روٹی

(Tahira Afzaal, Rawalpindi)

دسمبر کی یخ بستہ صبح میں سڑک کے کنارے کالج وین کا انتظار کرتے ہوے میری نظر اک بھکاری بچے پر پڑی 'اس کی عمر لگ بھگ سات سال ہو گی میلے کچیلے کپڑے پہنے سویٹر اور جوتوں سے بےنیاز بھیک مانگنے میں مصروف تھا .جونہی وہ میرے نزدیک آیا میں نے بیگ سے پانچ روپے کا سکہ نکال کر اسے دیا اور کہا 'تمہیں ٹھنڈ نہیں لگتی 'نا سویٹر پہنا ہے نا جوتے 'تمہیں زندہ نہیں رہنا کیا ؟اسنے ایک طائرانہ سی نظر مجھ پر ڈالی اور کسی فلسفی کی طرح بولا 'زندہ رہنے کے لیے "روٹی " کی ضرورت ہوتی ہے جوتی کی نہیں .اور میں یہ سوچتی رہ گئی کہ زندگی کیا ہے -

Rate it:
Share Comments Post Comments
Total Views: 638 Print Article Print
 PREVIOUS
NEXT 
About the Author: Tahira Afzaal

Read More Articles by Tahira Afzaal: 15 Articles with 5834 views »
Currently, no details found about the author. If you are the author of this Article, Please update or create your Profile here >>

Comments

آپ کی رائے
G Tahira Saheba, Gine ke ley Rooti is basic no shoes and cloths, Basic is food primary is cloths and shoes, Rooti Garib ki pahunoch se door hoti ja rahee hai, Kash ! Ehsas ho being a humain, yehan Insan kum Haiwan zada hain. If you want to feel you can see in village and poor areas when mother is preparing rooti its khusboo se bache katna khush ho tai hain . Hum insan bari naam ehsas khatam ho gya hai. Don't mind and don't take another way. Thanks
By: Maqsood Alam, Karachi on Mar, 28 2019
Reply Reply
1 Like
Language: