فیٹف گرے لسٹ ( پس منظر)

(zahid mehmood, Rawalpindi)

فیٹف گرے لسٹ ( پس منظر)
فیٹف یعنی ایف اے ٹی ایف جو کہ فنانشل ایکشن ٹاسک فورس کا مخفف ہے اور یہ ادارہ جی 7 ممالک کی ایک کانفرنس میں جو کہ 1989 کو فرانس کے شہر پیرس میں منعقد ہوئی میں اس میں قائم کیا گیا اسکا بنیادی مقصد منی لانڈرنگ اور دہشت گردی میں استعمال ہونے والے پیسے کی فنڈنگ کو روکنا ہے اب تک اس کے کُل 37 ممالک ممبر ہیں جن میں امریکہ، چین، روس، برطانیہ، بھارت، ملائشیا، اسرائیل، جرمنی، اٹلی، آسٹریلیا، کینیڈا، سعودی عرب، سنگا پور، جنوبی افریقہ، ترکی، سپین، سویٹزرلینڈ، جاپان، جنوبی کوریا، برازیل، ڈنمارک، بیلجئیم سمیت دیگر ممالک شامل ہیں

9/11 کو امریکہ میں ہونے والی دہشتگردی نے جہاں دنیا کے سیاسی معاملات میں بدلاؤ پیدا کیا وہیں دنیا پر معاشی گرفت مضبوط کرنے کے لیے مختلف طریقوں سے شکنجوں کو کسا گیا، ہماری بدقسمتی کہ 2006 میں بھارت اپنی کامیاب خارجہ پالیسی کی بنیاد پر فیٹف کا آبزور ممبر بنا اور پھر بھارت میں ہونے والے ممبئی دھماکوں کے بعد بھارت نے ایک بیانیہ ترتیب دیا کہ پاکستان ریاستی سطح پر دہشت گردوں کا مددگار ہے اور چوں کہ 9/11 کے بعد دنیا بھر میں امریکی کارروائیوں کے نتیجے میں مسلم دنیا میں شدت پسندی کو فروغ حاصل ہوا اور پھر کچھ ریاستوں نے اس شدت پسندی کو اپنے مقاصد کے لیے بھی استعمال کیا اس لیے دنیا بھر میں بالخصوص یورپ اور امریکہ میں ایک اسلاموفوبیا پر مبنی ردعمل سامنے آیا جسے بھارت نے ہمارے خلاف بخوبی استعمال کیا اور ہماری ریاستی و حکومتی کمزوریوں کی وجہ سے ہم اس بیانیہ کا بین الاقوامی طور پر مقابلہ نہ کرسکے اور یوں پاکستان کو پہلی مرتبہ 2008 میں فیٹف کی گرے لسٹ میں ڈال دیا گیا جسے 2 سال یعنی 2010 میں گرے لسٹ سے دوبارہ نکال دیا گیا۔ بھارت 2010 میں فیٹف کا مسقل ممبر بن گیا اور یوں پاکستان ایک ایسی کشمکش کا شکار ہوا جس سے پاکستان کو نکلتے ہوئے شاید کافی عرصہ لگ جائے پاکستان کو بھارتی بیانیہ کے بل بوتے پر اور ہماری کمزوریوں کی بناء پر 2012 میں دوبارہ گرے لسٹ میں ڈال دیا گیا جو کہ 2015 تک جاری رہا اور پاکستان کو گرے لسٹ سے وائٹ لسٹ کردیا گیا مگر یہ عمل بھی عارضی ثابت ہوا اور ہمیں 2018 کے جون میں جب ملک میں نگران حکومت تھی ایک بار پھر سے گرے لسٹ میں ڈال دیا گیا

یہ گرے لسٹ، بلیک لسٹ کیا ہے اور اسکے کون سے مضر اثرات ہوسکتے ہیں آئیے ذیل میں ان کا جائزہ لیتے ہیں

بلیک لسٹ ہونے والے ممالک پر عالمی پابندیاں لگ جاتی ہیں اور یہ تسلیم کرلیا جاتا ہے کہ یہ ممالک سرکاری سطح پر دہشت گردانہ کارروائیوں میں ملوث ہیں ۔ فیٹف کی بلیک لسٹ کے شکار ممالک میں ایران، شمالی کوریا، سمیت مختلف ممالک شامل ہیں جبکہ گرے لسٹ میں شامل ممالک کے لیے ایک وارننگ ہوتی ہے کہ وہ اپنے مالی نظام کو شفاف بنائیں نہیں تو انھیں بلیک لسٹ کردیا جائے گا۔ فیٹف کی بلیک لسٹ میں شامل ممالک پر بین الاقوامی پابندیاں لگادی جاتی ہیں جبکہ گرے لسٹ میں شامل ممالک کے سر پر ہمیشہ بین الاقوامی مالیاتی اداروں کی پابندیوں کے خطرات سر پر منڈلاتے رہتے ہیں جس سے وہ ممالک یعنی ان کی حکومتیں کسی بھی قسم کے بڑے فیصلے لینے سے قاصر ہوتے ہیں اور معاشرے میں ٹوٹ پھوٹ اور انتشار کا خطرہ ہمیشہ سے ہی منڈلاتا رہتا ہے۔ اس وقت دنیا کے جو ممالک گرے لسٹ میں شامل ہیں ان میں متحدہ عرب امارات، ترکی، یمن، سوڈان، فلپائن، شام، سینیگال، کمبوڈیا،برکینا فاسو، پانامہ سمیت 22 ممالک شامل ہیں جب یہ سطریں لکھی جارہی ہیں تو اسی وقت پاکستان کو گرے لسٹ سے نکالا گیا ہے۔

فیٹف کی گرے لسٹ، ہو یا بلیک لسٹ یا پھر وائٹ لسٹ گوکہ طاقت ور ممالک اور گروہوں کی ایماء پر بنتی ہے جسکے جتنے مفادات طاقتور ممالک کے ساتھ جُڑے ہیں اسی بناء پر وہ وائٹ، گرے یا پھر بلیک لسٹ ہوتا ہے اس وقت چوں کہ بھارت امریکہ اسرائیل گٹھ جوڑ ہے اور سعودی عرب بھی چوں کہ "جہادی گروہوں" کی سرپرستی سے انکاری ہے تو جہاں جہاں بھی "غیر ریاستی عناصر" سرگرم ہوں گے ان کے لیے فنڈنگ آسان ہوگی وہاں پر فیٹف سے سہولت حاصل کرنے کے لیے چند اہم ترین ممالک کے ساتھ مفادات جوڑنے ہوں گے اور ان کے مفادات کو قومی مفادات پر مقدم رکھنا ہوگا یا پھر دوسرا راستہ یہ ہے کہ خوددار قوموں کی طرح آہنی عزم کے ساتھ تمام قسم کی عیاشیوں کو پیچھے پھینک کر ذاتی مفادات کو قومی مفادات پر قربان کرکے نئے سرے سے منظم ہونا ہوگا کچھ عرصہ کے لیے شاید ہماری مڈل کلاس اور ایلیٹ کلاس کے پاس مہنگے موبائل فون، مہنگی گاڑیاں، مہنگی گھڑیاں، پالتو جانوروں کا مہنگا فوڈ، فاسٹ فوڈذ وغیرہ میں کمی جبکہ برانڈڈ کپڑوں کی جگہ مقامی کپڑوں پر مبنی لباس ہو، مگر اس لباس پر آپکو فخر محسوس ہوگا آپکی گردنیں جھُکی ہوئی نہیں ہوں گی آپ قومی غیرت، خودی، خودداری سے بھرپور ہوں گے

لیکن اس سب کے لیے ایک مضبوط ارادہ، مضبوط ویژن، بہترین حکمت عملی اور بہترین گورننس درکار ہوگی کرپشن کا سدباب کرنا ہوگا۔ لوٹی دولت کو رضاکارانہ یا بزور طاقت جیسے بھی ہو واپس لانا ہوگا ورنہ مزید تباہی مزید ذلت مزید رسوائی ہمارا مقدر ہے جو بھی کامیابیاں قوم نے قربانیاں دے کر حاصل کی ہیں وہ مخصوص افراد کی خواہشات تلے روند دی جائیں گی

اب دیکھتے ہیں کہ پہلے ہمارا ریاستی نظام فیصلہ کرتا ہے کہ اسے کس طرف جانا ہے یا پھر پاکستان کے عوام یہاں آخری بات گزارش کرنا چاہوں گا کہ ایسا ممکن نہیں رہے گا اب ایسے ہی چلتا رہے کیوں طاقت کے مراکز بین الاقوامی طور پر بدل رہے ہیں اور دنیا ایک سپر پاور کے بجائے مختلف گروپس کی صورت میں طاقت کی طرف جاتی دکھائی دے رہی ہے۔ مزید تعاون اور مزید انڈرسٹینڈنگ کی طرف دنیا جاتی دکھائی دے رہی ہے اب اس نئے ورلڈ آرڈر میں ہم اپنے لیے کیا حاصل کرتے ہیں یہ آنے والا وقت ثابت کرے گا

 

Comments Print Article Print
 PREVIOUS
NEXT 
About the Author: Zahid Mehmood

Read More Articles by Zahid Mehmood: 56 Articles with 35359 views »
Currently, no details found about the author. If you are the author of this Article, Please update or create your Profile here >>
17 Jun, 2022 Views: 605

Comments

آپ کی رائے