حکومت اور اپوزیشن میں مذاکرات !

(Ghulam Ullah Kiyani, Islamabad)

حکمران جماعت پاکستان تحریک انصاف (پی ٹی آئی) اپوزیشن کے ہر بیانیہ کو ریاست مخالف بیانیئے کے طور پر پیش کر رہی ہے۔ حکومت روزانہ کی بنیاد پر ہرمحاذ پر اپوزیشن کے اسی ریاست مخالف بیانئے کا پوری طاقت سے مقابلہ کرنے اور اپوزیشن اراکین پر کرپشن کیسز کو سامنے لانے کا فیصلہ کرنے کا عندیہ دیتی ہے۔اسی تناظر میں گزشتہ روز بھی وزیراعظم عمران خان نے ٹی وی چینلز کے ٹاک شو ز اور پارٹی لابنگ میں مصروف پارٹی کی نمائندگی کرنے والے پی ٹی آئی ترجمانوں کے اجلاس کی صدارت کرتے ہوئے ایک بار پھر اعلان کیاکہ ان کی حکومت اپوزیشنکی حکومت مخالف مہم یا کسی دباؤ کے آگے جھکے گی نہیں اور نہ ہی وہ کرپشن کے الزامات کا سامنا کرنے والے اپوزیشن رہنماؤں کو کوئی رعایتدے گی۔اس اجلاس میں بھی شرکا نے مسلم لیگ (ن) کے قائد میاں محمد نواز شریف اور سابق اسپیکر قومی اسمبلی سردار ایاز صادق کے حالیہ بیانات کو زیر بحث لایا اور انہیں غیرذمہ دارانہ قرار دیا۔دوسری طرٖف مسلم لیگ (ن) کے رہنماواخح کر رہے ہیں کہ سابق اسپیکر نے وزیرخارجہ شاہ محمود قریشی سے متعلق بات کی تھی، یہ بھی کہ اس گفتگو کا نشانہ کوئی ادارہ ہر گز نہ تھا۔اجلاس کے شرکاء ایاز صادق کے خلاگ بغاوت کا مقدمہ قائم کرنے کا مطالبہ کرتے رہے۔وزیراعظم کی زیر صدارت اس اجلاس کی خاص بات یہ بھی تھی کہ اجلاس کے بعض شرکاء نے مختلف حلقوں کی جانب سے سیاسی ڈائیلاگ اور بات چیت کی ضرورت سے متعلقپیش کئے جانے والے بیانات اور تجاویز پر بھی تبادلہ خیال کیا ۔بعض نے کہا کہ حکومت بھی اس بات چیت کے مطالبے پر غور کرے۔جس پر وزیراعظم سیاسی روابط اور رواداری کی تجاویز پر ناراض نہ ہوئے بلکہ کہا کہ ایسا ہو مگر یہ ملک اور ریاست کے وسیع تر مفاد کو نقصان پہنچائے بغیر یا اس کی قیمت پر نہ ہو۔عمران خان اس حق میں تھے کہ ان کے ترجمان ریاستی اداروں کو مزید مضبوط کرنے اور ان پر اپوزیشن کے حملے کو ناکام بنانے کے لئے سرگرم کردار ادا کریں۔

کیا موجودہ صورتحال میں حکومت اور اپوزیشن کے درمیان ڈائیلاگ ناگزیر ہے۔ گفت و شنید کس کے مفاد میں ہے اور اس کا کسے کوئی نقصان ہو سکتا ہے۔ اس بارے میں مختلف مبصرین اپنی بساط کے مطابق تبصرہ کر رہے ہیں۔ اس سلسلے میں ڈاکٹر ملیحہ لودھی جو کہ ملک کی ایک نامور ایڈیٹر اور سابق سفیر رہی ہیں ، ان کا موقف دلائل کے ساتھ سامنے آیا ہے۔ انہیں خدشہ ہے کہ پاکستان اس وقت تیزی سے بدلتی سیاسی صورتحال سے دوچار ہے، جس کے سبب ملک میں عدم استحکام کے بڑھنے کا خدشہ ہے، اور اگر ایسا ہوتا ہے تو اس کے بہت خطرناک نتائج نکل سکتے ہیں۔اس سیاسی صورتحال کے کم از کم 5 پہلو ایسے ہیں جو ایک ایسے وقت میں مستقبل کے حوالے سے غیر یقینی پیدا کررہے ہیں جب ملک کو اندرونی اور بیرونی چلینجز کا سامنا ہے۔ ان تمام پہلوؤں کے مابین تعلق نے صورتحال کو مزید مخدوش بنا دیا ہے۔اس کا پہلا پہلو تو یہ ہے کہ حکومت اور حزبِ اختلاف میں جاری کشیدگی اور لفظی جنگ کے ختم ہونے کا کوئی امکان نظر نہیں آرہا۔ ایک دوسرے پر لگائے جانے والے الزامات سیاسی ماحول کو مزید آلودہ کررہے ہیں۔ پریس کانفرنسوں میں اپنے سیاسی مخالفین پر گھناؤنے الزامات لگائے جا رہے ہیں اور پارلیمانی کارروائی کے دوران ایک دوسرے کو غدار کہنے اور جارحانہ حرکات کا ارتکاب کیا جارہا ہے۔دوسرا پہلو یہ ہے کہ حکومتی طرزِ عمل نے حزبِ اختلاف کے اتحاد کو مزید مستحکم کردیا ہے۔ پاکستان ڈیموکریٹک موومنٹ (پی ڈی ایم) میں شامل 11 جماعتیں وسیع عوامی نمائندگی کے ساتھ حکومت کے خلاف صف آرا ہیں، یعنی اب صورتحال عمران خان بمقابلہ دیگر تمام کی ہوگئی ہے۔ پی ٹی آئی حکومت کا سیاسی چیلنج اس لیے کمزور ہورہا ہے کیونکہ حزبِ اختلاف سے تنازع میں اس کے اتحادی خاموش ہیں اور وہ خاطر خواہ حمایت نہیں کررہے۔حالات کا تیسرا اور نسبتاً دوسرے پہلو سے قریب ترین پہلو یہ ہے کہ ملکی سیاست دو انتہاؤں میں تقسیم ہوگئی ہے اور اس میں سے اعتدال کا عنصر ختم ہوگیا ہے۔ سیاسی مخالفین کے درمیان اعتماد کا فقدان اس حد تک بڑھ چکا ہے کہ قومی ضرورت اور مشترکہ مفاد کے حامل معاملات پر بھی آپس میں بہت کم ہی تعاون کیا جاتا ہے۔چوتھی بات یہ ہے کہ اسٹیبلشمنٹ کی اس تمام معاملے سے دُور رہنے کی خواہش کے باوجود اسے اس سیاسی کھیل میں گھسیٹا جا رہا ہے۔ حزبِ اختلاف کی حکمتِ عملی یہ ہے کہ وہ سیاست میں اسٹیبلشمنٹ کی دخل اندازی کو بڑھا چڑھا کر بیان کرے۔ دوسری طرف حکومت بھی خود کو فوج کی حمایت حاصل ہونے کے دعوے کر کے غیر ارادی طور پر حزبِ اختلاف کا ہی کام کر رہی ہے۔ حکومت کے اس عمل سے اسٹیبلشمنٹ سیاسی رسہ کشی اور میڈیا میں ہونے والے مباحث کا مرکز بن گئی ہے۔موجودہ سیاسی صورتحال کا پانچواں اور سب سے اہم پہلو یہ ہے کہ ملک میں بڑھتی ہوئی کشیدگی اور سیاسی درجہ حرارت کی وجہ سے ملک کو درپیش معاشی چیلنجز سے توجہ ہٹ رہی ہے۔ سیاسی عدم استحکام معاشی ترقی کا سب سے بڑا دشمن ہوتا ہے اور خاص طور پر ایسے وقت میں جب ملک پہلے ہی کورونا کی وجہ سے معاشی دباؤ کا شکار ہے۔ جب مہنگائی نے عوام کا جینا مشکل کردیا ہے، ایسی صورتحال میں حکومت کی توجہ عوام کو درپیش مسائل کے حل کے بجائے سیاسی رسہ کشی پر ہو تو حکومت پر سے عوام کا اعتماد اٹھ جاتا ہے۔ان پہلوؤں پر غور کرنے کے بعد ہمارے سامنے ایک ایسی صورتحال سامنے آتی ہے جو مستقبل میں سب کے قابو سے باہر نکل سکتی ہے، اور جو کسی کے بھی مفاد میں نہیں ہوگی۔مذکورہ پہلوؤں نے پہلے ہی حالات کو سب کے لیے ناقابلِ برادشت بنا دیا ہے۔ آخر ایک ایسی حکومت کس طرح حزبِ اختلاف سے کسی قسم کی مفاہمت کو خارج از امکان قرار دے سکتی ہے جس کے پاس نہ ہی پارلیمان میں واضح اکثریت ہو اور نہ ہی اس کے پاس ایک اہم صوبے کا کنٹرول ہو؟ آخر حزبِ اختلاف اپنی تحریک کو کتنا عرصہ جاری رکھ سکتی ہے؟ کتنے عرصے تک حکومت اور اپوزیشن عوامی حمایت کھوئے بغیر عوامی مسائل کو نظر انداز کرسکتے ہیں؟ اور آخر کب تک اسٹیبلشمنٹ خود کو اس سیاسی کھیل سے دُور رکھنے کا بہانہ کرسکتی ہے جس میں اسے باربار گھسیٹا جا رہا ہے۔

بعض دیگر مبصرین کی طرح ڈاکٹر لودھی بھی سمجھتی ہیں کہ ان سوالات سے 3 ممکنہ منظرنامے تشکیل پارہے ہیں۔پہلا منظرنامہ یہ کہ حالات میں کوئی تبدیلی واقع نہ ہو۔ سیاسی کشیدگی، تصادم، پارلیمان کی کارروائی میں رکاوٹوں اور الفاظ کی جنگ ایسے ہی جاری رہے۔ ایسے میں اگر پی ڈی ایم نے واقعی اسمبلیوں سے مستعفی ہونے کی دھمکی پر عمل کرلیا تو ملک سیاسی بحران اور عدم استحکام کا شکار ہوجائے گا۔اس منظرنامے میں دیکھا جائے تو سیاسی جماعتوں کی توجہ معاشی اور سیکیورٹی صورتحال سے ہٹ جائے گی۔ یہ دونوں معاملات ہی اپنے حل کے لیے قومی اتحاد کے متقاضی ہیں اور ملک میں بڑھتی ہوئی سیاسی دُوریاں اس راہ میں حائل سب سے بڑی رکاوٹ ہیں۔ اس منظر کے آخر میں ملک ایک بحران سے نکل کر دوسرے بحران کا شکار ہوتا ہوا نظر آتا ہے، اور اس دوران ملک کو درپیش مسائل حل ہوتے ہوئے نظر نہیں ۔دوسرے منظرنامے میں حکومت اپوزیشن پر قابو پانے کے لیے پابندیوں کا سہارا لیتی نظر آتی ہے اور اس ضمن میں میڈیا پر بھی مزید غیر اعلانیہ پابندیاں عائد ہوسکتی ہیں۔ اس کے ساتھ ہی تنازعات میں گھرے ہوئے احتساب کے عمل میں تیزی آسکتی ہے۔ لیکن اس قسم کے جابرانہ اقدامات کا ہونا مشکل نظر آتا ہے کیونکہ ایک جمہوری حکومت کو اس کی بھاری قیمت ادا کرنی پڑتی ہے۔ ویسے بھی اگر ہم پاکستان کی سیاسی تاریخ پر نظر ڈالیں تو معلوم ہوتا ہے کہ اس قسم کی پابندیوں سے ملک مزید سیاسی انتشار کا شکار ہوا ہے۔تیسرا منظر نامہ یہ تشکیل پاتا ہے کہ حکومت اور اپوزیشن دونوں سیاسی نظام کو لاحق خطرات کے پیش نظر اپنے مابین جاری کشیدگی کو کم کریں اور مذاکرات کی میز پر اپنے اختلافات کو حل کرلیں۔ اس مقصد کے حصول کی خاطر اسٹیبلشمنٹ بھی اپنا کردار ادا کرے۔ سیاستدانوں کے مابین جاری چپقلش کو دیکھتے ہوئے شاید یہ سمجھنا خوش گمانی ہی ہوگی کہ وہ کسی قومی معاہدے پر تیار ہوں گے۔ بہرحال مستقبل کے لیے اصول اور ضابطوں کا تعین ہوسکتا ہے اور ہونا بھی چاہیے۔ ساتھ ہی ملک کو درپیش دفاعی اور معاشی چیلنجز کے حل کے لیے بھی اتفاق رائے ہونا چاہیے اور اسے تمام اداروں کی حمایت بھی حاصل ہونی چاہیے۔پہلے اور دوسرے منظرنامے میں ملک کی سالمیت اور اتحاد کو درپیش خطرات کی وجہ سے حکومت اور حزبِ اختلاف کے رہنماؤں کو چاہیے کہ وہ بامقصد مذاکرات پر سنجیدگی سے غور کریں۔ ظاہر ہے کہ یہ قدم حکومت کی طرف سے اٹھایا جانا چاہیے کیونکہ حزبِ اختلاف کے اکثر رہنما پہلے ہی مثبت رویہ اختیار کیے ہوئے ہیں۔ ان مذاکرات میں ایک باعمل سیاسی نظام اور مستقبل کے چیلنجز کو دیکھتے ہوئے ایک مؤثر قومی لائحہ عمل بھی ترتیب دینے کی ضرورت ہے۔ کیونکہ یہ وہ کم از کم امید ہے جو پاکستان کے عوام اپنے سیاستدانوں سے رکھتے ہیں۔

کرپشن میں اگر حکومت کے لوگ ملوث ہیں تو ان کے خلاف بھی اپوزیشن کے کرپٹ فرد سے بھی سخت کارروائی ہونی چاہیئے۔کیوں کہ اس نے عمران خان کے مشن کو براہ راست للکارا ہے۔ملک کے وسیع تر مفاد کے تناظر میں عوام کا مفاد بھی موجود رہے۔ عوام کو خوشحالی اور ترقی درکار ہے۔ مہنگائی اور بیروزگاری سے چھٹکارا ضرورت ہے۔ امن کا ماحول چاہیئے۔ اقتدار کی جنگ کے بجائے ملک کو ترقی یافتہ ممالک کی صف میں لاکھڑا کرنے والی صاحب بصیرت قیادت کی ضرورت ہے۔ اگر حکومت اور اپوزیشن باہم دست وگریبان رہی تو کسے فائدہ ہو گا۔ سوکھی کے ساتھ گھیلی بھی جلتی ہے۔ ڈائیلاگ اور بات چیت کا آپشن کھلا رہنا چاہیئے۔ وزیراعظم کا حکومتی ترجمانوں سے خطاب اور اس اجلاس میں پیش کردہ تجویز کو دیکھا جائے تو ترجمان سیاہ کو سفید اور رات کو دن کے طور پر پیش کرنے کی ترغیب پاتے ہیں ۔اس میں اصلاح احوال کی کمی محسوس کی جاتی ہے۔ حکومت فراخدلی کا مطاہرہ کرتی ہے۔ حکومتیں اپنے شہریوں سے کبھی انتقام نہیں لیتیں بلکہ اصلاح کی طرٖ ف توجہ وترغیب دیتی ہیں۔اپوزیشن بھی ملک اور ریاست کو کبھی داؤ پر نہیں لگاتی۔ آج بھی اسی کی ضرورت ہے۔
 

Comments Print Article Print
 PREVIOUS
NEXT 
About the Author: Ghulamullah Kyani

Read More Articles by Ghulamullah Kyani: 575 Articles with 220726 views »
Simple and Clear, Friendly, Love humanity....Helpful...Trying to become a responsible citizen..... View More
07 Nov, 2020 Views: 226

Comments

آپ کی رائے