فرنٹ لائن پر کشمیر

(Raana Kanwal, Islamabad)

علاقائی تسلط کی حوس میں ہندوستان نے جنوبی ایشیاء کو ایک انتہائی خطرناک موڑ پر لا کر کھڑا کر دیا ہے۔اس خطے میں بھارت اور پاکستان دونوں ایٹمی طاقتیں کشمیر پر دو جنگیں لڑ چکی ہیں۔ کشمیر سات دہائیوں سے بھی زیادہ عرصے سے دونوں ممالک کے مابین تنازعات کی ایک ہڈی ہے۔ کشمیر کی پاکستان اور اس کی مسلمان اکثریت ہونے کی وجہ سے ، پاکستانی رہنماؤں کو یہ اندازہ تھا کہ وہ پاکستان میں شامل ہوجائے گا. جان بوجھ کر تقسیم کے منصوبے کے تحت ، برطانوی جج سر سیرل ریڈکلف کی سربراہی میں باؤنڈری کمیشن نے ہندوستان کو گورداس پور ضلع کی دو مسلم اکثریتی تحصیلوں سے نوازا ، تاکہ ہندوستان کواس سرزمین تک رسائی حاصل ہوسکے۔ پاکستان کے حمایت یافتہ قبائلی شخص نے جب کشمیر پرحملہ کیا تھا اور مہاراجہ نے کشمیر کا دفاع کرنے کے لئے نہرو کی مدد لی تھی کیونکہ صرف ہندوستانی فوج ہی ان کو پسپا کر سکتی تھی اس لیے اس نے ہندوستانیوں کے ساتھ ڈیل کر لی۔ اس ڈیل کے تحت کشمیر کو خود مختاری سے الگ آئین اور پرچم دینے کے ساتھ ہی بیرون ملک مقیم افراد کو کشمیر میں پراپرٹی خریدنے پر پابندی عائد کردی گی۔

5 اگست کو مودی کی سربراہی میں حکومت ہند نے اس معاہدہ کو پھاڑ دیا۔ اس سے ہندو قوم پرست حامیوں کو متاثر کرنے کے لیے یہ قدم لیا۔ آرٹیکل 370 نے کشمیر کو دفاع ، مواصلات اور خارجہ امور کے علاوہ اپنا آئین بنانے اور خود مختاری کا حق دیا۔ 35 اے نے خود مختاری دی اور ریاست سے باہر ہندوستانیوں کو مستقل طور پر آبادکاری ، جائیداد خریدنے اور مقامی حکومت کی ملازمتوں کے انعقاد سے منع کیا۔
آرٹیکل 370 کی منسوخی نے پوری وادی میں احتجاج کی فضا برپا کر دی۔ ان مظاہروں کو روکنے کے لئے جی او آئی نے وادی میں کرفیو نافذ کیا اور اضافی دستے تعینات کردیئے۔ آرٹیکل 370 کو منسوخ کرنے کے پیچھے اصل ارادہ قبضہ اور لوٹ مار کے تھے۔ کشمیر میں ہر ایک کو بے حد محکوم بنایا جارہا ہے ، لیکن خواتین اس غیر انسانی محاصرے کا سب سے بڑا شکار ہیں۔ ہندوستانی منتر کے مطابق علاقے میں "سب ٹھیک ہے"۔ پھر وہ موبائل سروسیں کیوں نہیں کھولتے ، وہ لوگوں کو اپنے پیاروں سے ملنے اور طبی سہولیات تک رسائی کی اجازت کیوں نہیں دیتے اور کیوں وہ سیاسی رہنماؤں کو رہا نہیں کرتے ہیں۔ مودی نے اس خطے کو اندھیرے میں ڈوبا دیا ، انٹرنیٹ اور ٹیلی مواصلات کو روک دیا اور کرفیو نافذ کیا۔ اس کی حکومت دعویٰ کرتی ہے کہ کشمیر میں ہر چیز "معمول پر آرہی ہے ،"۔ اب چھ ہفتوں سے زیادہ کا عرصہ گزر چکا ہے جب ہندوستانی حکومت نے جموں و کشمیر کی خودمختاری کو کالعدم قرار دے کر ریاست کو لاک ڈاوں کیا ہوا ہے۔ بہت سے کشمیریوں کو خوف ہے کہ ہندوستان کی واحد مسلم اکثریتی ریاست میں ان کے طرز زندگی کو خطرہ لاحق ہے۔ فوجیوں کی بھاری تعداد میں موجودگی ، مواصلات کے خاتمے اور بڑے پیمانے پر نظربندی نے بڑے مظاہروں کو روکا ہے۔ سری نگر میں اور دوسرے علاقوں میں بھی، مارکیٹیں بند ہیں۔ پبلک ٹرانسپورٹ بھی بند ہے۔

پاکستان کو جموں و کشمیر میں ہونے والے واقعات پر مسلم دنیا اور عالمی برادری کی طرف سے پُرجوش جواب ملا ہے۔ دنیا خاموش ہوسکتی ہے لیکن پاکستانی حکومت اور اس کی عوام کشمیری عوام کے شانہ بشانہ کھڑے ہیں۔ وزیر اعظم عمران خان نے دعوی کیا ، "کشمیری عوام کے سفیر کی حیثیت سے میں بہادر کشمیری عوام کے خلاف فاشسٹ مودی حکومت کے ظلم اور انسانی حقوق کی سنگین پامالیوں کو بے نقاب کرنے جا رہا ہوں۔" پاکستان نے ہر فورم پر آواز اٹھاتے ہوئے متعلقہ بین الاقوامی تنظیموں سے بھی مطالبہ کیا ہے کہ وہ کشمیر میں بھارتی بربریت اور مظالم کا نوٹس لیں۔ مودی کے دور حکومت میں ہندوستانی حکومت پاکستان کے ساتھ فوجی تنازعہ کا مطالبہ کرتی رہی ہے۔ بھارتی فوج کے سربراہ جنرل بپن راوت اور گجرات کے وزیر اعلی نے حال ہی میں کہا تھا کہ ہندوستانی فوج آزاد جموں و کشمیر پر قبضہ کرنے کے لئے آپریشن کے لئے تیار ہے۔ 27 فروری 2109 کو ، ہندوستان نے ہماری فضائی حدود کی خلاف ورزی کی اور ہندوستانیوں کے ذریعہ ایل او سی کی مسلسل خلاف ورزی ہوتی رہی ہے۔
پاکستان کی حکومت نے بار بار عالمی برادری کو متنبہ کیا ہے کہ ہندوستان اور پاکستان کے درمیان جنگ کے تباہ کن اثرات پورے خطے اور دنیا پر پڑ سکتے ہیں۔ کشمیر کی صورتحال جمہوریت ، انسانی حقوق اور علاقائی استحکام کے لئے سنگین مضمرات کا باعث ہوگی۔

اب ان کی تکلیف ختم کرنے اور مودی سرکار کو یہ جواب دینے کا وقت آگیا ہے کہ اکیسویں صدی میں ان کے انتہا پسند فاشسٹ نظریہ کی کوئی جگہ نہیں ہے۔ ہندوستان کی سپریم کورٹ نےبھی اپنی حکومت کو اس اقدام کو واپس لے کر کشمیر کی انفرادی حیثیت کو بحال کرنے کا حکم دیا ہے۔ بھارت اب یہ ڈھونگ نہیں کر سکتا کہ کشمیر اس کا داخلی معاملہ ہے۔ دونوں ممالک کے مابین دشمنی کی صورت میں برصغیر میں ایٹمی تبادلے کے امکان کو رد نہیں کیا جاسکتا۔ اس لیے جلد از جلد امن کے عمل کو شروع کرکے ، کشمیر کے حوالے سے بین لااقوامی ممالک اور اقوام متحدہ ثالثی کا کردار ادا کریں۔

 

Comments Print Article Print
 PREVIOUS
NEXT 
About the Author: Raana Kanwal

Read More Articles by Raana Kanwal: 50 Articles with 15991 views »
Currently, no details found about the author. If you are the author of this Article, Please update or create your Profile here >>
18 Sep, 2019 Views: 212

Comments

آپ کی رائے