چین۔امریکہ کشیدگی اور عالمی امن و استحکام کو لاحق خطرات

(Shahid Afraz Khan, Beijing, China)
امریکہ کی چینی کمیونسٹ پارٹی پر تنقید بھی بلاجواز ہے کیونکہ آج اگر چین دنیا کی دوسری بڑی معیشت ہے تو اس کی بنیاد تو کمیونسٹ پارٹی نے ہی ڈالی ہے ،گزشتہ چار دہائیوں کے دوران 80 کروڑ سے زائد لوگوں کو غربت سے چھٹکارہ دلانا ، عالمی جی ڈی پی کی ترقی میں 30 فیصد سے زائد حصہ اور عالمی صنعتی چین کو مستحکم رکھنا ،یہ سب چینی کمیونسٹ پارٹی کی دوراندیش قیادت اور موئثر گورننس کی بدولت ہی تو ممکن ہوا ہے۔چین نے ہمیشہ پرامن ترقیاتی راہ کا انتخاب کیا ہے اور کبھی بھی اپنے نظریات دوسروں پر مسلط کرنے کی کوشش نہیں کی ہے ،چین اس بات کا داعی ہے کہ تمام ممالک اپنے قومی تقاضوں کے مطابق" ترقیاتی ماڈلز " اپنانے میں حق بجانب ہیں۔تاریخی حقائق ثابت کرتے ہیں کہ چین نے جس ترقیاتی سمت کا انتخاب کیا وہ بالکل درست اور عوام کی حمایت پر مبنی تھی۔

چین۔امریکہ کشیدگی اور عالمی امن و استحکام کو لاحق خطرات


تیس جولائی دنیا بھر میں دوستی کا عالمی دن منایا جاتا ہے جس کا مقصد دوستی کے مضبوط رشتے کی اہمیت کو اجاگر کرتے ہوئے امن ،بھائی چارے ،رواداری اور مخلصانہ جذبات کا فروغ ہے۔اس وقت دنیا کو عالمگیر وبا کے ساتھ ساتھ غربت ،تشدد ،نسلی امتیاز،انسانی حقوق کی سنگین خلاف ورزیوں سمیت چین۔امریکہ جیسی اہم عالمی طاقتوں کے درمیان کشیدگی اور تناو کی صورتحال کا سامنا ہے جس سے عالمی امن و استحکام اور اقتصادی عالمگیریت کی ترقی کو خدشات لاحق ہیں ۔ان چیلنجز سے نمٹنے کے لیے دوستانہ روابط کے فروغ کی اہمیت ماضی کی نسبت آج کہیں زیادہ ہے۔

عالمی منظرنامے میں چین اور امریکہ کے درمیان تیزی سے بڑھتی ہوئی کشیدگی بین الاقوامی سطح پر تشویش کا باعث بن چکی ہے۔آج کی دنیا میں جہاں امن اور ترقی کو فوقیت حاصل ہے وہاں "سرد جنگ" کی ذہنیت ہر گز قابل قبول نہیں ہے لیکن اسی سوچ کے تابع چند امریکی سیاستدانوں کی چین مخالف جارحانہ پالیسی دونوں بڑے ممالک کے درمیان باہمی تعلقات میں بگاڑ کا سبب بن رہی ہے جو پورے "ورلڈ آرڈر" کے لیے تباہ کن ثابت ہو سکتی ہے۔

امریکی وزیر خارجہ مائیک پومپیو انہی امریکی سیاستدانوں میں شامل ہیں جو چین کی مخالفت میں پیش پیش ہیں اور ابھی حال ہی میں انہوں نے چین میں حکمران جماعت کمیونسٹ پارٹی آف چائنا اور چین کے سوشلسٹ نظام کے خلاف "اشتعال انگیز "خطاب کرتے ہوئے چین مخالف اتحاد تشکیل دینے کی باتیں کیں ۔بظاہر ایسا محسوس ہوا کہ وہ چاہتے ہیں کہ "وائٹ ہاوس" کی منشا کے مطابق دنیا چین پر چڑھ دوڑے مگر آج کے زی شعور معاشروں میں ایسا ممکن نہیں ہے کیونکہ ہر ملک کو طویل المیعاد پیمانے پر اپنا اور اپنے عوام کا مفاد عزیز ہے لہذا دنیا سے ایسی توقعات وابستہ کرنا محض خام خیالی کے سوا کچھ نہیں۔اس کی ایک حالیہ مثال یورپی یونین کی جانب سے چین کے ساتھ ایک اہم تجارتی سمجھوتے پر اتفاق ہے جسے فریقین رواں برس کے اواخر تک حتمی شکل دے دیں گے جبکہ دوسری مثال جنوبی بحیرہ چین کے حوالے سے متعلقہ فریقوں کی امریکی بیانیے کی مخالفت اور مشاورت کے ذریعے اختلافات کے حل پر آمادگی ہے۔چین نے تو گزشتہ دہائیوں کے دوران بارہا اپنے عمل سے ثابت کیا ہے کہ وہ کسی کےخلاف اشتعال انگیز یا جارحانہ طرزعمل نہیں اپنا سکتا ہے لیکن اگر اُس کے قومی مفادات کو نقصان پہنچانے کی کوشش کی گئی تو برابری کی بنیاد پر جواب لازمی دیا جائے گا۔

امریکہ کی چینی کمیونسٹ پارٹی پر تنقید بھی بلاجواز ہے کیونکہ آج اگر چین دنیا کی دوسری بڑی معیشت ہے تو اس کی بنیاد تو کمیونسٹ پارٹی نے ہی ڈالی ہے ،گزشتہ چار دہائیوں کے دوران 80 کروڑ سے زائد لوگوں کو غربت سے چھٹکارہ دلانا ، عالمی جی ڈی پی کی ترقی میں 30 فیصد سے زائد حصہ اور عالمی صنعتی چین کو مستحکم رکھنا ،یہ سب چینی کمیونسٹ پارٹی کی دوراندیش قیادت اور موئثر گورننس کی بدولت ہی تو ممکن ہوا ہے۔چین نے ہمیشہ پرامن ترقیاتی راہ کا انتخاب کیا ہے اور کبھی بھی اپنے نظریات دوسروں پر مسلط کرنے کی کوشش نہیں کی ہے ،چین اس بات کا داعی ہے کہ تمام ممالک اپنے قومی تقاضوں کے مطابق" ترقیاتی ماڈلز " اپنانے میں حق بجانب ہیں۔تاریخی حقائق ثابت کرتے ہیں کہ چین نے جس ترقیاتی سمت کا انتخاب کیا وہ بالکل درست اور عوام کی حمایت پر مبنی تھی۔حال ہی میں ہارورڈ کینیڈی اسکول کے تحقیقی مرکز نے ایک سروے کے نتائج جاری کیے جو بتاتے ہیں کہ چین میں 93 فیصد سے زائد شہری چینی کمیونسٹ پارٹی کی قیادت میں اپنی حکومت کی کارکردگی سے مطمئن ہیں اور حکومتی اقدامات کی بھرپور تائید کرتے ہیں۔ایسے میں چین کے خلاف سرد جنگ کی شروعات اور "زیروسم ذہنیت" کی کوئی منطق نہیں ہے بلکہ یہ اقدام عالمی امن کے لیے خطرہ اور انسانیت کے مفادات کے لیے تباہ کن ہے۔امریکہ کو عالمی برادری سمیت پورے چینی عوام کی مخالفت بھی مول لینا پڑے گی اور نتیجہ ماسوائے ناکامی اور شرمندگی کے کچھ نہیں نکلے گا۔

چین۔امریکہ سفارتی تعلقات کے قیام کو اکتالیس برس بیت چکے ہیں اور دنیا نے دیکھا کہ اس عرصے کے دوران دو طرفہ تعاون کی بدولت نہ صرف دونوں ممالک کے لیے بلکہ عالمگیر سطح پر ثمرات حاصل ہوئے ہیں۔اگر ماضی پر نگاہ دوڑائیں تو 28 فروری1972 کو دونوں ممالک کے درمیان طے شدہ مشترکہ اعلامیے میں واضح کیا گیا تھا کہ اگرچہ چین اور امریکہ کے درمیان سوشلسٹ نظام اور خارجہ پالیسی سے متعلق اختلافات موجود ہیں تاہم اس سے قطع نظر فریقین ایک دوسرے کی خودمختاری و جغرافیائی سالمیت کے احترام ، ایک دوسرے کے خلاف عدم جارحیت اور داخلی امور میں عدم مداخلت ،برابری، باہمی مفاد اور پر امن بقائے باہمی کے اصول پر عمل پیرا رہیں گے۔ چین کی آج بھی کوشش ہے کہ انہی اصولوں پر عمل پیرا رہتے ہوئے آگے بڑھا جائے اور تنازعات کو باہمی مشاورت اور مذاکرات سے حل کیا جائے لیکن امریکہ اپنی "سپر پاور" کی سوچ سے اب تک باہر نہیں نکل سکا ہے۔عالمی مبصرین کے نزدیک ٹرمپ انتظامیہ کی چین مخالف روش کا مقصد امریکہ کو درپیش شدید نوعیت کے ملکی مسائل سے عوام کی توجہ ہٹانا ہے ۔وبا سے موئثر طور پر نمٹنے میں امریکی حکومت کی ناکامی ، نسلی تنازعات ، بے روزگاری ، معیشت پر پڑنے والا دباو اور نومبر میں صدارتی انتخاب ، یہ وہ تمام عوامل ہیں جن کے باعث "چین کارڈ" امریکی سیاستدانوں کی بظاہر آسان ترجیح ہے لیکن اس کے نتائج انتہائی بھیانک ہو سکتے ہیں۔

چین آج بھی عالمی امن کے قیام ، عالمگیر اقتصادی ترقی کے فروغ اور ضوابط پر مبنی بین الاقوامی گورننس کے نظام کے تحفظ کے لیے کوشاں ہے۔ایسے میں محض چند سیاسی مفادات کے حصول کے لیے چین۔امریکہ تعلقات کو داو پر لگانا دانشمندی نہیں ہو گی۔دنیا آج کسی سرد جنگ کی متحمل نہیں ہو سکتی ہے ،سرد جنگ کی فرسودہ سوچ بین الاقوامی تعلقات کے بنیادی اصولوں کی نفی اور مشترکہ ترقی و استحکام کے لیے تعمیری کردار سے انحراف ہے۔اس حقیقت سے انکار نہیں کیا جا سکتا ہے کہ دنیا کو درپیش موجودہ مسائل کا حل عالمی طاقتوں کی ایک بڑی ذمہ داری ہے بالخصوص ایک ایسے وقت میں جب انسانیت کو عالمگیر وبا کا مشترکہ چیلنج درپیش ہے۔چین۔امریکہ دوستانہ روابط اور بہتر تعلقات کئی اہم بین الاقوامی مسائل کے حل کی کلید ہے لیکن بنیادی شرط اناپرستی ،تعصب اور تنگ نظری سے بالاتر سوچ اپنانے کی ہے۔

 

Comments Print Article Print
 PREVIOUS
NEXT 
About the Author: Shahid Afraz Khan

Read More Articles by Shahid Afraz Khan: 65 Articles with 11887 views »
Currently, no details found about the author. If you are the author of this Article, Please update or create your Profile here >>
29 Jul, 2020 Views: 95

Comments

آپ کی رائے