دھرنے کیوں ناکام ہوئے۔۔۔؟

(Sarwar Siddiqui, Lahore)

کہاجاتاہے جنگ اور سیاست میں بروقت فیصلہ کرنے کی بڑی اہمیت ہے جن لوگوں میں قوت ِ فیصلہ نہ ہو یا جو حالات سے فائدہ اٹھانے کی صلاحیت ہی نہ رکھتے ہوں وہ کبھی غالب نہیں آسکتے۔۔جب تحریک ِ انصاف کے چیئرمین عمران خان نے اسلام آباد آزادی مارچ کااعلان کیا ایک تہلکہ سا مچ گیا اور حکومتی صفوں میں سرا سیمگی پھیل گئی۔ پھرجب عوامی تحریک کے ڈاکٹر طاہرالقادری نے بھی انقلاب مارچ کیلئے 14اگست کے دن کا ہی انتخاب کیا تو تھرتھلی مچ گئی وزیروں مشیروں اور ان کے مشیروں کی توپوں کا رخ دونوں رہنماؤں کی طرف ہوگیا کچھ لوگ ڈاکٹر طاہرالقادری کو اہمیت دینے کو تیارنہ تھے کہ جو پارٹی پارلیمنٹ سے باہرہے وہ حکومت پردباؤ نہیں ڈال سکتی۔۔ایک خاموش معاہدے کے تحت دونوں تحریکوں نے بیک وقت اپنے سفرکا آغازکرنا تھا لیکن تحریک ِ انصاف کے قائدین کے دل میں اکیلے اکیلے میلہ لوٹنے اور کریڈٹ لے جانے کا شوق انگڑائیاں لینے لگا انہوں نے ماڈل ٹاؤن میں کنٹینروں کے حصارمیں محصور ڈاکٹر طاہرالقادری کو ساتھ لے کر چلنا مناسب خیال نہ کیاPTIکے بیشتررہنما اتنے پرجوش تھے جیسے ان کے اسلام آباد پہنچتے ہی میاں نوازشریف ڈرکے مارے استعفیٰ دیدیں گے ۔دونوں پارٹیوں کے ا لگ الگ اسلام آباد جانے سے ان کی قوت تقسیم تو ہوئی لیکن جب انہوں نے ڈی چوک میں پڑاؤ ڈالا تو ڈاکٹر طاہرالقادری کو احساس ہوا کہ ان کے ساتھ تو عمران خان سے بھی زیادہ لوگ ہیں حالانکہ عمران خان نے عوامی تحریک سے بہترہوم ورک کیا تھا PTI نے اسلام آباد میں 10لاکھ افراد جمع کرنے کااعلان کیا تھا پروگرام تھا لانگ مارچ کے ساتھ صرف لاہورسے ایک لاکھ موٹر سائیکل کارکن عمران خان کے ساتھ ساتھ پرجوش نعرے لگاتے جائیں گے پھر راولپنڈی اسلام آبادکے قومی اسمبلی کے تین حلقوں میں اسدعمر،خود عمران خان اور شیخ رشید ایم این تھے دو ایم پی اے بھی موجود تھے اور سب سے بڑھ کر خیبر پی کے صوبہ کی گورنمنٹ ان کی پشت پر کھڑی تھی جبکہ ڈاکٹر طاہرالقادری کے پاس ایسا ایک بھی ایج نہ تھا اس لئے PAT کو کسی نے اہمیت ہی نہیں دی ۔ حکومت نے فیصلہ کیا کہ ڈی چوک میں کسی کو جانے کی اجازت نہیں دی جائے گی لیکن دھمکیوں،سختیوں اوررینجرز وپولیس کے ہزاروں جوانوں کے باوجود مظاہرین کو نہیں روکا جا سکتا بہرحال ڈاکٹر طاہرالقادری اورعمران خان اپنے اپنے حامیوں کے ہمراہ روزانہ کنٹینرپر میاں نوازشریف کوللکارتے رہے ڈی چوک جہاں چڑی پر بھی نہیں مار سکتی وہاں ہزاروں افراد دھرنا دئیے بیٹھے تھے یہ مناظر بھی عجب تھے پاکستان کی پارلیمانی تاریخ جب بھی لکھی جائے گی وہ دھرنا سیاست کے تذکرے کے بغیر مکمل نہیں ہوگی۔ شیخ الاسلام کے لہجے میں تلخی زیادہ تھی سانحہ ٔ ماڈل ٹاؤن کے شہداء کا خون حکومت سے قصاص مانگ رہا تھا اسی اثناء میں جب حکومت پر دباؤ بڑھا تومیاں نوازشریف حکومت نے آرمی چیف جنرل راحیل شریف کو’’ سہولت کار‘‘کا کرداراداکرنے کوکہایہی وہ وقت تھا جب عمران خان اورڈاکٹر طاہرالقادری کو واپسی کا باعزت راستہ مل سکتا تھااحتجاج کرنے والے دونوں رہنماؤں کوآرمی چیف نے ملاقات کیلئے مدعوکیاشنیدہے کہ آرمی چیف نے شیخ الاسلام سے وعدہ کیا کہ سانحہ ٔ ماڈل ٹاؤن کی غیرجانبدار تحقیقات تک میاں شہباز شریف اپنے عہدے سے مستعفی ہو جائیں گے جبکہ عمران خان کو کہا گیا کہ اگر وہ وزیر ِ اعظم کے استعفیٰ کے مطالبہ سے دستبردارہو جائیں تو باقی 5مطالبات تسلیم کرنے کیلئے پوری کوشش کی جائے گی اسی اثناء میں حکومت نے بھی اعلان کردیا کہ وہ دھاندلی کی تحقیقات کیلئے جو ڈیشل کمیشن بنانے کیلئے تیارہے۔لیکن عمران خان حالات کا درست اندازہ نہ لگا سکے انہوں نے وزیر ِ اعظم کے استعفیٰ کے مطالبہ سے دستبردارہو نے سے انکارکردیااسی لئے کہاجاتاہے جنگ اور سیاست میں بروقت فیصلہ کرنے کی بڑی اہمیت ہے جن لوگوں میں قوت ِ فیصلہ نہ ہو یا جو حالات سے فائدہ اٹھانے کی صلاحیت ہی نہ رکھتے ہوں وہ کبھی غالب نہیں آسکتے۔اگلے روز منظرنامہ ہی تبدیل ہو چکا تھا پارلیمنٹ میںPTIکے علاوہ تمام جماعتیں میاں نواز شریف کے ساتھ کھڑی ہوگئیں خورشید شاہ، مولانا فضل الرحمن، محمود اچکزئی،چوہدری اعتزاز احسن اور اسفندیارولی خان نے پارلیمنٹ کے مشترکہ اجلاس میں برملا کہا 2013ء کے انتخابات میں دھاندلی ہوئی ہے لیکن ہم جمہوریت کی بقاء کیلئے میاں نواز شریف کے ساتھ ہیں۔۔پھرجب دھرنے کے شرکاء ڈی چوک سے پارلیمنٹ کی طرف بڑھے تو ایک حشر بپاہوگیا آنسوگیس، ربڑکی گولیاں، فائرنگ،لاٹھی چارج اور مزاحمت کے نتیجہ میں ہزاروں متاثرہوئے۔کئی جان سے گئے درجنوں زخمی ہوکرہسپتال جا پہنچے اس کے باوجود حکومت نے کوئی بھی مطالبہ تسلیم نہیں کیا عمران خان نے حکومت پردباؤ بڑھانے کیلئے شہر شہر جلسے کرنے کا پروگرام بنایا لیکن کتنی عجیب بات کہ انہوں نے ڈاکٹر طاہرالقادری کو اعتمادمیں لینا بھی گوارانہیں کیا دھرنا تحریک کا بغورجائزہ لیاجائے تو احساس ہوگاشروع دن ہی سے دونوں تحریکوں کے درمیان کوارڈی نیشن نام کو بھی نہیں تھا حالانکہ ان کا ایجنڈا ایک تھامقصد ایک اور دشمن مشترکہ۔واقفان ِ حال کا کہناہے کہ تحریک ِ انصاف حد درجہ خوش فہمی کا شکار تھی کہ’’ ایمپائر ‘‘کی انگلی اٹھ جائے گی ۔۔ایک بات طے ہے کہ خوش فہمی ہو یا غلط فہمی اس کا نتیجہ کبھی اچھا نہیں نکلتا دونوں صورتوں میں خودساختہ تانے بانے الجھ جاتے ہیں بہرحال70روز بعد دھرنوں کی طوالت سے تنگ ڈاکٹر طاہرالقادری مایوس ہوکر انقلابی دھرنا لپیٹ کر چلتے بنے اس کے ساتھ ہی ڈی چوک میں جورونق تھی وہ ختم ہوگئی اور یوں عمران خان کا دھرنا علامتی دھرنا رہ گیا اس سے جو پریشر حکومت پر نظر آرہا تھا وہ یکسرختم ہوگیا اور جو حکومت پہلے مذاکرات کے لئے ترلے کررہی تھی اس نے کسی قسم کے مذاکرات سے انکارکردیا۔ حالات بتاتے ہیں اگر عمران خان اورڈاکٹر طاہرالقادری کے درمیان بہترین کوارڈی نیشن ہوتی تو اس کا فائدہ یقینی طورپر دونوں کا ہوتا اور آج حالات یکسر مختلف ہوتے۔کہاوت ہے عقل مندکو غلطی کااحساس ہو جائے تو وہ اپنے آپ کو درست کرنے کی کوشش کرتاہے جبکہ جاہل ضدپر اڑ جاتاہے اور یہی کام حکومت نے کیا دھرنوں کی وجہ سے کئی ممالک کے سربراہان ِ مملکت کے دورے ملتوی ہوئے ۔۔ ملکی معیشت کو اربوں کا نقصان ہوا۔ کئی ماہ وفاقی دارالحکومت کا نظام تلپٹ ہوکررہ گیا۔۔سچی بات تو یہ تھی کہ عمران خان ایک ایسی بند گلی میں داخل ہو گئے تھے جہاں سے نکلنے کا کوئی راستہ کسی کو سجھائی نہیں دیتا تھا لیکن آرمی پبلک سکول میں دہشت گردوں کی سفاکانہ کارروائی کی آڑ میں عمران خان نے دھرنا ختم کرنے کااعلان کردیا
حاضرہیں میرے چاک ِ گریباں کی دھجیاں
تمہیں اور کیا دل ِ دیوانہ چاہیے

نوازحکومت کی یہ حکمت ِ عملی کامیاب تو رہی کہ انہوں نے تحریک ِ انصاف کو تھکا دیا ڈاکٹر طاہرالقادری اپنی انتھک افرادی قوت کے باوجود ناکام ہوگئے نوازشریف حکومت کامیاب ہوگئی ۔ سیاسی مبصرین کہتے ہیں کہ اس حقیقت سے بھی انکار نہیں کیا جا سکتا کہ دھرنوں نے قوم کو ایک نئے شعورکا ادراک دیا جس کے نتیجہ میں2018میں ہونے والے الیکشن بڑے معرکہ الاراء اور نتیجہ خیزثابت ہوئے ’’سیانے‘‘ تو دھرنوں کے دوران ہی کہہ رہے تھے کہ دھرنے دراصل عمران کی انتخابی مہم ہے جو انہوں نے وقت سے پہلے شروع کردی اس وقت کی حکومت مسلسل اپنا دفاع کرنے پر مجبور رہی یقینا جنگ اور سیاست میں بروقت فیصلہ کرنے کی بڑی اہمیت ہے جن لوگوں میں قوت ِ فیصلہ نہ ہو یا جو حالات سے فائدہ اٹھانے کی صلاحیت ہی نہ رکھتے ہوں وہ کبھی غالب نہیں آسکتے۔اس بات سے سب کو سیکھنے کی ضرورت ہے لیکن بد قسمتی سے سیکھنے کی کوشش کوئی کوئی کرتاہے۔ دھرنوں سے شروع ہونے والی انتخابی مہم نے تو عمران خان کو پاکستان کا وزیر ِ اعظم بنادیا سوچنے کی بات یہ ہے کہ ڈاکٹر طاہرالقادری کو کیا ملا؟ وہ تو تادم ِ تحریر سانحہ ٔ ماڈل ٹاؤن کے شہداء اور متاثرین کو انصاف دلانے میں بھی کامیاب نہیں ہو سکے
کسی کے ایک آنسوپر ہزاروں دل تڑپتے ہیں
کسی کا عمربھر رونا یونہی بے کار جاتاہے

Rate it:
Share Comments Post Comments
Total Views: 259 Print Article Print
About the Author: Sarwar Siddiqui

Read More Articles by Sarwar Siddiqui: 218 Articles with 84902 views »
Currently, no details found about the author. If you are the author of this Article, Please update or create your Profile here >>

Reviews & Comments

Language: