ملالہ کیوں آئی ہے۔

(Habib Ganchvi, Islamabad)
دہشتگردی کے جو مہیب سائے ملک عزیز کے چھائے ہوئے تھے یہ اس بات کی غمازی ہے کہ بین الاقوامی سطح پر بھی پاکستان کے موجودہ حالات باعث اطمینان ہے۔

ملالہ یوسفزئی تقریبا آٹھ سال بعد خود ساختہ جلاوطنی کے بعد پاکستان آئی ہے۔ ایسے حالات میں جبکہ ابھی بھی اُس کے لیے کوئی ناخوشگوار حالت بعید از امکان نہیں پاکستان آنا بڑی ہمت کی بات ہے یہ ہمت انہیں وطن کی محبت نے دلائی ہے یا اور کوئی وجہ ہے وہ وقت بتائے گا مگر ارباب قیل و قال اس پرمختلف آرا قائم کررہے ہیں۔ کوئی اسے خوش آئند قرار دے رہا ہے تو کوئی شک و شبہات کی نظر سے دیکھ رہا ہے۔ اور کسی کوتشویش ہورہی ہے۔ مگر ان سب حالات میں خوش آئند بات یہ ہے کہ پاکستان کے حالات اچھے سمت میں جارہے ہیں اور ان کا یہاں سے بخیر و عافیت گزر جانا وطن عزیز کے حق میں ایک اچھےاور مثبت تاثر کا باعث بن سکتاہے۔ دہشتگردی کے جو مہیب سائے ملک عزیز پر چھائے ہوئے تھے یہ اس بات کی غمازی ہے کہ بین الاقوامی سطح پر بھی پاکستان کے موجودہ حالات باعث اطمینان ہے۔ حالیہ پی ایس ایل کے پاکستان میں انعقاد اور پھر افواج پاکستان کا اس سال بھی بڑی طاقت و جراءت کے ساتھ اپنی طاقت کا مظاہرہ کرنا اور سی پیک پر بڑی تیزی رفتاری کے ساتھ کام کا جاری ہونا اور ملالہ جیسی بین الاقوامی شہرت رکھنی والی شخصیت جن پر خطرناک قاتلانہ حملہ ہوچکی ہو واپس اپنے ملک آنا، یہ سب ہمارے ملک عزیز کے لیے مثبت تاثر پیدا کرنے میں ممد و معاون ثابت ہونگے۔
 

Comments Print Article Print
 PREVIOUS
NEXT 
About the Author: habib ganchvi

Read More Articles by habib ganchvi: 23 Articles with 15081 views »
i am a media practitioner. and working in electronic media . i love to write on current affairs and social issues.. .. View More
30 Mar, 2018 Views: 638

Comments

آپ کی رائے
thank you for your comment sir.i can not found your article if you share that link it will be great.
By: habib ganchvi, Islamabad on Apr, 02 2018
Reply Reply
0 Like
Habib Sahib! Your article ملالہ کیوں آئی ہے۔ of 30 March 2018 is a soft article. It is good of you that you have been quite neutral in your approach. I wish you read my article on Hamari Web, captioned “MALALA – BEING GROOMED AS FUTURE PRIME MINISTER OF PAKISTAN” of 27 December 2015. May be many of us who feel sympathy with Malala, change their views and see the hidden treachery hatched against my country. We have to keep our eyes open. Afterall Bacha Khan the Frontier Ghandi, Dr. Abus Salam winner of Noble Prize, Hussain Haqani, Pakistan’s ex-Ambassador to USA and many other such personalities were Pakistanis. All that glitters is not gold, though an old proverb, yet holds good even today. Malala (initially quite innocently) but her father Zia-ud- Din deliberately fell to his ego, and great game of the enemies of Islam and Pakistan. They were picked up, groomed and used against Pakistan. They have the nuisance value, which the enemies of Islam and Pakistan would certainly use to the maximum. We have to keep our ears and eyes open and the writers, columnists and media persons owe a great responsibility. They must guide the masses to the right direction. Let we not be swayed only due to the sympathies we have for the ladies especially those who have meti some tragedy. Thanks. Sarwar, March 31, 2018.
By: sarwar, lahore on Mar, 31 2018
Reply Reply
0 Like