مصلحت کا دور ہے

(Muddasir Ahmed, India)

پچھلے دنوں بابری مسجد کی جگہ پر رام مندر بنانے کے لئے جو سنگ بنیاد رکھی گئی ہے اس دوران یہ بات پھر سے عیاں ہوئی ہے کہ کون کتنا سیکولر اور کون کتنا کمیونل ہے؟.. حالانکہ رام مندر ہندوؤں کے عقیدے کا معاملہ ہے اگر وہ مندر بناتے ہیں تو انکی اپنی مرضی ہے اور انکا اپنا عقیدہ ہے ۔ لیکن یہاں اس ملک میں ایک مسجد کو توڑ کر وہاں مندر بنانا سوائے نفرت پھیلانے کے اور کچھ نہیں ہے ایسے میں پچھلے 80 سالوں سے جو مسلمان اس اراضی کو لے کر دعویداری کررہے تھے وہ بھی مصلحتوں کو بنیاد بنا کر، صبرکا پیغام دے کر مسجد کی اراضی کو اپنے ہاتھوں سے جانے دے دیا ۔۔ افسوسناک بات یہ بھی ہے کہ جس قیادت پر مسلمانان ہند نے اب تک بھروسہ کیا وہ بھی ناکام رہی اوراپنی بقاء، اپنے اداروں کے وجود کے لئے ملی معاملات کی بلی چڑھادی۔ اب انکے بعد ہمارا سوال ان مسلم تنظیموں اور قائدین سے ہے جو آزادی کے 76 سال بعد بھی مسلسل سیکولرزم کے نام پر چوٹ کھانے، سیکولر سیاست کے نام پر دھوکہ کھانے اور سیکولرزم کی جڑوں کو مضبوط کرنے کے نام پر مسلمانوں کو دھوکہ دیا، مسلمانوں کے وجود کو کھوکھلا کیا اور مسلمانوں کے مستقبل کو خطرے میں ڈالا تھا اب وہ کیا کرینگے؟. جب راجیو گاندھی نے بابری مسجد کے احاطے میں رام کی مورتیاں نصب کی تو مسلمان خاموش رہے اور راجیوگاندھی کو ہی اپنا قائد تسلیم کیا، اسکے بعد 1992 کو پی وی نرسمہا راؤ کی موجودگی میں بابری مسجد کو شہید کیا گیا پھر بھی مسلمانوں کے لئے کانگریس ہی مجبوری رہی ۔ اسکے بعد من موہن سنگھ کا دور رہا اس میں بھی مسلم قائدین نے کانگریس کو اپنا مذہب بنالیا اور ہر بار یہی کہا گیا کہ اگر مسلمان کانگریس کو ووٹ نہیں دینگے تو بی جے پی آجائے گی۔ اب سوال یہ پیدا ہورہا ہے کہ ملک بھر میں آزادی کے بعد سے اب تک مسلمانوں نے کانگریس کو ہی ووٹ دیا ہے تو باربار بی جے پی کیسے آرہی ہے؟۔کرناٹک میں ایک تنظیم بنام کرناٹکا مسلم متحدہ محاز کے نام سے موجود ہے، اسکا کام یہ ہے کہ وہ الیکشن سے کچھ دن پہلے کانگریس کے بڑے لیڈروں سے ملاقات کرتی ہے اسکے بعد ریاست بھر میں گھوم پھر کر کانگریس کی حمایت میں ووٹ دینے کی بات کرتی ہے اسکے علاوہ دو۔تین سیٹیں ایسی ہوتی ہیں جہاں پر کانگریس کا گدھا کمزور ہوتا ہے اور جے ڈی یس کا خچر مضبوط ہوتاہے ان مقامات پر گدھے کے بجائے خچر کو ووٹ دینے کی بات کرتے ہیں ۔ انکے علاوہ اگر کوئی مسلمان مضبوط دعویدار ہو تب بھی وہ اسکا ساتھ نہیں دیتے کیونکہ محاذ کی نظر میں کانگریس ہی سیکولر ہے باقی اگر آزاد امیدوار جو مسلم ہو وہ کمیونل بن جاتا ہے یا پھر وہ بی جے پی کو جتانے کے کھڑا ہوجاتا ہے۔ ایسے میں پانچ سالوں تک کانگریس بچاؤ۔ بی جے پی ہٹاؤ کا نعرہ بلند کرنے والی محاذ اب ایسے موقت میں جب کانگریس پارٹی کے کارکنان مسلمانوں کے جذبات اور دیب سے جڑی ہوئی بابری مسجد کی جگہ پر مندر کی تعمیر ہونے پر جشن منارہے ہوں تو کیوں اسکی مخالفت نہیں کررہے ہیں۔ کیوں اخباری بیان جاری کرتے ہوئے کانگریس کے دوغلی پالیسی کے تعلق سے برہمی کا اظہار نہیں کررہے ہیں ۔ اب تک کانگریس کو سیکولر ہونے کا سرٹیفکیٹ دینے والے مسلمانوں کے کنٹراکٹرس اخلاقی ذمہ داری لے کر محاذ کو تحلیل نہیں کررہے ہیں ۔ کیا اب بھی محاذ کو بھروسہ ہے کہ کانگریس سیکولر پارٹی ہے ۔ جن جن لوگوں کو ووٹ دینے کے لئے محاذ کی جانب سے فتویٰ دیا گیا تھا اس میں سے ایک درجن اراکین اسمبلی کانگریس اور جے ڈی یس چھوڑ کربی جے پی میں چلے گئے ہیں ۔ اب محاذ کے ذمہ داران کیسے ان بہروپی سیکولر لیڈروں کی مخالفت کرینگے۔ حالانکہ انکا دعویٰ ہے کہ محاذ رضاکارانہ طور پر کام کرتی ہے، کسی سے پیسے نہیں لیتی، اپنے ذاتی اخراجات سے ریاست کا دورہ کرتے ہوئے وہ سیکولر پارٹیوں کی تائید کرتی ہے، اس میں دانشوروں کی بڑی ٹیم ہے وغیرہ ۔۔ ٹھیک ہے سب مان لیں گے لیکن کیا اپنا پیسہ خرچ کرکے دوسروں کے گھروں میں چراغاں کرنا اچھا ہے یا اپنے پیسے کا استعمال اپنے گھر کو روشن کرنے کے لئے کیا جائے؟. دانشوروں کی ٹیم موجود ہے تو کیونکر ریاست میں مسلمانوں کی طاقت بنانے کے لئے دانشمندی سے کام نہیں لیا جاتا؟. جو دھوکہ مسلمانوں کو کانگریس کرتی آئی ہے اس کانگریس کو سبق سکھانے کے لئے یا ان پر دباؤ ڈالنے کے لئے لائحہ عمل تیار نہیں کیا گیا؟ ... حقیقت یہ ہے کہ یہاں ہماری قائد قیادت سے زیادہ اپنے اپنے مفادات کی تکمیل اور اپنے وجود کی بقاء کے لئے کام کرتے رہے ہیں، یہ حالات صرف محاذ کے ذمہ داروں کی نہیں بلکہ ملک کے بیشتر علاقوں میں مختلف سیاسی جماعتوں سے جڑے ہوئے مسلم لیڈروں کی ہے، ان کے سامنے بھلے ہی امت مسلمہ کا خاتمہ ہو لیکن وہ اپنے عہدوں، اپنی پارٹیوں اور تنظیموں کو چھوڑنے کے لئے تیار نہیں ہوتے، چھوڑنے کی بات تو دور سخت الفاظ میں مذمت کرنا بھی انکے لئے گنوارا نہیں جسکی تازہ مثال آل انڈیا مسلم پرسنل لاء بورڈ کا انگریزی والا ٹوئٹ ہے جس میں پہلے مسجد کی شہادت، رام مندر کی تعمیر اور عدالت کے فیصلے کی مذمت کی گئی پھر اس پیغام کو مصلحت کا حوالہ دیتے ہوئے ڈیلیٹ کردیا گیا۔۔ واضح ہوکہ مسلمانوں کی تاریخ بہادروں، ہمت والوں، شہیدوں اور غازیوں سے بھری پڑی ہے نہ کہ موجودہ وقت بزدل قائدوں کی طرح ماضی میں مثالیں ملتی ہیں ۔ اب امت مسلمہ کو بھی چاہئے کہ وہ دلالوں، قوم کے کنٹراکٹروں، بزدل لیڈروں، پیمنٹ پر کام کرنے والے علماء اور راتوں رات بکنے والے میڈیا کے صحافیوں کا دامن تھامنے کے بجائے خالص امت کا درد اور جذبہ رکھنے والوں کے ساتھ چلیں اور ایسے لوگوں کو ڈھونڈ کر نکالیں اور انہیں اپنا قائد تسلیم کریں ۔اردو کے مشہور شاعر سید ابوبکر مالکی نے لکھا ہے کہ
مصلحت کا دورہے،مدمقابل ہے مفاد
کچھ اِدھر خاموش ہیں اور کچھ اُدھر خاموش ہیں۔

بالکل حالات اسی طرح سے قوم مسلم میں پیدا ہوچکے ہیں،مصلحت کی بات تو سب کررہے ہیں،لیکن اس کے مقابلے میں جو طاقتیں ہیں وہ اپنے قومی مفادات کیلئے ذاتی مفادات کوقربان کررہے ہیں جبکہ اُمت مسلمہ میں کچھ لوگ خاموشی کامظاہرہ کررہے ہیںتو کچھ لوگ خاموش رہنے والے مسلمانوںکی تائید کررہے ہیں۔یہی افسوسناک پہلوہے۔
 

Comments Print Article Print
 PREVIOUS
NEXT 
About the Author: Muddasir Ahmed

Read More Articles by Muddasir Ahmed: 185 Articles with 55143 views »
Currently, no details found about the author. If you are the author of this Article, Please update or create your Profile here >>
11 Aug, 2020 Views: 261

Comments

آپ کی رائے