طلباء میں خودکشی کا بڑھتا ہوا روجحان

(Romaisa Hussain, Karachi)

نوجوان جو کہ کسی بھی ملک کی قومی طاقت کا ایک اہم عنصر ہوتے ہیں قوموں کی ترقی کا دارومدار اس کے نوجوانوں پر ہوتا ہے اس لیے نوجوانوں کو قوم کا معمار کہا گیا ہے _ہمارے لیے یہ بہت مضحکہ خیز بات ہے کہ آج کل ہمارے معاشرے میں نوجوانوں میں خودکشی کا روجحان بہت بڑھ گیا ہے جس کی ایک وجہ ہے ہمارے تعلیمی اداروں کی غفلت' ہمارے تعلیمی اداروں کا خراب اور بد عُنوان نظام ہی ہمارے نوجوانوں کو ڈپریشن جیسی بیماری سے متعارف کروا رہا ہے ہمارے ملک کے کافی تعلیمی اداروں میں اس قدر جانبدار(favoritism )ہے جس کی بنیاد پر یا تو ہزاروں طلباء کو فیل کر دیا جاتا ہے یا انکو کم نمبر دے کر انکی صلاحیتوں کو پست کر دیا جاتا ہے طلباء بار بار کوشش کرنے کے بعد بھی جب امتحان میں کامیاب نہیں ہو پاتے دوستوں اور گھر والوں کی باتوں سے تنگ آکر آخر میں تھک ہار کر خودکشی کو ترجیت دیتے ہیں _خودکشی کرنے والوں کو اوّل تو یہ بتانے کی ضرورت ہے کہ خودکشی کسی بھی مسئلے کا حل نہیں ہے اور نہ ہی اس سے مسائل حل ہونگے بلکہ مسائل میں مزید اضافہ ہوجاتا ہے اپنے ساتھ اپنے گھر والوں کو بھی بہت سے سنگین مسائل سے دو چار کر جاتے ہیں _ہمارے تعلیمی اداروں کے انتظامیہ کو ماضی میں ہونے والے واقعیات سے سبق حاصل کرتے ہوئے اپنے تعلیمی اداروں کو درست کرنا چاہئے اور ساتھ ساتھ اساتذہ کو اپنے فرائض میں سنجیدگی کا مظاہرہ کرتے ہوئے کمزور طلباء پر خاص توجہ دینے کی ضرورت ہے طلباء کو انکی کمزوری سے آگاہ کرنا چاہئے اور جانبداری (favoritism) کو ختم کرنا چاہئے _

حکومت وقت کی یہ زمیداری ہے کہ خودکشی کے اس بڑھتے ہوئے روجحان کے انسراد کے لیے مناسب و موزوں معاشی تدابیر کو اختیار کرے اور ساتھ ہی جانب داری (favoritism )کے مسئلے پر موثر قانون سازی کی جائے تاکہ نوجوان نسل کو خودکش سے برباد ہونے سے بچایا جاسکے _
 

Rate it:
Share Comments Post Comments
Total Views: 228 Print Article Print
About the Author: Romaisa Hussain

Read More Articles by Romaisa Hussain: 10 Articles with 1669 views »
Currently, no details found about the author. If you are the author of this Article, Please update or create your Profile here >>

Reviews & Comments

Language: