لانس نائیک تیمور اسلم شہید

(Muhammad Aslam Lodhi, Lahore)

جمعہ کا دن تھا ‘نماز عشا کے بعد مساجد میں اعلان ہوا کہ کنٹرول لائن پر وطن عزیز کا دفاع کرتے ہوئے پاک فوج کے جوان‘ لانس نائیک تیمور اسلم جو شہید ہوگئے تھے ان کی نماز جنازہ والٹن روڈ لاہور کینٹ سے ملحقہ گراؤنڈ میں دس بجے رات پڑھائی جائے گی ۔پاک فوج اور اس کے شہیدوں سے مجھے والہانہ محبت ہے ‘ یہی محبت مجھے ان شہیدوں کے گھروں تک لے جاتی ہے جہاں لواحقین بھی اپنے پیارے کی جدائی میں آنسو بہاتے ہیں اور میں بھی ان کا ساتھ دیتا ہوں ۔یوں ایک ایسی داستان تحریر پاتی ہے جسے قارئین پسند فرماتے ہیں۔جیسے ہی میں متعلقہ گراؤنڈ میں پہنچا تو ایک جم غفیر پہلے سے وہاں موجود تھا ۔ دور دور تک لوگ پھولوں کے ہار لیے شہید کے جسد خاکی کی آمد کے منتظر تھے ‘ تقریبا رات بارہ بجے شہید کے جسد خاکی کو پورے فوجی اعزاز کے ساتھ اس گراؤنڈ میں لایا گیا جہاں ان کی نماز جنازہ ادا کی جانی تھی ۔ نماز جنازہ پیر سید سعید الحسن شاہ (‘ صوبائی وزیر مذہبی امور) نے نمازجنازہ پڑھائی پھر والٹن اسٹیشن کے قریب ریلوے آفیسر کالونی کے قبرستان میں شہید کو فوجی اعزاز کے ساتھ رات کے پچھلے پہر دفن کردیا گیا۔

