شاہراہ قراقرم (دنیا کا آٹھواں عجوبہ)

(Asghar Karim Khan, Karachi)
سات عجائباتِ عالم کی فہرست میں اگر آٹھویں عجوبے کو شامل کیا جاسکتا ہے تو وہ شاہراہِ قراقرم کے علاوہ اور کوئی چیز نہیں ہوسکتی۔ حویلیاں سے شروع ہوکر درہ خنجراب تک 806 کلومیٹر طویل یہ عظیم شاہراہ، انجینئرنگ کا شاہکار اور پاکستان کی تجارتی معاشی اور دفاعی شہہ رگ ہے۔

یہ راستہ کوئی نیا نہیں ہے صدیوں سے کاروان اس راستے سے چائے، پورسلین اور سلک خچروں پر لادکر چین سے گلگت لاتے تھے جہاں سے بارٹر سسٹم کے تحت سونا جواہرات اور مصالحہ جات لے جاتے تھے۔ اس سفر کے دوران پہاڑوں سے گر کر، لینڈ سلائیڈ کی وجہ سے اکثر ڈاکوﺅں کے ہاتھوں جان و مال گنوا بیٹھتے تھے۔ اس قدیم اور پرخطر راستے کو ایک شاہراہ میں تبدیل کرنا کوئی معمولی یا آسان کام نہیں تھا۔ اس کام کی دشواری کا اندازہ اس بات سے لگایا جاسکتا ہے کہ ابتدائی طور پر ایک یورپی فرم کو یہ کام دیا گیا اس فرم کے انجینئروں نے علاقے کا فضائی جائزہ لینے کے بعد ان سنگلاخ پہاڑوں اور چٹانوں کے درمیان کسی سڑک کی تعمیر کو ناممکن قرار دے دیا۔ اس کے بعد پاکستان نے یہ کام پڑوسی ملک چین کی کی مدد سے خود انجام دینے کا عزم کیا۔ دونوںممالک کے درمیان 1966 میں ایک معاہدے کے بعد اس ناممکن کو ممکن بنانے کا آغاز ہوا۔ اس کام کی عظمت اور وسعت کا اندازہ اس بات سے لگایا جاسکتا ہے کہ15000 پاکستانی اور 9500 چینی ماہر اور کارکنان اس کام میں بہ یک وقت مصروف عمل تھے۔ اس میں 24 بڑے پل 70 چھوٹے پل 1708 آبی گزرگاہیں ہیں۔طویل پہاڑی سلسلوں کے سینے میں شگاف ڈال کر شاہراہ بنانے کے لئے 8 ہزار ٹن ڈائنامائٹ استعمال کیا گیا اور تقریباً 30 ملین کیوبک میٹر پہاڑی چٹانوں کو راستے سے ہٹایا گیا۔ اس کی تعمیر میں 80 ملین کلوگرام سیمنٹ استعمال ہوا۔ تعمیراتی ساز و سامان اور مشینری کو مطلوبہ مقام تک پہنچانے کا کام پاک فضائیہ نے انجام دیا۔ بعض مقامات اس قدر دشوار تھے کہ ایک مہینے میں محض چند میٹر سڑک ہی بن پائی تھی۔ بالآخر وہ دن بھی آیا جب یہ شاہراہ تکمیل کو پہنچی اور ایک ناممکن کام انسان کے بلند حوصلہ کے باعث ممکن ہوا۔ مگر اس دورا ن408 افراد ہلاک اور 314 شدید زخمی ہوئے جبکہ معمولی زخمیوں کی تعداد ہزاروں میں ہے۔ یہ شاہراہ انسانی ہمت، محنت اور اعلیٰ صلاحیتوں کا جیتا جاگتا ثبوت ہے۔
 


اس شاہراہ پر سفر کرنا ہر پاکستانی کی خواہش ہوتی ہے۔ یہ ایک یادگار سفر ہوتا ہے۔ سارا راستہ خوبصورت مناظر، بلند و بالا پہاڑی سلسلوں، مچلتے دریاﺅں اور دنیا کی چند بلند ترین چوٹیوں کے درمیان سے گزرتا ہے۔ آئیے آج ہم آپ کو اس شاہراہ پر لے چلتے ہیں۔ اگر اسلام آباد سے سفر کا آغاز کریں تو پشاور روڈ (جی ٹی روڈ) پر سفر کرتے ہوئے 48 کلومیٹر کے فاصلے پر تاریخی شہر حسن ابدال آئے گا جو سکھوں کے گردوارے پنجہ صاحب کی وجہ سے عالمی شہرت رکھتا ہے۔

یہاں سے دائیں جانب مڑیں تو تقریباً ایک گھنٹے بعد حویلیاں آجاتا ہے جو فوجی چھاﺅنی کے باعث مشہور ہے یہاں سے شاہراہ قراقرم کا آغاز ہوتا ہے۔ حویلیاں سے اور ہری پور سے گزرتے ہوئے ایبٹ آباد آجاتا ہے۔ یہ ایک بڑا شہر ہے اس کی وجہ شہرت پاکستان آرمی کی کاکول اکیڈمی اور پرفضا مقام ٹھنڈیانی ہے یہاں سے ایک خوبصورت راستہ نتھیاگلی سے ہوتا ہوا مری تک جاتا ہے۔ ایبٹ آباد سے محض 26کلومیٹر کے فاصلے پر پائن کے درختوں میں گھرا مانسہرہ ہے یہاں سے ایک راستہ وادی کاغان کی طرف نکلتا ہے مگر ہمارا سفر آگے کی طرف ہے۔

مانسہرہ سے 100 کلومیٹر کے فاصلے پر بٹگرام سے گزرتے ہوئے تھاکوٹ کا پل آتا ہے جوکہ دریائے سندھ پر قائم پہلا پل ہے۔ اس پل کے ایک طرف ضلع مانسہرہ اور دوسری جانب ضلع سوات ہے۔ یہاں سے شاہراہ قراقرم کا اصل ایڈونچر شروع ہوتا ہے۔ فلک بوس چٹانوں کے ساتھ چمٹی سڑک پر چلتے ہوئے پیچ در پیچ موڑ اور ساتھ دوسری طرف گہری کھائی میں کہیں خراماں خراماں بہتے اور کہیں سیلابی انداز میں پہاڑوں سے سرٹکراتا دریائے سندھ۔ دوران سفر سامنے سے کوئی گاڑی یا ٹرک آجائے تو اسے کراس کرتے ہوئے جو مسافر کھائی کی جانب ہو اس کی سانس رک سی جاتی ہے کہ چند انچ کے فاصلے پر گہری کھائی اسے اپنی طرف بلاتی محسوس ہوتی ہے۔ مگر اس شاہراہ پر سفر کرنے والے ڈرائیوروں کی مشاقی کی تعریف نا کرنا بھی زیادتی ہوگی جو کہ گھنٹوں مسلسل ان دشوار گزار رستوں پر سفر کرتے ہیں یہاں حادثے کی شرح بہت کم ہے۔

شاہراہ قراقرم پر سفر کرتے ہوئے بعض مقامات پر کھائی کی جانب سرسبز مقامات نظر آتے ہیں یہ مقامی لوگوں کے کھیت ہیں مزید غور سے دیکھنے پر کچھ کچے مکانات اور ان کے مکین بھی نظر آئیں گے۔ پہاڑ کے بھورے پس منظر میں یہ ہریالی بہت بھلی لگتی ہے مگر ساتھ ہی یہ خیال بھی آتا ہے کہ بنیادی ضروریات کے بغیر اس دور افتادہ علاقے میں یہ لوگ کیونکر اپنی زندگی بسر کرتے ہوں گے۔ ان پہاڑوں میں بسنے والے لوگوں کو شاہراہِ قراقرم بننے کے بعد پتہ چلا کہ ان کے گاﺅں کے علاوہ بھی دنیا میں اور لوگ بستے ہیں۔

تھاکوٹ سے محض 28 کلومیٹر کے فاصلے پر بشام آتا ہے یہاں ایک تاریخی قلعہ بھی سڑک سے نظر آتا ہے یہاں سے ایک راستہ شانگلہ پاس کے ذریعے سوات جانکلتا ہے بشام میں کئی ہوٹل اور ریسٹورنٹ کے علاوہ ایک بڑا بازار بھی ہے جو 24 گھنٹے کھلا رہتا ہے۔ اس شہر کو شاہراہ قراقرم پر سفر کرنے والی ٹرانسپورٹ کے لئے مرکزی اہمیت حاصل ہے یہاں گاڑیاں کافی دیر رکتی ہیں۔ بشام کے بعد پٹن کومیلا اور سازین کے دشوار گزار علاقے آتے ہیں۔ پھر اچانک ماحول اور منظر تبدیل ہوجاتا ہے اور سفر ایک کھلے اور مسطح علاقے میں شروع ہوجاتا ہے۔ پہاڑی دیواروں سے چمٹے کھائی کے قریب سے 7 سے 8 گھنٹے کے سفر کے بعد یہ وسعت بھلی لگتی ہے یہاں کچھ گرمی کا احساس بھی ہوتا ہے۔ کیونکہ پاکستان کے گرم ترین علاقوں میں سے ایک چیلاس نزدیک ہی ہے۔ چیلاس میں کئی ہوٹل اور اور ایک خاصا بڑا بازار ہے۔ یہاں کافی چہل پہل نظر آتی ہے۔ ماہرین آثار قدیمہ نے یہاں گندھارا تہذیب کے کچھ آثار بھی دریافت کئے ہیں۔ چیلاس سے ایک راستہ تاریخی بابوسرٹاپ سے گزرکر وادی کاغان کی طرف نکلتا ہے۔ چیلاس سے شاہراہ قراقرم پر سفر کرتے ہوئے تقریباً ایک گھنٹے بعد رائے کوٹ کا پل آئے گا یہاں پہاڑ کی بلندی سے چمٹا ہوا ایک خطرناک راستہ نانگا پربت کی خوبصورت وادی فیری میڈو جاتاہے۔

جسے اپنے حسین مناظر کے باعث پریوں کی چراہگاہ کے نام سے یاد کرتے ہیں۔ رائے کوٹ سے تھوڑا آگے بڑھنے کے بعد اگر دائیں جانب نظر رکھیں تو آپ کو 8126 میٹر بلند پاکستان کی دوسری بلند ترین چوٹی نانگا پربت بھی نظر آسکتی ہے۔
 


یہاں سے مزید ایک گھنٹے کے سفر کے بعد جگلوٹ کی وادی آتی ہے یہاں کثیر تعداد میں فوجی جوان نظر آتے ہیں اس لئے کہ یہاں سے ایک راستہ ضلع استور سے ہوتا ہوا کارگل کی طرف نکلتا ہے۔ یہی راستہ عظیم سطح مرتفع دیوسائی اور خوبصورت وادیوں ترشنگ،روپل کو بھی جاتا ہے۔ راما جھیل کے لئے بھی یہی راستہ اختیار کرنا پڑتا ہے۔ ہمارا دل تو اسی طرف جانے کو چاہتا ہے مگر آپ کو شاہراہِ قراقرم کی سیر کرانی ہے اور خنجراب تک لے جانا ہے تو ہم جگلوٹ پر رکے بغیر آگے بڑھتے ہیں۔

جگلوٹ سے آگے بڑھتے ہی کچھ فاصلے پر دریائے گلگت اور دریائے سندھ کے ملاپ کا خوبصورت منظر نظر آتا ہے اب قراقرم پر سفر کرتے ہوئے سندھ کے بجائے دریائے گلگت، ہمارا ہمسفر ہوگا یہ گلگت تک دائیں جانب نظر آتا رہے گا۔ جگلوٹ سے گلگت کا فاصلہ 50 کلومیٹر ہے مگر اس سے پہلے ایک ذیلی سڑک دائیں جانب وادی اسکردو کی طرف جاتی نظر آتی ہے یہ شاہراہِ اسکردو ہے۔ گلگت شاہراہِ قراقرم کے ساتھ سب سے بڑا شہر ہے یہاں بڑی تعداد میں ہوٹل اور ریسٹورنٹ موجود ہیں۔ ایک بڑا بازار بھی گلگت کی رونق میں اضافہ کرتا ہے جہاں چائنا کا سامان وافر مقدار میں نظر آتا ہے۔ گلگت شاہراہ قراقرم کے عین اوپر نہیں بلکہ ایک ذیلی سڑک شاہراہ قراقرم سے اسے ملاتی ہے۔ یہاں سے 112 کلومیٹر کے فاصلے پر وادی ہنزہ ہے۔ راستے میں دینور کے مقام سے 7788 میٹر بلند ایک اور خوبصورت پہاڑی چوٹی راکاپوشی نظر آتی ہے۔ ہنزہ سے ایک راستہ ہسپر اور ہوپر گلیشئر کی طرف نکلتا ہے۔ ہسپر گلیشئر آگے جاکے عظیم گلیشئر بیافو سے مل جاتا ہے۔ یہاں سے آگے گلمت گاﺅں آتا ہے گاﺅں کے نزدیک ایک گلیشئر سیاحوں کو دعوت نظارہ دیتا ہے۔ ذرا آگے بڑھیں توپھسو گلیشئر آئے گا۔ اس گلیشئر کے تکونے ستون اپنی انفرادیت کی وجہ سے دنیا بھر میں شہرت رکھتے ہیں۔ یہاں سے ایک طویل اور دشوار گزار ٹریک وادی شمشال کی طرف جاتا ہے۔ یہ غیر ملکی سیاحوں کا پسندیدہ ترین ٹریک ہے۔ یہاں کے ہائی پورٹر کوہ پیمائی کے لئے دنیا بھر میں مشہور ہیں۔ پھسو کے بعد سوست آجاتا ہے یہاں ایک چیک پوسٹ ہے جہاں سے گزر کر چین کی طرف جاتے ہیں۔ چیک پوسٹ سے کچھ فاصلے پر بلند ترین درہ ، درہ خنجراب ہے-
 


یہ شاہراہ قراقرم کی آخری حد ہے یہاں سے آگے صرف وہ لوگ جاسکتے ہیں جن کے پاس چین کا ویزا ہو اس لئے کہ یہاں سے آگے چین کے صوبے ژی ژیانگ کی سرحدیں شروع ہوتی ہیں۔ ہنزہ سے خنجراب تک 209 کلومیٹر کا یہ فاصلہ 3 سے 4 گھنٹے میں طے ہوتا ہے۔ وادی خنجراب برف سے ڈھکی ایک وسیع، پرفضا اور یخ بستہ وادی ہے۔ یہاں آپ کو یاک بھی گھومتے پھرتے نظر آسکتے ہیں۔ حویلیاں سے خنجراب تک کا سفر تقریباً 22 گھنٹے میں طے ہوتا ہے۔ پرپیچ اور خطرناک راستوں سے گزرتے ہوئے۔ آپ گلیشئرز، بلند و بالا برف پوش چوٹیوں، آبشاروں اور قدرتی چشموں کا نظارہ کرتے دریائے سندھ، دریائے گلگت اور دریائے ہنزہ کی سنگت میں سفر کرتے ہوئے خنجراب پہنچنے پر طویل سفر کی تھکان بھول جاتے ہیں۔ اس وادی کو دیکھ کر بے ساختہ لبوں پر مسکراہٹ آجاتی ہے یہ کوئی عام مسکراہٹ نہیں ہے یہ انہی لوگوں کے نصیب میں ہوتی ہے جو درہ خنجراب پہنچتے ہیں ۔

Reviews & Comments

موقر روزنامہ جنگ نے بدھ ٢٢ اپریل کے مڈویک میگزین میں میرا یہ مضمون “شاہراہ قراقرم“ لفظی ہیر پھیر کے ساتھ “ر ع“ کے نام سے شایع کیا ہے۔ لنک ملاحظہ کریں۔
http://magazine.jang.com.pk/detail_article.asp?id=27345
یہ ادبی سرقے کی بدترین مثال ہے۔
By: Asghar Karim Khan, Karachi on Apr, 24 2015
Reply Reply
2 Like
Intahai Kamal. I feel mein Khanjrab se ho k aya hun.
By: Abid Rafique, Toba Tek Singh on Jul, 23 2013
Reply Reply
1 Like
May God Bless You Mr. Witer
By: sher abbas, Gilgit on Jul, 08 2013
Reply Reply
2 Like
yar zabardast article ...... dil chah raha hai abhi ur ker chala jao qaraqaram...
By: noman, dubai on Jun, 08 2013
Reply Reply
1 Like
Excellent dear..! this article really help to travel. very well written
By: faras, lahore on Dec, 01 2012
Reply Reply
1 Like
Great Experience, you are having, Keep it up!
By: Furqan Hanif, Karachi on Sep, 07 2012
Reply Reply
0 Like
Well done old friend, Also Pakistan's western areas are hidden jewels that can beat Switzerland any day.
By: asim, karachi on Sep, 07 2012
Reply Reply
1 Like
Well done old friend -
By: asim, karachi on Sep, 07 2012
Reply Reply
1 Like
Very well written... keep up the good work.!
By: J Z, Abudhabi on Sep, 04 2012
Reply Reply
1 Like
bohat hi achi sair karai ha aap na maza agaya or sath ma itni achi information b di thanks
By: Rizwan , karachi on Sep, 03 2012
Reply Reply
1 Like
Excellent article. Very informative. Pakistan Zindabad
By: Prof. M. SanaUllah, Karachi on Sep, 01 2012
Reply Reply
1 Like
wow!!! beautiful Pakistan ..
By: Angle Khan , California [ USA ] on Aug, 31 2012
Reply Reply
0 Like
Good job Ashgar Karim Khan. love our land
By: hammad, Riyadh on Aug, 30 2012
Reply Reply
1 Like
great and super information.........................
By: azeem, lahore on Aug, 30 2012
Reply Reply
0 Like
Language:    
Karakoram Highway runs through the northern areas connecting Pakistan with China's Xingjiang province is often described as " Eighth Wonder of the World" due to the marvel of civil engineering as it has taken 15 years to complete by the Pakistan Army Engineers in collaboration with China. It's been labeled as " World's highest paved international Road" under world's toughest terrain.