افغانستان میں امن استحکام کی غیر سنجیدہ کوششیں۔۔۔

(Qadir Khan, Lahore)

افغانستان میں قیام امن کے لئے گزشتہ دنوں عالمی سطح پر دو بڑے اجلاس منعقد ہوئے۔ د ونوں اجلاس عالمی سطح پر توجہ کا مرکز بنے۔خاص طور پر سعودی عرب کے شہر جدہ میں مسلم اکثر یتی ممالک کی عالمی تنظیم او آئی سی کی جانب سے دو روزہ اجلاس منعقد ہوا ۔ جس میں 57مسلم اکثریتی ممالک نے شرکت کی۔ جدہ کانفرنس میں علما اور مذہبی دانشوروں کی بڑی تعداد نے بھی شرکت کی۔ بظاہر اجلاس کا مقصد افغانستان میں قیام امن کے لئے مختلف طریقوں پر غور کرنا تھا ۔ تاہم اس بات کو شدت سے محسوس کیا گیا کہ سعودی عرب کی جانب سے امارات اسلامیہ کی حمایت میں کمی کا عنصر نمایاں تھا ۔ ماضی میں افغان طالبان کی ریاست کو سعودی عرب نے دنیا کی مخالفت کے باوجود سوویت یونین کی شکست کے بعد تسلیم کیا تھا۔ تاہم سعودی عرب پر امریکا دباؤ میں اضافے اور شاہ سلمان کی خارجہ و داخلہ پالیسیوں میں تبدیلی میں امارات اسلامیہ کے حوالے سے بھی واضح تبدیلی آئی اور سعودی عرب نے امارات اسلامیہ کو امریکی مطالبات سمیت کابل حکومت کی جانب سے پیش کردہ فارمولے کو تسلیم کرانے کے لئے امارات اسلامیہ پر دباؤ بڑھایاہے۔یہاں اہم بات یہ ہے کہ افغان طالبان امریکا سے براہ راست بات چیت اور مذاکرات کے لئے سیاسی عمل پر زور دیا جارہا ہے۔ تاہم افغان طالبان کابل حکومت کی جانب سے تمام پیش کشوں کو مسترد کرتے ہوئے غیر ملکی افواج کے انخلا اور امریکا کے ساتھ براہ راست مذاکرات کا مطالبہ کرتے ہیں ۔ امریکا کے لئے یہ عمل دشوار ہوتا جارہا ہے اور بالاآخر امریکی ذرائع ابلاغ کے حوالے سے یہ خبریں منظر عام پر آئی کہ امریکا افغانستان کے حوالے سے اپنی مسلسل شکست کے بعد حکمت عملی تبدیل کرنے پر غور کررہا ہے اور اس نئی حکمت عملی میں قطر میں قائم امارات اسلامیہ کے سیاسی دفتر کو دوبارہ فعال بنانے کے امکانات میں اضافہ ہوچکا ہے۔ یہ امید قائم ہوتی جا رہی ہے کہ امریکا افغانستان میں اپنی شکست کے بعد خطے میں اپنی مسلسل موجودگی کے لئے لاحاصل اخراجات کرنے کے بجائے ایسا طریق کار اختیار کرسکتاہے جس میں امریکی خزانے کے بوجھ میں اضافہ بھی نہ ہو اور مخصوص مفادات کے لئے امریکہ افغانستان میں موجود بھی رہے۔

امارا ت اسلامیہ کے لئے یہ بہت بڑا چیلنج بھی ہے کہ امریکا کو افغانستان سے مکمل طور پر انخلا کے لئے کتنا مجبور کیا جاسکتا ہے۔ گو کہ افغان طالبان کو اس وقت داعش ، کابل حکومت ، امریکا اور نیٹو ممالک کے علاوہ ایسی جنگجو تنظیموں کی جانب سے بھی مزاحمت کا سامنا ہے جنہوں نے کابل حکومت سے مفاہمت کرلی ہے۔ افغان طالبان جہاں اپنے روایتی اتحادیوں کی حمایت سے محروم ہورہا ہے تو دوسری جانب خطے میں امریکی بالادستی کی نئی حکمت عملی کے سبب نئے اتحادی ممالک کی شمولیت نے نے امارات اسلامیہ کی قوت میں بھی اضافہ کردیا ہے۔ استحکام امن کے حوالے سے جدہ کانفرنس سے یہ توقعات وابستہ کیں گئیں کہ افغان طالبان کے خلاف سخت موقف سے امارات اسلامیہ کے لئے کابل حکومت و نیٹو کے خلاف حملے کرنے میں مشکلات پیدا ہونگی ۔ لیکن امارات اسلامیہ کی جانب سے مزید سخت موقف نے امریکا کی مایوسی میں اضافہ کردیا ہے۔خاص طور پر داعش کی بڑھتی سرگرمیوں اور امریکی کردار کی وجہ سے امارات اسلامیہ کو روس ، ایران اور چین کی حمایت حاصل ہونے سے روایتی اتحادیوں پر انحصار کم ہونے میں مدد ملی ہے۔

برسلز میں نیٹو کی سالانہ کانفرنس میں بھی افغانستان کی مالی امداد کے علاوہ افغانستان کی موجودہ صورتحال پر غور و فکرکیا گیا۔ واضح ر ہے کہ 2012میں نیٹو اتحادیوں کی جانب سے فوج کے انخلا پر اتفاق رائے پایا گیا تھا ۔ گو کہ امریکی سابق صدر نے امریکی شہر شکاگو میں مغربی دفاعی اتحاد نیٹو کا سربراہی اجلاس میں افغانستان سے غیر ملکی افواج کی واپسی کی حکمت عملی کی توثیق کی تھی۔ اعلامیے میں یہ بھی واضح کیا گیا کہ 2014 میں افواج کے انخلا کے بعد نیٹو کا کردار تربیت اور مشاورت کا رہ جائے گا۔لیکن اس کے باوجود امریکا نے افغانستان میں فضائی حملوں میں اضافے کے ساتھ ساتھ پنی فوجیوں کی تعداد میں بھی اضافہ کردیا ۔ جس سے صورتحال میں مزید بے یقینی بڑھ گئی۔ امارات اسلامیہ کی جانب سے افغانستان کے کئی اضلاع پر قبضے کا سلسلہ دراز ہوتا چلا گیا اور کابل حکومت سمیت امریکا کی تمام تر کاروائیاں فضائی حملوں تک محدود ہوگئی جس میں عام شہریوں کی ہلاکتوں میں بے پناہ اضافہ دیکھنے میں آیا۔ سابق افغان صدر حامد کرزئی نے شگاگو اجلاس کے بعد دعوی کیا تھا کہ افغان طالبان میں اتنی قوت نہیں کہ غیر ملکی فوجیوں کے انخلا کے بعد افغانستان پر دوبارہ قبضہ کرلیں ، لیکن صرف چار برس بعد عالمی نشریاتی اداروں سمیت خود امریکی انتظامیہ متعدد بار تسلیم کرچکی ہے کہ افغانستان میں افغان طالبان کی طاقت میں اضافہ ہوا ہے اور اضلاع پر قبضے کا سلسلہ طویل ہوتا جارہا ہے ۔ اس وقت افغانستان کے60فیصد سے زائدحصے پر افغانستان کی عمل داری ہے تو دوسری جانب کابل حکومت ، سکڑ ہوچکی ہے۔ کابل میں بھی سخت ترین حفاظتی انتظامات کے باوجود افغان طالبان کے فدائی حملوں نے کابل و امریکی حکومت کو زچ کردیا ہے۔

برسلز اجلاس میں کابل حکومت کی جانب سے اشرف غنی اور عبداﷲ نے شرکت کی ، دونوں حکومتی عہدے داروں کے درمیان اختلافات برسلز اجلاس میں بھی کھل کر سامنے آئے۔ جان کیری نے پارلیمانی مدت ختم ہونے کے باوجود نئے انتخابات نہیں کروائے جس کی وجہ سے دونوں حکومتی شخصیات کی تمام توجہ اپنی شخصیت کو نمایاں کرنے پر رہی ۔ اطلاعات کے مطابق دونوں عہدے دار الگ الگ طیاروں میں گئے جہاں انہیں نیٹو حکام کا پروکوٹول تک نہیں ملا بلکہ کابل سفارت خانے کی گاڑی نے انہیں اجلاس کے مقام پر پہنچایا۔ یہ بڑی مضحکہ خیز صورتحال تھی جس میں یہ باور نہیں کرایا جاسکا کہ افغانستان کے عوام کی حقیقی نمائندگی کون کررہا ہے۔کابل کے دونوں سربراہ ’اشرف غنی اور عبداﷲ‘ بھی شریک تھے۔ چوں کہ ان دونوں کے درمیان شدید اختلافات موجود ہیں اور کبھی بھی ایک دوسرے کی تائید نہیں کرتے، اس لیے دونوں الگ الگ طیاروں میں برسلز گئے۔ ان میں سے ہر ایک نے یہ جتانے کی کوشش کی کہ وہ جان کیری کے مرہون منت سے افغانستان کے بااختیار حکمران ہیں۔گوکہ اجلاس کا اہم موضوع افغانستان کی موجودہ صورتحال تھی۔تاہم امریکی صدر نے اجلاس کو متنازع بنادیا اور یورپی یونین پر مختلف الزامات عائد کرتے ہوئے نیٹو اجلاس کے مقصدیت کو سبوتاژ کردیا ۔ یورپی یونین پر امریکی صدر نے الزام لگا یا کہ وہ نیٹو کے فریم ورک پر مالی اور فوجی تعاون نہیں کررہے۔نیز روس اور ایران کی یورپی یونین کے جانب سے حمایت پر امریکا کافی برہم نظر آیا ۔ اہم صورتحال یہ بھی تھی کہ امریکا کے ساتھ ساتھ برطانیہ نے بھی نے مزید 4ہزار اضافی فوجیوں کا ارادہ ظاہر کیا ۔ جس سے یہ ظاہر ہوتا ہے امریکا اور اس کے اتحادی افغانستان میں استحکام امن کے لئے سیاسی مذاکرات اور جاری جنگ کے تسلسل میں فرسٹریشن کا شکار ہیں اور سمجھ نہیں پا رہے کہ افغانستان کو طاقت سے فتح کرنے میں ناکامی کے بعد اب کون سا حربہ استعمال کیا جائے جس سے انہیں مزید شرمندگی کا سامنا نہ ہو۔ اعلامیہ میں کہا گیا ہے کہ ’’ نیٹو میں شامل تمام ممالک افغانستان کے ساتھ کھڑے ہیں اور جنگ جاری رکھیں گے۔ اس ضمن میں برطانیہ نے ساڑھے چار ہزار اضافی فوجیوں کو افغانستان بھیجنے کا عندیہ دیا اور یہ بھی معلوم نہیں کہ تازہ ترین فوجی افغانستان میں موجود 600 برطانوی فوجیوں کی جگہ خدمات انجام دیں گے یا ان کے علاوہ ہوں گے۔ نیٹو کے ایک رکن ملک ’مقدونیہ‘ نے کابل انتظامیہ کے ساتھ تعاون کا ایک عجیب اعلان کیا کہ وہ صرف 1000 ڈالر امداد فراہم کرے گا‘‘۔

دوہری حکومت کے دونوں سربراہان اشرف غنی اور عبد اﷲ عبداﷲ نے امریکی صدر ٹرمپ سے ملاقات کی کوشش کی لیکن انہیں ناکامی کا سامنا کرنا پڑا اور امریکی صدر نے ان سے ملاقات نہیں کی۔ ٹرمپ نے ملاقات کرنے سے انکار کر دیا اور کہا کہ نیٹو کے سیکرٹری جنرل سے ملاقات کریں۔ تاہم نیٹو کے سیکرٹری جنرل ’سٹول ٹنبرگ‘ نے بھی جلد جواب دے دیا کہ وہ ان کے ساتھ ملنے کی ضرورت محسوس نہیں کرتے۔ آپ واپس افغانستان چلے جائیں اور اپنی حکومت کو بہتر بنانے کے لیے عملی اقدامات اٹھائیں!!۔

نیٹو کے ہیڈکوارٹر برسلز کانفرنس اور سعودی عرب کے شہر جدہ کانفرنس کا مقصد غیر ملکی افواج میں اضافے اور مالی امداد کے لئے تھا ۔ جدہ کانفرنس میں علما سے افغانستان میں جاری جنگ و مزاحمت کے حوالے سے امارات اسلامیہ نے جاری فتوی پر اپنی سخت ناراضگی کا اظہار کیا ہے اور افغانستان میں جاری مسلح مزاحمت کو امریکی ایما پر متنازع بنانے پر سعودی حکومت کو بھی سخت تنقید کا نشانہ بنایاہے۔ کابل انتظامیہ میڈیا کے سامنے یہ وضاحت کرتی ہے کہ ''افغان تنازع کے حل کے لیے غیرملکی دوستوں سے ان کانفرنسز کے انعقاد کی درخواست کی گئی ہے۔’’ لیکن یہ اہم سو ال بھی سامنے آیا ہے کہ گزشتہ17برسوں میں ایسے کئی تجارب کو ناکامی کا سامنا کرنا پڑا ہے ۔ افغانستان میں غیر ملکی افواج و کابل حکومت کی جانب سے انسانی حقوق کی خلاف ورزیوں میں ہوش ربا اضافے نے افغانستان میں قیام امن کے لئے امن پسند دوست ممالک کی کوششوں کو ناقابل تلافی نقصان اور دشواریوں کا شکا ر کیا ہے۔غیر ملکی افواج اور نان اسٹیٹ ایکٹرز کی وجہ سے نہتے شہریوں کے قتل عام اور خاص طور پر پاکستان میں شدت پسندی کی نئی لہر میں اضافے کو تشویش ناک قرار دیا جارہا ہے۔ یہاں یہ بھی دیکھنے میں آیا ہے کہ لوگر، ننگرہار، خوست، ہلمند، بلخ، غزنی، زابل، قندھار اور دیگر صوبوں میں امریکی و کابل سیکورٹی فورسز کے فضائی حملوں اور چھاپوں کے نتیجے میں تباہ کن صورت حال کے دردناک مناظر ویڈیوز اور تصاویر سوشل میڈیا میں شیئر ہونے کے بعد کابل اور امریکی حکومت کی حمایت میں تیزی سے کمی کا رجحان جاری ہے ۔ امریکا کے وزیر خارجہ مائیک پمپیو خفیہ دورے پر افغانستان آ کر کابل انتظامیہ کے سربراہان کو یہ عندیہ دیتے ہیں کہ ''ہم افغانستان میں موجود رہیں گے۔’’اسی دن مخلوط حکومت کے سرابراہ نیٹو سربراہی اجلاس میں شرکت کے لیے چلے جاتے ہیں، تاکہ ان سے فوجی تعداد اور ڈالر بڑھانے کی اپیل کی جائے۔

کابل حکومت جانب دارنہ پالیسی میں امریکی فورسز کی جارحیت کے خلاف تضادات نے صورتحال کو مزید مضحکہ خیز بنادیا ہے۔ دلچسپ صورتحال اس وقت سامنے آئی جب کابل انتظامیہ کے نمائندے مولوی ''ملا کشاف’’نے کانفرنس سے خطاب کے دوران جو خط پڑھ کر سنایا، اس میں لکھا تھا: آخر میں ہم آپ سب علماء کو دعوت دیتے ہیں کہ افغانستان آ کر جنگ زدہ قوم کی صورت حال قریب سے دیکھیں۔ جنگ کے متاثرین، بیواؤں اور یتیموں کی حالت قریب سے دیکھیں۔ ہمیں یقین ہے آپ لوگ رونے پر مجبور ہو جائیں گے۔ حکومت کے خلاف جاری جنگ کو ناجائز قرار دینے کا اعلان کریں گے‘‘۔ جدہ کانفرنس میں جہاں کابل نمائندوں نے جب یک طرفہ موقف پیش کیا تو امارات اسلامیہ نے ردعمل دیتے ہوئے کہا کہ ۔’’ سب علماء بے ضمیر اور دنیا کے لالچی نہیں ہیں، جو بند آنکھوں کے ساتھ امریکی جارحیت کو جواز فراہم کرنے کا فتوی جاری کریں گے۔ ملا کشاف نے کانفرنس سے خطاب کے دوران کہا کہ افغانستان کو جنگ نے تباہ کر دیا ہے، لیکن یہ نہیں بتایا کہ جنگ کس نے مسلط کی ہے اور کس نے یہ ملک تباہ کیا ہے؟! انہوں نے چالیس ممالک کی یلغار کے بارے میں کچھ نہیں بتایا اور نہ ہی سانحہ قندوز کا ذکر کیاہے۔ انہوں نے صرف یہ مطالبہ کیا کہ کابل انتظامیہ کے خلاف طالبان کے جہاد کے خلاف فتوی جاری کیا جائے‘‘۔کابل انتظامیہ کے سربراہ کچھ عرصہ قبل تک بڑے فخر کے ساتھ جنگ کو جاری رکھنے پر بہت زور دیتے تھے اور کہتے تھے کہ امن کو طاقت کے زور پر قائم کیا جائے گا۔سلامتی امن کے لئے ہونا ضروری ہے، امن کا نام غلط استعمال نہیں کرنا چاہئے، امن کو جنگ میں بالادستی قائم کرنے کے لئے استعمال نہ کیا جائے، امن کی اہمیت کے ساتھ سطحی اور براہ نام سلوک کرنا نہ صرف امن کا خواب چکنا چور کرنے کا موجب بنے گا بلکہ جنگ میں شدت لانے کا سبب بھی بنے گا۔امن افغان عوام کی سب سے بڑی خواہش ہے، امن شہداء کی امنگوں اور امیدوں کی بحالی، ملک کی آزادی،مظلوم قوم کی خوشحالی، وطن عزیز کے استحکام اور سرحدوں کی حفاظت، تمام برادر اقوام کے درمیان اخوت اور بھائی چارے کی فضا قائم کرنے، علاقائی سالمیت کے لئے اور تعصب، غصب، قوم پرستی، امتیازی سلوک، بھتہ خوری، اخلاقی اور مالی کرپشن کے خاتمے،اقربا پروری اور میرٹ کی پامالی کے خلاف اور سب سے بڑھ کر عوام کی خواہشات کے مطابق نظام کے نفاذ کے لئے ایک بہترین وژن، اہم اور ضروری اقدام ہے۔

کابل حکومت کے ’’ سرحدی امور کے وزیر گل آغا شیرزئی نے دعوی کیا تھا کہ مجاہدین کی قیادت کے ساتھ گزشتہ تین ماہ سے بات چیت کا عمل جاری ہے۔اس کے علاوہ قندھار کے کمانڈر نے بھی گزشتہ دنوں اعلان کیا تھا کہ ہم 60 مجاہدین رہنماؤں کے ساتھ مذاکرات میں مصروف ہیں۔ اس سے قبل بھی انہوں نے ایک مرتبہ کہا تھا کہ 50 سینئر مجاہدین رہنما ان کے ساتھ مذاکرات کر رہے ہیں‘‘ لیکن امارات اسلامیہ نے ترجمان نے ردعمل دیتے ہوئے ایسے پراپیگنڈا قرار دیا کہ گزشتہ8برسوں سے جاری پراپیگنڈا کا تسلسل ہے جس میں کوئی حقیقت نہیں ہے۔ پہلے اشرف غنی نے امارات اسلامیہ کے ساتھ ہر قسم کے مذاکرات کے امکانات کو مسترد کیا تھا لیکن اب زچ ہونے کے بعد امارات اسلامیہ کو اسٹیک ہولڈر تسلیم کرلیا ہے اور افغانستان میں ہونے والے پارلیمانی انتخابات میں حصہ لینے کے لئے بار بار اپیل کررہے ہیں ۔ حالانکہ امارات اسلامیہ کا واضح موقف سامنے کئی بار آچکا ہے کہ وہ جموریت کے موجودہ نظام کو تسلیم نہیں کرتے اور کابل حکومت کو کتھ پتلی حکومت قرار دیتے ہیں۔ ان کا کہنا ہے کہ امریکا نے امارات اسلامیہ سے2001 میں اقتدار چھینا تھا لہذا قانونی اور اخلاقی طور پر امریکا پر لازم ہوجاتا ہے کہ وہ افغانستان کے حقیقی اسٹیک ہولڈر سے براہ راست مذاکرات کریں یا پھر جاری جنگ میں مزید نقصانات کو برداشت کرتے رہیں ۔ 2001 سے اب تک بی 52 طیاروں کی وحشیانہ بمباری اورافغانستان پر ٹینکوں کی گولہ باری سے عام شہریوں کو زیادہ نقصان پہنچا ہے ۔ دن رات نہتے شہریوں کے گھروں پر افغان طالبان کو پکڑنے کے نام پر چھاپے مارے جا رہے ہیں۔ عوام پر تشدد اور ان کا قتل عام معمول بنتا جارہا ہے۔چادر اور چاردیواری کا تقدس پامال کرنے میں امریکی و کابل سیکورٹی فورسز ملوث ہیں۔ مادر بم اور دیگر خطرناک بموں کی کارپیٹ بمباریوں نے عوام کو مکمل غیر محفوظ بنا رکھا ہے۔

حقیقت روزِروشن کی حقیقت واضح ہے کہ امریکی حملہ آوروں نے گزشتہ دو دہائیوں سے انسانی حقوق کی سنگین خلاف ورزیاں کیں ہیں۔ ٹرمپ کی پالیسی بھی ناکام ثابت ہوئی اور مایوس ہو کر رواں سال کے آغاز سے امن کے نام پر دوہری پالیسی اپنالی ہے۔ اس لیے کبھی امن ریلیوں کے نام پر، کبھی علماء کانفرنسوں کے تحت اور کبھی تاجکستان اور دیگر ممالک میں امارات اسلامیہ کے خلاف منصوبے بنائے جاتے ہیں۔ ان تمام منصوبوں کے پیچھے براہ راست امریکا کارفرما ہے۔ امن ریلیوں کے شرکاء اگر واقعی مخلص اور امن کے خواہاں ہیں تو امریکا کو براہ راست مذاکرات کے لئے مطالبات کو تسلیم کرنا ہوگا۔ امارات اسلامیہ کا واضح موقف بھی سامنے ہے کہ اگر واقعی میں کوئی انہیں کچھ ایسا نظر آتا ہے جو افغانستان میں استحکام امن کے لئے عملی کردار ادا کرسکتا ہے تو وہ بھی ہتھیار پھینک دیں گے اور عوام کے دفاع سے بھی دست بردار ہوجائیں گے، لیکن پہلے وہ صرف یہ آواز بلند کریں کہ جارحیت پسند اور غیرملکی فوجیں افغانستان سے چلی جائیں۔ فضائی حملے بند کیے جائیں۔ افغان عوام کو اپنے مستقبل کا فیصلہ کرنے دیا جائے۔ فضائی اور زمینی حدود میں انسانی حقوق کی خلاف ورزی ختم کی جائے ۔ غیر ملکی حملہ آوروں کو بتائیں کہ آپ نے گزشتہ 18 برس کے دوران موت، تباہی، بمباری اور بے عزتی کے سوا کچھ نہیں دیا۔ تمام جرائم اور مسائل کی بنیادی وجہ اور فساد کی جڑ امریکی یلغار ہے، جس کا خاتمہ ضروری ہے۔امن ریلیوں کے شرکاء ہوں یا امن دوست ممالک کو عوام کے بنیادی مسائل کا ادارک کرنا ضروری ہے کہ افغانستان میں امن کا استحکام کیوں ناکام ہورہا ہے۔ عوام باشعور اور مسائل کی بنیادی وجہ جانتے ہیں۔ سب جانتے ہیں کہ افغانستان میں بنیادی مسئلہ کہاں پیدا ہوا اور امن کی راہ میں کون رکاوٹ ہے؟ اگر امن پسند ممالک اس حقیقت کا ادراک کریں تو امن لانے کا ایک آسان راستہ انہیں میسر آ سکتا ہے۔برسلز اور جدہ کانفرنس جیسی کئی کانفرنسوں اور بھی منعقد ہوجائیں لیکن اس کا حقیقی فائدہ اس وقت ہی سامنے آسکتا ہے جب امریکا اور موجودہ کابل حکومت امن کی قرار واقعی خوائش بھی رکھتی ہوں۔حقیقت سے خالی بیانات دینے سے مسئلے کا حل نہیں نکل سکتا ۔ امریکا کو اپنی حکمت عملی کو تبدیل کرنا ہوگا اور جنگ کے راستے کو ترک کرکے امارات اسلامیہ کے ساتھ بامقصد براہ راست مذاکرات کی راہ اپنانی ہوگی ۔ طاقت کے ناکامی کے بعد امن کا واحد راستہ مزاکرات رہ جاتا ہے۔ جس سے روگردانی امریکا کے لئے نقصان کا مزید سبب بنے گا۔

Rate it:
Share Comments Post Comments
Total Views: 139 Print Article Print
About the Author: Qadir Khan

Read More Articles by Qadir Khan: 534 Articles with 190744 views »
Currently, no details found about the author. If you are the author of this Article, Please update or create your Profile here >>

Reviews & Comments

Language: