موٹاپے سے چھٹکارہ

(HOMEO DR FATEHYAB ALI SYED, Rawalpindi)
جسم کی توانائی کی ضروریات یعنی کیلوریز کے بارے میں علم ہونا چاہیے باڈی ماس انڈیکس چک کرتے رہنا چاہیے وزن میں کمی کے لئے متوازن اور مناسب غذا ہونی چاہئے غذا میں فائبر کی مقدار میں اضافہ کرنا چاہے

کچھ لوگ آسانی سے وزن بڑھا تو لیتے ہیں لیکن اسے کم کرنے میں پریشان ہوتےہیں اکثرہم نے ان کو یہ کہتے کئی بار سنا ہے ہم "کھاتے کم ہیں" پھر بھی موٹاپا ہے کہ ختم ہو نے کو نہیں آتا موٹاپا سے نمٹنے کے لئے" کھانا "اور" غذا" بہت اہم ہیں اس کےعلاوہ وزن کم کرنے اور اس سے بچنے کے لئے اور بھی بہت سے پہلو ہیں جن کایہا ں تفصیلی ذکر ہےموٹاپا صرف خواتین کی خوبصوتی یا کاسمیٹکس کا معاملہ نہیں بلکہ یہ ان کی صحت کے لئے بھی ایک سنگین خطرہ ہے اس کا تعلق ذیابیطس اور دل کی بیماریوں سے ہے جو ناسورکی طرح ہمارے معاشرے میں پھیل رہی ہیں گٹھیا اور ہائی بلڈ پریشر عام ہو چکا ہے پتلا ہو کر لوگ لمبی اور صحت مند زندگی گزارنا چاہتے ہیں موٹاپا کی بڑی وجوہ نا مناسب غیر متوازں غذا سہل پسندی اور بیہودہ طرز زندگی ورزش کی کمی افسردگی و پریشانی دیگر جذباتی حالات ومعاملات جذباتی کیفیات خواتین میں دماغی دبائو لینے کا زیادہ رجحان دیکھا گیا ہے یہی وجہ ہے کہ دن بہ دن ان میں موٹاپے، بلڈ پریشر، شوگر کی شرح میں بھی اضافہ ہورہا ہے کھانے پینے کے رویوں میں تبدیلی کی ضرورت ہے ہارمونل عدم توازن پٹیوٹری گلینڈکا ہارمونل عدم توازن یا ہائپو تھائی رائیڈ کا مسئلہ عام لوگوں کومتوازن اورمناسب غذا کے بارے میں مزید معلومات کی ضرورت ہےبہت سے موٹے افراد سچ کہتے ہیں کہ ہم خورا ک کھاتے کم ہیں لیکن پتلے لوگوں کی نسبت پھر بھی ہمارا وزن بڑھ جاتا ہے یہ ہی توسچ ہے کہ وہ صحیح قسم کے کھانے نہیں کھا رہے ہوتے ان کے پاس متوازن مناسب غذا کے بارے میں صحیح قسم کی معلومات نہیں ہوتیں چربی برقرار رکھنے والے کھانون(سفید آٹا ؛سفید چاول؛ سفید چینی ؛الکحل ) کاربوہائیڈریٹس سفید ڈبل روٹی یا میٹھی اشیاء میں پائے جانے والے کاربوہائیڈریٹس سے مختلف ہوتے ہیں جو فوری طور پر جسم میں جذب ہوکر جلنے کے بجائے چربی کا ذخیرہ کرتے ہیں اور موٹاپے کا باعث بنتے ہیں سورج مکھی کا تیل، خشک میوہ جات اور بہت سارے اقسام کے بیج، زیتون کا تیل، سفید سرسوں کا تیل استعمال کرکے چکنائی کی ضرورت کو پورا کیا جاسکتا ہے اورموٹاپہ کم کیا جاسکتا ہے مرغن غذائیں چٹ پٹے مصالحہ دار پکوان تکہ؛ کباب؛ شورما اور فرائی اشیاء چینی پر مشتمل مٹھائیاں اور بیکری کی اشیاء جانوروں کے دودھ کی پروڈکٹس سیچوریٹڈ چکنائی سیر شدہ چربی اور کولڈ ڈرنگ؛ کاربونیٹڈ واٹر میں کاربونک ایسڈ ہڈیوں سے کیلشیم چوستاہےجسم کی کیمسٹری تبدیل کر دیتیں ہیں اگر وزن کم اور موٹاپے سےنجات چاہتے ہیں تو اپنے جسم کی توانائی کی ضروریات یعنی کیلوریز کے بارے میں علم ہونا چاہیے باڈی ماس انڈیکس چک کرتے رہنا چاہیے وزن میں کمی کے لئے متوازن اور مناسب غذا ہونی چاہئے غذا میں فائبر کی مقدار میں اضافہ کرنا چاہے فائبر قبض دور کرتا اور اور اسٹول کے ذریعے جسم سے چربی کو ختم کرنے میں مدد کرتا ہےمٹھائی کی خواہش کو کم کرتا ہے ایسی غذائیں استعمال کریں جن میں فائبر وافر ہو جیسےپھل کچی اور پکی ہوئی سبزیاں ، چوکر، دالیں اور سویا بین سالم اناج یہ عام طور پر بہتر ہضم ہوتے ہیں اور ان میں چربی کم ہوتی ہے لوبیا ، سویا کی پروڈکٹس بیج اور گری دار میوے بہترین ہیں ایک تحقیق کے مطابق باداموں کو روزانہ کی خوراک کا حصہ بنانے سے توند میں کمی لانے میں مدد ملتی ہے جو کہ امراض قلب کا خطرہ بڑھا دیتی ہے تحقیق میں بتایا گیا ہے کہ روزانہ 42 گرام باداموں کا استعمال موٹاپے سے تحفظ دے کر امراض قلب کا خطرہ کافی حد تک کم کردیتا ہے غذا میں پروٹین شامل کریں بہترین پروٹین سبزیوں اور اناج میں ہیں یہ عام طور پر بہتر ہضم ہوتیں ہیں سرخ گوشت بہت محدود ہونا چاہئے کیونکہ ان میں چربی کی مقدار بہت زیادہ ہوتی ہے مچھلی اور چکن بغیر جلد کے غذا میں شامل کریں فلاڈلفیا کی ٹمپل یونیورسٹی کی تحقیق کے مطابق بچپن میں موٹاپے کا سبب صرف فاسٹ فوڈ، میٹھے مشروبات اور کم ورزش نہیں بلکہ نیند کی کمی بھی اس کا ایک اہم عنصر ہے تحقیق میں بتایا گیا ہے کہ بہتر اور زیادہ نیند سے بچوں میں کیلوریز لینے کی مقدار کم ہوتی ہے اور جسمانی وزن قابو میں رہتا ہےتحقیق کے نتائج سے معلوم ہوا ہے کہ اسکول جانے کی عمر کے بچوں کی رات کی نیند میں اضافہ موٹاپے پر قابو پانے میں مددگار ثابت ہوتا ہےسڈنی یونیورسٹی کی تحقیق کے مطابق اپنے جسمانی وزن میں کمی کیلئے کیلیوریز جلانے کی بجائے آپ غذا میں پروٹین سے بھرپور اشیاء کا استعمال زیادہ کریں تحقیق میں بتایا گیا ہے کہ گوشت، مچھلی، انڈوں وغیرہ کا استعمال اس حوالے سے بہترین ہے کیونکہ یہ پروٹین سے بھرپور غذائیں ہوتی ہیں ایک دن میں دس گلاس پانی پینے سے جسم میں موجود اضافی کیلوریز کم ہو جاتی ہیں۔ جو افراد وزن کم کرنے کیلئے خوراک کا استعمال کم کر دیتے ہیں انہیں وزن کم کرنے کیلئے پانی کا استعمال زیادہ کرنا چاہیئے دن میں کم از کم 20 سے 30 منٹ تک ایروبک جسمانی ورزش میں مشغول رہنا چاہئے واک انسان کو چاق وچوبند بھی رکھتی ہے موٹاپے کا اندازہ اس بات سے لگایا جاسکتا ہے کہ ایک شخص کتنے گھنٹے ایک دن میں بیٹھتا رہتا ہےاس کی جسمانی سرگرمیاں کتنی ہیں

