ایک دفعہ اس چارپائی پر سوئیں اور کئی بڑی بیماریوں سے چھٹکارہ پائیں ۔۔ پاکستان کی انتہائی قیمتی چارپائی جس کی دنیا دیوانی ہے

image

پہلے دور میں پاکستان کے ہر گھر میں چارپائی پائی جاتی تھی اور آج بھی گاؤں اور چھوٹے شہروں میں چارپائی کا استعمال کیا جاتا ہے۔ چارپائی لیٹنے اور بیٹھنے کے کام آتی ہے۔ جو لوگ مہنگے سے گدے نہیں خرید سکتے وہ آج بھی چارپائیوں کا استعمال کرتے ہیں۔ لیکن آج ہم آپ کو ایک ایسی چارپائی کے بارے میں بتانے جا رہے ہیں جس پر لیٹنے سے آپ کو کئی فائدے مل سکتے ہیں۔

چمڑے کی تاروں سے تیار چارپائی میں کھٹمل زیادہ نہیں ہوتے۔ گرمی کے موسم میں ٹھنڈی اور سردیوں میں گرم ہوتی ہے، اس پر بستر بچھانے کی ضرورت نہیں پڑتی۔ یہ چارپائی اتنی مضبوط ہوتی ہے کہ سالہا سال چلتی ہے۔ گائے کی کھال کمزور اور پتلی ہوتی ہے جبکہ بھینس کا چمڑا موٹا ہوتا ہے اسی لئے اس پائیدار چارپائی کو بنانے کے لئے زیادہ سے زیادہ بھینس کی کھال استعمال کی جاتی ہے۔

چارپائی بنانے کے لئے کھال کو پانی سے دھو لیتے ہیں اور پھر دوائی اور نمک ڈالتے ہیں۔ اس وجہ سے کھال سے بدبو بھی نہیں آتی اور چارپائی تیار ہونے کے بعد اس میں مہک بھی نہیں رہتی۔ اس کی بنائی کی قیمت 400 سے 800 روپے تک ہے۔ جبکہ بنی بنائی چارپائی 2 سے 4 ہزار تک مل جاتی ہے۔ جس کو ہر کوئی خرید سکتا ہے۔

اس چارپائی پر لیٹنے سے نہ تو کمر کے مہروں کے درمیان گیپ آتا ہے اور نہ ہی کمر درد ہوتا ہے۔ اس کے علاوہ وہ لوگ جن کو ہڈی جوڑ اور گٹھیا کا درد ہوتا ہے یہ ان کے لئے فائدے مند ثابت ہوتی ہے۔ اس چارپائی کو ماضی میں عمران خان بھی استعمال کرتے تھے۔ اس چارپائی کو خیبرپختونخوا اور پنجاب میں زیادہ تر بنایا جاتا ہے جس کو بنانے کے لئے دکانداروں کو خصوصی آرڈرز ملتے ہیں۔ چونکہ یہ ایک مہنگی چارپائی سمجھی جاتی ہے اس لئے اس کو بنوانے کے لئے پہلے سے آرڈر بُک کرنا پڑتا ہے۔


WATCH LIVE NEWS

مزید خبریں
سائنس اور ٹیکنالوجی
مزید خبریں

Meta Urdu News: This news section is a part of the largest Urdu News aggregator that provides access to over 15 leading sources of Urdu News and search facility of archived news since 2008.