خود ساختہ ترجمانوں کے نام

(Qadir Khan, Lahore)

ریاست کے چار ستونوں میں سے ایک میں بھی دارڑ پڑ جائے تو پوری عمارت خطرے میں آجاتی ہے۔بنیادی طور پر چار ستونوں کو ایک دوسرے کے ساتھ چلنے ، اعتماد سازی اور مملکت کی بہتری کے لئے ایک صفحے پر اکھٹا ہونے کی ضرورت پر زور دیا جاتا ہے۔ تاہم گذشتہ کئی دنوں سے غیر تعمیری بحث مباحثوں اور ’ انکشافات ‘ کی نئی روش کا آغاز ہوا۔ باہمی اختلافات سے نقصان وطن عزیز اورپچانویفیصد کمزور طبقے کوہی ہوتاہے۔ بعض عناصر کی جانب سے سلامتی امور پر اِن کیمرہ بریفنگ کا اِخفا اور بے معنی نظریہ کو فروغ دینا اخلاقی اقدار کی انحطاط پذیری کے مترادف قرار دیا جارہا ہے۔

عالمی ذرائع ابلاغ اور ملک دشمن عناصر کے ہاتھ میں ڈگڈگیاں آگئی ہیں ،جسے بجا بجا کرناچ رہے ہیں، ہم بخوبی جانتے ہیں کہ مسلح افواج ہر سیاسی بیان پر ردعمل نہیں دے دیتی ، اگر آئی ایس پی آر ہر سیاست دان کے بیانات پر ردعمل دینا شروع کردے، تو اس سے واضح ریاستی تقسیم کا تاثر ابھرے گا ۔ ناقدین ریاستی اداروں پر انگلیاں اٹھاتے لیکن جب تک کوئی مسند ِ اختیار و اقتدار پر ہو ، اس پر سخت ردعمل دینے سے گریز کرتے ہیں، یہ وتیرہ بن چکاکہ جب بھی کوئی صاحب اختیار یا اقتدار اپنے منصب سے رخصت ہوتا تو الزامات کا پنڈورا بکس کھل جاتا ہے۔ جواباََ الیکٹرونک و ڈیجیٹل میڈیا میں قیاس آرائیوں پر مبنی مباحثے عروج پر پہنچ جاتے ہیں ۔ جس کا کبھی حاصل کبھی مثبت نہیں رہا ۔

سب اہم کردار میڈیا کا ہے۔ سیلف سنسر شپ پالیسی کے باوجود کسی بھی سیاسی شخصیت کو صرف اس وجہ سے اہمیت دینا کہ اُس کے شگوفوں اور تُکے لگانے سے ریٹنگ بڑھے، تو اسے صحافتی اقدار کے منافی مانا جاتاہے ، صحافت مقدس ترین خدمات ہے ، اسے محض اس لئے پرگندا کرنا ،کہ کسی سیاسی شخصیت کو دیکھا اور سُنا ، اس لئے زیادہ جارہا ہے کہ وہ ایک سوچے سمجھے منصوبے کے تحت سنسنی پیدا کرکے گفتگو کے کئی پیرائے بڑے عامیانہ انداز میں بیا ن کرتا ہے۔ کسی سیاسی جماعت کے رہنما یا قائد کے لئے ذومعنی غیر اخلاقی لفظوں کا انتخاب ، کھلے ڈھکے لفظوں میں ریاستی اداروں و غیر جانب دار محکموں کا خود ساختہ ترجمان بن کر ’ نادان دوست ‘‘ کا کردار ادا کررہا ہے۔

عجیب وطیرہ بن چکا ہے کہ حکومتی ترجمانوں کی بڑی معقول تعداد موجودہے ۔ وزرا ء ، مشیر، معاون خصوصی وغیرہ اس کے علاوہ ہیں ، عوام ان کی وزارت کے بابت جاننا چاہتی ہے کہ کیا کھویا کیا پایا، سمجھ ہی نہیں پاتے کہ دفاعی امور کا وزیر، مواصلات کے محکمے میں زیادہ مصروف ہے یا وزیر مواصلات دفاعی وزرات میں ۔ اسی طرح خارجہ امور میں ریلوے کا انجن فیل ہوجاتا ہے اور تمام حدود و قیود توڑتا رہتا ہے، جب بات سلامتی امور کی جائے تو خودنمائی کا جو عالم ہے اس سے کوئی ناواقف نہیں ۔ الیکٹرونک میڈیا کو اپنی ایک ایس او پیز بنانے کی ضرورت ہے ۔ دیکھنے میں آیا ہے کہ وزیرتعلیم سے صحت کے امور پر مباحثہ تو بلدیات کے موضوع پر وزیرتعلیم جواب دے رہے ہوتے ہیں، قریباََ تمام وفاقی و صوبائی وزراتوں کا یہی حال ہے ، یعنی آوا کا آوا ہی بگڑا ہوا ، کہا جاسکتا ہے۔ وزیراعظم کی جانب سے ہر شعبے و محکمے کے مشیر و ترجمان بھی مقرر کئے گئے ہیں ، لیکن الیکٹرونک میڈیا کی ترجیحات سمجھنے سے قاصر ہیں کہ ایک ریلوے کی وزیر سے اس کی وزرات میں کھربوں روپے کے نقصان کے بجائے دیگر غیر متعلقہ سوالات پوچھے جاتے ہیں۔

ریاست کے اہم ستون صحافت کے زبوں حالی و ترجیحات کے حوالے سے انہیں اخبارات کی ترتیب و نظام و انصرام سے استفادہ کرنا چاہیے ۔ اگر کوئی بھی سیاسی شخصیت یا جماعت اپنے مخالفین کے خلاف غیر اخلاقی و عامیانہ گفتگو کا استعمال کرتی ہے تو یہ ان فرائض میں ہے کہ ناظرین کو ایسے لب و لہجے اور طرز بیان سے محفوظ رکھیں۔ معاشرتی گراؤٹ کی روک تھام کے لئے ذرائع ابلاغ کو اپنا مثبت کردار ادا کرنا ہوگا ۔ دوم پیمرکو ایسے بیانات و قیاس آرائیوں کا نوٹس لینا چاہیے جس میں ریاستی اداروں و پارلیمنٹ کی تضحیک ہو رہی ہو اور ایسی گفتگو جس سے معاشرے میں انتشار و افراتفری پھیلتی ہوں ، نشر کرنے میں احتیاط سے کام لینے کی ضرورت ہے۔

قانون نافذ کرنے والے و حساس ادارے ملکی سلامتی و عوام کی بقا کی ضامن ہیں ، ان کی ذمے داریاں سب سے زیادہ ہیں کیونکہ انہیں داخلی و خارجی محاذ کے ساتھ ساتھ وطن عزیز کی نظریاتی و سرحدی حدود کا تحفظ کرنا ہوتا ہے۔ ملک دشمن عناصر ، ممالک اور صوبائیت ، قوم پرستی ،لسانیت ، فرقہ واریت کے ناموں پر قوم واحدہ کو گروہ در گروہ کرنے والوں کا مقابلہ بھی کرنا ہوتا ہے۔ دنیا کی جدید ترین افواج میں اپنی مسلم حیثیت کو بھی قد آور رکھنا قومی سلامتی کے اداروں کے فرائض منصبی میں شامل ہیں، انہیں خصوصی طور پر ایسے نادان دوستوں کو شٹ اپ کال ضرور دینی چاہیے جو اپنی سیاسی پوائنٹ اسکورنگ کے لئے مسلح افواج کا مورال گرا رہے ہیں۔ جس قسم کے حالات کا سامنا اس وقت ملک و قوم کو ہے اس صورتحال میں عدلیہ کا کردار بھی ماضی کے مقابلے میں انتہائی ذمے دارنہ ہوچکا ہے ۔ عدالتی اصلاحات کو نچلی سطح تک عملی طور پر نافذ کرنا اور تفتیش کرنے والوں اداروں کے لئے ایک مربوط ؒلائحہ عمل کی فراہمی سے عدلیہ پر عوام کا اعتماد بحال ہوسکتا ہے۔

ریاست کا سب اہم ستون پارلیمنٹ ہے ، جہاں قانون سازی و عوامی فلاح ِ بہبود کے علاوہ ملکی نظام و انصرام چلانے کی اہلیت و اپوزیشن سے لاکھ اختلا ف کے باوجود مشترکہ معاملات پر مشاورتی عمل کو اہمیت دینا ، جمہوری اقدار کی حقیقی روح کو فروغ دے سکتا ہے ، گو کہ موجودہ جمہوری نظام پر کئی طبقات کے تحفظات کے باوجود ، اس عبوری دور میں شوریٰ کا مناسب پلیٹ فارم قرار دیا جاسکتا ہے اگر عوام کی حقیقی نمائندگی ہو،نیز اہل و خصوصی شعبوں میں ماہر شخصیات سیاسی و مذہبی جماعتوں کی ترجیح ہوں ۔ اظہار رائے کا عمل ہر سیاسی جماعت میں مقدم ہونا چاہے ، سیاست کی نرسریوں کی آبیاری کے لئے برداشت اور مینڈیٹ کو تسلیم کرنے کے رواج کو فروغ دینا وقت کی اہم ضرورت ہے۔ سیاسی شخصیات چاہیے ان کا تجربہ چار دہائیاں ہوں یا چار برس ، انہیں اپنے بیانیہ میں اعتدال پسندی کی راہ اپنانا ہوگی، ریاستی اداروں پر بلا جواز تنقید یا بے سبب لب کشائی اخلاقیات کے منافی تصور کیا جائے تو یہ سب کے حق میں بہتر ہوگا۔
 

Comments Print Article Print
 PREVIOUS
NEXT 
About the Author: Qadir Khan

Read More Articles by Qadir Khan: 693 Articles with 269126 views »
Currently, no details found about the author. If you are the author of this Article, Please update or create your Profile here >>
02 Oct, 2020 Views: 98

Comments

آپ کی رائے