دین اسلام کو مذہب کس نے بنایا؟

(Arshad Sulehri, Rawalpindi)

’’دین‘‘ اور’مذہب‘‘ میں بہت بڑا فرق ہے. اگرچہ ہمارے ہاں عام طور پر اسلام کو مذہب کہا جاتا ہے‘ لیکن دلچسپ بات یہ ہے کہ پورے قرآن مجید میں اور حدیث کے پورے ذخیرے میں اسلام کے لیے مذہب کا لفظ کہیں استعمال نہیں ہوا‘ بلکہ اس کے لیے ہمیشہ ’’دین‘‘ ہی کا لفظ مستعمل ہوا ہے. سورۂ آلِ عمران میں فرمایا گیاہے(آیت ۱۹) ’’یقینااللہ کے ہاں (اُس کی بارگاہ میں مقبول )دین تو صرف اسلام ہے‘‘. دین اور مذہب میں بنیادی فرق کو سمجھ لیجیے!مذہب ایک جزوی حقیقت ہے. یہ صرف چند عقائد (dogma) اور کچھ مراسم عبودیت (rituals) کے مجموعے کا نام ہے. جبکہ دین سے مراد ہے ایک مکمل نظام حکومت ہے۔یعنی حکومت الہیہ جو زندگی کے تمام پہلوؤں پر حاوی ہو. گویا مذہب کے مقابلے میں دین ایک بڑی اور جامع حقیقت ہے. اس پس منظر میں یہ کہنا تو درست ہو گا کہ اسلام مذہب نہیں ہے۔دین اسلام میں مذہب کے عناصر (elements) شامل کیے گئے ہیںتاکہ دین کی حاکمیت اور افایت کوختم یا کمزور کیا جائے اور دین اسلام کی اصل غرض و غایت کو پس و پست ڈال کر دین اسلام کو محض عبادات و رسوم و رواج تک محدود کردیا جائے۔خدائی احکامات اور قوانین کو عقائد میں بدل کر دین اسلام کو محض ایمانیات اورپھر اس کے مراسم ِ عبودیت ‘ نماز‘ روزہ ‘ حج اور زکو ٰۃ ہ تک رکھا جائے۔چنانچہ دین اسلام کی شکل مذہب کی صورت میں قبولیت پاگئی کیونکہ مذہب خطرہ نہیں بلکہ ڈھال بن کر حکمران طبقات ،سرمایہ دار ،جاگیر دار اور شاہوکاروں کو کئی معاملات میں تحفظ فرام کرتا ہے۔اس لئے اسلام بطور مذہب پسند کیا گیا اور کیا جاتا ہے۔ دین اسلام ایک نظام حکومت کی بات کرتا ہے۔متبادل حکومت اور بادشاہت الہیہ کے قیام پر زور دیتا ہے۔انبیاء اکرام کا اولین فرض بھی یہی تھا کہ زمین پر اللہ کی حکومت قائم کی جائے ۔ انسانوں کو جابر و ظالم زمینی خداوں (حکمرانوں ) سے نجات دلائی کر مساوات پر مبنی نظام الہیہ قائم کرکے رزق کی تقسیم کی جائے۔

اس حوالے سے ایک اہم حقیقت پر غور کیجیے! کسی ایک خطہ ٔ زمین میں مذاہب تو بیک وقت بہت سے ہو سکتے ہیں‘ لیکن دین ایک وقت میں صرف ایک ہی ہو سکتا ہے. نظام تو لازماً ایک ہی ہو گا. یہ کیسے ممکن ہے کہ سرمایہ دارانہ نظام اور اشتراکی نظام کسی خطہ زمین پر یا کسی ایک ملک میں بیک وقت قائم ہوں! حاکمیت (sovereignty) تو کسی ایک ہی کی ہو گی. یہ نہیں ہو سکتا کہ ملوکیت اور جمہوریت دونوں بیک وقت کسی ملک میں نافذ ہو جائیں. نظام ایک ہی رہے گا. اللہ کا نظام ہو گا یا غیر اللہ کا ہو گا. نظام دو ہرگز نہیں ہو سکتے‘ جبکہ ایک خطہ زمین میں مذاہب بیک وقت بہت سے ممکن ہیںجبکہ نظام ایک ہی غالب و برتر ہوگا۔ وہی حقیقت میں ’’نظام‘‘ کہلائے گا‘ اور دوسرا نظام سمٹ کر اور سکڑ جائے گا یا ختم ہوجائے گا۔دین اسلام کے ساتھ بھی یہی واردات ہوئی ہےکہ وقت کے حکمرانوں ،طاقت ور طبقات نے اپنی حاکمیت کو بچانے اور برقرار رکھنے کےلئے دین کی بجائے مذہب کو قبول کیا ۔مذہب کی سرپرستی کی اور مذہب کے فروغ کےلئے دل کھول کر سرمایہ کاری بھی کرتے رہے اور تاحال سرمایہ کاری کر بھی رہے ہیں ۔

14 سو سال پچھے نہیں جاتے ہیں۔آج کی صورتحال کو سامنے رکھتے ہیں ۔وزیراعظم عمران خان،آصف زرداری ،شریف برادران سے لیکر ملک ریاض تک کےلئے کیا دین قابل قبول ہے۔ہرگز نہیں ہے ۔مگر مذہب کو سب سر آنکھوں پر رکھتے ہیں ۔ملک ریاض حسین مذہب پر اربوں روپے کی سرمایہ کاری کرتے ہیں ۔مگر جب دین (حکومت الہیہ ) کی بات ہوگی تو یہ سارے بھاگ جائیں گے بلکہ دین دشمن قوتوں پر سرمایہ کاری کریں گے ۔کیونکہ دین فائلوں کو پہیے لگانے کی اجازت ہرگز نہیں دے گا اور نہ ہی انسانوں کی لاشوں پر بحریہ ٹاون بنانے دے گا۔مذہب اور دین میں یہی فرق ہے۔

دین اسلام کو مذہب بھی انہی شاہوکاروں،سرداروں،سرمایہ داروں ،جاگیر داروں اور پالتو مولویوں نے بنایا ہے۔یہ سب مسلمہ بن کذاب کے پیروکار ہیں ۔
 

Rate it:
Share Comments Post Comments
Total Views: 736 Print Article Print
 PREVIOUS
NEXT 
About the Author: Arshad Sulahri

Read More Articles by Arshad Sulahri: 112 Articles with 32173 views »
I am Human Rights Activist ,writer,Journalist , columnist ,unionist ,Songwriter .Author .. View More

Comments

آپ کی رائے
The Quran is not implemented as the constitution but it helps to design and write or establish an constitution that meets the basic principles of the Quran so to make each ensures to have access to justice as the equal gender with equal rights and respect in the society and never have tow or more or multidimensional laws for the rich and the poor unfortunately the Pakistani society has been meeting since the day one.
By: Mohammad Baig, Islamabad on Apr, 27 2020
Reply Reply
0 Like
Excellent exposition.So much clarity and Quran,s unequivocal, " laqum dina qum wal ya din". has to be read and understood beyond business and politics. So Help us GOD. (Amen)
By: Mohummad Yamin, lake elsinore, C.A. USA on Apr, 08 2020
Reply Reply
1 Like
Language: