تعویذ

Poet: م الف ارشیؔ
By: Muhammad Arshad Qureshi, Karachi

درد بڑھتا ہے تو فوراً ہی دوا کرتے ہیں
اور کچھ بھی نہیں ہم اس کے سوا کرتے ہیں

کوئی تعویذ بنا دے کہ سبب بن جائے
ان سے ملنے کی تو ہم روز دعا کرتے ہیں

کیسے کہدیں کہ تجھے قید کیا تھا ہم نے
تیرے صدقے میں پرندوں کو رہا کرتے ہیں

وہ تو اپنا تھا اسے کیسے بھلا دکھ دیتے
ہم تو دشمن سے بھی ہنس ہنس کے ملا کرتے ہیں

تم کو آتے ہیں نظر جو یہاں مخلص اکثر
زہر ہوتا ہے زباں میں وہ ڈسا کرتے ہیں

عشق نے ایسی کرامت کی عطا ہے ہم کو
ہم فقیروں کے لیے لوگ دعا کرتے ہیں

بھول بیٹھا ہے زمانے کے غموں کو ارشیؔ
خود کی ٹھوکر سے بھی تو لوگ گرا کرتے ہیں

Rate it:
29 Jan, 2020

More Love / Romantic Poetry

POPULAR POETRIES

FAMOUS POETS

About the Author: Muhammad Arshad Qureshi
My name is Muhammad Arshad Qureshi (Arshi) belong to Karachi Pakistan I am
Freelance Journalist, Columnist, Blogger and Poet.​President of Internati
.. View More
Visit 208 Other Poetries by Muhammad Arshad Qureshi »

Reviews & Comments

Language:    

My Page! Account Login:

(Post your Comments Immediately)
Email
Password
Do not have MyPage! account? Create Now

Guest Login:

(Comments will be online after Moderator Review)
Name
Email
City
Language:    

My Page! Account Login:

(Post your Comments Immediately)
Email
Password
Do not have MyPage! account? Create Now

Guest Login:

(Comments will be online after Moderator Review)
Name
Email
City