دیدار
Poet: Syed Zulfiqar Haider
By: Syed Zulfiqar Haider, Nizwa, Oman

اک آس لگاۓ بیٹھے ہیں تیرا دیدار کبھی تو ہو گا
تیرے چاہنے والوں میں میرا شمار کبھی تو ہو گا
چاہت کے سلسلے اور بھی ہو جایئں گے حسین
دل میں آپ کے میری محبت کا غبار کبھی تو ہو گا

اپنی سوچوں میں مجھے قید کر لو اتنا قریب کر لو
رلفیں بکھیرو میرے شانوں پر زلفوں کا اسیر کر لو
صورت دکھا کر اپنے حُسن کا مجھے دل گیر کر لو
تیرے ہونٹوں سے میری چاہت کا اقرار کبھی تو ہو گا

میرے آنگن میں آمد سے روشنی بکھیر تو سہی
میری تنہائی سمیٹ پیار کی بوند دے تو سہی
ہونٹوں کی پیاس بجھا جامِ اُلفت آنکھوں سے پلا تو سہی
تیری نگاہوں سے چاہت کا گمان کبھی تو ہوگا

تیرے ملنے کی آس میں گائل سا ہو گیا ہوں
آنکھیں تیرے انتطار میں کب سے اشکبار ہیں
چین اُڑ گیا ہے قسمت تو جیسے روٹھ گئی ہو مجھ سے
ذوالفقار کے لیئے تیرا بھی دل بے قرار کبھی تو ہو گا
 

Rate it: Views: 6 Post Comments
 PREV All Poetry NEXT 
 Famous Poets View more
Email
Print Article Print 06 Sep, 2018
About the Author: Syed Zulfiqar Haider

Visit 49 Other Poetries by Syed Zulfiqar Haider »

Currently, no details found about the poet. If you are the poet, Please update or create your Profile here >>
 Reviews & Comments
Mindblowing
By: Zahid, Sialkot on Sep, 08 2018
Reply Reply to this Comment
Umeed se bandhi zindagi
By: Mahmood, Sheikhupura on Sep, 08 2018
Reply Reply to this Comment
Maza a gaya
By: Minal, Hyderabad on Sep, 08 2018
Reply Reply to this Comment
Classic
By: Sultan, Lahore on Sep, 08 2018
Reply Reply to this Comment
Bout Aaala
By: Aleeha, Multan on Sep, 07 2018
Reply Reply to this Comment
Lovely
By: Ayisha, Sargodha on Sep, 07 2018
Reply Reply to this Comment
Post your Comments Language:    
Type your Comments / Review in the space below.