تیمور اسلم شہید ‘ پیر کالونی گلی نمبر 7 والٹن روڈ لاہورکینٹ میں 1991ء میں پیدا ہوئے ‘ جہاں ان کے والدین قیام پذیر تھے ‘یہ خاندان 1989ء میں ناروال سے لاہورشفٹ ہوا تھا۔تیمور اپنے والدین کا سب سے بڑا بیٹا تھا جبکہ اسی گھر میں تین بہنیں اورایک بھائی ( محمد مبین ) بھی ہے ۔ تیمور کی پیدائش ‘ پرورش اور تعلیمی مدارج لاہور میں ہی طے ہوئے ۔تیمور کی تربیت میں والدین کے ساتھ ساتھ نانا نانی اور ماموں کابھی کردار بہت اہم تھا۔ تیمور نے میٹرک کاامتحان کینٹ ایریا کی مقبول ترین تعلیمی درسگاہ "قربان اینڈ سرویا ایجوکیشنل ٹرسٹ" والٹن روڈ سے پاس کیا ۔ بعد ازاں تعلیم کو خیر باد کہہ کرفوج میں بھرتی ہوگئے ۔وہ فوج سے اس قدر والہانہ محبت کرتے تھے کہ اگر انہیں کوئی باوردی فوجی نظر آتاتو اسے سیلوٹ ضرور کرتے ۔ 1965ء کی پاک بھارت جنگ کے ہیرو میجر عزیز بھٹی شہید( نشان حیدر) کا ڈرامہ انہیں بے حد پسند تھاجب میجر عزیزبھٹی کی شہادت کا منظر سامنے آتا تو ان کی آنکھوں سے بے ساختہ آنسو بہہ نکلتے اور کہتا کہ میں بھی اسی طرح وطن کی حفاظت کرتے ہوئے جام شہادت نوش کروں گا ۔تیمور اسلم 2011 ء میں فوج میں بطور سپاہی بھرتی ہوکر 12بلوچ رجمنٹ (جو ان دونوں اوکاڑہ میں تعینات تھی) کا حصہ بنے ۔بعدازاں یہ رجمنٹ وزیرستان چلی گئی جہاں کتنی بار لانس نائیک تیمور اسلم کاسامنا دہشت گردوں سے ہوا ۔ ہر مقابلے میں تیمور اسلم نے دہشت گردوں کو جہنم واصل کیا ۔9 ستمبر 2017ء کو وہ رشتہ ازواج میں منسلک ہوئے ۔اﷲ تعالی نے ایک بیٹی سے نوازا جو تیمور اسلم کی جان تھی ‘تیمور جب بھی قبائلی علاقوں سے فون پر بات کرتا تواپنی بیٹی کی آواز سنانے کی فرمائش کرتا ‘چند ماہ پہلے تیمور اسلم کو وزیرستان سے کنٹرول لائن پر تعینات کردیاگیا جہاں وادی لیپا کی جبار پوسٹ پر انہیں بھیج دیاگیا ۔یہ مقام وہ ہے جہاں بھارتی فوج کے ساتھ روزانہ جھڑپیں ہوتی رہتی ہیں ‘ بھارتی فوج اندھادھند گولہ باری کرتی رہتی ہے جبکہ پاک فوج کے جوان اس کا منہ توڑ جواب دیتے ہیں ۔اپنی شہادت سے ایک گھنٹہ پہلے تیمور اسلم نے اپنے گھر فون کیا والدہ اور اہلیہ سے بات کی ۔ اہلیہ سے مخاطب ہوکر کہا میں اگلے مورچوں میں جارہا ہوں ‘ اگر زندگی رہی تو بات ہوگی وگرنہ خدا حافظ ۔یہ کہتے ہوئے تیمور اسلم بیس کیمپ سے وادی لیپا کی جبار پوسٹ کی جانب روانہ ہوئے جہاں فائرنگ کا نہ ختم ہونیوالا سلسلہ جاری تھا جس کا موثر جواب پاک فوج کے جوان دے رہے تھے اسی دوران دشمن کی جانب سے توپ خانے سے گولہ باری شروع ہوگئی اس گولہ باری سے پاک فوج کے تین جوان موقع پر ہی شہید ہوگئے ان میں ایک تیمور اسلم بھی تھے ۔ یہ سانحہ 15اگست 2019ء کو پیش آیا ۔ تدفین کے چندروز بعد تیمور اسلم شہید چند ایک لوگوں کے خواب میں نظر آئے ۔ محلے کا ایک شخص تعزیت کے لیے آیا اس نے بتایا کہ میں نے خواب میں تیمور شہید کو کچھ اس حالت میں دیکھا کہ انہوں نے فوج کی وردی پہن رکھی ہے جس پر بے شمار تمغے سجاہوئے ہیں جبکہ ان کے سر پر ہیرے اور موتیوں سے بنا ہوا خوبصورت تاج تھا تیمور شہید بہت خوش دکھائی دے رہے تھے ۔بیوی نے بھی خواب میں اپنے شوہر کو دیکھاجو اپنی لاڈلی بیٹی (جو ابھی آٹھ ماہ کی ہے) کو گود میں لے کر پیار کررہے تھے۔حضرت عبداﷲ بن مسعود ؓ کہتے ہیں میں نے عرض کیا یا رسول اﷲ ﷺاﷲ تعالی کو کونسا عمل زیادہ محبوب ہے ؟" آپ ﷺ نے ارشاد فرمایا وقت پر نماز پڑھنا ‘ والدین سے حسن سلوک کرنا ‘ اور اﷲ کی راہ میں جہاد کرنا" ۔ یہ حقیقت ہے کہ شہادت کی موت ہر کسی کے نصیب میں نہیں ہوتی ۔ قرآن پاک میں ہے کہ اﷲ کی راہ میں جا ن قربان کرنے والے کو مردہ نہ کہو بلکہ وہ تو زندہ ہیں ۔ بہرکیف اس کالم کے حوالے سے میں کور کمانڈر لاہور سے گزارش کروں گا کہ جس طرح پاک فوج کے باقی شہداء کے ناموں پر کینٹ ایریا کی سڑکوں کے نام رکھے گئے ہیں اسی طرح تیمور اسلم شہید جو کہ والٹن روڈ لاہور کینٹ کا رہائشی تھا ان کے نام پر یا تو والٹن روڈ کا نام تیمور اسلم شہید روڈ رکھاجائے اگر ایساممکن نہیں تو ڈیفنس چوک کو شہید کے نام سے منسوب کردیا جائے۔بے شک زندہ قومیں اپنے ہیروزکو نہیں بھولتیں ۔
 

Rate it:
Share Comments Post Comments
Total Views: 95 Print Article Print
About the Author: Muhammad Aslam Lodhi

Read More Articles by Muhammad Aslam Lodhi: 462 Articles with 190433 views »
Currently, no details found about the author. If you are the author of this Article, Please update or create your Profile here >>

Reviews & Comments

Language: