یوم کشمیر پر باتیں کچھ کشمیر کی

(Syed Ahmed Qadri, India)

آج یوم کشمیر ہے ۔ اس تعلق سے کچھ باتیں کشمیر کے ماضی اور حال کی ۔کشمیر جو کبھی جنّت ارضی تھا ،اب وہ مسلسل سیاست کے گرم تھپیڑوں سے آتشی چنار میں بدل گیا ہے۔ یہاں کے لوگوں کے لئے زندگی ایک عذاب سی ہو گئی ہے۔سانسیں بھی پہروں کے درمیان لینے پر مجبور ہیں۔دنیا چیخ چیخ کر رہی ہے کہ یہاں انسانی حقوق کی پامالی ہو رہی ہے،لیکن حاکم وقت کا ایک ہی رٹا رٹایا جملہ ہے کہ یہاں سب نارمل ہے۔ اگر سب کچھ نارمل ہے تو پھر آنے جانے پر اتنی پابندیاں کیوں ہیں۔کشمیر میں دم توڑتی انسانیت پر یوم کشمیر کے تعلق سے کچھ ہمدردی کر مرہم تو ہم رکھ ہی سکتے ہیں۔

اس حقیقت سے انکار نہیں کیا جا سکتا ہے کہ ایک وقت ایسا بھی تھاکہ کشمیر کا ذکر آتے ہی، جنّت ارضی کشمیر کی حسین وادیوں، مترنم جھرنوں،خوبصورت پہاڑوں،ہرے بھرے جنگلوں،جھلملاتی ندیوں، لہراتے شکارے اور نرم نرم روئی کے گالوں جیسی برف باری کی یادیں آتے ہی ذہن میں تازگی، نغمگی، شگفتگی اور دلفریبی کا شدید احساس ان لوگوں کے دلوں میں مچلنے لگتا ہے ،جن لوگوں نے اب سے دس بیس برس قبل ان حسین وادیوں کی سیر کیا ہے اور جن لوگوں کو جنت ارضی کی ان خوبصورت وادیوں کی سیر میسر نہیں ہوئی ، انھوں نے ’کشمیر کی کلی‘ ’جب جب پھول کھلے‘ او ر ’ آرزو‘ وغیرہ جیسی کشمیر کی حسین وادیوں پر بنی فلم کے توسط سے دیکھنے کے بعد ان کے دلوں میں ہمیشہ یہ آرزو دل میں انگڑایاں لیتی رہتی ہونگی کہ کاش مجھے بھی ایک بار ان خوبصورت وادیوں کی سیر کرنے کا موقع مل جائے۔ اس لئے کہ یہ کشمیر ہی ہے کہ جس کی رعنایوں سے متاثر ہو کر مغل بادشاہ جہانگیریہ کہنے پر مجبور ہوئے تھے کہ ؂
گر فردوس بر روئے زمیں است ہمیں است و، ہمیں است و، ہمیں است

یعنی زمین پر اگرجنت ہے ، تو یہی ہے، یہی ہے، یہی ہے۔ کشمیر کے جنت نشان ہونے کا جہانگیر جیسے عظیم بادشاہ کو اس شدت سے احساس تھا کہ انھوں نے وہاں شالیمار باغ وغیرہ جیسے کئی ایسے اعلیٰ اور یادگارنمونے بنوائے کہ آج بھی انھیں فراموش نہیں کیا جا سکتا ہے ۔، پھر ہم محمد رفیع کو کیسے بھول سکتے ہیں ۔ جن کی آواز کی سحر انگیزی ہر جوان دل کی دھڑکن بن کر کشمیر کی حسین وادیوں کی جانب اس طرح بلاتی ہے․․․․․․․․․․․․․․ ہر چہرہ یہاں چاند ہے،تو ہر ذرّہ ستارہ ٭ یہ وادیٔ کشمیر ہے، جنّت کا نظارہ

اس کا مطلب یہ ہوا کہ ہر فرد و بشر کو اس بات کا شدت سے احساس رہا ہے کہ اگر زمین پر کوئی جنّت ہے ، تو وہ کشمیر ہی ہے۔ یہی وجہ ہے کہ یہاں کے حسین نظاروں اور دلفریب مناظر سے حسن و عشق کی کرنیں بھی پھوٹتی ہیں ۔ جن پر درجنوں ناول، سینکڑوں افسانے اور نہ جانے کتنی نظموں اور غزلوں کا وجود سامنے آ چکا ہے۔ساتھ ہی ساتھ کشمیر کی وادیوں میں عشق و محبت پر مبنی بے شمار فلمیں بھی بن چکی ہیں ۔

لیکن افسوس صد افسوس کہ کشمیر کی ان خوبصورت وادیوں اور حسین مناظر کی دلفریبیوں کی قدر نہیں کی گئی اور اس جنتّ ارضی کو ناعقبت اندیشوں نے اپنے اپنے مفادات میں جہنم کا نمونہ بنا دیا ہے ۔کشمیر کے حسن کو شعلوں کی نذر کر دیا گیا ہے۔

کشمیر کی اپنی ایک شاندار تاریخ رہی ہے۔ جس پر سینکڑوں کتابیں شائع ہو چکی ہیں ۔ اس وقت یہ موقع نہیں ہے کہ میں اس کی پرانی تاریخ دہراؤں۔ لیکن یہ ضرور بتانا چاہونگا کہ جن تنازعات کے باعث یہ کشمیر تباہیوں کے دہانے پر ہے، اس کے ذمّہ دار وہ انگریز ہی ہیں ، جنھوں نے ہندوستا ن پر قبضہ جما کر اس کا سودا کرتے رہے اور اس کی شاندار روایات اور حسن کو مسخ کرتے رہے ۔ کشمیر ایک ایسا خوبصورت اور حسین علاقہ رہا ہے کہ ہر کے دل کی دھڑکن بنا رہا ہے ۔ ہر کی یہ خواہش رہی کہ ان حسین وادیوں پر اس کی ہی حکمرانی رہے۔یہی وجہ تھی کہ جب بھارت پر انگریزوں کا تسلط قائم ہوا ، تب ڈوگرہ کے راجہ گلاب سنگھ نے بھی یہ خواب دیکھا کہ کشمیر پر ان کی حکمرانی رہے۔چنانچہ اس راجہ نے انگریزوں سے کشمیر کا سودا کیا اور 1846 ء میں 75 لاکھ روپئے میں اس پورے خطہ کو خرید لیا اور اپنی حکمرانی قائم کر دی۔ ہمیں یہ بات نہیں بھولنی چاہئے کہ کشمیر میں ہمیشہ سے اسلام مذہب کے ماننے والوں کی تعداد زیادہ رہی ہے اور یہ بھی واضح رہے کہ یہاں اسلام، بابا نورالدین رشی اور بابابھلے شاہ کی تعلیمات اور روحانی قوتوں اور ان کے حسن اخلاق سے فروغ پایا ، جو امن و آشتی کے پیامبر بن کر یہاں آئے تھے ۔جن کی روحانی تعلیمات کے ہر مذہب کے لوگ اسیر رہے۔ بابا نورالدین رشی کشمیر کے لوگوں میں محبت، پیار، یکجہتی، اتحاد واتفاق کے مثال رہے۔ یہی وجہ ہے کہ صدیاں گزر جانے کے بعد بھی ان کے مجموعہ کلام ’’ نور نامہ ‘‘ اور ’’رشی نامہ‘‘ کا کشمیر یوں کے دلوں میں بسا ہوا ہے اور آج بھی انھیں لوگ عقیدت و احترام سے یاد کرتے ہیں ۔ اسی طرح لوگ بھلے شاہ کو بھی عقیدت و احترام کے ساتھ لوگ اپنے دلوں میں بسائے ہوئے ہیں ۔بابا بھلے شاہ کی روحانی تعلیم کا ہی یہ فیض تھا کہ اس سے متاثر ہو کر ایک زمانے میں یہاں کے بودھ راجہ، رنچن نے مذہب اسلام قبول کیا تھا او ر یہی راجہ رنچن، سلطان صدرالدین بن کر کشمیر کا پہلا مسلم حکمراں بنا تھا۔

1846 ء کشمیر کے لئے ایک ٹرننگ پوائنٹ ہے ۔ جب اس کا سودا انگریزوں نے ڈوگرہ کے راجہ گلاب سنگھ کے ساتھ کیا تھا ۔لیکن تقسیم ہند کے بعد اکتوبر 1947 ء کو مہاراجہ ہری سنگھ کی حکمرانی کے خلاف جدو جہد کر وہاں کی عوام نے بھارت کے ساتھ کئی شرائط کے ساتھ الحاق کرنے پر مجبور کر دیا تھا ۔ جن کی تفصیلات 18 ؍ اکتوبر 1947 ء کے ایک انگریزی روزنامہ ’ہندوستان ٹائمز ‘ میں بہت تفصیل کے ساتھ سرورق پر شائع ہوا تھا ۔اسی طرح اکتوبر 1947 ء میں ہی کشمیر کا کئی حصہ پاکستان میں چلا گیا۔ کیوں گیا ، فی الحال میں اس وقت اس مباحث میں نہیں پڑنا چاہتا ۔ لیکن اتنا ضرور ہے ان حصہ داری سے دونوں ملک ہند و پاک مطمئن نہیں ہوئے اور تنازعہ بڑھتا ہی گیا ۔ یہاں تک کہ 1948 ء میں دونوں ممالک کے درمیان جنگ کی نوبت آ گئی ۔ لیکن یکم جنوری 1949 ء کو سلامتی کونسل نے اس معاملے میں مداخلت کی، اور منظور شدہ دو قرارداد کے تحت بھارت کو کشمیر سے افواج کے اخراج کے ساتھ ساتھ جلد رائے شماری کی تاکید کی ۔ اس وقت بھارت کے وزیراعظم پنڈت نہرو نے رائے شماری کا وعدہ تو کر لیا لیکن بعد میں منحرف ہو گئے اور ادھر پاکستان نے بھارت سے آزاد کرائے گئے علاقوں میں آزاد کشمیر کی ریاست قائم کر دی ۔ اس درمیان 1960 ء میں یہ بھی ہوا کہ ہند و پاک کے درمیان ایک معاہدہ کے تحت ستلج، بیاس اور راوی ندیوں سے پاکستان دستبردار ہو گیا ۔ لیکن کشمیر کا تنازعہ ختم نہیں ہوا ، یہاں تک 1965 ء میں دونوں ملکوں کے درمیان جنگ چھڑ گئی ۔ جس میں بہت ساری انسانی جانیں تلف ہوئیں۔پھر بھی مسئلہ کشمیر حل نہیں ہو سکا اور 1999 ء میں کارگل جنگ بھی ہوئی ۔ کشمیر مسئلہ کو سلجھانے کے لئے بھارت اور پاکستان کے درمیان کئی بار مفاہمت کی باتیں بھی ہوئیں ۔ ذوالفقار علی بھٹو، بینطیر بھٹو اور جنرل پرویز مشرف بھی اس مسئلہ کو دور کرنے کئی راؤنڈ کی گفتگو کے بعد ناکام ہو کر واپس چلے گئے ۔ سابق وزیر ا عظم اٹل بہاری باجپئی بھی امن کا پیغام لے کر بہت سارے فنکاروں کے ساتھ پاک دورہ کر چکے ہیں ۔ لیکن مسئلہ یہ ہے کہ کشمیر جیسی خوبصورت سرزمین کے کسی بھی خطہ سے کوئی بھی دستبردار نہیں ہونا چاہتا ہے ۔ جس کے باعث یہ وادیٔ کشمیر ، جنّت کا نظارہ کی بجائے جہنم کا نمونہ بنتا جا رہا ہے ۔سیاسی بساط بچھا کر گزشتہ 5؍اگست 2019ء کو یہاں جو کچھ ہوا ۔ اسے بیان کرنے کی ضرورت نہیں ۔ یہاں کے سیاسی عدم استحکام ، فوجی مداخلت ،ان کی آمریت نے امن و امان قائم کرنے میں اب بھی کامیابی نہیں ملی ہے ۔ یہاں کے لوگوں کے ساتھ ظلم و تشدد سے بھرا سلوک، خاص طور پر یہاں کے نوجوانوں کو بات بات پر گولیوں سے ہلاک کرنا ، اوریہاں کی نوجوان لڑکیوں کے ساتھ نازیبا سلوک دیکھ کر لوگ زیادہ مشتعل ہوتے ہیں ۔ ان کی بنیادی ضرورتوں اور حقوق کو سلب کیا جانا ۔ غربت، بے روزگاری، ناخواندگی، بجلی کا بحران وغیرہ جیسے بنیادی مسئلے سے کشمیر کے لوگ بہت پریشان ہیں لیکن ان مسائل کے حل کی جانب کوئی توجہ نہیں ۔ان کے دکھ درد، کرب اور گھٹن سے بے پرواہ سیاسی رہنمأ اپنی اپنی سیاست کی بساط پر شہ اور مات کا کھیل ، کھیل رہے ہیں ۔ضرورت اس بات کی ہے کہ کشمیر کے مسئلہ کو کشمیریوں کے ساتھ مل کر، انھیں اعتماد میں لے کر مناسب اور باوقار طریقے سے حل کرنے کی کوشش کی جائے۔ ساتھ ہی ساتھ کشمیری نوجوان لڑکے اور لڑکیوں کے ساتھ مخلصانہ اور ہمدردانہ رویۂ اختیار کیا جائے ۔ آئے دن ہونے والے ا ن ہنگاموں میں ان کا مستقبل جس طرح تباہ و برباد ہو رہا ہے ، وہ وقت گزر جانے کے بعد واپس نہیں آئیگا ۔ انھیں انسان سمجھا جائے ، ان کی بنیادی ضرورتوں کو ہر ممکن طریقے سے پورا کرنے کی عملی کوشش ہو۔ اس لئے کہ ان کی زندگی کے بھی کچھ خواب ہونگے ۔ انھیں در در کی ٹھوکریں کھانے کے لئے نہ چھوڑا جائے ۔ کسی بھی قوم کو یہ بات کیسے گوارہ ہو سکتی ہے کہ ان کا بھائی ، ان کی بہنیں اپنے ملک کے طول و عرض میں پھیل کر مختلف گھروں کے دروازے ،دروازے پہنچ کر انصاف اور مدد کی بھیک مانگے ۔ ہر حساس شخص کی نظر اس وقت شرم سے جھک جاتی ہے جب کشمیر کی جوان جوان لڑکیاں ان کے دروازے پر اپنی بھوک اور پیاس سے نڈھال ہاتھ پھیلاتی نظر آتی ہیں ۔

کشمیریوں کے دکھ ،درد،غم، اذیت،بربریت اور ہر سطح پر ہونے والے ان کے استحصال کو جاننے، سمجھنے اور ان کے زخموں پر ہمدردی اور محبت کا مرہم رکھتے ہوئے، ان کے مداوا کے لئے سیاسی اور سماجی سطح پر غور و فکر کرنے کی سنجیدہ کوشش ہو تو مجھے یقین ہے کہ مسئلے کا حل ضرور نکلے گا ، شرط یہ ہے کہ کوشش سیاسی مفادات سے اُوپر اٹھ کر انسانی اقدار کے ساتھ ہو ۔ سیاسی رہنماوں کو اس بات کا خیال ہونا چاہئے کہ منافرت اور فرقہ واریت سے بہت ساری انسانی زندگیاں تباہ و برباد ہو رہی ہیں ، جس سے دونوں ملک کو نقصان ہو رہا ہے اور فائدہ کوئی اور ملک اٹھا رہا ہے ۔ یہ وہ ملک ہے جو کسی بھی قیمت پر نہیں چاہتا کہ ان دونوں پڑوسی ملکوں میں دوستی قائم رہے۔اگر دونوں ملکوں کے گلے شکوے ختم ہو جائیں تو بلا شبہ دونوں پڑوسی ملک اپنے اپنے ملک میں انسانیت اور انسانی اقدار کی ایک نئی تاریخ رقم کر سکتے ہیں۔

 

Rate it:
Share Comments Post Comments
Total Views: 63 Print Article Print
 PREVIOUS
NEXT 
About the Author: Syed Ahmad Quadri

Read More Articles by Syed Ahmad Quadri: 92 Articles with 40649 views »
An Introduction of Syed Ahmad Quadri
by: ABDUL QADIR (Times of India)

Through sheer imagination,
.. View More

Comments

آپ کی رائے
Language: