ملازمِ باکمال اور ماں کے وفادار

(M.Qasim Saleem , Lahore)
اگر حکومتی ادارہ پولیس سے مصالحت درکار ہے تو ان کو اسی پر معمور کردیں تاکہ باقی رعایا کو بھی اپنے مسائل حل کروانے کے لئے ادارہ میسر آجائے ورنہ سفارش اور رشوت کے بغیر تو عام انسان کی ایف آئی آر کی درخواست ہی داخل دفتر ہو جاتی ہے

سندھ ہو یا بلوچستان یاہوپنجاب جا بجا ریاست باپ کی حیثیت رکھتی ہےاور حکومت ماں کی سوچ اور اکثرگھر میں ماں سے کسی نا کسی بات پر کسی اولاد کوماں سے گلہ ہوتاہی ہےاورہونے بھی چاہیےاور ماں کو بتانا بھی چاہیے یہ ایک فطری عمل ہے کہ انسان جس سے محبت کرتا ہے اپنا دکھ بھی اسی کو بتاتا ہے یہ الگ بات ہےہمارے معاشرے میں ماں سے شکوہ کو ماں کی توہین گردانا جاتا ہے اورماں اپنے رعب و دبدبے کو قائم رکھنے کی خاطر کسی ایک کو بلا وجہ مار کر اپنے اقتدار کو قائم رکھتی ہے اور ایسی صورت حال مڈل کلاس خاندانوں یا غریب گھر کی ماں کے ساتھ ضرور ہوتی ہے جو عام طور پر مجبوری میں اپنی ہی اولاد کے ساتھ ناانصافی بھی کر لیتی ہے اور اپنی کی نا انصافی کو جانتی بھی ہے اور کسی نا کسی طرح سے اُس کی بھرپائی کی کوشیش بھی کرتی ہے لیکن مجبوری ایسا نا کرنے دیتی ہے اور ہماری حکومت جو ریاست مدینہ کا نعرہ لگا کر مغربی سوچ اور اندازِ حکمرانی کو ہم سے بہتر سمجھتی ہے اور اس کو ہماری ریاست پر نافظ کرنے کے لیے ریاست مدینہ کا نعرہ لگا کر عوام کو بے وقوف بنانے کی کوشیش اور تجربہ کر رہے ہیں اس ریاست مدینہ کے شاہ کی سوچ اورارادوں کی عکاس اور منہ بولتی تصویر ہےموجودہ نظام کی یہ حالت جوماضی میں بھی خامیوں سے بھرا پڑا تھا اورکسی بھی حکومت کے لئےپاکستان کے شہریوں کوآئینی حق سے مرحوم کرنا کچھ مشکل تو تھا مگرنا ممکن نہیں تھا مگر اب نشانہ بنانااور قانون کے طابع کرنے کی غرض سے کس شہری کے ساتھ نا روا ماورائے قانون سلوک کرنا کا جواز صرف قانون کی بالا دستی ہے پھر ایسا کرنے کے لئے خواہ خون بہانا پڑ جائے یا کسی کی چادر اور چار دیواری کا تقدس پامال کرنا پڑئے پولیس مقابلہ کرنا مقصود ہو یا اغوا کرکے اپنی مرضی کا بیان پر دستخط کروانا مقصود ہو توبہت آسان ہوگیا ہے اور ایسا کرنےکے لئے قانون کے محافظوں کے لئے قانون کے تابع لانے کی تاویل کافی ہےاوراب یہ کام انتہائی آسان ہے اگرآئین پاکستان پرلگی قانون کی قدغن نا ہوتی تو شائید مشکل ہوتا لیکن آئین پاکستان کو 85فی صدعوام جو نا تو جانتی ہے اور نا ہی اُن کی زندگی سے اس کا کوئی واسطہ ہے اوراس لفظ قانون جس کی تشریح ہرحکومتی مشیرخود سے کرتے ہے اورقانون جو حکومتی حواریوں کے قلم سے لکھی تحریر کا نام سمجھا جاتا ہے اور بسا اوقات تو تحریرکے بغیر ہی کام چلتا ہے اور کبھی کبھی تحریر بعد میں آتی ہے اور تکمیل پہلے ہی ہو جاتی ہے اور ایسے شاہ سے وفادری نبھانے کے لئے ضروری سمجھا جاتا ہےاوراگر ضروری نا بھی سمجھا جائے توہمارے نظام میں نوکری بچانے اور اپنے بچوں کا مستقبل محفوظ بنانے کے لئے انتہائی اہم ہے ایسے میں ملازمِ باکمال اور ماں کے وفادار کو دیکھنا یہ ضروری ہے کہ دو فریقین میں سے پلا کس کا بھاری ہے اور سفارش کس کی ہے اگر اس میں کوئی غلطی ہو جائے تو جس قدر شاباش کی امید ہوتی ہے اسی قدر سزا بھی تجویز ہو سکتی ہے دار اصل اس وقت قارئین کی توجہ گزیشتہ دنوں ہو نے والےلائق تحسین خبرکی جانب دلوانا چاہتا ہوں قطع نظراس کے کہ قانون کہتا کیا ہے اور ہمارے معاشرے میں ہوتا کیا ہے لیکن جوخبرریاست مدینہ کے نشریاتی اداروں نے عکس بند کر کے عوام کے سامنے پیش کی کے مطابق وہ کچھ اس طرح ہے کہ ایک مظلوم خاتون عائشہ بی بی نے وزیراعظم پاکستان کو لائیو کال کرروتے روتے بتایا کے اپنےنجی سوسائٹی میں موجود گھر کو ایک حاضر ڈیوٹی پولیس آفیسر ذیشان اصغر کےبھائی عمران اصغرکوکرائے پردیا اوردسمبر 2020 میں ایف ای آردرج کروائی گئی تھی اورسابقہ سی سی پی او اس کا قبضہ مدعییہ کو دلوا چکے تھے مگر مسلسل ادارے کی گولی اور گیرے سے تنگ آئی خاتون نےریاست مدینہ کے شاہ کواچانک کال کی اورسربراہ پنجاب پولیس نے ایک ہی دن میں پانچ لاکھ میں ڈیل فائنل کردی خاتون نے مقدمات واپس لے لئے اورہرقسم کی کاروائی سے دستبرداری ہو گئی جبکہ سول مقدمہ زیر سماعت عدالت ابھی موجود تھااب اس میں میں اپنی رائے شامل کروں وہ بھی حامد میرصاحب جیسے با رعب صحافی پر لگی قدغن کے بعد صرف اتنا قارئین کو بیان کرنا چاہتا ہوں کہ حاکمیت سے پہلے اور انصاف کا نام لینے والوں نے کس چیز کا نام انصاف رکھا ہوا ہے اگر حکومتی ادارہ پولیس سے مصالحت درکار ہے تو ان کو اسی پر معمور کردیں تاکہ باقی رعایا کو بھی اپنے مسائل حل کروانے کے لئے ادارہ میسر آجائے ورنہ سفارش اور رشوت کے بغیر تو عام انسان کی ایف آئی آر کی درخواست ہی داخل دفتر ہو جاتی ہے اور اگر ایف آی آر درج ہو بھی جائے تو ملظمان دندانتے پھرتے ہیں اور مددعی چکرحصول گرفتاری اور تفتیش کے چکر میں پڑئے رہتے ہیں افسوس قانون کے محافظوں کو اس معاملے کو نمٹانے کی شاباش وصول کرتے شرم ضرور آنی چاہیے کہ پولیس میں اصلاحات اگر یہ ہیں تو اس سے بہتر نیا ادارہ بنا دیا جائے کیونکہ اسی دن جناب نے قوم کو بتایا تھا کہ پرانے نظام کو درست کرنے میں وقت درکار ہے نسبتاً نیا ادارہ بنانا آسان ہوتا ہے ویسے میں ایسے ہی الفاظ نکمے مرمت ساز سے بار ہا مرتبہ سن چکا ہوں اور کئی اعلی ڈگری یافتہ ڈاکٹرز سے بھی جو مریض کو ٹھیک کرنے کی پوری فیس بلکے زیادہ فیس بھی لیتے ہیں اور تکلیف رفاع نا ہونے پرذمہ داری قبول کرنے کی بجائےاس سے ہی ملتی جلتی باتیں بتا کر مریض کو تسلی دیتے ہیں۔
 

Comments Print Article Print
 PREVIOUS
NEXT 
About the Author: M.Qasim Saleem

Read More Articles by M.Qasim Saleem : 9 Articles with 1683 views »
Currently, no details found about the author. If you are the author of this Article, Please update or create your Profile here >>
01 Jun, 2021 Views: 249

Comments

آپ کی رائے