گھر میں موجود چربی گُھلانے اور وزن گھٹانے والی 8عام چیزیں
کیلیوریز سے بھرپور مرغن غذاؤں اور ورزش سے جی چرانا موٹاپے کو دعوت دیتا ہے لیکن اچھی خبر یہ ہے کہ آپ کے گھر میں موجود کم خرچ اشیا سے موٹاپے کو روکاجاسکتا ہے۔ ایک تحقیق ہے

سرخ مرچ: سرخ مرچ میں موجود مرکب کیپسیسن انسانی جسم کے اندر تھرموجنیسس کو سرگرم کرتا ہے۔ یہ جسم میں گرمی پیدا کرکے چربی کو پگھلانے میں مدد فراہم کرتا ہے۔ اس لیے ماہرین کا مشورہ ہے کہ تازہ سرخ مرچوں کے ٹکڑے یا پھر پسی ہوئی سرخ مرچوں کو غذا میں ملاکر کھانے کی عادت بنائیں ۔

سبزیاں اور اناج: براؤن رائس، جو اور دلیہ پروٹین سے بھرپور ہوتا ہے ۔ اس میں موجود ریشہ (فائبر) ہاضمے اور خوراک کو جسم میں جذب کرنے کا عمل تیز کرتا ہے۔

دوسری جانب سبزیوں میں غیر حل شدہ فائبر ہوتا ہے اور پیچیدہ کاربوہائیڈریٹس کی بنا پر جسم انہیں ہضم کرنے کے لیے ذیادہ توانائی خرچ کرتا ہے ۔ ماہرین کے مطابق اس کے ساتھ سیب اور ناشپاتی ضرور کھائیں کیونکہ یہ پھل بھوک کی شدت کم کرتے ہیں۔

کالی مرچ: سیاہ مرچوں میں پایا جانے والا ایک مرکب پائپرائن کہلاتا ہے جو چربی کے خلیات کو تیزی سے توڑتا اور ختم کرتا ہے۔اس طرح سیاہ مرچ نہ صرف کھانوں کو مزیدار بناتی ہے بلکہ تھرمک افیکٹ کے زریعے زائد لحمیات کو تلف کرتی ہے۔

ادرک: ادرک میں بھی سرخ مرچوں والا مرکب کیپسیسن پایا جاتا ہے۔ یہ حرارت پیدا کرتی ہے لیکن تازہ اور کٹی ہوئی ادرک فوری فائدہ کرتی ہے۔دنیا بھر میں زیرِاستعمال ادرک کے فوائد مسلم ہیں کیونکہ یہ بھوک کے احساس کو کم کرتی ہے اور وزن بڑھنے نہیں دیتی۔ سالن اور دیگر کھانوں کے ساتھ ادرک ملاکر کھانے کے زبردست فوائد حاصل ہوتےہیں۔ باریک تراشوں کو کاٹی ہوئی ادرک کو دس منٹ پانی میں ابال کر اس کی چائے پینے سے بھی وزن گھٹانے اور چربی کم کرنے میں بہت فائدہ ہوتا ہے۔

لہسن: لہسن دل اور خون کے ہموار بہاؤ میں کلیدی کردار ادا کرتا ہے۔ اس میں موجود کئی مرکبات جسم میں بھوری چکنائی کو کم کرتے ہیں جسے براؤن فیٹ کہا جاتا ہے۔

سرسوں: سرسوں کھاتے ہی جسم کا درجہ حرارت بڑھ جاتا ہے اور یہ ذائقے دار ہونے کے علاوہ تیزی سے لحمیات کو ختم کرکے جسم سے اضافی موٹاپے کو ختم کرنے میں معاون ہوتی ہے۔ اس لیے ضروری ہے کہ سرسوں کو کھانوں پر ڈریسنگ کے لیے ضرور استعمال کیا جائے۔

سبزچائے: وزن گھٹانے میں سبز چائے کی افادیت اب ثابت ہوچکی ہے ۔ یہ میٹابولزم کو بڑھا کر کیلوریز جذب کرنے میں مدد دیتی ہے۔ اس کے علاوہ اینٹی آکسینڈنٹس، پولی فینولز اور کئی معدنیات جسم پر بہترین اثر ڈالتی ہیں۔ اگر سبز چائے کے ساتھ ورزش بھی کی جائے تو تیز اور فوری نتائج حاصل ہوسکتےہیں۔
دار چینی :میں شامل اجزاءچربی کو گھلانے کا عمل تیز کردیتے ہیں جس کی وجہ میٹابولزم کو تیز کردینا ہے۔ یہ مصالحہ توند کو کم کرنے مین مددگار ثابت ہوتا ہے جبکہ یہ بلڈ شوگر کی سطح کو بھی کنٹرول میں رکھتا ہے جس کے نتیجے میں بے وقت بھوک نہیں لگتی اور آپ جنک فوڈ استعمال کرکے جسمانی وزن میں اضافے سے بچ جاتے ہیں

معالجاتی خوراک پھل اور سبزیاں
اسپرولینا ، کھيرا اورککڑی ، تربوز ، کدُو پیٹھا ، انار ، حلوہ کدّو ؛ چقندر؛ پالک; ساگ ، اجمودا , جوائن انگور, بلیو بیریز، انناس ،لیموں، ناشپاتی ،سیب پھلوں میں پائے جانے والی شکر فروٹ کوز ہے ریفانیڈ کاربوہائیڈریٹ سے بھوری چربی حرارت زائی کی حوصلہ افزائی کرتی ہے

ان اشیاء سے بچیں
ریفانیڈ کاربوہائیڈریٹ ، الکحل ، مسالے دار چَٹپٹے کھانوں ، تلے ہوئےکھانوں ، چربی سے بھرپور غذائیں اورکھانے نمکین اور میٹھے کھانے ، چاکلیٹ ، ٹھنڈے خام کھانے زیادہ شیریں پھل شیلف سٹور اشیاء ، کافی ، کالی چائے ، کیفین ، دودھ کی پروڈکٹس اور ریفانیڈ اور پروسیسز کیے ہوئےکھانے کی اشیاء جوس ، خشک فیٹی گوشت ، چینی ، بیکن بکاوئٹ ، کینڈی ، شہد ، جیلی ؛جام ، چاکلیٹ ، چیونگم ، کیک ، کوکیز ، آئس کریم ، سافٹ ڈرنکس ، چپس ، دیگر تلی ہوئی سنیک فوڈ ، تلی ہوئی کھانے ، میٹھا پھل
ماہرین صحت کے مطابق اگر آپ وزن کم کررہے ہیں تو غذائی احتیاط اور ورزش کے ساتھ اس میں مراقبے
کو بھی شامل کرلیں تو فوری اور بہتر نتائج ثابت ہوسکتے ہیں
ہر انسان کی غذائی ضروریات عمر، جنس، قد اور وزن اور صحت کے مطابق فرق ہوتی ہیں۔ جو چیزیں صحت کے لیے مفید ہیں ان کی مقدار کا تعین کرنا لازمی ہے۔ ان کی زیادہ مقدار فائدے کے بجائے نقصان دہ بھی ثابت ہوسکتی ہے۔ آپ کی صحت کے لیے التماس ہے کہ خود ڈاکٹر بننے سے بہتر ہے ماہرین سے رائے لی جائے۔
 

Disclaimer: All information is provided here only for general health education. Please consult your health physician regarding any treatment of health issues.
Rate it:
Share Comments Post Comments
Total Views: 2314 Print Article Print
About the Author: HOMEO DR FATEHYAB ALI SYED

Read More Articles by HOMEO DR FATEHYAB ALI SYED: 6 Articles with 12201 views »
I am qualified HOMEOPATH & NUTRITIONIST give consultation to CHRONIC patients since 1974. HOMEOPATHIC DOCTOR. FATEHYAB ALI SYED Bsc(Food& Nutrition).. View More

Reviews & Comments

Language: