بجٹ اور کچھ سوالات

(Zaheer Hussain, )

 گذشتہ جمعہ کے با برکت دن پر ، وفاقی حکومت نے اپنا بجٹ عوام کے سامنے پیش کیا۔ پاکستان تحریک انصاف نے اس بجٹ کو عوام کا دوست قرار دیا ہے۔ لیکن معاشیات کے شعبے سے وابستہ ہر فرد کی نظر میں ، ملک کے خالی خزانوں ، ٹیکس وصولی میں ناکامی اور موجودہ حکومت کی ناکام پالیسیوں کی وجہ سے ، اس بجٹ میں کوئی خاص امید نہیں ہے۔ ماہرین معاشیات کے مطابق ، اس بجٹ کو آئی ایم ایف ، اور دیگر بین الاقوامی اداروں کو ، ان کے قواعد و ضوابط کے مطابق پیش کیا گیا ہے۔

کسی بھی ملک کا بجٹ اس کے جی ڈی پی کے حساب سے لگایا جاتا ہے۔ اور ملک کی آمدنی (اخراجات) اور اخراجات کا تناسب (یعنی ایکویٹی)۔ اور غیر ضروری اخراجات کو کم کرنے کی کوشش کی جاتی ہے۔ حالیہ جاری کردہ بجٹ میں ایسی کوئی قابل عمل تجویز نہیں کی گئی ھیں۔ اس وقت، بین الاقوامی ادارہ قرضہ ، اور گردشی قرضے ملک کے لئے ایک بڑا خطرہ ہیں۔ خان صاحب حکومت سنبھالتے ئی پیلپز پارٹی اور نون لیگ کے دور میں لیے ھوئے قرضات کی تحقیق کے لیے ایک کمیشن کو ترتیب دی. خان صاحب نے اپنا موقف بتاتے ھوئے بتایا کہ پاکستان کی معشیت کی تباھی کان کارن مالیاتی اداروں سے لیا ھوا قرضا ھے. ان اختیارات پر قابو پال رہے تھے جو پی پی پی اور مسلم لیگ (ن) نے قرضوں کی تحقیقات کے لئے ایک کمیشن بنایا تھا۔

وزیر اعظم کا موقف اور کیس کے حقائق آپ کے سامنے پیش کرتے ھیں۔ گنتی کے مطابق ، پاکستان اپنے قیام سے لے کر 2008 تک۔ یعنی 61 سال کے ایک برے عرصے میں 6000 بلين کا قرضا لیا ھے. اور 1971 تک ہر پاکستانی مرد ، عورت اور بچے تقریبن 500 روپے کے مقروض تھے۔ اور سن 2008 تک پاکستان قرض کے مرض میں مبتلا ھوتا گیا. آبادی میں اضافے کے ساتھ ہی ہر پاکستانی کو 36،000 ہزار روپے کا مقروض ھو گیا۔ طویل ہنگامی صورتحال اور آمریت کے بعد ، 2008 میں پیپلز پارٹی اقتدار میں آئی۔ اس وقت پاکستان پر 600 ارب روپے کا قرض تھا۔

پیپلز پارٹی نے 2008 سے 2013 تک حکومت کی ، اور ان پانچ سالوں میں وطن عزیز پر 36000 ارب روپیے کا بوجھ ڈالا گیا. اور اس طرح پی پی پی کی حکومت سے پہلے ہر پاکستانی پر 36،000 ہزار روپے کا قرض تھا۔ جو پاکستان پیپلز پارٹی کی پانچ سالہ حکومت کے بعد بڑھ کر 88،000 ہزار روپے ہوگیا۔

پاکستان پیپلز پارٹی کی رخصتی کے بعد ن لیگ کا دور شروع ہوا۔ ان کے دور کو نون لیگ کی قیادت وطن کی تاریخ کا سنہری دور قرار دیتی ھے۔ لیکن اس عرصے کے دوران مزید 14000 ارب روپے قرض لیا گیا۔ اور پاکستانی عوام پر قرضوں کا بوجھ 16000 ارب سے بڑھ کر 30 ھزار ارب ہوگیا۔ اور اس طرح اس پانچ سالوں کے دوران ، ہر پاکستانی پر 88 ہزار کی بجائے ایک لاکھ 44 ھزار ھو گيا۔

مسلم لیگ نے اپنے پانچ سال پورے کیے۔ اور پھر تبدیلی سرکار کے دور کی شروعات ھوئی۔ آئی ایم ایف کے پاس جانے کو پی ٹی آئی کی حکومت خودکشی کے مترادف قرار دیتی تھی۔ ملک کی کرنسیوں کو کنٹرول کرنے کے بعد عالمی مالیاتی ادارے کا دروازہ کھٹکایا گیا۔ صرف انہیں ایشین ڈویلپمنٹ بینک ، اور دیگر بین الاقوامی اداروں سے قرض لیا گیا تھا۔ جب ان قرضوں سے ملک کی معیشت پر قابو نہیں پایا گیا تھا ، تو مقامی بینکوں سے بھی قرضے حاصل کیے گئے. اس وقت صرف تحریک انصاف کے فقط بائیس مہینوں کے دوران قرضے کا حجم مختصر مدت میں 30،000 ارب سے بڑھ کر 43،000 بلین ہو گیا ہے۔

اور فی الحال ہر پاکستانی پر قرضی کی رقم ایک لاکھ 44 ہزار سے بڑھ کر ایک لاکھ 95 ہزار ہوگئی ہے۔ تحریک انصاف کے کچھ ہی سالوں میں تقریبا 43،000 عام قرضے ہیں۔ تاہم ، ان ابتدائی مہینوں میں فروختف ہونے والا قلیل مدتی قرض 20،000 ارب تک جا پہنچا ہے۔

اقتدار میں آنے کے بعد سے ، خان چھ سالوں میں قرضوں کے حجم پر 6،000 ارب سے 30،000 ارب سوالات کررہے ہیں۔ تحقیقاتی کمیشن بنا رہا تھا۔ وہ ہمیشہ ماضی کے حکمرانوں پر تنقید کرتا تھا۔ لیکن بائیس مھینوں کی قلیل مدت میں 13،000 روپے کے قرض جیسی بیماری کا جواب کون دے گا؟ یہ ہزاروں روپے کہاں جارہے ہیں؟ حکومت نے اس وقت بجٹ کے خسارے کو پورا کرنے کے لئے 7 ٹریلین ڈالر قرض لیا ہے۔ اس وقت جب نیا بجٹ آنے والا تھا۔ دوسری طرف پبلک سیکٹر کے کاروباری اداروں کے خسارے میں روز بروز اضافہ ہوتا جارہا ہے۔ موجودہ حکومت نے جس وقت ملک کا اقتدار سنبھالا ۔ اس وقت پی سی سیز کا خسارہ 1.4 ٹریلین تھا۔ اب اس میں 1.5 ٹریلین کا اضافہ ہوا ہے۔

آئیے تسلیم کریں کہ قرض گھریلو معیشت کے لئے ایک قاتل زہر ہے۔ لیکن ایک سوال یہ بھی ہے کہ کیا حکومت قرضوں کے ذریعہ کب تک ملکی نظام چلا سکتی ہے؟ پچھلی حکومتوں نے قرض لیا تھا۔ اور ادارے بھی اور اداریں بھی انھوں نے خراب کیے۔ لیکن پی ٹی آئی نے حکومت کا اقتدار سنبھالنے میں کئی مہینے ہوچکے ہیں۔ ان بائیس ماہ کے دوران ، ملک نے بڑے پیمانے پر قرض لیا ہے۔ غیر محفوظ شدہ قرضوں میں تاریخی اضافہ ہوا ہے۔ عوام پر ٹیکس کا بوجھ بڑھا دیا گیا۔ آمدنی مختلف ذرائع کے ذریعی حاصل کئی. لیکن اس کے باوجود بھی کوئي بھتری نظر نھیں آ رھیں۔ اس وقت ہر انسان کے ذہن میں ایک سوال ہے۔ اتنا پیسہ کھاں گیا؟

حکومت فی الحال ڈھٹائی سے بجٹ پیش کررہی ہے۔ لیکن ایک سوال پھر پیدا ہوتا ہے۔ بجٹ خسارے ، گردشی قرضوں اور عالمی مالیاتی اداروں کو قرض ادا کرنے کے لئے کیا حکمت عملی طے کی جائے گی؟ ایک لون لانے کے لئے حکومت دوسرا قرض دے رہی ہے۔ لیکن کیا اب ایسی ہی حکمت عملی اپنانی چاہئے؟ کیا اب ہر پاکستانی پر قرضوں کی مقدار بڑھتی جارہی ہے؟ اس وقت آٹے ، چینی ، آئی پی پیز ، اور پیٹرول کے بحران سے دوچار موجودہ حکومت اس وقت ملکی معیشت کو کیسے ترقی دے سکتی ہے؟
کیا تجربات ماضی کی طرح گھریلو معیشت پر بھی چھرے بدل کر انجام دیئے جائیں گے؟ یا آئی سی یو میں معاش کو ہنگامی پالیسیوں کے ذریعہ وینٹیلیٹر میں منتقل کیا جائے گا؟ حکومت اقتصادی حالات کے لئے کورونا وائرس کو مورد الزام قرار دے رہی ہے۔ لیکن یہاں ، سوال پیدا ہوتا ہے۔ کورونا وائرس پھیلنے سے تین ماہ تک ملکی معیشت کو خطرہ لاحق ہے۔ لیکن آپ نے باقی مہینوں اقتدار کے دوران عوام اور ملک کے لیے کیا بھتری کی؟

اس وقت یہ سوچنے اور سمجھنے کی بات ہے کہ ملکی معیشت کو قرضوں سے آزاد کرنے کے لئے کیا اقدامات کیے جاسکتے ہیں۔ سب سے پہلے تو ہمیں قرض جیسے رہن سے نجات حاصل کرنی ہوگی۔ ٹیکس وصولی کے نظام کو بہتر بنانا ہوگا۔ عام لوگوں کی بجائے ٹیکس چوروں کو انصاف کے کٹہرے میں لایا جائے۔ ملکی برآمد کے لئے ٹھوس اور جامع حکمت عملی تیار کریں۔ سیاسی بیان بازی اور بیان بازی کو ترک کردیں ، عوام کی فلاح و بہبود پر توجہ دی جانی چاہئے۔ اگر نہیں تو ، عالمی مالیاتی اداروں کے ہاتھوں میں وطن ایک کھلونا بن جائے گا۔ ایک شخص جو ملک سے محبت کرتا ہے اور اسے پیار کرتا ہے وہ اسے کبھی قبول نہیں کرے گا۔

 

Rate it:
Share Comments Post Comments
Total Views: 132 Print Article Print
 PREVIOUS
NEXT 
About the Author: Zaheer Hussain
Currently, no details found about the author. If you are the author of this Article, Please update or create your Profile here >>

Comments

آپ کی رائے
Language: