غداری ،سنگین غداری ،آئین شکنی اور آئین کی پامالی پرعمومی تبصرہ

(Arshad Sulahri, )

سابق جنرل اور آپاکستان مسلم لیگ کے سربراہ کےخلاف سنگین غداری کیس کا فیصلہ آنے کے بعد ماہرین آئین وقانون اور دانشور غداری ،آئین شکنی اور آئین کی پامالی کی تشریحات کر رہے ہیں۔کہا جا رہا ہے کہ غداری کا لفظ درست نہیں ہے۔آئین شکنی یا آئین کی پامالی جیسے الفاظ مناسب تھے جو استعمال کیے جاتےتو اچھا تھا۔تفصیلی فیصلہ میں پیراگراف بعد از مرگ لاش کو سر عام پھانسی دینے پر بھی شور مچا ہے۔

راقم ذاتی طور پر فیصلہ کے حق یا مخالف نہیں ہے بلکہ دستور پاکستان کا پابند ہے۔جو ریاست اور راقم کے درمیان شہریت کا معاہدہ ہے۔دستوری ریاست میں دستور ہی مقدم ہوتا ہے۔کوئی بھی ملک دستور کے بغیر قائم نہیں رہ سکتا ہے۔ملک کی جعفرافیائی سرحدوں سے اہم اور مقدس اس ملک کا دستور ہوتا ہے جو ملک کا وجود قائم رکھتا ہے۔دستور کوتوڑنا ،دستور شکنی کرنا ،دستور کو پامال کرناغداری ہے۔جس میں ملکی راز افشاں کردینا ،ملک کے خلاف کام کرنا جو دستور توڑنے ،دستور کو پامال کرنا ہے جو غداری کے زمرے میں آتا ہے۔جس پر حال ہی میں ایک ادارے کے افسر کو سزائے موت بھی دی گئی اور اسے پھانسی لگایا گیا تھا۔

طاقت کے بل بوتے پر غیردستور ی طریقے سے ملک پر قبضہ کرنا اور غیرآئینی حکمرانی قائم کرنا دستوری ریاست میں دستور کے مطابق سنگین غداری کے زمرے میں آتا ہے۔سنگین غداری کی سزا بھی سنگین ہی ہوتی ہے۔جس کی بڑی مثال برطانیہ کےا ولیور کرومویل (Oliver Cromwell)برطانوی جرنیل جسے مارشل لاء لگانے کی سزا میں بعد از مرگ پھانسی پر لٹکا دیا گیاتھا۔پشاور ہائی کورٹ کے چیف جسٹس اور خصوصی عدالت کے سربراہ جسٹس وقار سیٹھ نے جس آئین شکن انگریز جرنیل کو قبر سے نکال کر پھانسی پر لٹکانے کا حوالہ دیا ہے۔اولیور کرومویل (Oliver Cromwell) نامی وہ انگریز جرنیل 1658ء میں ملیریا کے ہاتھوں انتقال کر گیا تھا-لیکن تین سال بعد 30 جنوری 1961 کو اس کی لاش کو مارشل لاء کے نفاذ اور اپنے ہی ملک پر قبضہ کرنے کے جرم میںقبر سے نکال کر پھانسی کی سزا دی گئی اور نعش کو لندن کے ایک چوک میں لٹکا دیا گیاتھا۔پھر اس کا جسم گڑھے میں پھینک دیا گیا اور سر کاٹ کر کھوپڑی کھمبے پر لٹکا دی گئی تھی۔ اولیور کرومویل کے ساتھ تین مزید لوگوں کی لاشوں کو بھی سزائے موت دی گئی تھی۔جن میں رابرٹ بلیک، جان براڈشا اور ہنری آئرٹن کی لاشیں شامل تھیں۔یہی وجہ ہے کہ انگلینڈ میں اس کے بعد کسی کو پھر مارشل لاء لگانے کی جرات نہیں ہوئی ہے۔اولیور کرومویل کو سنگین غداری کامرتکب ٹھہرایا گیا تھا ۔جس نے طاقت کے ذریعے ریاست پر قبضہ کیا اورغیر آئینی و غیر قانونی حکمرانی قائم کی تھی۔

1973 کے آئین میں 18ویں ترمیم کے ذریعے غداری کی تعریف یوں کی گئی ہےکہ آئین ِ پاکستان کا آرٹیکل 6 کہتا ہے کہ ’ہر وہ شخص غدار ہے جو طاقت کے استعمال یا کسی بھی غیر آئینی طریقے سے آئین پاکستان کو منسوخ، تحلیل، معطل یا عارضی طور پر بھی معطل کرتا ہے یا ایسا کرنے کی کوشش بھی کرتا یا ایسا کرنے کی سازش میں شریک ہوتا ہے۔‘

پاکستان کے آئین کی پامالی اور آئین شکنی کے حوالے سے جو تعریف کی گئی ہے ۔وہی درست ہے۔طالبان کےساتھ بھی یہی لڑائی تھی کہ وہ پاکستان کے دستور کو تسلیم نہیں کرتے تھے اور آئین کے باغی تھے۔طالبان کے ساتھ جنگ ہوئی جیسے دہشت گردی کے خلاف جنگ قرار دیا گیا تھا۔جو سرحدوں پر نہیں لڑی گئی تھی بلکہ دستور کےخلاف اٹھنے والے عناصر کی سرکوبی کےلئے لڑی گئی تھی۔

Rate it:
Share Comments Post Comments
Total Views: 185 Print Article Print
 PREVIOUS
NEXT 
About the Author: Arshad Sulahri

Read More Articles by Arshad Sulahri: 103 Articles with 29471 views »
I am Human Rights Activist ,writer,Journalist , columnist ,unionist ,Songwriter .Author .. View More

Comments

آپ کی رائے
Language: