دل میں چھید کردینے والی آواز

(Sami Ullah Malik, )

اتنی صبح گھنٹی کی آوازنے دل کی دھڑکن کوبے ترتیب کردیا۔میں نے ریسیوراٹھایاتوچندلمحے جان ہی نہ پایاکہ میں جاگ رہاہوں یاخواب کی کوئی کیفیت ہے۔ اس کی آوازمیری اکلوتی پوتی سے بہت ملتی جلتی تھی۔اس کاہرلفظ گہرے کرب میں ڈوباہواتھاوہ ہچکیوں کے ساتھ رورہی تھی،مجھے اورکچھ سنائی نہیں دے رہاتھا۔ رات کاآخری پہرتھاکہ نیندمیری آنکھوں سے یکایک ایسے روٹھ گئی جیسے اس سے میری کوئی آشنائی نہیں۔میں اٹھ کربیٹھ گیااوروہ جانے مجھے کیاجان کرروتی رہی،اپنی کہانی سناتی رہی اورمیں اسے جھوٹی تسلیاں دیتارہا۔میں یہ پوچھنا بھی بھول گیاکہ اس نے میراٹیلیفون کہاں سے حاصل کیاہے؟اس کانام زینب ہے اورپلوامہ سے اس کاتعلق ہے۔کئی ماہ پہلے اس کی شادی ہوئی،کچھ ہی دنوں بعدجلادصفت وردی میں ملبوس کچھ لوگ آئے،تلاشی کے نام پرسارے گھرکو اکھاڑ پچھاڑدیا۔جاتے ہوئے اس کے خاوندکواپنے ساتھ لے گئے ۔گھروالوں نے جب احتجاج کیاتوگولیوں کی تڑتڑسے اس کاگھرانہ اس طرح کانپ رہاتھاجس طرح کسی گناہ گارکادل تنہائی میں کانپتا ہے۔

تین دنوں کے بعدوہ گھرواپس آگیالیکن اسے پہنچاننامشکل ہورہاتھا۔اس سے تفتیش کی جاتی رہی کہ وہ کبھی سرحدپارگیا تھایانہیں؟مزیدچنددنوں بعدآدھی رات کو وہی وردی میں ملبوس افراد نے اچانک چھاپہ مارا،دیوارپھلانگ کراندرآنے والے ، زینب کے شوہراورجیٹھ کو،کچھ کمپیوٹراوردوسری اشیاء سمیت اٹھا لے گئے۔ دونوں برسوں دہلی میں رہے اوروہاں تعلیمی اداروں میں پڑھاتے رہے۔ان کاقصوریہ تھاکہ وہ کشمیرمیں ہونے والے مظالم کومکمل ثبوتوں کے ساتھ عالمی انسانی حقوق کے اداروں کومہیاکرتے تھے۔ابھی زینب کے ہاتھوں کی مہندی بھی پھیکی نہیں پڑی تھی کہ وہ اس افتادکاشکارہوگئی۔اس نے عالمی انسانی ہمدردی کے تمام اداروں سے رابطہ کرکے اس ناگہانی مصیبت کے بارے میں مطلع کیاتوسب نے اپنی اپنی مجبوریوں کااظہارکرتے ہوئے جان چھڑانے کی کوشش کی۔ اس نے عدالت سے رجوع کیاتوبھارت کی تمام ایجنسیوں نے تحریری طورپربتادیاکہ ہمیں ان دونوں کے بارے میں کوئی علم نہیں۔

22سالہ دلہن اب بستی بستی بھٹک رہی ہے،دکھائی دینے والاہردروازہ کھٹکھٹارہی ہے۔گلیوں گلیوں دہائی دے رہی ہے لیکن ظلم کے لق ودق صحرامیں اس کی آوازچیخ بن کرخوداسی کے کانوں میں پلٹ آتی ہے۔لگ بھگ بھارت کی ایک ارب انسانوں کی بھری پڑی آبادی میں کوئی دروازہ وانہیں ہوتا،کوئی دریچہ اپنی آغوش نہیں کھولتااورکوئی کھڑکی اسے آوازنہیں دیتی۔ میں ابھی تک نرم وگدازبسترمیں نیم درازبیٹھاتھااورلندن کی خنک رات ہولے ہولے سرک رہی تھی اور کشمیرکی ایک عفت مآب بیٹی کی آوازقطرہ قطرہ میرے دل پرٹپک رہی تھی۔وہ کہہ رہی تھی:
“مجھے بتائیں میں کہاں جاؤں؟سرینگر سے ٹھوکریں کھاتی کھاتی بھارت کے دارلحکومت نئی دہلی اس لئے آگئی ہوں کہ دنیا میں سب سے بڑی جمہوریت کا نعرہ لگانے والے کشمیرمیں کسی انسانی حقوق کے ادارے کوجانے کی اجازت نہیں دیتے، کوئی غیرملکی صحافی یاکیمرہ اس جنت میں داخل نہیں ہوسکتا جس کوان درندوں نے جہنم میں تبدیل کردیاہے۔میراکوئی ٹھکانہ ہے نہ جائے پناہ،میں کیاکروں؟کدھرجاؤں؟میں اپنے کھوجانے والے شوہراوراس کے بھائی کی تلاش کروں یااپناآپ بچاؤں؟ میں اپنی فریاداخباروں کوسناچکی،مسلمان ہونے کے ناطے مجھے بہت سے اخبارکے مالکان کی کڑوی اورکسیلی باتیں بھی سننے کوملیں ،کسی کادل نہیں پسیجا،کسی نے میراحال نہیں پوچھا۔آپ کے ایک واقف کارنے اپنے ٹیلیفون سے نمبرملاکرمیرے ہاتھ میں یہ کہہ کرتھمادیاکہ ان کوبھی تواطلاع ہونی چاہئے جن کو ہرکشمیری بہن بیٹی اپنابھائی اورباپ سمجھ کرہرلمحہ ان کی سلامتی اورعافیت کی دعاؤں میں مگن رہتی ہیں۔اتنی رات گئے آپ سے بات کرنے پربہت شرمندہ ہوں لیکن میں کیاکروں؟ میں کدھرجاؤں؟بہنیں اوربیٹیاں آخراپنے دکھ اورغم اپنوں سے ہی کرسکتی ہیں؟میں اب کس کو۔۔۔۔!

فون بندہوجانے کے بعدبھی میراکمرہ دیرتک سسکیوں سے بھرارہا۔دیرتک میرے کانوں میں صحرائی ریت کے بگولے سائیں سائیں کرتے رہے اوردیر تک میری آنکھیں دہکتے کوئلوں پرکسمساتی راکھ سے بھری رہیں اوردیر تک ایک آوازجومیری پوتی کی آوازسے بہت ملتی جلتی تھی،میری بندکھڑکی کے شیشوں پردستک دیتی رہیں۔زینب اپنے شوہراوراس کے بڑے بھائی کی تلاش میں ہے۔ہزاروں دیگرافراداپنے پیاروں کے انتظارمیں کسی اچھی خبرکے منتظرہیں۔کئی بوڑھے والدین کی آنکھیں پتھراچکی ہیں کہ ان کے بڑھاپے کے سہارے ان سے چھین لئے گئے ہیں اوراس وقت بے سہارامارے مارے پھررہے ہیں۔امریکاکی ایک ہندوپروفیسرنے اپنے ساتھی پروفیسر کی مدد سے کشمیر میں اجتماعی قبروں کی نشاندہی میں مدد دی جہاں چار ہزارسے زائد افرادکوگڑھے کھودکردفن کردیا گیا۔اس جنتِ ارضی میں جنگل کاقانون جاری وساری ہے۔

فریادکناں زینب کے یہ جملے میرے کانوں میں پگھلے ہوئے سیسے کی مانندکیوں دوڑرہے ہیں کہ”بالآخر بیٹیاں اپنے دکھوں کاتذکرہ اپنے باپ سے نہ کریں تو کہاں جائیں؟”میں اسے کیسےبتاؤں کہ عصمت صدیقی اپنی عفت مآب بیٹی عافیہ صدیقی کی تلا ش میں بھٹک رہی ہے،آمنہ مسعود جنجوعہ پچھلے کئی برسوں سے حکومتی اداروں کے مردہ ضمیروں کوجگانے کی کوششوں میں ناکام ہوچکی ہے۔کوئی ان کی انگلی تھامنے والانہیں،کوئی انہیں راستہ سجھانے والانہیں۔یہ کیساسحرہے کہ انسان بیٹھے بٹھائے تحلیل ہوجاتے ہیں اورکسی کوکچھ پتہ بھی نہیں چلتا۔

کسی پرشک ہوتوقانون موجودہے،اسے حرکت میں لایاجاسکتاہے،اس کے خلاف شواہد جمع کرکے اسے عدالتی عمل سے گزاراجاسکتاہے،اسے صفائی کاموقع دینے کے بعد جرم ثابت ہونے پر کڑی سزادی جا سکتی ہے لیکن یہ عجیب دستورچل نکلاہے کہ کسی کوغائب کردیاجائے اورپھر مہینوں بلکہ سالوں تک اس کے عزیزوں کوانتظارکی سولی پرلٹکادیاجائے کہ ان کے پیارے عزیز کہاں اورکس حال میں ہیں اوران پرکیاگزررہی ہے؟ایساکرنے سے ایک مہذب ملک کی ساکھ پرانتہائی منفی اثرپڑتاہے جودنیابھرکی سب سے بڑی جمہوریت کاجعلی ڈھنڈورابھی پیٹ رہاہو۔ کیاوہ نہیں سمجھتے کہ اس طرح ان کی “روشن خیال جمہوریت”محض ایک سراب دکھائی دینے لگی ہے؟ہم تویہ سب کچھ امریکی کروسیڈسے عہدِوفانبھانے کیلئے کررہے ہیں لیکن بھارت تو امریکا اورمغرب کی دوستی کادم بھررہاہے۔وہ اپنے انہی دوستوں کے کندھے استعمال کرکے اقوام متحدہ کی مستقل نشست(ویٹوپاور)کے خواب دیکھ رہاہے تاکہ اس طاقت کے نشے میں وہ مہابھارت کی تکمیل کرسکے۔ پھرکیاوجہ ہے کہ انسانی حقوق کی ایسی پامالی پرایک امریکی ہندوپروفیسرکوبھی اجتماعی قبروں جیسے ہولناک مظالم پر احتجاج کی آوازاٹھاناناگزیرہوگیااورانسانی حقوق کے چیمپئن ممالک کوکشمیرمیں اس ہولناک مظالم سے آگاہ کرناپڑا۔

ہم نصیبوں جلے توایسے ہیں کہ آج تک کشمیرمیں ان اجتماعی قبروں کے انکشاف کے بعدقصرِسفیدکے فرعون نے کوئی اعلامیہ جاری نہیں کیابلکہ مغربی ممالک توبھارت کی بلائیں لے رہے ہیں اورایٹمی توانائی کی مددکیلئے دل وجاں فرشِ راہ کئے ہوئے ہیں لیکن ماورائے عدالت ہلاکتوں سے لیکراغواء تشدد، ریاستی جبراورقانون وعدل کی رسوائی تک ہروہ الزام ہمارے دامن کاداغ بنا دیا گیاجس کاتصورکیاجاسکتاہے،اس کے باوجودامریکا کی دلداری ہماری سب سے بڑی ترجیح ہے جس کیلئے ہم نے اچھے بھلے ملک کوجنگل بنادیااورڈھٹائی کی حدتویہ ہے کہ اب بھی اسی عطارکے لونڈے سے امیدیں وابستہ کئے ہوئے ہیں۔

زینب کے شوہرکاجرم صرف یہی ہے کہ وہ دنیاکے انسانی حقوق کے اداروں کوکشمیر میں ہونے والے مظالم کی اصلی تصویرسے آگاہ کرتاتھا۔کشمیرمیں”غیر اعلانیہ کرفیو”کی آڑمیں ہونے والے مظالم کی نشاندہی کرتاتھا۔”غیراعلانیہ کرفیو”جیسی منحوس اصطلاح کااستعمال سب سے پہلے 2008ء میں امرناتھ اراضی ایجی ٹیشن کے دوران گورنراین این وہرانے شروع کیاتھالیکن اس سے بھی پہلے شیخ محمدعبداللہ نے 1975ءمیں پبلک سیفٹی ایکٹ یہ کہہ کرمتعارف کروایاتھا کہ یہ صرف اسمگلروں کے خلاف استعمال کیاجائےگا۔اس ایکٹ کے تحت بغیرکسی عدالتی کاروائی کے کسی بھی شخص کودوسال کیلئے زنداں کی تاریکی میں پھینکاجاسکتاہے لیکن آج تک اسی غیرانسانی اورظالمانہ قانون کوبے دریغ بے گناہ کشمیریوں کے خلاف استعمال کیا جارہاہے اوربیشتر کشمیری اسی تعذیبی قانون کے تحت چودہ چودہ سال سے بھی زیادہ بھارت کی جیلوں میں گل سڑرہے ہیں۔

اگرآپ کویادہوتو29اور30مئی 2009ء کی درمیانی رات کوکشمیر کی دومجبور بیٹیوں نیلوفراورآسیہ کواجتماعی عصمت دری کے بعد قتل کردیاگیاتھاجس سے اہل شوپیاں کے علاوہ سارے کشمیریوں کے دل دہل گئے تھے۔پوری وادی میں اس پر بھرپوراحتجاج ہوالیکن شوپیاں کے غیورعوام نے47دن کی مسلسل ہڑتال سے اس سانحے کوامرکردیاکہ وہ اپنی ان بیٹیوں کے صدمے کوکبھی نہیں بھول سکتے۔مجھے یادہے کہ تین سالہ سوزین جوایک سال بعداپنی ماں اورپھوپھی کی اجتماعی عصمت دری کے خلاف احتجاج کررہاتھا اس کوغمزدہ لواحقین کے ساتھ انصاف مانگنے کی پاداش میں مجرم ٹھہراکر گرفتارکرلیا گیا تھا۔کیایہ ممکن تھا کہ تین سالہ بچہ جواپنے پاؤں پراچھی طرح چل بھی نہیں سکتا وہ بھارت کے وزیراعظم کیلئے کوئی خطرہ بن سکتاتھا؟دنیا کی سب سے بڑی جمہوریت کے محافظ اس بلکتے تڑپتےشیرخوارزین جس کے آنسوکئی دلوں کوگھائل کررہے تھے،مردہ خورگدھوں کی طرح ٹوٹ پڑے تھے۔

مجبورومقہورکشمیریوں کے سرقلم کرنے کیلئے”غیراعلانیہ کرفیو”کے دوران”پبلک سیفٹی ایکٹ” کی بے لگام تلوارہی کافی تھی کہ اب کشمیرمیں تعینات سات لاکھ افواج کو”آرمڈفورسزسپیشل پاورایکٹ”اور”ڈسٹرب ایریاایکٹ”جیسے ظالمانہ قوانین کے تحت بے پناہ اختیارات حاصل کرنے کے بعدکسی کوجوابدہ نہیں،جس کی وجہ سے اب یہ قانون عوام کے محافظین کہلانے والوں کیلئے ایک نفع بخش تجارت کی شکل اختیارکرگیاہے جس میں لین دین انسانی سروں اورسستے انسانی خون سے ہوتا ہے۔میں توابھی تک زاہد،وامق،عنائت اللہ اورطفیل متو کی ہلاکتوں سے لیکرمژھل فرضی جھڑپوں میں کشمیریوں کے سرِعام قتل کونہیں بھول سکا،اے میری مظلوم ومجبوربیٹی زینب!کیا تجھے معلوم نہیں کہ اسلام کاایک درخشندہ ستارے کانام بھی زینب تھاجن کی مژھل فرضی جھڑپوں میں کشمیریوں کے سرِعام قتل کونہیں بھول سکا،اے میری مظلوم ومجبوربیٹی زینب! کیا تجھے معلوم نہیں کہ اسلام کاایک درخشندہ ستارے کانام بھی زینب تھاجن کی کنیت”ام المصائب “تھی جن کے خطبات آج بھی مسلم امہ کیلئے مشعلِ راہ ہیں۔

میراوجدان اس بات کی گواہی دیتاہے کہ ظلم وستم کایہ دورایسے عوامی انقلابی ریلے کودعوت دے رہاہے جس کے سامنے توپ وتفنگ ناکارہ اوربے بہرہ ہو جاتی ہیں۔انقلابِ فرانس بھی ایک پتھرمارنے سے شروع ہواتھاپھراس کے بعدبادشاہ کے محافظین اپنے تمام اسلحے کے ساتھ نہ توبادشاہ کی حفاظت کرسکے اور نہ خودکوبچاسکے۔اس طوفانی ریلے کے سامنے تمام ظالمانہ قوتیں اپنے اتحاد کے باوجودتنکوں کی طرح خس وخاشاک کی طرح بہہ گئیں۔جونرم ہاتھ یاسفیدکالر والی گردن نظرآئی اس کاشانوں سے تعلق ختم کردیاگیا۔کشمیرکےموجودہ حالات میں امرناتھ جیسی ایجی ٹیشن سے بھی کہیں شدید مزاحمتی تحریک شروع ہوچکی ہےجہاں سات دہائیوں سے کشمیریوں کابہنے والامقدس خون اب ضروررنگ لائے گااوراب کوئی نیامیرجعفریامیرصادق ظالموں کومیسرنہ آسکے گاانشاء اللہ۔

لیکن ٹھہریئے مجھے کچھ ان افرادکے ضمیر کوبھی جگاناہے جن کی یہ مجبورومقہوربیٹیاں ان کے نام کی دہائی ان شہداء کے قبرستانوں میں دیتی نظرآرہی ہیں جو ہمارے ہاں کے مفادپرستوں کی چیرہ دستوں کاشکارہوگئے جن کوہرقیمت پراپنا اقتدار عزیزہے اورسفاک مودی سے ملاقات کیلئے بے چین ہیں اورسلامتی کونسل میں اپناووٹ دیکراس کوممبربنانے میں بھی کوئی شرم محسوس نہیں کی۔آخریہ روتی بلکتی مائیں،دربدربھٹکتے بوڑھے باپ،بال بکھرائے دہائی دیتی بیویاں کہاں جائیں؟کون سی زنجیرعدل ہلائیں،کس دیوارسے سر پھوڑیں؟میں سوچتے سوچتے تھک گیا ہوں لیکن کوئی جواب سجھائی نہیں دیتا۔آج بھی تین سالہ سوزین کے آنسواوربائیس سالہ نوبیاہتازینب کی آوازیں مسلسل میراتعاقب کررہیں ہیں اورمیرے لئے کرب کاایک اضافی پہلویہ ہے کہ دل میں چھید کردینے والی آوازمیری پوتی کی آوازسے ہوبہوملتی ہے!

 

Rate it:
Share Comments Post Comments
Total Views: 106 Print Article Print
About the Author: Sami Ullah Malik

Read More Articles by Sami Ullah Malik: 204 Articles with 42358 views »
Currently, no details found about the author. If you are the author of this Article, Please update or create your Profile here >>

Reviews & Comments

Language: