راحت اندوری ۔۔۔۔۔اے موت تو نے مجھ کو زمیندار کر دیا

(Dr Izhar Ahmed Gulzar, Faisalabad)

 راحت اندوری نے عدم کے کُوچ کے لیے رخت سفر باندھ لیا۔اُردو ادب کا وہ آفتاب جو یکم جنوری 1950ء میں اندور (بھارت )سے طلوع ہوا وہ 11/ اگست 2020ء کو عدم کی بے کراں وادیوں میں ہمیشہ کے لیے غروب ہو گیا۔۔اُاردو ادب کے ہمالہ کی ایک سر بہ فلک چوٹی فرشتہء اجل کے ہاتھوں کورونا وائرس کی لپیٹ میں آ کر زمیں بوس ہو گئی ۔۔اندور کے شہر خموشاں کی زمین نے اُردو ادب کے اِس خورشید جہاں تاب کو ہمیشہ کے لیے اپنے دامن میں چُھپا لیا۔ جو گزشتہ سات عشروں سے علم و ادب سے وابستہ افراد کے سر پر سایہ فِگن تھا۔اُردوا دب میں ہر جگہ اس لافانی ادیب کے افکار کے پرتو دکھائی دیتے ہیں ۔ ۔تفہیم ادب کا کوئی بھی عکس ہو' اُسی کے خدو خال دل و نگاہ کو مسخر کرلیتے ہیں ۔۔راحت اندوری ایک دبستان علم و ادب کا نام ہے ،وہ اردو ادب کے ایک درخشاں عہد کی نشانی تھے ۔ان کی وفات سے اردو ادب کا ایک زریں عہد اپنے اختتام کو پہنچا ۔دنیا لاکھ ترقی کے مدارج طے کرتی چلی جائے ، ایسی نابغہء روزگار ہستیاں اور یگانہء روزگار فاضل کبھی پیدا نہیں ہو سکتے ۔ وہ اردو زبان و ادب کا ایک دائرۃ المعارف تھے۔ جب تک دنیا باقی ہے قارئینِ ادب اس دبستانِ علم و ادب سے استفادہ کرتے رہیں گے اور ان کے خیالات سے اذہان کی تطہیر و تنویرکا اہتمام ہوتا رہے گا ۔۔وہ اردو زبان کے ممتاز شاعر اور انڈین فلموں کے مقبول گیت نگار تھے۔۔ان کے والد رفعت اللہ قریشی اور والدہ مقبول النساء بیگم اندور ( بھارت)میں ایک کپڑے کی ملز میں ملازم تھے ۔۔آپ ان کے چوتھے بچے تھے ۔۔آپ نے اپنی ابتدائی تعلیم نوتن ہائیر سکینڈری اسکول سے مکمل کی ۔۔
1973ء میں انہوں نے اسلامیہ کریمیا کالج اندور سے گریجویشن کی ۔۔1975ء میں برکت اللہ یونیورسٹی بھوپال مدھیہ پردیش سے اردو ادب میں ماسٹرز کیا ۔۔1985ء میں بھوج یونیورسٹی مدیحہ پردیش سے اردو میں مشاعرہ پر مقالہ لکھنے پر انھیں اردو ادب میں پی ایچ ڈی کی ڈگری دی گئی ۔۔ملازمت کا آغاز اندور کے ایک کالج میں اردو ادب پڑھنے سے کیا ۔۔وہ شاعروں میں بہت ذوق و شوق سے شرکت کرتے تھے ۔۔اپنے مخصوص انداز میں مشاعرہ پڑھنے کی وجہ سے وہ ہندوستان کے مایہ ناز شاعر کے طور پر مقبول ہو گئے ۔۔اور اس طرح اردو لٹریچر کی ممتاز شخصیات میں ان کا شمار ہونے لگا ۔۔۔اردو ادب کے ساتھ ساتھ وہ سکول اور کالج لیول کی فٹبال اور ہاکی ٹیم کے کیپٹن بھی رہے ۔۔۔انہوں نے شعر و شاعری کا آغاز کالج دور سے ہی شروع کر دیا تھا جب ان کی عمر صرف 19 برس تھی ۔۔۔۔۔۔۔۔ان کے شروع میں تازگی اور نیا پن شروع ہیں سے تھا ۔۔۔ان پی ادبی خدمات کے اعتراف کے طور پر انہیں بے شمار اعزازات سے نوازا گیا ۔۔۔۔اور ان کو بہت سے ادبی ایوارڈ دیئے گئے ۔۔راحت اندوری نے بہت سی انڈین فلموں کے لیے بھی گیت لکھے ہیں ۔۔جن میں آشیاں ،سر، جنم ، خود دار ، مرڈر ، منا بھائی ایم بی بی ایس ،مشن کشمیر میناکشی ،فریب اور عشق وغیرہ شامل ہیں ۔۔۔اردو ادب میں انہوں نے اپنی مندرجہ ذیل کتب سے حصہ ڈالا ۔۔۔روپ روپ ، پانچواں درویش ،ناراض ل اور لمحے لمحے ۔۔۔۔راحت اندوری خود آگاہ انسان ہیں۔انہوں نے اپنی شاعری میں وہی کہا ہے جسے انہوں نے خود محسوس کیا اور درست سمجھا کیوں کہ ان کی شاعری ان کی ذاتی محسوسات اور مشاہدات پر مشتمل ہے ۔وہ اپنے ارد گرد ہونے والے حالات و واقعات سے باخبر رہتے ہیں۔۔ ان کی شاعری گل و بلبل کی کوئی روایتی شاعری نہیں ۔بلکہ عصری تقاضوں کو ملحوظ خاطر رکھ کر انہوں نے شعر کہے ہیں ۔۔انسانوں کے دکھ درد ان کے مسائل اور سماجی حالات کا وہ گہرا شعور رکھتے ہیں ۔۔یہی وجہ ہے کہ ان کی شاعری شعور کی آئینہ دار ہے ۔۔۔۔

ہمیں حقیر نہ جانو ہم اپنے نیزے سے
غزل کی آنکھ میں کاجل لگانے والے ہیں
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
اب اپنی روح کے چھالوں کا کچھ حساب کروں
میں چاہتا تھا چراغوں کو ماہتاب کروں
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
سمندر پار ہوتی جا رہی ہے
دعا پتوار ہوتی جا رہی ہے
مسائل، جنگ ،خوشبو، رنگ ،موسم
غزل اخبار ہوتی جا رہی ہے
بہت کانٹوں بھری دنیا ہے لیکن
گلے کا ہار ہوتی جا رہی ہے
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

افواہ تھی کہ میری طبیعت خراب ہے
لوگوں نے پوچھ پوچھ کے بیمار کردیا
دو گز سہی مگر یہ مِری ملکیت تو ہے
اے موت تو نے مجھ کو زمیندار کردیا
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

راحت اندوری ذہنی اور طبعی اعتبار سے انفرادیت پسند تھے ۔کسی کی تقلید کرنا تو رہا ایک طرف ، زندگی کی دوڑ میں وہ کسی کے ساتھ چلنا تک سمجھوتا نہیں کرتے تھے ۔۔ان کی جدت پسندی اور انفرادیت پسندی انہیں ہمیشہ نئے نئے خیال ڈھونڈنے پر مجبور کرتی رہی۔۔۔اس طرح ہمیں ان کی شاعری میں رنگارنگی اور بو قلمونی محسوس ہوتی ہے۔۔۔۔راحت اندوری کی یہ جدت ادا ان کی شاعری میں نئے رنگ اور نئے خوبصورت پھول کھلاتی نظر آتی ہے ۔۔۔۔اور ان کی شاعری کو پڑھ کر قاری کو ایک عجیب و غریب ، خوشی و مسرت کا احساس ہوتا ہے ۔۔بالکل ویسا ہی جیسا کسی سیاح کو کسی نئے علاقے کو دیکھ کر ہوتا ہے ۔۔جس میں حسن فطرت اپنی تمام تر رنگینیوں اور تابانیوں کے ساتھ جلوہ گر ہوں۔۔ مندرجہ ذیل اشعار دیکھئے اور اندازہ لگائیں کہ راحت اندوری کی یہ جدت پسندی کس طور پر نئے پھول کھلاتی ہے ۔۔۔۔۔۔۔
ہم سے پہلے بھی مسافر کئی گزرے ہوں گے
کم سے کم راہ کے پتھر تو ہٹاتے جاتے
یہ ضروری ہے کہ آنکھوں کا بھرم قائم رہے
نیند رکھو یا نہ رکھو خواب معیاری رکھو
یہ ہوائیں اڑ نہ جائیں لے کے کاغذ کا بدن
دوستو مجھ پر کوئی پتھر ذرا بھاری رکھو
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

خالی ہیں ترے شہر سے جاتے جاتے
جان ہوتی تو مری جان لٹاتے جاتے
اب کے مایوس ہوا یاروں کو رخصت کر کے
جا رہے تھے تو کوئی زخم لگاتے جاتے
رینگنے کی بھی اجازت نہیں ہم کو ورنہ
ہم جدھر جاتے نئے پھول کھلاتے جاتے
مجھ کو رونے کا سلیقہ بھی نہیں ہے شاید
لوگ ہنستے ہیں مجھے دیکھ کے آتے جاتے
ہم سے پہلے بھی مسافر کئی گزرے ہوں گے
کم سے کم راہ کے پتھر تو ہٹاتے جاتے
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

لوگ ہر موڑ پہ رُک رُک کے سنبھلتے کیوں ہیں
اتنا ڈرتے ہیں تو پھر گھر سے نکلتے کیوں ہیں
موڑ ہوتا ہے جوانی کا سنبھلنے کے لیئے
اور سب لوگ یہیں آ کے پھسلتے کیوں ہیں
نیند سے میرا تعلق ہی نہیں برسوں سے
خواب آ، آ کے مری چھت پہ ٹہلتے کیوں ہیں
میں نہ جگنو ہیں، دیا ہوں نہ کوئی تارا ہوں
روشنی والے مرے نام سے جلتے کیوں ہیں

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

اس کی کتّھئی آنکھوں میں ہے جنتر مَنتر سب
چاقو واقو چھُریا ں وُریاں خنجر وَنجر سب
مجھ سے بچھڑ کر وہ بھی کہاں اب پہلی جیسی ہیں
پھیکے پڑ گئے کپڑے وَپڑے زیور وِیور سب
عشق وِشق کے سارے نسخے مجھ سے سیکھتے ہیں
حیدر ویدر منظر وَنظر جوہر وَوہر سب
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

راحت اندوری نے اپنی غزل میں نئے نئے موضوعات داخل کیےاور اسلوب کے نئے زاویے تراشے ۔۔۔۔وہ جدت پسند تھے اور بات میں بات پیدا کرتے تھے۔۔ان کی نکتہ آفرینیوں کے نمونے ان کی شاعری میں جابجا ملتے ہیں ۔۔۔۔۔راحت اندوری کے نزدیک ذہن کو ایک خیال سے دوسرے خیال تک پہنچانا اور مختلف تخیل پیکروں کو ایک دوسرے کے ساتھ اس طرح مربوط کرنا کہ ان کا مجموعی تاثر وحدت کا تاثر ہو ، آسان نہیں ۔۔۔۔۔لفظی نقطہ آفرینی کا محرک صرف اپنی سطحی قسم کی ذہنی برتری اور سبقت کا احساس ہوتا ہے ۔۔ راحت اندوری کی شاعری میں الفاظ کا صوتی آہنگ بھی قابل تعریف ہے ۔۔انہوں نے الفاظ کے انتخاب میں بڑی فنکاری کا ثبوت دیا ہے اور ان سے وہ موسیقیت اور نغمگی پیدا کی ہے جو پڑھنے والے کومسحور کر دیتی ہے ۔راحت اندوری مختلف الفاظ کو ملا کر ایک مترنم کیفیت پیدا کر دیتے ہیں ۔وہ منفرد الفاظ کی نغمگی اور موسیقیت کا بھی گہرا شعور رکھتے ہیں ۔۔مگر مختلف الفاظ کی مخصوص دروبست سے جو نغمگی پیدا ہوسکتی ہے اس میں راحت اندوری اپنا جواب نہیں رکھتے ۔۔

گھر سے یہ سوچ کہ نکلا ہوں کہ مر جانا ہے
اب کوئی راہ دکھا دے کہ کدھر جانا ہے
جسم سے ساتھ نبھانے کی مت امید رکھو
اس مسافر کو تو رستے میں ٹھہر جانا ہے
موت لمحے کی صدا زندگی عمروں کی پکار
میں یہی سوچ کے زندہ ہوں کہ مر جانا ہے
نشہ ایسا تھا کہ میخانے کو دُنیا سمجھا
ہوش آیا، تو خیال آیا کہ گھر جانا ہے
مرے جذبے کی بڑی قدر ہے لوگوں میں مگر
میرے جذبے کو مرے ساتھ ہی مر جانا ہے
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

رشتوں کی دھوپ چھاؤں سے آزاد ہو گئے
اب تو ہمیں بھی سارے سبق یاد ہو گئے
آبادیوں میں ہوتے ہیں برباد کتنے لوگ
ہم دیکھنے گئے تھے تو برباد ہو گئے
میں پربتوں سے لڑتا رہا اور چند لوگ
گیلی زمین کھود کر فرہاد ہو گئے
بیٹھے ہوئے ہیں قیمتی صوفوں پہ بھیڑیے
جنگل کے لوگ شہر میں آباد ہو گئے
لفظوں کے ہیر پھیر کا دھندہ بھی خوب ہے
جاہل ہمارے شہر میں استاد ہو گئے
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
راحت اندوری نے معمولی سے معمولی بات کو بھی بہت قرینے سے بیان کیا ہے۔۔دنیا کی تمام حرکت و رونق اور چہل پہل کی وجہ یہ قرار دی ہے کہ انسانی زندگی فانی ہے ۔۔ زندگی کی دھڑکنوں نے ایک دن تو رکنا ہی ہے۔۔دنیا کی بے ثباتی کو جس طرح راحت اندوری نے اپنی شاعری کا حصہ بنایا ہے یہ انہی کا حصہ ہے ۔۔۔زندگی کی بے ثباتی سے کہے ہوئے ان کے اشعار سن کر لوگ جھوم جھوم اٹھتے تھے۔۔راحت اندوری کی غزل میں تڑپ بھی ہے اور غم کا احساس بھی۔۔۔ اس میں نغمہ بھی ہے اور مصوری بھی ،۔۔۔۔۔۔ان میں سادگی بھی ہے اور پرکاری بھی ۔۔۔۔۔مگر سب سے بڑی بات جو ان کی غزل میں ہے وہ یہ ہے کہ انہوں نے جذباتی خلوص اور جوش زندگی کے ساتھ ساتھ غزل میں حسن و تحمل کا بڑا معیار قائم کیا ہے ۔۔۔۔۔۔۔۔

یہ سانحہ تو کسی دن سے گزرنے والا تھا
میں بچ بھی جاتا تو اک روز مرنے والا تھا
ترے سلوک تری آگہی کی عمر دراز
مرے عزیز مرا زخم بھرنے والا تھا
مرا نصیب مرے ہاتھ کٹ گئے ورنہ
میں تیری مانگ میں سندور بھرنے والا تھا
مرے چراغ، مری شب ، مری منڈیریں ہیں
میں کب شریر ہواؤں سے ڈرنے والا تھا

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

دوستی جب کسی سے کی جائے
دشمنوں کی بھی رائے لی جائے
موت کا زہر ہے فضاؤں میں
اب کہاں جا کے سانس لی جائے
بس اسی سوچ میں ہوں ڈُوبا ہوا
یہ ندی کیسے پار کی جائے
میرے ماضی کے زخم بھرنے لگے
آج پھر کوئی بھول کی جائے
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
جہالتوں کے اندھیرے مٹا کے لوٹ آیا
میں، آج ساری کتابیں جلا کے لوٹ آیا
یہ سوچ کر کہ وہ تنہائی ساتھ لائے گا
میں چھت پہ بیٹھے پرندے اڑا کے لوٹ آیا
وہ اب بھی ریل میں بیٹھی سسک رہی ہوگی
میں اپنا ہاتھ ہوا میں ہلا کے لوٹ آیا
وہ چاہتا تھا کہ کاسہ خرید لے میرا
میں اس کے تاج کی قیمت لگا کے لوٹ آیا
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
راحت اندوری نے اپنی غزلوں میں اپنے ذاتی تجربات اور جذبات کی آنچ دے کر ایک نیا رنگ، ایک نیا انداز ایک نیا نمونہ سخن بنا دیا ہے۔۔۔سادگی، شرینی اور الفاظ کا خوبصورت انتخاب ان میں کمال کا نظر آتا ہے ۔۔۔۔۔عمدہ شاعری اور پھر ان کے پڑھنے کا انداز ان کے کہے ہوئے افکار کو چار چاند لگا دیتا تھا ۔۔۔۔۔۔اس حقیقت سے انکار نہیں کیا جاسکتا کہ راحت اندوری اپنے جدید رنگ کے خیالات کے تنوع سے غزل کو ایک نئی زندگی بخشی ۔۔۔اسے نئے نئے موضوعات سے مالامال کیا ۔۔۔۔۔اسے عشق و حسن اور ہوا و ہوس کے دائرے سے نکال کر اس قابل بنایا کہ وہ سیاسی و سماجی، قومی و ملی حالات پر تبصرے ، تعیش و تکبر کی مذمت ،غلامی و محکومی سے نفرت ،حق گوئی اور آزادی سے محبت ،ادب و اخلاق اور تعلیم و تہذیب کا ذکر، صبر و ضبط اور ہمت و استقلال کی ترغیب ، مذہب ، تصوف ، پند و موعظت کا بیان ، ریا کار عابد و زاہد اور شیخ و واعظ پر طنز اس انداز سے کر سکے کہ صداقت و واقعیت ، خلوص و محبّت اور رنگ تغزل قائم رہے ۔۔۔۔

مرے خلوص کی گہرائی سے نہیں ملتے
یہ جھوٹے لوگ ہیں سچائی سے نہیں ملتے
وہ سب سے ملتے ہوئے ہم سے ملنے آتا ہے
ہم اس طرح کسی ہرجائی سے نہیں ملتے
پُرانے زخم ہیں کافی ، شمار کرنے کو
سو، اب کِسی بھی شناسائی سے نہیں ملتے
ہیں ساتھ ساتھ مگر فرق ہے مزاجوں کا
مرے قدم مری پرچھائی سے نہیں ملتے
محبتوں کا سبق دے رہے ہیں دُنیا کو
جو عید اپنے سگے بھائی سے نہیں ملت
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

وہ اک اک بات پہ رونے لگا تھا
سمندر آبرو کھونے لگا تھا
لگے رہتے تھے سب دروازے پھر بھی
میں آنکھیں کھول کر سونے لگا تھا
چُراتا ہوں اب آنکھیں آئینوں سے
خدا کا سامنا ہونے لگا تھا
وہ اب آیئنے دھوتا پھر رہا ہے
اُسے چہروں پہ شک ہونے لگا تھا
مجھے اب دیکھ کر ہنستی ہے دُنیا
میں سب کے سامنے رونے لگا تھا

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ راحت اندوری کی شاعری میں نعتیہ مضامین فراوانی ہے ۔۔۔حضور اکرم صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم کی توصیف و تحسین کا جملہ نقطہ پرکار ہے ۔۔سرکار دو عالم صلی اللہ علیہ و آلہ وسلم کا سراپا مبارک ، ان کی سیرت کے مختلف پہلو ،معجزات کی بہاریں ، بنی نوع انسان پر اان کے ان گنت احسانات ، دنیا کی تزئین و تہذیب میں ان کے لامتناہی کارنامے ، درود وسلام اور آپ صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم کی محبت کی کیفیات ، دوری مدینہ سے پیدا ہونے والی تڑپ اور اس کا سوز و گداز کے عناصر آپ کی شاعری میں جابجا ملتے ہیں ۔۔۔۔۔۔۔

زمزم و کوثر و تسنیم نہیں لکھ سکتا
یا نبی آپ کی تعظیم نہیں لکھ سکتا
میں اگر سات سمندر بھی نچوڑوں راحت
آپ کے نام کی ایک میںم نہیں لکھ سکتا
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
راحت اندوری کہ دل کی تڑپ بے قراری اور اس طرح ہی کیفیت و حالت کا اندازہ کوئی اہل دل ہی کر سکتا ہے ۔۔انہوں نے اپنی سسکتی بلکتی کراتی روح کو نہ مٹنے والی ہوک کو بڑی سچائی سے بیان کیا ہے ۔۔ان کے مخصوص اسلوب، آہنگ ، الفاظ کے برجستہ و موزوں استعمال نے اثر و تاثیر کو دو آتشہ نہیں بلکہ سہ آتشہ کردیا ہے۔۔۔ایک ایک لفظ قلب و روح کا ترجمان ہے ۔۔۔۔۔۔یوں محسوس ہوتا ہے کہ عشق و محبت کی مستیاں پابند آداب ہیں اور وارفتگی میں بھی شعوری صلاحیتیں بیدار ہیں ۔۔۔ان کے نوک قلم سے نکلنے والا ہر شعر آداب نعت کے حصار سے نہیں نکلا، شریعت کی حدود میں مقید رہ کر ہی ذوق نعت کو سلیقہ ملتا ہے اور یہی مقصد حیات ہے ۔۔۔۔راحت اندوری جب اس نعت کو اپنے مخصوص انداز کے ساتھ پڑھتے ہیں تو اس نعت کے ایک ایک شعر سے قلب و روح میں ایک ہلچل مچ جاتی ہے ۔۔۔دل کی دھڑکنیں تیز ہو جاتی ہیں ۔۔۔آنکھیں بھیگ بھیگ جاتی ہیں ۔۔۔حوالہ کے پوری نعت نعت دے رہا ہوں ۔۔کہ اس نعت نے میرے دل کی تاروں کو چھیڑا ہے ۔۔۔اور کملی والے آقا کی محبتوں سے جھولیاں بھر دی ہیں۔

اگر نصیب قریبِ درِ نبی ہو جائے
مِری حیات مِری عُمر سے بڑی ہو جائے

اندھیرے پائوں نہ پھیلا سکیں زمانے میں
درود پڑھیے کہ ہر سمت روشنی ہو جائے

گزرتا کیسے ہے ایک ایک پل مدینے میں
اگر سنانے پہ آئوں تو اِک صدی ہو جائے

درِ حبیب سے ہر بار واپسی کے وقت
دُعا یہ مانگی کہ اک اور حاضری ہو جائے

بنامِ ساقیِ کوثر، بنامِ ختمِ رُسل
شرابِ عشق جو پی لے وہ جنتی ہو جائے

میں "میم" "ح" لکھوں پھر "میم" اور "دال" لکھوں
خدا کرے کہ یونہی ختم زندگی ہو جائے
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
راحت اندوری نے جو کچھ اپنی شاعری میں بیان کیا ہے اس میں کوئی تصنع نہیں ہے ۔۔حضور اکرم صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم سے ان کی سچی عقیدت کا اظہار ہوتا ہے ۔۔
مری حیات ، مری کائنات آنکھوں میں
وہ ذات پاک ہے وہ ذات صفات آنکھوں میں
در حضور کو رکھتا ہوں پتلیوں کی طرح یہ دیکھ
یہ دیکھ رہی ہیں مری نجات آنکھوں میں
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
راحت اندوری کے نعتیہ کلام میں سوز و گداز ،شگفتگی و شیفتگی ، شائستگی اور پختگی موجود ہے ۔۔وہ عشق مصطفی صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم میں ڈوب کر نعتیں لکھتے ہیں ۔۔بلاشبہ ان کا کلام روشنی کا پیکر ہے ۔۔اور نور رفعت سے مزین ہیں ۔۔ ان کی نعت میں عقیدت و شعور کا حسین امتزاج ملتا ہے۔۔سب سے بڑی بات کہ ان کے ہاں یہ عجز و انکسارہے ۔۔۔ بارگاہ در نبی میں ہدیہ عقیدت پیش کرتے ہوئے لکھتے ہیں ۔۔

کچھ دن سے مری سوچ کی گہرائی بڑھ گئی
کچھ دن سے میرے فکر کی اونچائی بڑھ گئی
نعلین جب سے آپ کے دیکھے ہیں خواب میں
محسوس ہو رہا ہے کہ بینائی بڑھ گئی
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
راحت اندوری اپنی ذات میں ایک انجمن تھا ۔۔انسانیت کے وقار اور سر بلندی کی خاطر راحت اندوری نے ایک قلم بہ کف مجاہد کا کردار ادا کیا ۔معاشرے کے قوی ،موقع پرست اور سفاک استحصالی طبقے کی خود غرضی کے خلاف راحت اندوری نے ہمیشہ کُھل کر لکھا اور اس کا دبنگ لہجہ ،منفرد اسلوب اور بلندآواز جبر و استبداد کے پاٹوں میں پِسنے والے قسمت سے محروم طبقے کی ترجمان بن گئی۔اس نے عوامی زندگی کی ایسی حقیقت پسندانہ لفظی مرقع نگاری کی ہے۔۔ جس کا کرشمہ قلب و نظر کو مسخر کر لیتا ہے ۔اس یگانۂ روزگار فاضل کا اُٹھ جانے کی خبر سُن کر دِ ل بیٹھ گیا اور دِل و جاں میں سب آرزوئیں مات کھا کر رہ گئیں۔اللہ کریم' راحت اندوری کو جوارِ رحمت میں جگہ دے ۔جب تک دنیا باقی ہے ،راحت اندوری کی آواز کانوں میں رس گھولتی رہے گی اور یہی پیغام دیتی رہے گی کہ روشنی کا سفر ابھی جاری رکھو کہ منزل ابھی نہیں آ ئی۔

جو آج صاحبِ مسند ہیں کل نہیں ھوں گے
کراۓ دار ہیں ذاتی مکان تُھوڑی ھے
عبید اللہ‎ علیم نے انهی لوگوں کے بارے میں تو کہا تھا ۔۔۔۔

اندر بھی زمیں کے روشنی ہو
مٹی میں چراغ رکھ دیا ہے

(تحریر : ڈاکٹر اظہار احمد گلزار )

م

Comments Print Article Print
 PREVIOUS
NEXT 
About the Author: Dr Izhar Ahmed Gulzar

Read More Articles by Dr Izhar Ahmed Gulzar: 45 Articles with 28447 views »
Currently, no details found about the author. If you are the author of this Article, Please update or create your Profile here >>
18 Aug, 2020 Views: 316

Comments

آپ کی رائے