کڈنی کی بیماری سے بچاؤ کے طریقے

(Gyan Bhadra, India)
صحت مند طرز زندگی کو اپنانے ، احتیاطی تدابیر اٹھانے گردوں کے مرضوں کوگردے کی بیماری سے بچانے کیلئے پیشاب کی معمول جانچ کرواکر کڈنی کی بیماری سے بچاؤ کریں

آج کل، کڈنی سے متعلق بیماری ایک سنگین مسئلہ بن چکی ہے۔کھانے کی خرابی، غیر صحت مندطرز زندگی اورشوگر( ذیابیطس )جیسے بیماریوں نے گردوں کے مریضوں کی تعدادمیں اضافہ کیا ہے۔’’لوگوں میں اپنے جسم کے تئیں غفلت، گردے کی بیماریوں کے بارے میں مکمل طور سے معلومات نہ ہونا انہیں بے وقت گردی کی بیماری میں مبتلا کرتا ہے۔‘‘یہ کہنا ہے کہ ڈاکٹر پرسون گھوش کا جوکہ گڑگاؤں میں واقع میدانتا میڈسٹی ہسپتال کے گردے اور یورولوجی کے سیکشن میں ایسو سی سیٹ ڈائریکٹر کی پوزیشن پر کام کررہے ہیں۔
یہاں ان کے انٹرویو کے کچھ اہم حوالہ جات ہیں:
سوال: آج کل چھوٹے شہروں اور گاؤں میں گردے کی بیماری کیمتعلق ایک غلط فہمی ہے۔ گاؤں میں گردے کی بیماری کے باوجود، اسے ’’پروسٹیٹ کاتھوڑابڑھا ہونا‘‘بتا کر نظر انداز کررہے ہیں۔ہمارے قارئین کو اس تناظر میں بتائیں۔
جواب: عموما ایک گردے خدا کی طرف سے ایک قیمتی جسمانی تحفہ ہے۔لہذا، اس نقطہ نظر سے، ہمارا فرض ہے کہ خدا کی طرف سے دی گئی اس انمول اور قیمتی تحفہ کی دیکھ بھال اور حفاظت کریں۔
ایک مثال کے طور پر، میں کہتا ہوں۔ آپ R.O. فلٹر سسٹم کی طرف سے پاک و صاف پانی پیتے ہیں۔ اسی طرح، گردے ہمارے جسم میں ایک جدید ترین RO ہے۔جو ہمارے جسم کے اندر مضرعناصر کو فلٹر کرکے پیشاب کے ذریعے ان کو باہر خارج کرتے ہیں۔اتنا ہی نہیں، گردے جسم کے بلڈ پریشر، الیکٹرویلی سطح اور وٹامن ڈی عام طور پر برقرار رکھتا ہے۔
ہم صرف جسم کے بیرونی اعضاء کی صاف صفائی اور دیکھ بھال کرتے ہیں۔لیکن ہم گردوں جیسے اعضاء نہیں دیکھ پاتے ہیں اس لئے ہم انہیں نظر انداز کرتے ہیں۔یہ ایک غلط سوچ ہے۔
سوال: اس تناظر میں آپ کا کیامشورہ ہے؟
جواب: اس تناظر میں، میرے پاس مشورہ ہے کہ سال میں ایک بار کڈنی یعنی گردے کی طبی جانچ ضرور کرائیں۔ دوسریجسمانی اعضاء کی طرح کڈنی یعنی گردے بھی خراب ہوتے ہیں۔ مثلاًکڈنی میں جرائثیم ،کڈنی میں پتھر،کڈنی کا کینسر اور کڈنی میں پیدائشی طور پرغیر معتبر متضادات انفیکشن اور کمی ہونا وغیرہ۔
اگر ممکنہ گردے کی بیماری طبی معائنہ کے ذریعے پہلے پتا چل جائے، تو اس بیماری کی پیچیدگیوں سے بچنا ممکن ہوجاتا ہے۔طبی جانچ پڑتال باقاعدگی سے کرنا ضروری ہے۔
سوال: ممکنہ گردے کی بیماریوں سے آگاہ کرائیں؟
جواب: ہم نے بڑے پیمانے پر گردے کی بیماریوں کو دو اقسام میں تقسیم کیا ہے۔
(1) جراحی گردوں کی بیماری: یہ اس طور پر سمجھا جا سکتا ہے کہ ایسے گردوں کی بیماری جس کا مرض تشخیص سرجری یا شلی ممکن ہے۔ میسن؛ کسی قسم کی رکاوٹ میں گردوں کے پتھر، گردے کی کینسر اور مثالی غدود.
(2) میڈیکل گردے کی بیماری: اس طرح کے گردے کی بیماری کی تشخیص اور علاج دواؤں یا علاج کے طریقوں سے ممکن ہے۔
اس زمرے میں گردے کا متاثرہ ہونا جیسے بیماری، پرانی گردے بیماریوں، بلڈ پریشر اور ذیابیطس کی طرف سے پیدا گردوں کی بیماری وغیرہ جراحی متعلقہ بیماریوں میں یورولجسٹ بیماری تشخیص اور علاج کا کردار ادا کرتے ہیں۔
میڈیکل سے متعلق بیماریوں میں نوفولاجسٹ لوگوں کا علاج کرتے ہیں۔
سوال: گردوں کی بیماریوں میں کیا نوعیت کی علامات ظاہر ہوتی ہیں؟
جواب: پیٹ کے ایک طرف دردہونا، بخار آنا، پیشاب میں خون آنااور بیشاب کرنے میں رکاوٹ کا ہونا ،یہ کڈنی کی بیماری کے علامات ہیں۔کئی لوگوں میں یہ علامات دکھائی نہیں دیتے ہیں ۔کہنے کا مطلب یہ ہے کہ کڈنی بیماری غیر علامتی بھی ہوتے ہیں۔
بنیادی طور سے جو میڈیکل جانچ ہے ،وہ لوگوں کو ضرور کرانی چاہئے ۔جیسے الٹراساؤنڈ ،بیشاب جانچ ۔
اگر بیماری پیچیدہ شکل میں ہے تو اس صورتحال میں، لوگوں کو ایم آر آئی، CT-اسکین، پی ای ٹی -CT چیک کرنا چاہئے۔تحقیقات کے ذریعہ موصول ہونے والے نتائج کی بنیاد پر، لوگوں کے ساتھ علاج سے متعلق اختیارات اور تفصیلات تفصیل سے بتا یا جاتا ہے ۔
جانچ کے متبادل کا استعمال بیماری کے مطابق کیا جاتا ہے ۔کڈنی میں ٹیومر یا اسٹون (پتھر)ہونے کی حالت میں سرجری کی صلاح دی جاتی ہے ۔ریڈیوتھریپی کی صلاح بیماری کی حالت کی بنیاد پر دی جاتی ہے ۔
سرجری تراکیب میں اعلی سطحی اوپن سرجری،کم سے کم انویسو سرجری، انڈورورولاجی (لیزر-کرنوں کے ذریعے)لو پروسکوپی اور روبوٹک سرجری شامل ہیں۔
ایسا کئی دفعہ مشاہدہ کیا گیا ہے کہ کڈنی کی بیماری سے متاثرہ لوگوں میں دل اور پھیپھڑوں کی صحت اچھی نہیں ہوتی ہے۔
ایسی حالتوں میں، ہم گردے کی بیماری کو کھلی سرجری کے ذریعے علاج کرتے ہیں۔ اس صورت حال میں، کم سے کم ان ویسو سرجری کے ذریعے علاج کرنا منع ہے ۔
 

Disclaimer: All information is provided here only for general health education. Please consult your health physician regarding any treatment of health issues.
Rate it:
Share Comments Post Comments
Total Views: 589 Print Article Print
About the Author: Gyan Bhadra

Read More Articles by Gyan Bhadra: 8 Articles with 3342 views »
Currently, no details found about the author. If you are the author of this Article, Please update or create your Profile here >>

Reviews & Comments

Language: