مسئلہ کشمیر پر بھارتی ہٹ دھرمی

(Hafiz Shahid Parvaiz, )
دنیا کا کوئی بھی مذہب معاشرہ تنظیم سیاسی جماعت یا فرد انسانیت کے قتل اور انسانیت پر ظلم ڈھانے کی سوچ کی حمایت نہیں کرتا لیکن اکثر اوقات خود کو دوسرے انسانوں پر بڑائی دینے کیلئے اور دوسرے پر رعب اور دبدبا جمانے کیلئے قتل و غارت بھی کی جاتی ہے اور انسانیت کو اذیت ناک اسباق بھی سکھانے کی کوششیں ہوتی رہتی ہیں۔ حضرت آدم کے وقت سے آج تک انسانیت کے قتل عام کا سلسل نہیں تھما حکومتیں سنبھالنے کا وقت ہو تو یا پھر اقتدار کی ہوس دوسروں کے علاقے پر قبضہ کرنے کی کوششیں ہوں تو یا پھر خود کو دنیا کی سب سے بڑی طاقت منوانے کا لالچ ہمیشہ پسے ہوئے طبقات ،غریب اور کمزور افرادپر ظلم ڈھائے گئے ، تاہم ستر سال سے زائد کے مظالم کی داستان کشمیر کے بغیر دنیا کے کسی بھی خطے میں ہوتی دیکھائی نہیں دے گی۔ اسلامی جنگیں ہوں یا پھر ہلاکوں خان، چنگیز خان، شیر شاہ سوری اور دیگر بڑے حکمرانوں کی باتیں کسی نے بھی خود کو ایک چھوٹے سے حصے پر قبضہ جمانے کیلئے ایک اتنی لمبی مظالم کی داستانیں ڈھائیں نہ جنگیں ہوئیں تو دوسری جانب مقبوضہ جموں و کشمیر کے عوام کا صبر و حوصلہ اور انڈین حکمرانوں کے ساتھ مسلسل آنکھیں دیکھانے کا سلسلہ اور خود کو آزادی کیلئے سیسہ پلائی دیوار بن کر کھڑے رہنے کا تسلسل کسی بھی مضبوط ترین قوم ہونے کا بڑا ثبوت ہے۔ اپنی تین نسلوں سے آزادی کی جدوجہد اور اپنی مرضی سے زندگی گزارنے کے حقوق کے حصول کیلئے پرتشدد رویوں قتل عام اور بھارتی افواج کے سامنے کھڑئے رہنا بے شک قابل دید ہے۔ لیکن افسوس ناک بات یہ ہے کہ دنیا عالم پر اپنی قوت کا غلبہ دیکھانے کی دعویدار امریکہ دنیا بھر میں اپنے فیصلوں کو منوانے کے حوالہ سے انتہائی معروف اور قابل عمل فورم اقوام متحدہ اور دنیا بھر میں انسانیت کے حقوق کا علم بلند کرنے والی دیگر بڑی عالمی طاقتوں کی نظر کشمیریوں پر کیوں پر نہیں پڑیں اور کشمیر کی آزادی کیلئے بھارت کے سامنے کسی بھی دنیا کے وڈیرے بادشاہ اور عالمی طاقتیں ہونے کے دعویداروں نے بھارتیوں کو یہ بات منوانے پر کیوں زور نہیں دیا کہ کشمیری پاکستان کا حصہ بننے کی خواہش رکھتے ہیں اور وہ اپنی جان مال اور عزت کی حفاظت پاکستان کے ساتھ رہ کر بہتر سمجھتے ہیں تو بھارت جیسے خود غرض اور انسانیت دشمن ملک کے سامنے کھڑے ہوکر کشمیریوں کو ان کے حقوق کی آزادی دلوانا کیا اقوام متحدہ کے سیکرٹری جنرل اور دیگر عالمی ثالثی اداروں کی ذمہ داری نہیں۔ اگر ہے تو اس پر علمدرآمد کروانے کیلئے ستر برس کی تاخیر کیوں پاکستانی عوام اور پاکستان کی حکومت کی جانب سے کشمیری قوم کے ساتھ کھڑے رہنے اور ان کی حوصلہ افزائی کیلئے دنیا بھرمیں آواز بلند کرنے کا سلسلہ بے شک قابل دید ہے۔لیکن اس وقت تک کشمیریوں کے حقوق کی آزادی اور ان کو خود مختار زندگی گزارنے کا موقع ملنا مشکل ہے کہ جب بڑی طاقتیں متحد اور یکجہا ہوکر ان کے حقوق کیلئے انڈیا کے منہ پر طمانچہ نہ لگائیں۔ دنیا کے بیشتر علاقوں میں آزادی کے حقوق کیلئے بڑی بڑی تحریکیں چلائی گئیں لیکن مقبوضہ کشمیر جتنی لمبی اور لاشوں کے انبار لگا کر چلائی جانے والی تحریک کی مثال شائد ہی ملنا مشکل ہوگا۔ بہرحال پاکستان نے اپنے حصے کا کردار عالمی طاقتوں کو بھارت کی جانب سے ڈھائے جانے والے مظالم کی آگاہی فراہم کرکے بھرپور کیا جبکہ وزیراعظم کی جانب سے کشمیریوں کو مرحم پٹی کرنے ادویات کی فراہمی کھانے پینے کی اشیاء کی فراہمی بھی قابل تحسین ہے لیکن جب تک عالمی تنظیمیں اور انسانی حقوق کی بڑی دعویدار طاقتیں اس مسلئے پر متحد نہیں ہونگی اس وقت تک مسلہ کشمیر کا حل مشکل ترین نظر آرہا ہے لیکن کشمیریوں کا جذبہ حب الوطنی اور ان کی قربانیاں کسی صورت رائیگاں نہیں جائینگی۔
Comments Print Article Print
 PREVIOUS
NEXT 
About the Author: Hafiz Shahid Parvaiz

Read More Articles by Hafiz Shahid Parvaiz: 29 Articles with 11795 views »
Currently, no details found about the author. If you are the author of this Article, Please update or create your Profile here >>
25 Aug, 2016 Views: 299

Comments

آپ کی رائے