دنیا کے منصفو!

(Sarwar Siddiqui, Lahore)

یہ یکم جنوری 1990 ء کی بات ہے جب جماعت اسلامی کے امیر قاضی حسین احمد نے ایک تقریب کے دوران بھارتی ظلم و ستم کے خلاف کشمیری مسلمانوں کے ساتھ5فروری کو عالمی سطح پر یوم ِ اظہارِ یکجہتی منانے کا تصور پیش کیا کہ پوری قوم متحد ہو کرمسئلہ کشمیر پر آواز بلند کرے ۔۔بھارتی مظالم کو بے نقاب کیا جائے اور اقوام ِ عالم پر زور دیاجائے کہ یہ مسئلہ اقوام ِ متحدہ کی قراداردوں کے مطابق حل کیا جانا ناگزیر ہے اس سلسلہ میں قاضی حسین احمدمرحوم نے (اس وقت کے )پنجاب کے وزیر اعلیٰ میاں نواز شریف سے ملاقات کرکے انہیں اس مسئلے کی اہمیت ،نزاکت اور ضرورت پر قائل کرلیا میاں نواز شریف کو یہ تجویز اتنی پسند آئی کہ انہوں نے 5فروری کو پنجاب میں عام تعطیل کااعلان کردیا تمام اپوزیشن جماعتوں نے بھی اس تجویز کی مکمل حمایت کافیصلہ کردیا مرکز میں محترمہ بے نظیر بھٹو وزیر ِ اعظم تھیں انہوں نے بھی عوام کا جوش و خروش دیکھتے ہوئے اس فیصلے کو زبردست پذیرائی بخشتے ہوئے ملک بھر میں سرکاری چھٹی کا نوٹیفکیشن جاری کردیا یوں5فروری 1990ء عالمی سطح پر کشمیریوں کے ساتھ یک جہتی کی علامت بن گیا اس ضمن میں پاکستانی و کشمیری الیکٹرانک اور پرنٹ میڈیا نے بھرپور کردار ادا کرتے ہوئے اسے دنیا بھر میں اجاگر کردیا 5فروری 1990ء کے روز دنیا میں پہلی بار سرینگر سے مظفر)آباداور پشاور تا کراچی انسانی ہاتھوں کی زنجیر بنا ئی گئی بعد ازاں انسانی ہاتھوں کی زنجیر نہ جانے کیوں بنانا بند کردی گئی 5فروری 1990ء کو ملک کی تمام چھوٹی بڑی سیاسی جماعتوں،انسانی حقوق کی تنظیموں،سماجی کارکنوں اور عوام نے دنیا بھر میں بھارتی مظالم کو اجاگر کرنے کیلئے جلسے ، جلوس اور ریلیاں نکالیں ،سیمینار،مذاکرے اور تقاریب کاانعقاد کیااور اب تلک یہ سلسلہ جاری ہے جبکہ محترمہ بے نظیر بھٹونے مظفر آباد میں آزادکشمیر کی دستور ساز اسمبلی میں خطاب کرتے ہوئے پر جوش انداز میں کشمیری مسلمانوں کا بھرپور ساتھ دینے کا عزم کیااس کے ساتھ ساتھ میاں نواز شریف جو اس وقت اپوزیشن میں تھے انہوں نے اس دن کو کامیاب بنانے کیلئے خصوصی ٹیمیں بنائیں اپنے وزراء ، ارکان ِ اسمبلی اور پارٹی رہنماؤں کو متحرک کیا اس روز سے 5فروری ایک تاریخی حیثیت اختیار کرگیا ہے یہ دن کشمیری مسلمانوں کی جدوجہد کی علامت بن گیا ہے کیونکہ ایک طویل عرصہ سے کشمیری مسلمان بھارتی مظالم کا شکار ہیں ۔۔۔جنت نظیر وادی میں قتل و غارت کا بازار گرم ہے ۔۔۔کشمیریوں کی جدو جہد کو ریاستی جبر سے کچلنے کیلئے آئے روز مسلمانوں کے خون سے ہولی کھیلی جارہی ہے کشمیر ایک ایسا سلگتا ہوا سنگین ایشو جو عالمی ضمیر کا امتحان بن کررہ گیا ہے دنیا بھرکے کشمیری مسلمان برس ہا برسوں سے انپے حق ِ خودارادیت کیلئے جدوجہد کررہے ہیں جس کی پاداش میں بھارتی حکومت نے ان پر عرصہ ٔ حیات تنگ کردیا ہے ایک محتاط اندازے کے مطابق اب تلک ایک لاکھ سے زائد لوگ اپنی جانوں کا نذرانہ دے کر اس تحریک کو ایک نئی زندگی دے چکے ہیں۔۔۔ہزاروں مرد وزن لاپتہ ہیں۔۔۔ ان گنت بھارتی جیلوں،عقوبت خانوں یا ان کی خفیہ ایجنسیوں کی تحویل میں ہیں اس جدو جہد کاایک پہلو یہ بھی ہے کہ نصف صدی سے زیادہ مدت سے کشمیر کی ہزاروں بیٹیوں کی عزت پامال کردی گئی۔ لاکھوں افراد معاشی اعتبار سے تباہ ہو چکے ہیں لیکن دنیا کے منصفوں کے کان سے جوں تک نہیں رینگتی۔موجودہ وزیراعظم عمران خان نے اقوام ِ متحدہ کی جنرل اسمبلی میں جوتاریخ ساز تقریر کرکے دنیا کے منصفوں کے ضمیرکو جنجھوڑنے کی بہتیری کوشش کی لیکن انسانی حقوق کی عالمی تنظیموں اور نام نہادعلمبرداروں کو جانوروں پر ہونے والاظلم تو دکھائی دیتاہے لیکن کشمیری مسلمانوں پر گذرتی قیامت دکھائی نہیں دیتی شاید وہ اندھے ،گونگے اور بہرے بن چکے ہیں انہیں مقبوضہ کشمیرپر بھارت کا غاصبانہ قبضہ بھی نظر نہیں آتا۔۔۔کشمیریوں کے حق استواب ِ رائے کیلئے اقوام ِ متحدہ کی قرار دادوں کا بھی احترام نہیں الٹا ایک کالاقانون نافذکرکے مقبوضہ کشمیرکو بھارت کا حصہ قراردیدیا وہاں کئی ماہ سے مسلسل کرفیو نافذ ہے خوراک،ادویات اور کپڑوں کی شدید قلت ہے حتی ٰ کہ کشمیری اپنے مرنے والوں کی تدفین گھروں میں کرنے پرمجبورہوگئے ہیں۔اور تو اور بات بے بات پرعالمی طاقتوں کے پیٹ میں مروڑ اٹھنا معمول کی بات ہے لیکن آج تک انسانیت کی توہین پر ان کا کوئی ردِ عمل نظر نہیں آتا بلکہ وہ کشمیر کی جدوجہد کو’’دراندازی‘‘ اور کشمیری مجاہدین کو’’ اتنت وادی‘‘ کا نام دینے سے بھی دریغ نہیں کرتے حالانکہ پاکستان اورکشمیری حریت پسندباقاعدہ فریق ہیں جن کی مرضی کے بغیر مسئلہ کشمیر کا کوئی بھی حق قابل ِقبول نہیں دنیا بھر کے کشمیریوں اور پاکستانی قوم کا ایک ہی مطالبہ ہے کہ بھارت ۔۔کشمیریوں کی رائے حق دہی کو تسلیم کرتے ہوئے اپنی فوجیں مقبوضہ وادی سے واپس بلائے اور کشمیریوں کو اپنی قسمت کا فیصلہ خو دکرنے کاحق دیاجائے یہ بھارت کے اپنے وسیع تر مفاد میں ہے تنازعہ ٔ کشمیر با عزت حل کرنے سے جنوبی ایشیا میں پائیدار امن کی بنیاد رکھی جا سکتی ہے۔۔۔جتنی بڑی رقم بھارت اپنے جنگی جنوں پر صرف کررہا ہے اس سے بھارت میں بہت سے عوامی بھلائی کے کام کئے جا سکتے ہیں اس طرح پاکستان بھی اپنے دفاع کیلئے جو خطیر رقم خرچ کرنے پر مجبورہے اس سے دونوں ممالک میں غربت ختم کرنے کے لئے بہترین پلاننگ کی جا سکتی ہے ۔۔۔ایک اور بات دنیا میں ریاستی جبر،دھونس ،دھاندلی اور ظلم سے کسی کو زیادہ دیر تک محکوم نہیں رکھا جا سکتا یہ فطری بات ہے جس چیز کو جتنا دبایا جائے وہ اتنی ہی تیزی سے ابھر تی ہے بھارتی حکمرانوں نے ۔کشمیریوں کو رائے حق دہی سے محروم کرکے بر ِصغیرپاک و ہندکے ایک ارب انسانوں کا مستقبل داؤپر لگا دیاہے حالانکہ بر ِصغیرکے لوگ امن چاہتے ہیں کیونکہ امن میں ہی ہم سب کی بقاء۔ عافیت اور سلامتی ہے کاش!بھارتی حکمران دل کی آنکھیں کھول کرغور کریں تو محسوس ہوگا امن سب سے بڑی نعمت ہے۔

Rate it:
Share Comments Post Comments
Total Views: 141 Print Article Print
 PREVIOUS
NEXT 
About the Author: Sarwar Siddiqui

Read More Articles by Sarwar Siddiqui: 144 Articles with 33860 views »
Currently, no details found about the author. If you are the author of this Article, Please update or create your Profile here >>

Comments

آپ کی رائے
Language: