خوف کا فلسفہ ،ضیاء الحق سے عمران خان تک

(Arshad Sulahri, )

پرویز مشرف کو عدالت کی جانب سے سزا سنائی گئی تو پاکستان کے کئی شہروں میں مظاہرے کرائے گئے۔سزا کو غیر شرعی اور غیر اسلامی بھی قرار دلوایا گیا مگر بات بن نہیں پائی کیوں کہ زمانہ بہت کچھ سمجھ گیا ہے۔انہی دنوں ایک اسلامی کام کرنے والے چھوٹے سے دفتر میں جانا ہوا۔میزبان نے پرویز مشرف کی سزا پر اظہار افسوس شروع کردیا ۔راقم نے جذبہ جمہوریت سےلبریز لہجے میں سو دلیلیں دے ماری کہ سزا جائز ہے اور پرویز مشرف کی سزا واجب ہے۔میزبان مذکور د لیل کو تسلیم کرنے کی بجائے فوری پینترا بدلتے ہوئے وار کرتے ہیں کہ اللہ کے دین اور رسول وﷺ کی تعلیمات کو نہ ماننے والے پرویز مشرف کی سزا کے حق میںراگ الاپ رہے ہیں ۔یکا یک کمرے کی فضا میں خوف کی لہری ابھری اور سب سہم گئے اور راقم کی زبان بھی گنگ ہوکر رہ گئی کہ مبادا کچھ اور آفت آسکتی ہے ۔سلام کر کے وہاں سے رفوچکر ہونے میں اپنی عافیت سمجھی ۔

مذہب کا خوف بڑا کارگر ہتھیار ہے ۔جس کا برملا استعمال آمر ضیا الحق کے دورمیں کیا گیا۔موت کا منظر مرنے کے بعد کیا ہوگااس وقت کی مقبول ترین کتاب تھی۔ضیاالحق کے گیارہ سال پاکستان کے عوام نے خوف زدہ ہوکر گزارے ۔بعدازاں یہ چلن عام ہوتا گیا ۔یہ اختیار مذہبی گروہوں اور رسہ گیر وں نے اپنے ہاتھ میں لے لیا اور خود فیصلے کرنے لگے ۔بلاس فہمی کے الزامات میں کئی گھرانے اجڑ چکے ہیں اور ہزاروں افراد نے مقدمات اور مشکلات کا سامنا کیا ہے۔

یہ سلسلہ رکا نہیں ہے۔گزشتہ دنوں ایک خاتون اسسٹنٹ کمشنر کو نوعمر لڑکوں کی خود لگائی گئی عدالت میں اپنی صفائی دیتے ہوئے دیکھا گیا ہے۔ طالب علم نے اپنے استاد کو قتل کر دیا ۔بے شمار ایسے واقعات ہیں ۔کسی ایک ایسے سانحہ پر وزیراعظم سمیت کوئی وزیر اور چھوٹے سے چھوٹا اہلکار بھی متاثرین کی اشک شوئی کےلئے کبھی نہیں گیا ہے۔ریاست اور حکومت مکمل لاتعلق رہتی ہے۔معمول کی کارروائی کی جاتی ہے۔مذمتی بیان تک جاری نہیں کیا جاتا ہے۔

اب یہ بات ڈھکی چھپی نہیں رہی ہے کہ مذہبی انتہا پسندوں کے متعلق ریاستی رویہ نرم ہوتا ہے۔فیض آباد دھرنے کی مثال سامنے ہے۔ جب تحریک لبیک کے لوگوں کو گھروں میں واپسی کےلئے کرایہ تقسیم کیا گیا تھا۔بعض مواقع پر مظاہرے کرنے کےلئے بھی سہولت فراہم کی جاتی ہے۔حکمرانوں کےلئے یہ لوگ آکسیجن کا کام کرتے ہیں اور بوقت ضرورت کام آتے ہیں ۔

حکمران جب عوام کے مسائل سے صرف نظر کرتے ہیں اور عوام کو ڈلیور کرنے میں ناکام رہتے ہیں تو انہیں ایسے ایشوز کی ضرورت ہوتی ہے جو عوام اور میڈیا کی توجہ اصل ایشوسے ہٹا سکیں۔میڈیا رپورٹس کے مطابق سرمد سلطان کی فلم زندگی تماشا سنٹرل سنسر بورڈ نے پاس کردی تھی مگر پھر نمائش روک دی گئی کہ تحریک لبیک نہیں چاہتی ہے کہ فلم کی نمائش ہو۔اب فلم کی نمائش کی اجازت دینا اسلامی نظریاتی کونسل پر ہے کہ کونسل کیا فیصلہ دیتی ہے۔

پاکستان کے حکمرانوں میں ایسے لگتا ہے کہ ضیا الحق کی روح عود آئی ہے ۔جو ہر بات میں خوف کے عنصر کو شامل کرکے عوام کی توجہ مسائل و بحران سے ہٹانے کی کوشش کر رہے ہیں ۔باخبر حلقے جانتے ہیں کہ خوف کے ماحول میں ملک کی ترقی کیا ہوتی ہے اور ضیاء الحق کی خرافات نے ملک کو جن اندھروں کی نذر کیا وہ اندھرے آج تک مسلط ہیں ۔عمران خان حکومت نے بھی ضیاءالحق کا راستہ اپنا لیا ہے ۔جس کی منزل روشنی نہیں ہے بلکہ روشن آوازوں کو دبانے اور ختم کرنے کی کوشش ہے ۔آوازیں دبانے کاعمل واپسی کا سفر ہے ۔جس کے سرخیل آمر ضیاءالحق تھے۔
 

Rate it:
Share Comments Post Comments
Total Views: 319 Print Article Print
 PREVIOUS
NEXT 
About the Author: Arshad Sulahri

Read More Articles by Arshad Sulahri: 105 Articles with 29730 views »
I am Human Rights Activist ,writer,Journalist , columnist ,unionist ,Songwriter .Author .. View More

Comments

آپ کی رائے
Language: