بھنور میں پھنسے ہیں کنارا نہیں ہے

Poet: Tanzeem Akhtar تنظیم اختر
By: tanzeemakhtar, doha

بھنور میں پھنسے ہیں کنارا نہیں ہے
کوئی ناخدا اب ہمارا نہیں ہے

غمِ عشق ہے ایک ایسا سمندر
کہ جس کا کوئی بھی کنارہ نہیں ہے

سمجھتے ہو تم جس کو جاگیر اپنی
یہ ہے دل مر ا گھر تمہارا نہیں ہے

سراپا ہمیں لوٹ کر پھر وہ بولے
یہاں پر بچا کچھ تمہارا نہیں ہے

ہیں ہم منتظرکب سے اس کی صدا کے
مگر اس نے اب تک پکارا نہیں ہے

بہت قیمتی ہو ہمارے لئے تم
تمہیں پا کے کھونا گوارا نہیں ہے

کہیں دور چلتے ہیں ہم اس نگر سے
یہاں پر ہمارا گزارا نہیں ہے

کرو تم بھی سودا محبت کا تنظیمؔ
کہ اس میں کوئی بھی خسارہ نہیں ہے

Rate it:
23 May, 2020

More Love / Romantic Poetry

POPULAR POETRIES

FAMOUS POETS

About the Author: tanzeemakhtar
Visit Other Poetries by tanzeemakhtar »
Currently, no details found about the poet. If you are the poet, Please update or create your Profile here >>

Reviews & Comments

Language:    

My Page! Account Login:

(Post your Comments Immediately)
Email
Password
Do not have MyPage! account? Create Now

Guest Login:

(Comments will be online after Moderator Review)
Name
Email
City
Language:    

My Page! Account Login:

(Post your Comments Immediately)
Email
Password
Do not have MyPage! account? Create Now

Guest Login:

(Comments will be online after Moderator Review)
Name
Email
City