چلیں اچھاہوا قائم علی شاہ تو رخصت ہوئے!!

(Muhammad Azam Azim Azam, Karachi)
پی پی پی کا قائم علی شاہ کی تبدیلی کا فیصلہ دیر سے ہوا مگرہواتو صحیح .. جب تک سندھ حکومت دبئی میں بیٹھی اپنی غیر انتظامی سیاسی قیادت کے مشوروں پر چلتی رہے گی تو نیا وزیراعلیٰ بھی قائم علی شاہ جیسا ڈمی وزیراعلیٰ بن جائے گا....
ابھی جبکہ حکومت کو ختم ہونے میں صرف 22ماہ رہ گئے ہیں ایسے میں گزشتہ اتوار کودُبئی میں پیپلز پارٹی کے چیئرمین بلاول زرداری اور شریک چیئرمین آصف علی زرداری اور سندھ سمیت مُلک کے دوسرے صوبوں سے بھی دُبئی جانے والے پی پی پی کے سینیئررہنماؤں اور جیالوں کے ہونے والے ہنگامی اجلاس میں باہم صلح مشوروں سے وزیراعلیٰ سندھ سید قائم علی شاہ کی فوری تبدیلی سمیت موجودہ سندھ کابینہ کے بعض وزراء کو سندھ کابینہ میں شامل کئے جانے جبکہ بعض وزراء کو کابینہ سے نکالے جانے کابھی حتمی فیصلہ کیا گیا ۔

یوں پچھلے دِنوں دبئی میں ہونے والے فیصلوں کی روشنی میں بلاول ہاؤس کراچی میں بلاول زرداری کی زیرقیادت جاری اجلاس میں سیدقائم علی شاہ نے اپنا استعفیٰ اپنی پارٹی کے چیئرمین بلاول زرداری کو پیش کردیااوراپنے عہدے سے سبکدوش ہوگئے ہیں اِس سے قبل قائم علی شاہ اور بلاول زرداری میں ون ٹوون ملاقات بھی ہوئی جس کے بعد قائم علی شاہ کا یہ کہناتھا کہ قیادت نے جو فیصلہ کیا ہے اِسے تسلیم کرتاہوں میں کل بھی پارٹی کا کارکن اور جیالاتھااور آج بھی ہوں۔

اگرچہ اِس سے انکار نہیں کہ سیدقائم علی شاہ کی تبدیلی کے حوالے سے ہونے والے فیصلے پر معتبر ذرائع کا خام اور قوی خیال یہ ہے کہ قائم علی شاہ کی تبدیلی کا فیصلہ(با اختیارآصف علی زرداری اور ادی فریال تالپورکے ہوتے ہوئے بے اختیار)پیپلزپارٹی کے چیئرمین بلاول زرداری کی خصوصی خواہش پر کیا گیاہے جن کا خیال ہے کہ اپنی پارٹی کے اِن بزرگ رہنماکو اِن کے وزیراعلیٰ سندھ کے عہدے سے تبدیل کردیاجائے اور اِن کی جگہہ کسی جوان جیالے کو لایاجائے تو سندھ کے بہت سے سیاسی مسائل حل ہوسکتے ہیں یوں بلاول زرداری کی بے پناہ خواہش اور تجویز پر پی پی پی کی دُبئی میں بیٹھی سندھ حکومت کے معاملے کو ہنڈل کرنے والی غیر انتظامی مگرسیاسی قیادت یعنی کہ آصف علی زرداری اور فریال تالپور نے اپنے دل پر پتھر رکھ کر وزیراعلیٰ سندھ سید قائم علی شاہ کو تبدیل کرنے کا فوری فیصلہ کیا جس کے بعد نئے وزیراعلی ٰ سندھ کی حیثیت سے سب سے مضبوط نام جو سامنے آیا وہ مرادعلی شاہ کا نام ہے حالانکہ پارٹی میں اِن سے بھی زیادہ سینیئراور با صلاحیت و بااعتماد کارکنا ن موجود ہیں جن کے نام پرپارٹی کے بہت سے سینیئررہنماؤں کے تحفظات سامنے آرہے ہیں مگر بلاول زرداری اِنہیں راضی کرنے کی کوششوں میں لگے پڑے ہیں اُمید ظاہر کی جارہی ہے کہ بلاول اپنی خواہش کے مطابق اپنی کوشش میں کامیاب ہوجائیں گے اور اپنے سینیئرز کو منالیں گے اور اِسی کے ساتھ ہی بلاول ہاؤس کراچی میں تُرنت مراد علی شاہ کو سندھ کا نیا وزیراعلیٰ سندھ بنانے کے حوالے سے زورشور سے تیاریاں شرو ع ہوگئیں۔

جبکہ خبرہے کہ اِدھر جیسے ہی مراد علی شاہ کراچی پہنچے تو اُنہوں نے بھی گورنر سندھ ڈاکٹر عشرت العبادسے خصوصی ملاقات کی اوراِن سے اپنی وزیراعلیٰ سندھ کی حیثیت سے سونپی جانے والی اہم ذمہ داریوں سے متعلق آگاہی حاصل کی اور اپنے حق میں اِن کے تعاون کو یقینی بنانے کاعہدپیما کیا ابھی اِنہیں وزیراعلیٰ سندھ کی ذمہ داریاں سونپی جانے میں کچھ وقت باقی ہی تھاکہ بلاول زرداری بھی کراچی پہنچ گئے اور اُنہوں نے بھی وزیراعلیٰ سندھ کی فوری تبدیلی سے متعلق کئے گئے دُبئی کے فیصلے پر جلد عمل درآمد کرنے کا پروگرا م ترتیب دے دیاہے اور اطلاعات آرہی ہیں کہ جمعے کو سندھ اسمبلی کے ہونے والے اجلاس میں نئے قائد ایوان کا چُناؤ ہوجائے گااور نئے وزیراعلیٰ سندھ کے منصب مرادعلی شاہ کے کاندھوں پر ڈال دیاجائے گا۔

اَب دیکھتے ہیں کہ مراد علی شاہ کیا اپنی ذمہ داریاں اُس طرح نبھاپائیں گے؟؟ جس طرح ایک بااعتماد اور پُروقار وزیراعلیٰ کو اپنافرائضِ منصبی نبھانا چاہئے یا یہ باصلاحیت اور باہمت ہوکر بھی اپنی ذمہ داریاں اُسی طرح اداکریں گے جس طرح اِن کے پیش روماضی کے قائم علی شاہ انجام دیتے رہے ہیں ؟؟ نئے وزیراعلیٰ کے آنے کے بعد بھی سندھ اور کراچی کے سیاسی اور انتظامی معاملات یوں چلتے رہیں گے ؟؟ یا اِن میں کوئی مثبت تبدیلی بھی آئے گی؟؟ ۔

بہر حال،کچھ بھی ہے چلیں..!! یہ تو بہت ہی اچھاہواکہ قائم علی شاہ رخصت ہوئے پی پی پی کا قائم علی شاہ کی تبدیلی کا فیصلہ دیر سے ہوامگرہواتو صحیح،آج اگر سندھ اور کراچی کو کھویا ہوامقام دِلانا ہے اور کراچی کو گندگی اور غلاظت سے نجات دلاناا ہے اورپور ے سندھ سمیت کراچی کو بھی ترقی اور خوشحالی کی راہ پر گامزن کرناہے تو پھر یہ لازمی ہے کہ پیپلز پارٹی کے چیئرمین بلاول زرداری اپنے نئے وزیراعلیٰ سندھ کو تمام اختیارات دے کر اِسے طاقت ور ترین وزیراعلیٰ سندھ بنائے تو اندرونِ سندھ سمیت کراچی میں کچھ تعمیری اور مثبت تبدیلیاں رونماہوسکیں گی ورنہ سندھ کا نیا وزیراعلیٰ بھی دُبئی میں بیٹھی سیاسی قیادت کے سَحر میں گرفتار ہوگیاتو پھرسیدقائم علی شاہ کی تبدیلی کا فیصلہ پی پی پی کے لئے سِوائے ڈرامے بازی کے کچھ نہیں ہوگا سو جب تک سندھ حکومت دبئی میں بیٹھی اپنی غیر انتظامی سیاسی قیادت کے مشوروں پر چلتی رہے گی تو نیا وزیراعلیٰ بھی قائم علی شاہ جیسا بن جائے گا..؟؟؟ ۔

تاہم اُمید ہے کہ جب یہ کالم شائع ہوگا تب تک یقینی طور پر مراد علی شاہ سابق وزیراعلیٰ سندھ کے چھوڑے ہوئے گھمبیر مسائل اور کئی کڑے چیلنجوں اور سخت امتحانات کے ساتھ سندھ کے نئے وزیراعلیٰ کی حیثیت سے نامزدہوچکے ہوں گے اور سید قائم علی شاہ سندھ کے سابق وزیراعلیٰ سندھ کی حیثیت سے پہنچانے جانے لگیں گے اور اپنی ڈمی نما وزیراعلیٰ سندھ کی حیثیت ختم کرچکے ہوں گے یوں یہ سندھ کی تاریخ کے ایک ایسے وزیراعلیٰ قرار پائیں گے جن کی وجہ سے پاکستان پیپلزپارٹی نہ صرف مُلک بلکہ سندھ میں بھی اپنی حیثیت اور وقار کو کھونے کا سبب بنی ہے ۔

اَب یہ اور بات ہے کہ پی پی پی کی دُبئی میں بیٹھی سیاسی اعلیٰ قیادت اور پاکستان میں سندھ حکومت کے انتظامی اُمور کو چلانے والے اِس بات پر لیپا پوتی کرتی پھرے ایسانہیں ہے تو ویسانہیں ہے ، کچھ عناصر پارٹی میں غلط فہمیاں پیداکرنے کی کوشش کررہے ہیں مگراَب کوئی کچھ بھی کہے ، ہمیں اِس حقیقت پر ضرور یقین رکھنا ہوگا کہ سندھ سمیت کراچی کو گھنڈراور کچرے اور گندگی وغلاظت کا ڈھیر بنانے میں جتناکردارآٹھ سال پہلے آثارِ قدیمہ سے دریافت ہونے کے بعد وزیراعلیٰ سندھ کے عہدے پر فائز ہونے والے سیدقائم علی شاہ کا ہے اُتناکسی اور کا ہاتھ نہیں ہے ،یا یوں کہہ لیں کہ پی پی پی کی دُبئی میں بیٹھی سندھ حکومت کی غیرانتظامی مگرسیاسی شخصیت آصف علی زرداری کے نزدیک قائم علی شاہ کی حیثیت صرف سندھ حکومت کے جاری کردہ چیکس پر سائن کرنے والی اتھارٹی کے سواکچھ نہیں تھی اِنہیں تو یہ بھی اختیارحاصل نہیں تھاکہ یہ خود سے کسی انتظامی امورچلانے والے اپنے کسی ماتحت یا ضلعی انتظامیہ کے کسی ذمہ دار سے کوئی کام کروانے کا بھی حکم جاری کرسکیں یہی وجہ تھی کہ سندھ کے ڈمی نما وزیراعلیٰ سید قائم علی شاہ اپنی سادہ طبیعت کے باعث اپنی دُبئی قیادت کے نزدیک قابلِ بھروسہ اور اعتماد والی ہستی قرارپائے تھے جس پر پی پی پی کے چیئرمین بلاول زرداری کو اندرہی اندر یہ احساس کھائے جارہاتھا کہ پارٹی کے شریک چیئر مین آصف علی زرداری اور پھوپھی جان فریال تالپور المعرو ف ادی نے سید قائم علی شاہ کوبحیثیت وزیراعلیٰ سندھ کیوں برقراررکھاہوا ہے؟؟؟ جبکہ اِن کی عمر اور عہدے کی ذمہ داریاں یہ انصاف نہیں کرتی ہیں کہ یہ اِس عمر میں اِس عہدے پر کام کریں کیوں کہ بلاول زرداری خود جوان ہیں اور وہ نئے عزم اور نئے ولولوں کے ساتھ اپنے نانا شہید ذوالفقا ر علی بھٹو اور اپنی والدہ محترمہ شہید رانی بے نظیر بھٹو کے مقدس لہو سے اپنی پہچان بنانے والی پاکستان پیپلز پارٹی کو اِس کے حقیقی رنگ وبو اور دلکش اور دلنشین روٹی ،کپڑااور مکان کا نعرہ عوام الناس تک پہنچانے کے ساتھ ساتھ جمہوریت کے روحانی ثمرات بھی مُلک کے ہر غریب کے گھر کی دہلیز اور اِس کے آنگن تک پہنچانے کے لئے اپنی پارٹی کے با اعتماد اور باصلاحیت اور پڑھے لکھے سلجھے ہوئے نوجوانوں اور جوانوں کی ٹیم کے ہمراہ کے آگے لے کر بڑھناچاہتے ہیں اِسی لئے بلاول زرداری نے چاہا ہے کہ سب سے پہلے اپنے نیک عزم کی تکمیل ضعیف وزیراعلیٰ سندھ سید قائم علی شاہ کی تبدیلی سے کی جائے اور الحمدُ اﷲ ، بلاول زرداری اپنے مقاصد میں کامیاب ہوتے دکھائی دے رہے ہیں۔
Comments Print Article Print
 PREVIOUS
NEXT 
About the Author: Muhammad Azim Azam Azam

Read More Articles by Muhammad Azim Azam Azam: 1230 Articles with 607690 views »
Currently, no details found about the author. If you are the author of this Article, Please update or create your Profile here >>
27 Jul, 2016 Views: 404

Comments

آپ کی رائے