زندگی تو لاجواب ہے
Poet: Malik Shahzaib Ali Nasir Awan
By: Malik Shahzaib Ali Nasir Awan, Lahore

کبھی ہنستی ہوئی، مسکراتی ہوئی
گیت گاتی ہوئی، گنگناتی ہوئی
کبھی روتی ہوئی، چلاتی ہوئی
جسم و روح کو ستاتی ہوئی
کبھی حسن ہے، شباب ہے
کبھی دکھوں کی کتاب ہے
مگر زندگی تو لاجواب ہے
کبھی پھولوں کی اک کیاری سی
جس کا پتا پتا، کلی کلی پیاری سی
کبھی اذیت سی، بیماری سی
تن بدن پہ بھی بھاری سی
کبھی گیندا ہے، گلاب ہے
کبھی ہر گھڑی عذاب ہے
مگر زندگی تو لاجواب ہے
کبھی انگور کی گود میں پالی ہوئی
دلکش صراحی و جام میں ڈالی ہوئی
کبھی رسم و رواج میں ڈھالی ہوئی
اور روایات کی چکی میں ڈالی ہوئی
کبھی میکدہ ہے، شراب ہے
کبھی ظلم ہے ، عتاب ہے
مگر زندگی تو لاجواب ہے
کبھی تدبیریں سکھاتی ہوئی
چکور کی اڑان اڑاتی ہوئی
کبھی تقدیر کا پہرہ بٹھاتی ہوئی
فنا فی الفور کا پیغام سناتی ہوئی
کبھی ساز ہے، رباب ہے
کبھی موت ہے، حساب ہے
مگر زندگی تو لاجواب ہے
تو لاجواب ہے
ہاں تو لاجواب ہے

Rate it: Views: 10357 Post Comments
 PREV All Poetry NEXT 
 Famous Poets View more
Email
Print Article Print 11 Jan, 2009
About the Author: Malik Shahzaib Ali Nasir Awan

Visit 11 Other Poetries by Malik Shahzaib Ali Nasir Awan »

Currently, no details found about the poet. If you are the poet, Please update or create your Profile here >>
 Reviews & Comments
Nice beautifull
By: Abrish anmol, Sargodha on Nov, 21 2016
Reply Reply to this Comment
i like this poetry v v fantastic keep it up guy
By: nida, karachi on Jan, 07 2010
Reply Reply to this Comment
kabhi aati hai
khamoshi se
chupke se
barsath mein
veraney mein
anjaney mein
kis waja se
kis liye
kis ki khatir
kis k liye
kiya bataein
yeh kiya hai
ek ehsaas
ek piyaas
phir bhi achi lagti hai
anjani si
bhigi si
phechani si
khubsorat si
tumhari yaad!
By: javed khan, sibi on Aug, 13 2009
Reply Reply to this Comment
Post your Comments Language:    
Type your Comments / Review in the space below.