پاک برونائی تعلقات و امکانات

(Hammad Asghar Ali, )

برونائی اگرچہ رقبے اور آبادی کے لحاظ سے بہت چھوٹا ملک ہے مگر تیل اور گیس کے بہت بڑے ذخائر کا مالک ہونے کے سبب اس کی خاصی اہمیت ہے ۔برونائی جنوب مشرقی ایشیاء میں جزیرے بورنیو کے شمالی ساحل پر واقع ہے۔ بحیرہ جنوبی چین کے ساتھ اپنے ساحل کے علاوہ، یہ ملک ملائیشین کی ریاست سرواک سے گھرا ہوا ہے۔ اسے لیمبنگ کے ضلع سرواک نے دو حصوں میں الگ کردیا ہے۔برونائی جزیرہ بورنیو میں مکمل طور پر واحد خودمختار ریاست ہے۔ جزیرے کا باقی حصہ ملائیشیا اور انڈونیشیا کے مابین تقسیم ہے۔ 2018 کے اعداوشمار کے مطابق برونائی کی آبادی 963،428 تھی۔برونائی میں مکمل طور پر خود مختار بادشاہت ہے جو شرعی نظام کے نفاذ کی دعویدار ہے۔

جدید منیلا اور جزیرے بورنیو کے شمال مغرب میں واقع ہیں۔جزائر پر مشتمل اس ریاست کا 1521 میں اسپین کے سیاح میگیلن نے دورہ کیا۔19 ویں صدی کے دوران، برونائی سلطنت کا زوال شروع ہوا۔ 1888 میں، برونائی برطانیہ کا حصہ بنالیا گیا۔دوسری جنگ عظیم کے دوران جاپانی قبضے کے بعد، 1959 میں ایک نیا آئین لکھا گیا تھا۔ 1962 میں، بادشاہت کے خلاف ایک چھوٹی سی مسلح بغاوت ہوئی جو انگریزوں کی مدد سے ختم کردی گئی۔

برونائی نے یکم جنوری 1984 کو برطانیہ سے آزادی حاصل کرلی۔ 1990 اور 2000 کے عشرے کے دوران معاشی نمو، جس نے 1999 سے 2008 تک جی ڈی پی میں 56 فیصد اضافہ کیا گویا اس نے برونائی کو صنعتی ملک میں تبدیل کردیا۔ برونائی نے بڑے پیمانے پر پٹرولیم اور قدرتی گیس کے شعبوں سے دولت تیار کی ہے۔ سنگاپور کے بعد جنوب مشرقی ایشیائی ممالک میں برونائی کا دوسرا اعلی انسانی ترقی کا انڈیکس ہے، اور اسے ''ترقی یافتہ ملک'' کے طور پر درجہ حاصل ہے۔

بین الاقوامی مالیاتی فنڈ (آئی ایم ایف) کے مطابق، برونائی فی کس مجموعی گھریلو مصنوعات کے حساب سے دنیا میں پانچویں نمبر پر ہے۔ آئی ایم ایف نے 2011 میں اندازہ لگایا تھا کہ برونائی دو ملکوں میں سے ایک تھا (دوسرا لیبیا تھا) جس کا سرکاری خسارہ 0% تھا۔ فوربس نے اپنے پیٹرولیم اور قدرتی گیس کے شعبوں کی بنیاد پر، 182 میں سے برونائی کو پانچویں امیر ترین ملک کی حیثیت سے بھی درجہ دیا ہے۔

یہاں اس امر کا تذکرہ بے جا نہ ہوگا کہ 1979 تک، برونائی کے غیر ملکی تعلقات پوری طر ح سے برطانیہ کے زیر انتظام تھے۔ اس کے بعد، انہیں برونائی کے شعبہ سفارت کاری نے سنبھالا۔ 1984 میں آزادی کے بعد، اس خدمت کو وزارتی سطح پر اپ گریڈ کیا گیا تھا اور اب اسے وزارت خارجہ کے نام سے جانا جاتا ہے۔

برطانیہ کے ساتھ اپنے روایتی تعلقات کے بعد، برونائی نے یکم جنوری 1984 کو اپنی آزادی کے فور ا بعد ہی دولت مشترکہ کی رکنیت حاصل کر لی اور اس کا 49 ویں رکن بن گیا۔ علاقائی تعلقات کو بہتر بنانے کی طرف اپنے پہلے اقدام میں سے ایک کے طور پر، برونائی 7 جنوری 1984 کو آسیان میں شامل ہوا اور اس کا چھٹا (6th ) رکن بن گیا ۔ اپنی خودمختاری اور آزادی کو مکمل طور پر تسلیم کرنے کرانے اس نے اسی سال 21 ستمبر کو اقوام متحدہ میں مکمل ممبر کی حیثیت سے شمولیت اختیار کی۔

ایک اسلامی ملک کی حیثیت سے، برونائی جنوری1984 میں مراکش میں منعقدہ چوتھے اسلامی سربراہ اجلاس میں، اسلامی کانفرنس کی تنظیم او آئی سی (جو اب اسلامی تعاون کی تنظیم ہے ) کا ایک مکمل رکن بن گیا۔ اس کے بعد 1989 میں ایشیا بحر الکاہل اقتصادی تعاون فورم (اے پی ای سی) کے الحاق کے بعد برونائی نے نومبر 2000 میں ایپیک اقتصادی رہنماؤں کے اجلاس اور جولائی 2002 میں آسیان علاقائی فورم (اے آر ایف) کی میزبانی کی۔

یاد رہے کہ برونائی 1 جنوری 1995 کو ورلڈ ٹریڈ آرگنائزیشن (ڈبلیو ٹی او) کا بانی ممبر بن گیا ۔برونائی کے سنگاپور اور فلپائن کے ساتھ گہر ے تعلقات ہیں۔ اپریل 2009 میں، برونائی اور فلپائن نے مفاہمت کی ایک یادداشت پر دستخط کیے جس کے تحت زراعت اور زراعت سے وابستہ تجارت اور سرمایہ کاری کے شعبوں میں دونوں ممالک کے باہمی تعاون کو تقویت ملی ہے۔جس پر بجا طور پر چین کو تحفظات ہیں برونائی کے ذریعہ سراواک کے حصے کے طور پر لیمبنگ کی حیثیت کو تنازعہ کا سامنا کرنا پڑا ہے کیونکہ اس علاقے کو پہلی بار 1890 میں منسلک کیا گیا تھا۔ مبینہ طور پر یہ معاملہ سن 2009 میں حل ہوا تھا، جب برونائی نے ملائیشیا کے بدلے میں سرحد قبول کرنے پر رضامندی ظاہر کی تھی، برونائی کے پانیوں میں تیل کے کھیتوں کے دعوے ترک کردیئے تھے۔ برونائی حکومت نے اس کی تردید کی ہے اور کہا ہے کہ لیمبنگ پر ان کا دعوی کبھی نہیں ڈالا گیا۔برونائی 2013 میں آسیان تنظیم کا صدر تھا۔ اس نے اسی سال آسیان سربراہی اجلاس کی میزبانی بھی کی۔

یہاں اس امر کا تذکرہ شائد بے جا نہ ہوگا کہ اگرچہ پاکستان اور برونائی دونوں نہ صرف دولت مشترکہ اور او آئی سی کے رکن ہیں بلکہ دفاعی شعبے میں بھی خاصی حد تک تعاون کر رہے ہیں اور پاکستان کے چیف آف نیول سٹاف نے فروری 2020کو برونائی کا دورہ کیا اور پاکستان ملٹری اکیڈمی میں برونائی افواج کے افسران زیر تربیت رہے ہیں مگر دونوں ملکوں کے مابین تجارتی ،دفاعی اور ثقافتی میدان میں باہمی تعلقات کو مزید فروغ دینے کی بہت زیادہ گنجائش موجود ہے ۔امید کی جانی چاہیے کہ متعلقہ حکام اس جانب خاطر خواہ ڈھنگ سے توجہ دیں گے
 

Comments Print Article Print
 PREVIOUS
NEXT 
About the Author: Hammad Asghar Ali

Read More Articles by Hammad Asghar Ali: 14 Articles with 3268 views »
Currently, no details found about the author. If you are the author of this Article, Please update or create your Profile here >>
30 May, 2020 Views: 267

Comments

آپ کی رائے