روبرو ہے ادیب: عارف مجید عارف

(Zulfiqar Ali Bukhari, Islamabad)
تحریر و ملاقات: ذوالفقار علی بخاری

محترم عارف مجید عارف صاحب لکھتے لکھتے غائب ہوئے اور پھر جب واپسی ہوئی تو انہوں نے اپنا سلسلہ وہیں سے جوڑا ہے جہاں سے ٹوٹا تھا، ان کی واپسی میں اہم ترین کردار قابل احترام نوشاد عادل صاحب کا ہے، موصوف جہاں منفرد رجحانات کے موجد ہیں، وہیں اب لکھاریوں کی پوشیدہ صلاحیتیں بھی اُجاگر کرنے میں چپکے سے خدمات سرانجام دے رہے ہیں،یہی دیکھ لیں عارف مجید عارف صاحب کو ادب اطفال کی جانب مائل کرنا اورلکھنے کی طرف مائل کرنا کوئی چھوٹا کارنامہ قرارنہیں دیا جا سکتا ہے۔


محترم عارف مجید عارف سے ہماری گفتگو قارئین کی نذر ہے

********************************

سوال: اپنے بارے میں بتائیں کب اور کہاں پیدائش ہوئی؟

جواب:19-09-1968، بمقام حیدرآباد۔

********************************

سوال: آپ کے بچپن کی کوئی خا ص یاد، جو قارئین کو بتا نا چاہیں؟

جواب:ایسی بہت یادیں ہیں۔ایک بار اپنے منجھلے ماموں کے کمرے میں تین کڑیوں والی کنڈی لگا کر جوتے کے تلے پر پالش کر رہا تھا پھر اندر سے کنڈی ہی نہیں کھل سکی۔بہت تگ و دو کے بعد باہر والوں نے کسی طرح دروازہ کھولا۔دراصل مجھے یہ سمجھ نہیں تھی کہ جوتے کے تلے پر پالش کیوں نہیں کرتے۔اس وقت میری عمر پانچ سال سے بھی کم تھی۔

********************************

سوال:آپ کو کب خیا ل آیا کہ لکھنا چاہیے؟

جواب:گھر میں ہر طرف کتاب ہی کتاب تھی۔مطالعے کے شوق اور اپنا نام کہانی پر شائع ہونے کی خواہش نے یہ خیال پیدا کیا۔۔۔1980 یا 81 کا سال تھا۔

********************************

سوال: اولین تحریر کی اشاعت پر کیسا محسوس ہوا تھا؟

جواب:وہ خوشی ناقابل بیان ہے۔۔مجھے یہ لگ رہا تھا کہ مجھے تمام دنیا کی خوشی حاصل ہو گئی ہے۔اس سے بھی زیادہ خوشی مئی 2020 میں ہوئی جب میری دس سالہ بیٹی آمنہ عارف کی پہلی کہانی روزنامہ ایکسپریس میں شائع ہوئی۔

********************************

سوال:آپ کے پسندیدہ مشاغل کیا ہیں؟

جواب:اب تو مطالعہ،کرکٹ دیکھنا اور کبھی کبھی اچھی پرانی موسیقی سننا۔۔پہلے تو بہت مشاغل تھے مثلا" ٹکٹ جمع کرنا، سکے جمع کرنا اور کتابیں جمع کرنا(خصوصا" فیروز سنز کی) اب بھی ٹکٹ ،سکے اور کچھ کتابیں موجود ہیں۔

********************************

سوال: آپ کے خیال میں ایک اچھے لکھاری کے مشاغل کون سے ہونے چاہیں؟

جواب:مشاغل انسان کی طبیعت اور فطرت سے تعلق رکھتے ہیں۔۔ایک اچھا ادیب اپنے مزاج کے مطابق ہر قسم کے مشاغل رکھ سکتا ہے اس میں کوئی قید نہیں ہے۔مطالعہ تو سب ہی لکھنے والے کرتے ہی ہیں۔عموما" لکھنے والے کے فنون لطیفہ میں زیادہ دلچسپی ہوتی ہے۔

********************************

سوال:آپ کی زندگی کا سب سے خوش گوار لمحہ کون سا ہے؟

جواب:جب میری بڑی بیٹی کی پیدائش ہوئی۔۔۔اپنی شادی اور پہلی کہانی کی اشاعت بھی ان لمحات میں شامل سمجھیں۔

********************************



سوال:کیا زندگی کے خوشگوار لمحات لکھاری کو مزاح لکھنے کی جانب راغب کر سکتے ہیں؟

جواب:بالکل۔۔۔ماحول اور مزاج کا اس معاملے میں بہت بڑا کردار ہے۔میرے ذاتی خیال کے مطابق تخلیق کے لیے خوشگوار ماحول بہت اہم ہے۔جب طبیعت میں شگفتگی ہوگی تو پھر شگوفے ہیں چھوٹیں گے۔

********************************

سوال:آپ کے خیال میں ادب،ادیب اورمعاشرے کا آپس میں کتنا گہراتعلق ہے؟

جواب:ادیب معاشرے کا اچھا نباص ہوتا ہے لیکن لازمی ہے کہ وہ اچھا انسان بھی ہو۔ایک معاشرت کی تعمیر میں ادب اور ادیب کا مثبت کردار ہوتا ہے۔وہ اپنی تحریر کے ذریعے شعور بیدار کرسکتا ہے۔

********************************

سوال:آپ زندگی کے تلخ حقیقتوں کو تحریروں میں بیان کرنا پسند کرتے ہیں؟

جواب:جی۔۔بالکل۔۔۔میری کچھ تخلیقات کے پیچھے کچھ نہ کچھ حقیقی تلخیاں شامل ہیں۔

********************************



سوال:آپ کا اپنے والدین سے کیسا تعلق رہا ہے؟

جواب:بہت ہی اعلی۔۔۔والد صاحب نے تو کبھی ڈانٹا بھی نہیں،والدہ کبھی کبھار غصہ کرلیا کرتی تھیں۔

********************************

سوال:والدین کے حوالے سے کوئی یاد جو آپ بتانا چاہیں؟

جواب:والد نے کبھی کسی چیز سے منع نہیں کیا اور میں نے کبھی کسی غلط سرگرمی میں حصہ بھی نہیں لیا۔میں اپنی ملازمت کی وجہ سے کبھی رات تین بجے بھی گھر پہنچا تو والدہ انتظار جاگ رہی ہوتی تھیں۔

********************************

سوال:جیون ساتھی کا انتخاب کس کی مرضی سے ہونا چاہیے۔اپنی یا والدین کی؟

جواب:والدین کو یہ حق حاصل ہونا چاہیے۔لیکن انہیں بھی چاہیے کہ اس معاملے میں بے جا زبردستی نہ کریں۔۔جوڑ مناسب ہونا چاہیے۔

********************************

سوال: آپ کی زندگی کا اہم ترین سبق کیا ہے؟

جواب:کبھی کسی کم ظرف کو دوست نہ بناو۔

********************************

سوال: آپ نے کہاں تک تعلیم حاصل کی ہے؟

جواب:ایم اے (اکنامکس)

********************************

سوال:آپ کے خیال میں تعلیم اور معاشی طور پر استحکام ایک لکھاری کے لئے کتنا ضروری ہے؟

جواب:معاشی استحکام تو ہر شعبے میں ذہنی سکون کا باعث ہوتا ہے۔تعلیم سے زیادہ شعور اور بے داری لکھنے والے کے زیادہ ضروری ہے۔کچھ ادیب محض میٹرک پاس ہیں مگر ان کا تخیل کمال کا ہے۔

********************************



سوال:آپ کو کب ناقابل اشاعت تحریر پر بہت رنج ہوا؟

جواب:زیادہ نہیں کیوں کہ وہ تحریر دوسرے معاصر رسالے میں شائع ہو گئی تھی۔

********************************

سوال:آپ کے خیال میں جو تحریر ناقابل اشاعت ہوئی،اُس میں خامی کی بڑی وجہ کیا تھی؟

جواب:اظہر کلیم مرحوم کے رسالے "اشارہ" کے لیے ایک کہانی کھیل کے موضوع پر لکھی تھی ۔جسے انہوں نے پرچے کے مزاج کی وجہ سے واپس کردیا تھا وہ تحریر دو ماہ بعد سچی کہانیاں میں شائع ہو گئی تھی۔

********************************

سوال:کیا تعلیم اورلکھنے کا ایک دوسرے سے تعلق ہے؟

جواب:تعلیم کا مطلب حرف شناسی نہیں ہوتا۔اس کے معنی شعور کے ہیں اور شعور اور لکھنا آپس میں مربوط ہیں

********************************

سوال:اب تک کون کون سے رسائل و جرائد میں لکھ چکے ہیں؟

جواب:تعلیم وتربیت، نونہال، ہونہار، ٹوٹ بٹوٹ،کھلونا،جگنو(شیخ غلام سنز) بچوں کا میگزین (حیدرآباد)،ذوق وشوق، بچوں کا میگزین(کراچی)،بچوں کا باغ،اخبار جہاں،اشارہ ڈائجسٹ،سچی کہانیاں،سرگزشت،اخبار وطن،کرکٹر،کرکٹ ٹائمز۔۔۔۔۔جنگ، نوائے وقت، حریت، ایکسپریس، نائنٹی ٹو نیوز، امن، انقلاب ۔۔اور بھی کچھ ہیں مگر ابھی ذہن میں نہیں ہیں۔

********************************

سوال: آ پ کے لکھنے کا کیا طریقہ کار ہے،اس پر کتنا وقت صرف کرتے ہیں؟

جواب:پہلے دور میں تو جیب میں چھوٹی کاپی اور پین رکھتا تھا ۔جہاں خیال آیا اسی وقت لکھ لیا ورنہ بعد میں تحریر کا حق ادا نہیں ہوتا۔اب موبائل پر بہتر لگتا ہے کیوں کہ کبھی بھی ترمیم واضافہ آسانی سے ہو جاتا ہے۔

********************************

سوال:آپ کبھی اپنی سرگذشت لکھنے کا سوچتے ہیں؟

جواب:نوشاد عادل جس کے پہچھے پڑ جائیں ۔اس کا بچنا ناممکن ہے۔۔۔۔سرگزشت مکمل لکھی لی ہے ۔اگلے ہفتے ارسال کردوں گا۔۔۔انشا اللہ۔

********************************

سوال: قاری کی پذیرائی کو آپ کس نظر سے دیکھتے ہیں؟

جواب:اپنی ذاتی تسکین کے بعد قاری کی رائے سب سے احسن ہے۔

********************************

سوال: یہ بتائیے کہ لکھاریوں کو معاوضہ یا اعزازی شمارہ کیوں ملنے چاہیں؟

جواب:ہمارے ملک میں تو اس کا رواج ہی کم ہے ۔معاوضہ ضرور ملنا چاہیے۔ہر شخص کا حق ہے کہ اسے اس کے فن و ہنر کا معاوضہ حاصل ہو۔

********************************

سوال: بچوں کے لئے لکھتے وقت لکھاریوں کو کیا بات سوچنی چاہیے؟

جواب:بچوں کی تعلیم وتربیت ۔ان کے مزاج کے مطابق اصلاحی تحریر لکھی جائے تاکہ وہ تعمیر معاشرے میں اپنا کردار سمجھیں اور اسے ادا کر سکیں۔

********************************

سوال: بچوں کو لکھنے،پڑھنے کی جانب مائل کیسے کیا جا سکتا ہے؟

جواب: گھر میں مطالعے کا رجحان ہونا چاہیے۔جیسا گھر کا ماحول ہوگا بچہ ویسی ہی تربیت حاصل کرے گا اس کے علاوہ تعلیمی اداروں میں مطالعے کی افادیت پر کام ہونا چاہیے۔مثلا" لائبریری اور اس میں بچوں کی لازمی حاضری ہونی چاہیے۔

********************************

سوال: کیا ہر لکھنے والے کے لئے صاحب کتاب ہونا ضروری ہے؟

جواب:ضروری نہیں ہے۔کچھ لوگ صرف صاحب کتاب کہلانے کے لیے بہت فضول کتب بھی شائع کروالیتے ہیں۔کچھ کا پیسہ اور اثر رسوخ ایسی کتابوں کے انبار لگا دیتا ہے جو بعد میں کباڑخانے میں تلتی ہیں۔

********************************

سوال: اپنے قارئین کے نام کوئی پیغام دینا چاہیں گے؟

جواب:محنت اور نیکی کبھی رائگاں نہیں جاتی۔۔کسی نہ کسی شکل میں ثمر بار ثابت ہوتی ہے۔۔اس کے لیے وقت کا انتظار کریں۔
Comments Print Article Print
 PREVIOUS
NEXT 
About the Author: Zulfiqar Ali Bukhari

Read More Articles by Zulfiqar Ali Bukhari: 322 Articles with 270880 views »
I'm an original, creative Thinker, Teacher, Writer, Motivator and Human Rights Activist.

I’m only a student of knowledge, NOT a scholar. And I do N
.. View More
05 Mar, 2021 Views: 77

Comments

آپ کی رائے