کیا ایسا بھی ہوسکتا ہے؟

(Shaikh Khalid Zahid, Karachi)
وقت کسی بپھرے ہوئے سمندر کا رویہ اختیار کر چکا ہے جس کی وجہ سے ساری دنیا کے حالات غیر یقینی کی صورتحال سے دوچار ہیں ۔ جیسا سوچا تھا ویسا تو ہوا نہیں اور ویسا ہوگیا جس کا خیال تک نہیں کیا گیادنیا ایسی کیفیت سے دوچار محسوس کی جارہی ہے ۔ مادہ پرستی کا دور دورہ ہے ہر کوئی اپنے اپنے حساب کتاب کیمطابق لاءحہ عمل ترتیب دے کر بیٹھا ہوتا ہے جبکہ قدرت کا اپنا طے شدہ اور قابل عمل پروگرام ہوتا ہے جو ہوکر رہتا ہے ۔ قدرت اگر کسی کو ذلت دینے پر آجائے تو اس کے اچھے سے اچھے کام کو بھی اتنا خراب پیش کیا جاتا ہے کہ سب کرنے والے کے اوپر گر جاتا ہے اور اسی طرح اگر قدرت عزت دینے کا طے کرلے تو کسی بھی قسم کا کام ہو اسے اچھا ترین بنا دیا جاتاہے ۔ دنیا ابھی غیر یقینی کی انتہائی صورتحال سے گزر کر آئی ہے یعنی کچھ ہی وقت گزرا ہے کہ دنیا کورونا جیسی موذی وباء نے اپنی لپیٹ میں لے رکھا تھا اور واضح طور پر محسوس کیا جارہا تھا کہ گویا قیامت یا پھر قیامت کا نمونہ قدرت نے انسانیت کو دیکھا دیا ہے، اب اس کی پکڑ سے کافی حد تک آزادی مل چکی ہے لیکن ابھی بھی خبریں آرہی ہیں کہ کورونا اب کوئی اور شکل اختیار کر کے واپس آنے کی کوششو ں میں مصروف ہے ۔

کیا وہ وقت آن پہنچا ہے کے یہ مان لیا جائے کہ دنیا کی تمام تر مشکلات کا سبب بننے والی کوئی ایک دنیاوی طاقت ہے جو اپنے اثر و رسوخ اور اپنی موجودگی ہر ملک کے داخلی اور خارجی معاملات میں رکھنا چاہتی ہے ۔ یوں تو دنیا بخوبی اس امر سے بخوبی واقف ہے کہ آمریکہ وہ ملک ہے جو ساری دنیا میں اپنی قائم کردہ اجارہ داری کی بقاء کی جنگ لڑ رہا ہے ۔ آمریکہ کو ایسا کرنے کی ضرورت افغانستان میں عبرت ناک شکست پر پردہ ڈالنے کیلئے کرنا پڑ رہا ہے ۔ دوسری طرف پچھلی دو دہائیوں سے سب سے بڑے حلیف بلکہ اگلی صفوں میں کھڑے ہوکر سارا خسارا برداشت کرنے والے ملک پاکستان کا ایک دم سے اعلانیہ ساتھ چھوڑ دینا ، امریکہ کیلئے کسی بہت بڑے دھچکے سے کم نہیں تھا جس کی دھمک انکے اعلی اعوانوں تک بھی پہنچ گئی ، اس اعلان کی توثیق در توثیق وہوتی چلی گئی اور پاکستان نے ناصرف امریکی مطالبات ماننے سے انکار کردئے بلکہ الٹے اپنے مطالبات رکھ رئیے ۔ ان مطالبات کو تسلیم کرنا امریکہ کیلئے اس لئے ضروری ہوگیا کیونکہ اسکی افواج کو افغانستان سے نکلنے کا محفوظ راستہ انہی شرائط پر ملنا تھا ۔ محفوظ راستہ مل گیا ساری فوج رات کی تاریکی میں نکل گئی اس طرح نکلنے کا طریقہ یقینا پاکستان نے بتایا ہوگا ۔ امریکہ نے جان کی آمان پائی اور وقت کی نزاکت کو سمجھتے ہوئے پاکستان کی ہر شرط تسلیم کر لی لیکن یہ سب اسکے مزاج کے خلاف انکی حکمت عملی سے متصادم ہوا تو کسی نا کسی طرح اور جلد از جلد اسکا بدلہ لینا ضروری تھا اور اسکا بہترین بدلہ یہی ہوسکتا تھا کہ اس صاحب اقتدار کو زیر کردیا جائے جس نے ہ میں (امریکہ ) کو جھکنے پر مجبور کیا ہے ۔ اب جوکچھ ہوا ہے وہ کسی سے بھی چھپا ہوا نہیں ہے اور ویسے بھی آج ہم سماجی ابلاغ کے دور میں ہیں ، خبر کتنی ہی بڑی کیوں نا ہو یا کتنی ہی معمولی کیوں نا ہو سب کوسماجی ابلاغ پر یکساں اہمیت دی جارہی ہے ۔

تحریک انصاف کی حکومت کو ہٹانے میں خارجی دخل اندازی تقریباً ثابت ہوچکی ہے اور اس خارجی دراندازی کو راستہ دینے والے اور انکے آلہ کار بننے والے بلکہ ایک اصطلاح کچھ وقت پہلے بہت عام ہوئی تھی سہولت کاروں سے آہنی ہاتھوں سے نمٹاجائے گا، لیکن اسوقت مسلۃ دہشت گردی کا تھا جس پر الحمدوللہ ہمارے قانون نافذ کرنے والے اداروں نے بیش بہا قیمتی جانوں کے نذرانے دے کر قابو پایا اور انکے سہولت کاروں کو بھی انجام کو پہنچایا ۔ پاکستان کی تاریخ میں سیاسی دھاندلیوں کی سب سے بڑی مثال سقوط ڈھاکہ کی صورت میں موجود ہے جو ایک بدنما داغ کی طرح نمایاں ہے یہ اس کی بات ہے جب خبر اپنی مرضی سے شاءع کی جاتی تھی اور ناشاءع کرنے کا اختیار بھی موجود تھا، اسکے بعد اگر ہم کسی سیاسی دھاندلی کو رقم کرینگے تو وہ تحریک انصاف کی حکومت کو گرانے کیلئے کی جانے والی دھاندلیوں کا تسلسل ہے ۔ سقوطِ ڈھاکہ تاریکی میں سرزد ہونے والا سانحہ سمجھ کر سیاہ باب بنا کر بند کردیا گیا لیکن عمران خان کو وزارتِ اعظمی سے ہٹا کر اور انکے خلاف ایک اجتماعی محاذ بنا کر جتنی بڑی غلطی کی گئی ہے یہ ہم لوگ خوب دیکھ رہے ہیں ۔ ایک طرف تنہے تنہا عمران خان دوسری طرف تمام ادارے اور تمام ذی قدر سیاسی جماعتیں ، اب کیا تھا عمران خان کوخوب معلوم ہوچکا تھا کہ انکا مقدمہ اب عدالتوں میں تو سننے والا کوئی نہیں ہے انہوں نے عوامی عدالتیں لگانا شروع کردیں اور کسی زخمی شیر کی مانند اپنے مخالفین کو للکارنا شروع کردیا اور للکارتے ہوئے نام نہاد قومی سیاسی جماعتوں کے عظیم جانے جانے والے رہنماءوں کے چہروں پر سے نقاب نوچنا شروع کردئیے اب کیا تھا اصلی چہروں کے سامنے آتے ہی عوام نے عمران خان کی ہر آواز پر لبیک کہنا شروع کردیا ،آواز نے گونج بننا شروع کیا اور یہ گونج ایک شہر سے دوسرے شہر اور پھر شہر شہر گلی گلی کوچے کوچے میں سنی جانے لگی ہے ۔ حق ثابت ہوچکا ہے نا اہل اور درآمد شدہ نظریہ بری طرح سے ناکام ہوتا دیکھائی دے رہا ہے ہر قدم اس اتحاد کی اجتماعی قبر کی جانب بڑھ رہا ہے ۔ پاکستان بہت جلد اپنے حقیقی نظریاتی وارث کو سونپا جانے ولا ہے ۔ اب انتخابات کا وقت بھی نکلتا جا رہاہے اب اقتدار خود بخود عمران خان کی جھولی میں ڈالا جائے گا اور بہت جلد پاکستان میں صدارتی نظام قائم کیا جائے گا ۔ اگر اللہ نے چاہ تو وقت واپس آجائے گا جب پاکستان کے فیصلے پاکستان میں ہی کئے جائینگے ۔ انشاء اللہ ۔
 
Comments Print Article Print
 PREVIOUS
NEXT 
About the Author: Sh. Khalid Zahid

Read More Articles by Sh. Khalid Zahid: 511 Articles with 310236 views »
Take good care of others who live near you specially... View More
20 May, 2022 Views: 829

Comments

آپ کی رائے