نیا مسئلہ نیا بحران

(Sarwar Siddiqui, Lahore`)

 پاکستان کی تاریخ اٹھا کر دیکھ لیجئے ہر روز ایک نیا مسئلہ،ہر سال نیا بحران۔۔ ۔۔ قدم قدم پر نیا امتحان ۔۔۔آئے روز درپیش سنگین معاملات ، سلگ سلگ کر جینا۔۔ سسک سسک کر مرنا ۔۔۔ ہر وقت خوف۔۔۔ ہر لمحہ اضطراب عام پاکستانی اپنے دل پر ہاتھ رکھ کر بتائے کیا واقعی زندگی اسی کو کہتے ہیں؟ وہ بھی حکمران تھے جن کا کہنا تھا’’ دجلہ کے کنارے کتا بھی بھوکا مرجائے قیامت کے روز اﷲ کے حضور عمرؓ جواب دہ ہوگا‘‘ اور ایک آج کے حکمران اور سیاستدان ہیں جن کی سیاست کا محور
گلیاں ہو جان سنجھیاں وچ مرزا یار پھرے
ہے کہا جا سکتاہے وہ ماضی کے قصے،کہانیاں ہیں بے شک وہ ماضی ہے لیکن شاندارروایات کا حامل
کسی کے ایک آنسوپر ہزاروں دل تڑپتے ہیں
کسی کا عمر بھر کا رونا یونہی بے کار جاتاہے

بچپن میں یہ شعر پڑھا جو آج بھی بہت متاثرکرتاہے انسانی رویے، سیاست ،طبقاتی کش مکش یا پھر عاشقی کے تناظرمیں اسے بہترین مثال کہا جا سکتاہے ۔۔۔یہ اس لئے بھی یادآیا کہ ایک وقت تھا عمران خان ‘شیخ رشید اور شیخ الاسلام پروفیسر ڈاکٹر طاہرالقادری میاں نوازشریف حکومت کو ٹف ٹائم دینے کیلئے میدان میں خم ٹھوک کر اترے تھے آج مولانا فضل الرحمن مسلم لیگ ن کے میاں نوازشریف اور پیپلزپارٹی کے آصف زرداری کی حمائت سے عمران خان حکومت کا تختہ الٹنے کادعوی کررہے ہیں شایداسی لئے کہا جاتاہے کہ تاریخ اپنے آپ کو دہراتی ہے ماضی میں جماعت اسلامی نے حالات سے بروقت خوب فائدہ اٹھاکر میاں نواز شریف کے خلاف کئی سال کا غبار نکالنے کی کوشش کی ہے اب وہ عمران خان کے خلاف ہے اس کے باوجود لگتاہے موجودہ حکومت کو فی الحال کوئی خطرہ نہیں البتہ کئی سیاستدانوں کی باسی کڑی میں ابال آسکتاہے ماضی میں کم و بیش40-30 سال قبل احتجاجی سیاست کے رنگ ڈھنگ ہی نرالے تھے جب بھی اپوزیشن حکومت کے خلاف تحریک چلانے کااعلان کرتی چھوٹی بڑی درجنوں جماعتیں مرحوم و مغفور نوابزادہ نصراﷲ خان کے گرد جمع ہو جایاکرتیں جن سیاسی جماعتوں کو تانگے کی سواریاں بھی میسر نہیں تھیں ان کی چال ڈھال اور بیان بازی دیدنی ہوتی ۔پریس کانفرنس یا احتجاج کی کوریج دیکھ کر کئی چھوٹی جماعتوں کے سربراہ اخبارات میں نوابزادہ نصراﷲ خان کی بڑی بڑی تصویریں دیکھ کر آہیں بھرتے اور اپنا نام تک نہ چھپنے پر دل ہی دل میں حکومت کے خلاف احتجاجی تحریکوں کے دوران سیدمنظورگیلانی ،میاں سعیدقادری،پیرفضل الحق جیسے رہنماؤں کی پھرتیاں قابل ِ دید ہواکرتی تھیں
کسی کے ایک آنسوپر ہزاروں دل تڑپتے ہیں
کسی کا عمر بھر کا رونا یونہی بے کار جاتاہے

کا شعر دہراتے رہتے ۔بلاشبہ شہرت ہر کسی کا نصیب نہیں بنتی کامرانی کیلئے انسانی رویے۔۔۔سیاسی حالات،معاشرتی ماحول،اخلاقی اقدار اورمعاملات بھی شدید اثرات مرتب کرتے ہیں لیکن سیاست تو ہے ہی ۔ قدم قدم پر نیا امتحان ۔۔اپوزیشن کیلئے ہر وقت گرفتاری کا خوف۔۔۔ ہر لمحہ اضطراب۔۔۔پاکستانی سیاست کی پون صدی پر غورکیا جائے تو یہ احساس گہرا ہوتا چلا جائے گا کہ اس ملک میں آج تک جمہوری انداز سے کوئی سیاستدان بناہے نہ اقتدار میں آیا سب کے سرپرست ِ اعلیٰ فوجی ڈکٹیٹر تھے اس حقیقت کو کوئی جھٹلانا بھی چاہے تو نہیں جھٹلاسکتایہی وجہ ہے کہ کسی حکمران نے اپنے دل میں عوام کا درد محسوس نہیں کیا’’شارٹ کٹ‘‘ کے فارمولے پر پیرا شوٹ کے ذریعے نازل ہونے والے عوام کا دکھ کیا جانیں ۔۔انہیں کیا معلوم مہنگائی کس عفریت کا نام ہے۔۔بھوک سے بلکتے بچوں کو دیکھکر اپنا گردہ بیچنے والوں پر کیا بیتتی ہے؟۔۔۔ تھانے کچہری اور سرکاری اداروں میں عوام کوکتنی تذلیل برداشت کرنا پڑتی ہے۔۔۔ اب وہ حکمران کہاں سے لائیں جس کا کہنا تھا’’ دجلہ کے کنارے کتا بھی بھوکا مرجائے قیامت کے روز اﷲ کے حضور عمرؓ جواب دہ ہوگا‘ احتجاجی پروگرام اپنی جگہ پر حکومت پر دباؤ بڑھانے کیلئے یہ کام بھی ضروری ہیں لیکن عوام کی حالت بہتر بنانے کیلئے کچھ نہ کچھ کرنا ناگزیرہے پاکستان کی سرزمین صحیح معانوں میں وہ ماحول مانگتی ہے جو قومی امنگوں کا ترجمان ہو آج عوام میں تحریک ِ پاکستان کا جذبہ بیدارکرنے کی ضرورت ہے تاکہ اس پاک وطن میں ایسا معاشرہ پروان چڑھ سکے جس میں لڑائی نہ ہو،شرانگیزی نہ ہو،دہشت گردی نہ ہو، امن ہو، سکون ہو۔ اﷲ تعالیٰ سے دعا ہے کہ ہمارے ہم وطنوں کو عزت ،سکون اور خوشحالی سے مالا مال کردے ایسا ماحول بن جائے کہ
خودی کو کربلند اتنا کہ ہر تقدیرسے پہلے
خدا بندے سے خود پوچھے بتا تیری رضا کیاہے

اصل میں نئی نسلوں کے مستقبل کو تابناک بنانے کچھ پلاننگ کرنا ہوگی ،بہتری کیلئے کوشش کرتے رہنا ہی زندگی کی علامت ہے جب تک ۔۔ہر روز ایک نیا مسئلہ،ہر سال نیا بحران۔۔ ۔۔ قدم قدم پر نیا امتحان ۔۔۔آئے روز درپیش سنگین معاملات ، سلگ سلگ کر جینا۔۔ سسک سسک کر مرنا ۔۔۔ ہر وقت خوف۔۔۔ ہر لمحہ اضطراب کا سلسلہ ختم ہو جائے گا صحیح معانوں میں اس روزنئے پاکستان کی روشن صبح کا آغازہوگا۔ آئیے کوشش کریں۔۔ کوشش کرکے تو دیکھیں۔
Qجمہور کی آواز ایم سرورصدیقی
 

Comments Print Article Print
 PREVIOUS
NEXT 
About the Author: Sarwar Siddiqui

Read More Articles by Sarwar Siddiqui: 262 Articles with 85101 views »
Currently, no details found about the author. If you are the author of this Article, Please update or create your Profile here >>
25 Oct, 2019 Views: 241

Comments

آپ کی رائے