سنو۔۔۔۔!!! درویش لوگوں کی کوئی دنیا نہیں ہوتی۔۔۔۔۔؟؟؟

(Naila Rani, Lahore)

بس لوگ کہتے تھے۔۔۔۔کہ چند دنوں کا مہمان ہے درویش۔۔ مگر درویش کو تو پورا یقین تھا۔۔۔۔کہ اسکا اللہ اسکو بے مقصد مرنے نہ دے گا۔۔۔۔۔یہ ہی وجہ تھی کہ ۔۔۔۔دنیا والے بھی اسکے حوصلے سے حو صلہ پکڑتے تھے۔۔۔۔سینکڑوں بیماریاں درویش کو گھیرے ہو ئے تھی۔۔۔۔۔اور ہر بیماری کے آنے کے بعد درویش کا حوصلہ پہاڑوں سے بھی بلند ہو جاتا۔۔۔۔اور وہ اپنے رب کے بہت قریب ہو جاتا۔۔۔۔۔اسکی دعائیں عرش پر شور مچا دیتی۔۔۔۔اور وہ پھر ہو کر رہتا۔۔ جسکو وہ دعا دے دیتا۔۔۔۔اسکا دامن خوشیوں سے بھر جاتا۔۔۔۔مگر درویش نہیں جانتا تھا۔۔۔۔کہ یہ دنیا کتنی حقیر اور اس میں رہنے والے لوگ کتنے ظالم ہیں۔۔۔۔اسے نہیں معلوم تھا کہ۔۔۔۔اس دنیا میں وہی عزت پاتا ہے۔۔۔ اور وہی زندہ رہتا ہے۔۔۔۔جسکے پاس پیسہ ہوتا ہے۔۔۔جس کے پاس بھاری سفارش ہوتی ہے۔۔۔۔اور جس کے پاس ہر جگہ استعمال کرنے کے لئے ایک بڑا نام ہوتا ہے۔۔۔۔وہ تو اتنا معصوم تھا ۔۔۔کہ اپنی پاکٹ منی کو ہی ماں کے سامنے پیش کر کے بولتا۔۔۔۔ماں تم پریشان نہ ہونا۔۔۔۔یہ سارا پیسہ تیرا ہے۔۔۔۔تو جو چاہے اسکا کر لے۔۔۔۔اور درویش کی ماں درویشوں کی درویش تھی۔۔۔۔۔وہ ان چند سکوں پر ہی خوش ہو جاتی۔۔۔۔دن یونہی گزر رہے تھے۔۔۔۔کہ ایک دن درویش کی حالت زیادہ ہی بگڑ گئ۔۔۔۔اسکو جب ایک دکان نما ہسپتال میں لے جایا گیا۔۔۔۔تو اسوقت درویش کو کوئ ہوش نہ تھا۔۔۔۔۔درویش کی ماں تڑپ رہی تھی۔۔۔۔اور باپ سرہانے کھڑا سسک رہا تھا۔۔۔۔وہ جانتے تھے کہ یہ ایک پرائیو یٹ ہسپتال ہے۔۔۔۔یہاں تو بڑے بڑے علاج نہیں کروا سکتے۔۔۔۔پھر ہم مزدور لوگوں کی انکے نزدیک کیا وقعت۔؟ مگر درویش تو ہر حال میں جینا چاہتا تھا۔۔۔۔وہ اپنی زندگی کو انسانیت کے لیئے وقف کر نا چاہتا تھا۔۔۔۔مگر وہ یہ نہیں جانتا تھا۔۔۔۔کہ جنکی خدمت کے لیئےوہ جینا چاہتا ہے۔۔۔۔وہ اسے زندہ رکھنا نہیں چاہتے۔۔۔۔ہسپتال کی پہلی فیس ماں باپ نے پورے گھر کی جمع پونجی اکٹھی کر کے بھر دی تھی۔۔۔۔ اسکے بعد انکی نگاہیں مدد کی منتظر تھیں ۔۔۔۔۔مگر کسی طرف سے بھی مدد نہ آنی تھی نہ آئ۔ یوں لگتا تھا جیسے دنیا میں مدد کرنے والے لوگ ہیں ہی نہیں ۔۔۔۔سارے ہی ختم ہو چکے ہیں ۔۔۔۔ ایک ہفتے کی فیس تھی۔۔۔۔ایک ہفتہ علاج ہوتا رہا۔۔۔جب تیسرے دن درویش کو ہوش آیا۔۔۔۔اسنے اپنی ماں سے ایک سوال کیا۔۔۔ماں میں یونہی بے مقصد تو نہیں مارا جاؤں گا۔۔۔۔؟؟؟ ماں جانتی تھی کہ وہ مارا جائے گا۔۔۔۔مگر وہ درویش کے آگے خاموش بیٹھی رہی۔۔۔۔۔اور پھر الگ جا کر سجدوں میں روتی رہی۔۔۔۔کہ اے اللہ ہم سے اس آزمائش کو ختم کر دے۔۔۔خدا نے اسکی دعا سن لی تھی۔۔۔۔اسکی دعا قبول ہو چکی تھی۔۔۔ماں سے درویش کی حالت دیکھی نہ جاتی تھی۔۔۔۔اور درویش کی خواہش نہ پوری ہونی تھی نہ ہوئ۔۔۔۔درویش تڑپ رہا تھا ۔۔۔۔اور اسکو بے حد چاہنے والی ماں ۔۔۔۔اسکی تڑپ میں تڑپ رہی تھی۔۔۔۔وہ جانتی تھی کہ اب میرا درویش وقعی چند دنوں کا مہمان رہ گیا ہے۔۔۔۔اس لئیے نہیں کہ اسکی بیماریوں کا کوئ علاج نہیں تھا۔۔۔۔بلکہ اس لیئے کہ اسکی بیماریوں کے علاج کےلیئے انکے پاس پیسہ نہیں تھا۔۔۔۔وہ زندہ رہنے کی خواہش پوری کر سکتا تھا۔۔۔۔اگر اسکے ماں باپ پیسے والے ہوتے۔۔۔۔۔خدا کی قسم یہ ایک حقیقت ہے۔۔۔۔کہ غریب لوگ اکثر علاج نہ کروا سکنے کی وجہ سے مر جاتے ہیں ۔۔۔۔درویش لوگ بھلا اپنے لیئے دعائیں کہاں کرتے ہیں ۔۔۔۔وہ تو دنیا والوں کو فیض پہنچانا چاہتے تھے۔۔۔۔مگر وہ نہیں جانتے تھے کہ ۔۔۔۔بے فیض لوگوں سے محبت کرنے کا صلہ ۔۔۔۔انھیں درویش کی موت کی صورت میں ملے گا۔۔۔۔پانچویں دن جب درویش نے کرا ہتے ہو ئے ماں کی طرف ایک پر امید نظر سے دیکھا۔۔۔۔تو اسکی ماں کی آنکھیں جھکی ہوئ تھیں وہ سمجھ چکا تھا کہ اسکے ماں باپ بے بس اور دنیا بہت ظالم ہے۔۔۔۔اسنے دھیمے لہجے میں ماں سے کہا۔۔۔۔ماں میرا رخ کعبے کی طرف کردو ۔۔۔۔ماں کا کلیجہ جیسے تڑپ کر رہ گیا۔۔۔۔وہ سمجھ گئ تھی ۔۔۔کہ درویش اب اس دنیا میں چند گھڑیوں کا مہمان رہ گیا ہے ۔۔۔۔ماں نے اسکے کہنے پر اسکا رخ کعبے کیطرف کر دیا۔۔۔۔چھٹے دن ان کے پاس درویش کو خوراک دینے کے بھی پیسے نہ تھے۔۔۔۔۔درویش بھوک سے نڈھال آہیں بھرنے لگا۔۔۔۔۔اب تو ماں باپ دونوں سجدے میں گر کر گڑ گڑائے ۔۔۔۔یا اللہ ہم تینوں سے اس آزمائش کو دور کر دے۔۔۔۔خدا نے انکی سن لی ۔۔۔۔اور ساتویں دن پتا چلا درویش کعبے کیطرف رخ کر کے ۔۔۔ابدی نیند سو چکا ہے۔۔۔۔درویش چلا گیا تھا مگر میں جب بھی اس وقعے کو سوچتی ہوں تو دل میں خیال آتا ہے کہ کیا درویش لوگوں کی کوئ دنیا نہیں ہو تی۔۔۔۔

 

Rate it:
Share Comments Post Comments
Total Views: 667 Print Article Print
About the Author: naila rani riasat ali

Read More Articles by naila rani riasat ali: 92 Articles with 89655 views »
Currently, no details found about the author. If you are the author of this Article, Please update or create your Profile here >>

Reviews & Comments

Language: