگ دی جاتی رہی ہے۔بھارت کا وزیر اعظم مودی خود مصدقہ دہشت گرد ہے۔ان کی اپنی عدالتوں کے مطابق احمد آباد ، گجرات میں عورتوں اور بچوں کو زندہ جلا دینا وزیر اعظم مودی کا سیاہ کارنامہ ہے ۔ بھارت دنیا میں واحد ملک ہے جس کی نصف سے زیادہ آبادی گائے کا پیشاب پیتی ہے۔ دنیا میں سب سے زیادہ رجسٹرڈ جسم فروش عورتیں بھارت میں ہیں۔ بھارت پوری دنیا میں بدکاری کیلئے عورتیں سپلائی کرنے والا سب سے بڑا ملک ہے۔ان کی آمدنی کا زیادہ حصہ بیہودہ اور فحش فلموں، عورتوں کی دلالی اور جسم فروشی سے وابستہ ہے۔ اس وقت دنیا بھر میں سب سے زیادہ ایڈز کے مریض بھارت میں ہیں۔ یہ اخلاقی طور پر دیوالیہ پن کی علامت ہے۔ سب سے زیادہ مذہبی جنونی بھارت میں ہیں۔ مذہبی فسادات کی بناء پر قتل و غارت میں بھی بھارت کا پہلا نمبر ہے۔ پلوامہ ڈرامے کے بعد آپ کی اینکرز لال ٹماٹر بند کرنے کا ڈرامہ ہی کرتی رہیں جبکہ پاکستان نے آپ کی افغانستان جانے والی چھ سو ملین ڈالر کی ٹریڈ بند کر کے رکھ دی ہے۔ ارے نادانوں! تم اس ملک پر تجارتی پابندیوں کی کوشش کر رہے ہو جو دنیا بھر کی ٹریڈ کی راہداری کا مرکز بننے جا رہا ہے۔ مودی جی! اپنی اصلیت پہنچانیں اور اس کے مطابق حرکتیں کریں۔ متعصب اور دہشت گرد ملک ہونے کی وجہ سے ’’انٹرنیشنل اولیمپکس‘‘ نے آپ پر تا حیات پابندی لگا دی ہے۔ تمہارے پیٹ میں سی پیک منصوبے کا ہی درد ہے ناں۔ تھوڑا انتظار کرو۔ سی پیک کو شروع تو ہو لینے دو۔ دنیا پاکستان کی راہداریوں کے ذریعے تجارت کرے گی اور تم منہ دیکھتے رہ جاؤ گے۔ ہیومن رائیٹس کمیشن نے مودی حکومت کو تین بھارتی ریاستوں’’ مغربی بنگال‘‘ ’’ اتر اکھنڈ‘‘ اور ’’ اتر پردیش‘‘ میں کشمیریوں کے ساتھ ناروا سلوک کرنے کی وجہ سے نوٹس جاری کردیا ہے۔ کیا آپ کو یاد ہے کہ بنگلور کے کرکٹ میچ میں آپ ہار رہے تھے تو آ پ کی ’’جنتا‘‘ نے’’ بنگلور سٹیڈیم ‘‘کو ہی نظر آتش کر دیا تھا۔ اس کا مطلب یہ ہوا کہ دنیا میں صرف سیاستدان ہی نہیں بلکہ برے اور جاہل تماشائی بھی آپ کے ہی ملک میں ہیں۔ دنیا بھر نے آپ کا یہ تماشا دیکھا کہ سٹیڈیم خالی کروا کے اور میدان سے شراب کی بوتلیں ہٹا کر میچ جاری رکھنا پڑا۔ ا رے نادانوں! آ پ کے پاس ٹھمکوں، آئیٹم سانگز اور بیہودہ فلموں کے سوا ہے کیا کہ ہمارے ’ ’اسلامی جمہوریہ پاکستان‘‘ کو دھمکیاں دیتے پھرتے ہو۔ مودی جی ہوش کے ناخن لو۔ آپ دولت کی دھمکیاں دیتے ہو۔ ٹریلر کے بعد اصل فلم چلانے کی بھاشا سناتے ہو۔کیا آپ کو نہیں معلوم کہ امریکہ و برطانیہ سمیت نیٹو کے 29 ممالک دنیا بھر کا اسلحہ اور فوج لے کر نہتے طالبان کے ساتھ جنگ کرنے کیلئے افغانستان آئے تھے۔ یاد ہے کیا ہوا ان کے ساتھ؟ ان ممالک کے مقابلے میں ہندوستان کی اوقات تو ایک چپڑاسی سے بھی کم ہے۔ بھارت کے کل بجٹ جتنے ڈالر تو امریکہ ایک مہینے میں افغانستان میں خرچ کرتا رہا۔ اب وہی امریکہ بہادر بھاگنے کیلئے رستے تلاش کر رہا ہے۔ کیا ماضی کی سپر پاور روس کا حشر بھی آپ بھول گئے ہیں؟ مودی جی آپ کا مقابلہ کسی ’’بانا نا سٹیٹ‘‘ سے نہیں بلکہ دنیا کی نمبر ون ایجنسی آئی ایس آئی، اپنے پروفیشنل ازم کا لوہا منوانے والی پاک فوج اور بائیس کروڑ مجاہدین سے ہے۔اپنی گندی سیاست اپنے پاس رکھو۔ کلبھوشن جیسے لوگوں سے پاکستان میں دہشت گردی کی کاروائیاں روک دو۔پھر مشورہ ہے کہ ہوش کے ناخن لو اوراس خطے کو جنگ کے شعلوں میں مت جھونکو۔مذاکرات کے ذریعہ مسائل حل کرو۔ ظالموں! کشمیریوں پر ظلم و ستم بند کرو۔ کشمیریوں کا خون رائیگاں نہیں جائے گا۔ تمہارے دن گنے جاچکے ہیں۔’’ غزوۃ الھند‘‘ کا وقت قریب ہے۔ ان شاء اﷲ مظلوموں کی آہیں رنگ لائیں گی اور تم کیفر کردار تک پہنچو گے۔ یاد رکھناکہ کارگل میں آپ نے امریکہ کے پاؤں پکڑے تھے۔ اب کس کے پاؤں پکڑو گے۔ پاکستان پر امن ملک ہے اور ہم امن سے رہنا چاہتے ہیں۔ ہمارا قرآن ایک بے گناہ کی موت کو پوری انسانیت کا قتل کہتا ہے ۔۔لیکن ۔۔مودی جی! یہ بھی یاد رکھنا کہ اپنے پاگل پن کی وجہ سے ، اسرائیل کی آشیرباد میں آکر جس دن آپ نے جنگ چھیڑ ہی دی تو آپ کے ٹکڑے روس سے بھی زیادہ ہوں گے۔ کسی غلط فہمی میں نہ رہنا یہ جذبہ شہادت سے سرشار پاک فوج ہے۔ آپ کی سات لاکھ فوج چندسو نہتے کشمیری فریڈم فائیٹرز کا مقابلہ نہیں کر پاتی اور بات کرتے ہو پاکستان سے جنگ کی۔یہ بھی یاد رہے کہ پاکستان کی ریاست عطیہ خدا وندی ہے جو قیامت تک قائم دائم رہے گی۔ آپ جیسے بد خواہوں کی ناپاک پھونکوں سے یہ چراغ بجھایا نہ جائے گا۔ پاکستان زندہ باد **** پاک فوج پائندہ باد

Rate it:
Share Comments Post Comments
Total Views: 151 Print Article Print
About the Author: Prof Masood Akhtar Hazarvi

Read More Articles by Prof Masood Akhtar Hazarvi: 182 Articles with 90639 views »
Director of Al-Hira Educational and Cultural Centre Luton U.K., with many years’ experience as an Imam of Luton Central Mosque. Professor Hazarvi were.. View More

Reviews & Comments

Language: