مرا راز دل آشکارا نہیں

Poet: Meer Anees
By: shoaib, khi

مرا راز دل آشکارا نہیں
وہ دریا ہوں جس کا کنارا نہیں

وہ گل ہوں جدا سب سے ہے جس کا رنگ
وہ بو ہوں کہ جو آشکارا نہیں

وہ پانی ہوں شیریں نہیں جس میں شور
وہ آتش ہوں جس میں شرارہ نہیں

بہت زال دنیا نے دیں بازیاں
میں وہ نوجواں ہوں جو ہارا نہیں

جہنم سے ہم بے قراروں کو کیا
جو آتش پہ ٹھہرے وہ پارا نہیں

فقیروں کی مجلس ہے سب سے جدا
امیروں کا یاں تک گزارا نہیں

سکندر کی خاطر بھی ہے سد باب
جو دارا بھی ہو تو مدارا نہیں

کسی نے تری طرح سے اے انیسؔ
عروس سخن کو سنوارا نہیں

Rate it:
03 Nov, 2016

More Meer Anees Poetry

POPULAR POETRIES

FAMOUS POETS

About the Author: shoaib
Visit Other Poetries by shoaib »
Currently, no details found about the poet. If you are the poet, Please update or create your Profile here >>

Reviews & Comments

Language:    

My Page! Account Login:

(Post your Comments Immediately)
Email
Password
Do not have MyPage! account? Create Now

Guest Login:

(Comments will be online after Moderator Review)
Name
Email
City
Language:    

My Page! Account Login:

(Post your Comments Immediately)
Email
Password
Do not have MyPage! account? Create Now

Guest Login:

(Comments will be online after Moderator Review)
Name
Email
City